Ramadan 2017: Worship Fasting Virtues Blessings Essential Elements

Recently updated on September 10th, 2017

Ramadan 2017: Worship Fasting Virtues Blessings Essential Elements
5 (100%) 1 vote

Ramazan 2017: Ramadan month moon has not sighted in India yet till 03:15 PM IST on 27 May, 2017, and not even in Pakistan and Bangladesh also. First roza will be from from tomorrow which will fall on Sunday Insha ALLAH. Declared by Hilal Committee.

Insha ALLAH kal se Hijri Tareekh

Bismillah hirRahmaan nirRaheem

With The Name of ALLAH, The Gracious and The Merciful

SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam

Earn Savab from Different Types of Worship During the Month of Ramadan

01, Ramadan, 1438

ALLAH Jalla Jalaaluhoo ne tujhe kis maqsad ke liye banaya hai ae Mah-e-Ramazan Kareem. Tujhe pakar ham apni maghfirat ki raah khol sakte hai. Tu zariyah hai hamari falah ka. Na farishte na kuch tere ehtaram se ALLAH khud hamein in’am bakhshenge. Wo Eid-ul-Fitr kitni khush gawar hogi us Ramazan Kareem ke ehtaram-o-muhabbat karne wale ki. Kya noor hoga tere chahne walo ke paikar pe. Aj is article ‘Ramadan 2017: Worship Fasting Virtues Blessings Essential Elements’ mein Insha ALLAH is khas mahine ka ehtaram-o-ibadat karne ke tareeqe aur hidayat ham pesh karenge.

Ramadan-2017-Worship-Fasting-Virtues-Blessings-Essential-Elements-yaALLAH-270517

Hurry!! Limited Periods Offer

Ye in’am sirf ek mah ke liye hai.

Ramadan 2017 ke Muqaddas Maah Mein Khas Ibadaat, Barkatein, Fazeelat, Ehtaraam aur Fawaid Kaise Hasil Karein!

Khush Amdeed Ramadan-ul-Mubarak 2017 

ALLAH Ta’ala ne tujhe kitna mubarak, kitna pyara, kitna azeem aur kitna muqaddas banaya hai. Ae Ramadan! Sari duniya ke musalman do mahine se tere ane ki tayari aur d’ua kar rahe hain. Kitne mujahid aur kitne ALLAH wale tere istaqabal ke liye be-chain hain aur tere intezar ki ek ek ghadi gin-gin kar guzar rahe hain. Abhi ek dusre mulk se ek dost ne paigham bheja hai. Ke hamare han jumu’ah ke din pahle roze ka imkan hai. Ap Ramadan-ul-Mubarak ke khusoosi mamoolat mujha bata dijiye.

Ae Ramadan dekh! Musalman kitni be-chaini se tera intezar kar rahe hain. Hamare aj 29 Sha’aban ki tareekh hai. Kuch log zindah reh kar tujh se gale milenge. Aur chand hi ghanton mein tere intezar ki mithas apne kafan mein lapete qabron mein ja soyen ge.

Ae Ramadan! Tu bohat ajeeb hai. Hamare Madni Aaqa SallALLAHU Alayhe Wasallam un par main aur mera sab kuch qurban, Rajab ka chand dekhte hi tujhe yad karna shuru kar dete the.

Ae ALLAH hamare liye Rajab aur Sha’aban mein barkat ata farma aur hamein Ramadan tak pohncha. Ameen. Ae Ramadan! Rab Ta’ala ne teri jhauli ko sa’adaton se bhara hai.  ALLAH Ta’ala ne Qur’an Pak jaisi Azeem-ul-Shan kitab teri ek raat mein loh-e-mahfuz se asmaan se zamin par utari. Wah Ramadan wah! Qur’an Pak jaisa tohfa teri pakizah raat mein ummat-e-marhuma ko mila.

Ae Ramadan! Tera to nam bhi Qur’an Pak mein mazkurah hai. Isliye tu bhi mubarak aur tera nam bhi mubarak. Ae Ramadan! Teri jhauli bhari huyi hai. Rehmat, maghfirat, jahannum se nijat ka mahina hai. Tu sakhawat aur gham khawari ka mahina hai.

Ae Ramadan! Tere din pak aur teri ratein munawwar aur mu’attir hain. Ae Ramadan! Tu phir aa raha hai, puri shan ke sath, puri aan ke sath. Malum nahi is bar tu kitne gunahgaron ki paki ka zariyah bane ga. Han Ramadan han! Hamein pata hai, teri raton ke noor ne bade bade sharabi, papi, zani, chor aur daku pak kar ke jannati bana diye.

Han Ramadan hamein ilm hai tu bohat sakhi hai. Tujhe Rab ne bohat taqat di hai. Hazrat Jibraeel Alayhis Salam jo Anbiya Karaam Alayhis Salam par utra karte the. Ae Ramadan! wo teri ek raat mein ummat ke un logon ke pas ate hain. Jo bilak rahe hote hain. Ro ro kar Rab ko mana rahe hote hain. Jhoom kar tilawat kar rahe hote hain. Talwarein uthaye dushmano ka muqabla kar rahe hote hain.

 Ae Ramadan! Han ye haqeeqat hai teri. Shab-e-qadar mein rooh-ul-qudus farishte le kar zamin par aa jate hain. Khush naseeb logon ke liye salamti ki d’ua mangte hain. Ae Ramadan! Hamein malum hai tere ate hi jannat ke darwaze khul jate hain. ya ALLAH! Hamein bhi jannat ata farma aur tere ate hi jahannum se bachaa! Ameen. Aj har taraf tera intezar hai. Ek ek ghadi intezar hai. Tu ayega aur zarur ayega. Hamein pata nahi ke hum honge ya nahi. Agar hum huye to tujhe dil khaul kar apne gham aur dukhde sunayen ge.

Hamein yaqeen hai ke ae Ramadan, tu hamara dukhda zarur sune ga. Aur Insha ALLAH teri barkat se halaat tabdeeli ki karwat leinge. Ameen!

Ae Ramadan! Faisla to Rab ne kar diya hai hum to teri raton mein sara dukhda sunayenge. Kitne ghar lut gay? Kitne sar kat gaye? Kya kuch chin gaya? Ye deen ka aur hamara nam-o-nishan mitana chahte hain. Aur zulm aur gunah mein badhte hi ja rahe hain. Aur ab to bohat khush hain ke hamari taqat na-qable taskheer hai.

Ae Ramadan! Tu to ghazwa-e-badar ka ain gawah hai. Tu ne Halaku aur Changez ka daur bhi dekha hai. Tujhe bohat kuch yad hai. Unche burj kaise girte hain. Aur mutkabbir lagon ka ghuroor kaise khak mein milta hai. Han hum tujh se Insha ALLAH sari batein kareinge. Aur wo konsa zulm jo nahi dhaya ja raha hai. Ae Ramadan! Hamein malum hai ye halaat hamare aimal ka natija hain, magar tu to bakhshish aur rehmat ka mahina hai. Han Ramadan tu aa raha hai. Tere pyare qadmon ki ahat sunayi de rahi hai. Masjidon mein tera tazkirah chal pada hai. Umrah karne walon ne ahram utha liye hain. Aur Qur’an padhne wale minute minute gin rahe hain.

Marhaba!! Khush Aamdeed!! Ae Ramadan! Bohat sare khush naseeb tere muqaddas ayyam mein rozana ek Qur’an Pak khatam kareinge aur kamzor log teen din mein ek khatam. Malum nahi hamari qismat mein kya likha hai? Ae ALLAH! Hamare liye bhi Qur’an padhna aur sunna asaan farma aur phir qubool bhi farma. Ameen! Bohat sare log ae Ramadan! Apni jebein aur tijoriyan khaul deinge aur roze daron ko roza iftar karwayenge.

ya ALLAH! Hamare liye bhi aimal asaan farma. Ameen! Bohat sare log is mahine mein bakhshe jayenge. Arsh se ailaan hoga ke inka nam jahannum ki fahrist se nikal kar jannat ki fahrist mein likh do. ya ALLAH! Hum bhi isi fazal ki sawali hain.

Bohat sare log Ae Ramadan! Tere ate hi gunahon ko yun chod deinge jis tarah khanzir ke gosht ko pare phainka jata hai. ya ALLAH! Hamein bhi unhi mein se bana. Ae Falasteen mein zulm ka shikar banne wale musalmano! Mubarak ho Ramadan aa raha hai. Utho aur himmat kar ke sab kuch wapis le lo. Sab kuch kama lo.

Ae Iraq ke ghayyur musalmano! Mubarak ho Ramadan aa raha hai. Utho aur dastaane haram ahle kaleesa ko suna do. Han Ramadan! Tu dekh hum ailaan kar rahe hain ke tu aa raha hai. Mazlumon ki khatir, pise huye musalmano ki khatir, haq ki khatir aur gunehgaron ki bakhshish ki khatir. Ae Ramadan! Teri khushbu aa rahi hai, dil ko mahka rahi hai. Haye kash ke ham bhi is Ramadan mein kamyabi pa lein. Bus is waqt to yahi darkaar hai aur yehi d’ua!!

Tohfa-e-Mah-e-Ramadan 1438/2017

Ramadan Kareem ALLAH Ta’ala ki Nazar mein

“Maah-e-Ramadan wo hai jis mein Qur’an utara gaya jo logon ko hidayat karne wala hai aur jis mein hidayat ki aur haq aur batil ki tamiz ki nishaniyan hain. Tum mein se jo shakhs is mahine ko paye use roze rakhne chahiyen, han jo bimar ho ya musafir ho use dusre dino mein ye ginti puri karni chahiye, ALLAH Ta’ala ka irada tumhare sath asaani ka hai, sakhti ka nahi, Wo chahta hai ke tum ginti puri kar lo aur ALLAH Ta’ala ki di hui hidayat par uski badaiyan bayan karo aur Uska shukar ada karo.”

(Surat Al-Baqarah, ayat # 185)

ya ALLAH Website Popular Articles

Ramadan Kareem Rahmat-e-Alam SallALLAHU Alayhe Wasallam ki Nazar mein

Hazrat Salman Farsi se riwayat hai ke Maah-e-Sha’aban ki aakhri tarikh ko Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe Wasallam ne hamein ek khutbah diya. Us mein Aap SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya!

“Ae logo! Tum par ek azmat aur barkat wala mahina saya fagan ho raha hai, is mubarak mahina ki ek raat (Shabb-e-qadar) hazar mahino se behtar hai. Is mahine ke roze ALLAH Ta’ala ne farz kiye hain aur iski raton mein bargaah-e-Khudawandi mein khada hona (namaze taraweeh padhne ko) nafal ibadat muqarrar kiya hai (jiska bohat savab rakha hai). Jo shakhs is mahine mein ALLAH Ta’ala ki raza aur Uska qurb hasil karne ke liye koi ghair farz ibadat (yani sunnat ya nafal) ada karega to usko dusre zamane ke farzon ke brabar iska savab milega aur is mahine mein farz ada karne ka savab dusre zamane ke sattar farzon ke brabar hai.”

Ek aur jagah irshad farmaya,

“Ye sabar ka mahina hai aur sabar ka badla jannat hai. Ye hamdardi aur gham-khawari ka mahina hai aur yehi wo mahina hai jis mein momin bandon ke rizq mein izafah kiya jata hai. Jis ne is mahine mein kisi roze dar ko roza iftar karwaya to us ke liye gunahon ki maghfirat aur aatishe dozakh se azaadi ka zariyah hoga aur usko roza dar ke brabar savab diya jayega. Baghair iske ke roza dar ke savab mein koi kami ki jaye.”

Aap SallALLAHU Alayhe Wasallam se kisi ne arz kiya,

“Ya Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe Wasallam! Hum mein se har ek ko to iftar karane ka samaan mayassir nahi hota, (to kya ghurba is azim savab se mahrum raheinge?)”

Aap SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya!

“ALLAH Ta’ala ye savab us shakhs ko bhi dega jo dudh ki thodi si lassi par ya sirf pani hi ke ek ghunt par kisi roza dar ka roza iftar kara de. Aur jo koi kisi roza dar ko pura khana khila de usko ALLAH Ta’ala Mere Hauz (yani Kausar) se aisa sairaab karaye ga jis ke bad usko kabhi pyas hi nahi lage gi ta aakhir wo jannat mein pohanch jaye.”

“Is mubarak mahine ka ibtadayi hissa ‘Rahmat’ hai. Darmeyani hissa ‘Maghfirat’ aur aakhri hissa ‘Aatish-e-Dozakh se Azaadi’ hai. Aur jo admi is mahine mein apne ghulam wa khadim ke kam mein takhfeef aur kami kar dega, ALLAH Ta’ala uski maghfirat farma dega aur usko dozakh se rehayi aur azadi de dega.”

(Behaqqi)

 Nekiyon ka Mausam-e-Bahaar

Ramadan-ul-Mubarak ka mahina shuru hote hi har musalman ka dil khud ba khud neki ki taraf khincha chala jata hai aur burayi se uktahat mahsus hone lagti hai. Shayed har ek ki tabiyat par ye khushgawar asar us farishte ki pukar par hota hai, jo Maah-e-Ramadan mein rozana ye sada lagata hai.

Ya baaghi al-khair qabla ya baaghi lashar aqsar

Translation: “Ae khair ke talab gaar! age badh aur jaldi, ae burayi ke chahne wale! Bus kar aur ruk ja.”

Ahadees-e-Mubarikah ki Roshni mein Ramadan ki Khusoosi Ibadaat aur unke Fazail-o-Ahmiyat

Isi munasibat se kuch ibadaat ke fazail, Ahadees-e-Mubarikah se muntakhib kar ke likhe ja rahe hain taa ke amal karte waqt ALLAH Ta’ala ki taraf se milne wale azim azar-o-savab ka tasavvur hamein ruhani taqwiyat bakhshe. Agar ye bashaartein aur sa’adatein hamare dil-o-damagh mein basi rahein to zyadah se zyadah nekiyon ka khazana jama kar lena hamare liye bohat asaan ho jayega.

1- Roza

Hazrat Abu Hurairah Radi ALLAHU Anhu se riwayet hai ke Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya,

“Admi ke har ache amal ka savab dus guna se sat sau guna tak badhaya jata hai magar ALLAH Ta’ala ka farman hai ke roza ki ye bat nahi, wo to sirf Mere hi liye hai aur main hi iska badla dun ga. Mera banda meri raza ke liye apni khawahish, nafs aur apna khana pina chod deta hai. Roza dar ke liye do khushiyan hain.

Ek (rozana) iftar ke waqt , dusri apne Rab se mulaqat ke waqt aur qasam hai ke roze dar ke muh ki bu ALLAH Ta’ala ke nazdik mushk ki khushbu se bhi behtar hai aur roza (shaitan ke hamlon aur jahannum se bachao ke liye) dhaal hai.

Aur jab tum mein se kisi ka roza ho to wo fahash aur be-hudah batein na kare aur shor wa shughab na kare aur agar koi dusra us se gali galoch ya jhagda kare to kah de ke main roze dar hon.”

(Bukhari, Muslim)

Hazrat Sahal bin Saad Saadi Rahmatullah Alayhe naqal karte hain ke Janab Nabi Kareem SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya,

“Jannat mein ek khas darwazah hai jise “Baab-ul-Reyaan” kaha jata hai. Qayamat ke roz us mein se sirf roze dar dakhil honge, unke siwa koi aur us darwaze se dakhil nahi hoga. Kaha jaye ga ke roze dar kahan hain? Pas roze dar khade ho jayenge (aur us mein se jannat mein dakhil ho jayenge) unke elawa koi us se dakhil nahi jo sake ga. Jab roze dar dakhil ho jayenge to ye darwaza band kar diya jayega.”

(Bukhari, Muslim)

2- Taraweeh-o-Nawafil

Hazrat Abu Hurairah Radi ALLAHU Anhu, Rahmat-e-Alam SallALLAHU Alayhe Wasallam ka irshad naqal karte hain ke Aap SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya,

“Jo log iman aur savab ke yaqeen ke sath Ramadan ki raaton mein namaz (nawafil, taraweeh, tahajjud) padheinge unke sab pichle gunah mu’af kar diye jayenge.”

(Bukhari, Muslim)

 

3- Shabb-e-qadar aur uski Khas D’ua

Ye ba-barkat aur noorani raat Ramadan ki aakhri dus raaton mein hoti hai. Iski fazilat beyan karne ke liye Qur’an Kareem mein ek surat nazil farmayi gai hai, jiska tarjumah hai,

“Beshak hum ne is (Qur’an Pak) ko Shabb-e-qadar mein utara aur apko kya malum ke Shabb-e-qadar kya hai? Shabb-e-qadar hazar mahino se behtar hai. Is mein farishte aur ruh nazil hote hain, apne Rab ke hukam se har kam par. Wo subah roshan hone tak salami ki raat hai.”

Hazrat Ayesha Radi ALLAHU Anha se riwayet hai ke maine Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe Wasallam se pucha ke agar mujhe malum ho jaye ke kon si raat Shabb-e-qadar hai to main us raat ALLAH Ta’ala se kya arz karun?

Aap SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya, ye alfaaz kaho,

“Allahumma innaka afwan kareemun tuhibbul afwa fa’afu anni”

 

Tarjumah: (Ae ALLAH! Tu bohat mu’af karne wala aur karam farmane wala hai, mu’af karna tujhe pasand hai, pas Tu mujhe mu’af farma)

 

4- Ai’tkaaf

Ye ek ashqaana aur walhaana ibadat hai kyunke bandah apne Mehbub Rab ke dar par aa kar pad jata hai aur apne liye duniya aur aakhirat ki bhalaiyan samet kar le jata hai.

Hazrat Ibn Abbas Radi ALLAHU Anhu se riwayet hai ke Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe Wasallam ne ai’tkaaf karne wale ke bare mein farmaya ke wo gunaho se bacha rahta hai aur uske nekiyon ka hisab, sari nekiyan karne wale bande ki tarah jari rahta hai.”

(Ibn-e-Maajah)

‘ya ALLAH Dua Wazaif’ Se Kinhe Faydah Hua? Yahan Parhiye!

 

5- Tilawat-e Qur’an Pak

Maah-e-Ramadan aur Qur’an Pak mein Khusoosi munasibat aur lagaw hai aur kyun na ho, kalam-e-Ilahi ki ye azim daulat isi mahine mein insaniyat ko nasib huyi. Aur ALLAH Ta’ala ne Ramadan ka ta’arauf hi Qur’an Shareef ke zariye karwaya hai.

Chunache irshad hai,

“Ramadan ka mahina wo hai jis mein Qur’an utara gya jo logon ke liye hidayat aur hidayat ki roshan daleelein aur haq-o-batil mein faraq karne wala hai.”

(Surah Al-Baqarah)

Qur’an Pak ki tilawat ke fazail bohat se hain. Kam-az-kam har harf par das nekiyan milti hain. Is liye Maah-e-Mubarak mein zyadah se zyadah iska ahtamaam karna chahiye.

6- Sadqah-o-Khairaat

Hadees Shareef mein ata hai ke Aap SallALLAHU Alayhe Wasallam sab se zyadah sakhi the aur Ramadan-ul-Mubarak mein to Aap SallALLAHU Alayhe Wasallam ki sakhawat tez hawaon se bhi badh jati thi.

(Fatah Al-Baari)

Is Maah-e-Mubarak mein mamuli mamuli kharch karne walon ko ALLAH Ta’ala bade bade inamaat deta hai. Basa auqaat kisi ko ek khajur se roza iftar karwa dene par hi umar bhar ke gunah mu’af ho jate hain. Jo mal ALLAH Ta’ala ke raste mein badh kar kharch kiya jata hai wohi dar haqeeqat kam ane wala hai. Jo baqi reh jata hai wo to kisi aur ka muqaddar hai aur iska hisab behar hal hamari gardan par hoga.

Sadqah ki Ahmiyat Hadees Shareef ki roshni mein

Hazrat Abu Musa Al-Sh’ura Radi ALLAHU Anhu farmate hain ke Nabi Kareem SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya,

“Har musalman ko chahiye ke sadqah diya kare”

Logon ne dareyaft kiya ke agar uske pas sadqah dene ke liye kuch na ho to kya kare?

Irshad farmaya,

“Apne hathon se mehnat mazduri kar ke apne ap ko bhi fayedah pohnchaye aur sadqah bhi de.”

Logon ne arz kiya, agar ye bhi na kar sake (ya kar sakta ho phir bhi) na kare?

Irshad farmaya,

“Kisi gham zadah mohtaj ki madad kare.”

Arz kiya, agar ye bhi na kare?

Irshad farmaya,

“To kisi ko bhali bat bata de.”

Arz kiya, agar ye bhi na kare?

Irshad farmaya,

“To (kam-az-kam ) kisi ko nuqsan pohanchane se hi baz rahe kyun ke ye bhi us ke liye sidq hai.”

(Bukhari)

7- Ek jaame aur Khoobsurat Hadees Shareef

Ibn Abbas Radi ALLAHU Anhu ki riwayet hai ke unho ne Huzoor SallALLAHU Alayhe Wasallam ko ye farmate huye suna ke,

“Jannat ko Ramadan Kareem ke liye khushbuon ki dhuni di jati hai aur shuru sal se aakhir sal tak Ramadan ki khatir araasta kiya jata hai. Pas jab Ramadan-ul-Mubarak ki pahli raat hoti hai to arsh ke niche se ek hawa chalti hai jiska nam ‘Masheerah’ hai (jiske jhaunkon ki wajah se) jannat ke darakhton ke patte aur kawadon ke halqe bajne lagte hain jis se aisi dil awez sureeli awaz nikalti hai ke sunne walon ne is se achi awaz kabhi nahi suni.

Pas khushnuma aankhon wali hoorein apne makano se nikal kar jannat ke bala khano ke darmeyan khade ho kar awaz deti hain ke koi hai ALLAH Ta’ala ki bargah mein hum se mangni karne wala, taa ke Haq Ta’ala Shanahu usko hum se jod dein. Phir wohi hoorein jannat ke daaroghah rizwan se puchti hain ke ye kaisi raat hai. Wo labbaik kah kar jawab dete hain ke Ramadan-ul-Mubarak ki pahli raat hai. Jannat ke darwaze Mu’hammad SallALLAHU Alayhe Wasallam ki ummat ke liye (aj) khaul diye gaye.

Huzoor SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya ke Haq Ta’ala Shanahu, rizwan se farma dete hain ke jannat ke darwaze khaul de aur malik (jahannum ke daaroghah) se farma dete hain ke Ahmad-e-Mustafa SallALLAHU Alayhe Wasallam ki ummat ke roza daron par jahannum ke darwaze band kar de aur Jibraeel Alayhis Salam ko hukam hota hai ke zamin par jao aur sarkash shayateen ko qaid karo aur gale mein tauq dal kar darya mein phaink do ke Mere Mehbub SallALLAHU Alayhe Wasallam ki ummat ke rozon ko kharab na karein.”

Nabi Kareem SallALLAHU Alayhe Wasallam ne ye bhi farmaya ke Haq Ta’ala Shanahu Ramadan ki har raat mein ek munadi ko hukam farmate hain ke teen martabah awaz de ke hai koi Mangne wala jisko main ata karun, hai koi taubah karne wala ke main uski taubah qubool karun , hai koi maghfirat chahne wala ke main uski maghfirat karun, kon hai jo ghani ko qarz de. Aisa ghani jo nadaar nahi, aisa pura-pura ada karne wala jo zara bhi kami nahi karta.”

Huzoor SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya,

“Haq Ta’ala Shanahu Ramadan Kareem mein roza iftar ke waqt aise das lakh admiyon ko jahannum se khalasi marhamat farmate hain jo jahannum ke mustahiq ho chuke the. Aur jab Ramadan ka aakhri din hota hai to yakam Ramadan se aj tak jis qadar log jahannum se azaad kiye gaye the unke brabar ek raat mein azaad farmate hain aur raat Shabb-e-qadar hoti hai to ALLAH Ta’ala Jibraeel Alayhis Salam ko hukam farmate hain. Wo farishton ke ek bade lashkar ke sath zamin par utarte hain. Unke sath ek sabz jhanda hota hai jsko Ka’aba ke upar khada karte hain.

Hazrat Jibraeel Alayhis Salam ke sau bazu hain jin mein se do bazuon ko usi raat mein kholte hain jinko mashriq se maghrib tak phaila dete hain. Phir Hazrat Jibraeel Alayhis Salam frishton ko taqaza farmate hain ke jo musalman aj ki raat khada ho ya baitha ho, namaz padh raha ho ya zikr kar raha ho, usko salam karein aur musafah karein aur uski du’aoon par ameen kahein, subah tak yehi halat rahti hai.

Jab subah ho jati hai to Hazrat Jibraeel Alayhis Salam awaz dete hain ke ae farishto ki jamat ab kooch karo aur ALLAH Ta’ala ne Ahmad SallALLAHU Alayhe Wasallam ki ummat ke momino ki hajton aur zaruraton mein kya mamla farmaya. Wo kahte hain ke ALLAH Ta’ala ne un par tawajjuh farmayi aur char shakhson ke elawa sab ko mu’af farma diya. Sahaba ne pucha ke ya Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe Wasallam! Wo char shakhs kon hain?

Irshad huya ke

  • Ek wo shakhs jo sharab ka aadi ho,
  • Dusra wo shakhs jo waledain ki nafarmani karne wala ho,
  • Teesra wo shakhs jo qita rahmi karne wala aur nata todne wala ho,
  • Chotha wo shakhs jo keena rakhne wala ho aur apas main qata taluq karne wala ho,

Phir jab Eid-ul-Fitr ki raat hoti hai to uska nam (aasmano par) “Layelat-ul-jayezah” (inaam ki raat) se liya jata hai aur jab eid ki subah hoti hai to farishte tamam galiyon aur raston se siron par khade ho jate hain aur aisi awaz se jisko jinnat aur insan ke siwa har makhluq sunti hai pukarte hain ke ae Mu’hammad SallALLAHU Alayhe Wasallam ki ummat! Us Rab Kareem ki dargah ki taraf chalo jo bohat zyadah ata farmane wala hai.

Phir jab log eid gah ki taraf nikalte hain to ALLAH Ta’ala farishton se dareyaft farmate hain, kya badla hai us mazdur ka jo apna kam pura kar chuka ho, wo arz karte hain ke hamare Ma’abood aur hamare Maalik iska badla yehi hai ke uski mazduri puri-puri di jaye, to ALLAH Ta’ala irshad farmate hain ke ae farishto! Main tumhein gawah banata hun, maine inko Ramadan ke rozon aur taraweeh ke badla mein Apni raza aur maghfirat ata kar di aur bandon se khitab farma kar Irhsad hota hai ke,

Ae Mere bando! Mujh se mango. Meri Izzat ki qasam, Mere jalal ki qasam! Aj ke din Mere is ijtama mein mujh se apni aakhirat ke bare mein jo sawal karo ge ata krunga aur duniya ke bare mein jo sawal karo ge us mein tumhari muslehat par nazar karunga. Meri izzat ki qasam ke jab tak tum Mera khayal rakho ge, Main tumhari laghzishon ki parastari karta rahunga (aur unko chupata rahunga) Meri izzat ki qasam aur Mere jalal ki qasam! Main tumhein mujrimon (aur kafiron ) ke samne ruswa aur fazihat na krunga. Bus ab bakhshe bakhshaye apne gharon ko laut jao, tum ne Mujhe razi kar diya aur Main tum se razi ho gya. Pas farishte is ajar-o-savab ko dekh kar jo is ummat ko iftar ke waqt milta hai, khushiyan manate hain aur aur khil jate hain.”

(Al-Targhib, Fazail Aimal)

 

Roze ke Zaruri Masail Niyat kab karein?

Maah-e-Ramadan mein roze ke ye aham masail yaqeenan apke liye hohat fayedah mand sabit honga.

  • Behtar ye hai ke Ramadan-ul-Mubarak ke roze ki niyat subah sadiq se pahle pahle kar li jaye.
  • Agar kuch khaya piya na ho to dopaher se ek ghanta pahle (yani nisf al-nehar se pahle) tak Ramadan Shareef ke roze mein bus itni niyat kar lena kafi hai ke aj mera roza hai. Ya raat ko niyat kare ke subah roza rakhna hai.

       (Al-Bahr 2,454- Radul Mukhtar 2,377)

 

Sehri-o-Iftar

Roze ke liye sehri khana ba-barkat hai ke is se din bhar quwwat rahti hai. Magar ye roze ka sahi hone ke liye shart nahi. Pas agar kisi ko sehri khane ka mauqa nahi mila aur us ne sehri khaye baghair roza rakh liya to roza sahi hai.

(Radul Mukhtar 2,419)

 

  • Sairan ek minute pahle shuru hota hai is dauran pani piya ja sakta hai. Baharhal ahteyat ka taqaza ye hai ke sairan bajne se pahle pahle pani pi liya jaye.
  • Suraj gharub hone ke bad roza iftar karne mein takhir nahi karni chahiye.

(Radul Mukhtar 2,419)

 

  • Usool ye hai ke roza rakhne aur iftar karne mein us jagah ka aitbar hai jahan admi roza rakhte waqt aur iftar karte waqt maujud ho. Pas jo shakhs Arab mumalik se roza rakh kar Hindustan aye usko Hindustan ke waqt ke mutabiq iftar karna hoga. Aur jo shakhs Hindustan se roza rakh kar maslan Saudi Arab gya ho, usko wahan ke gharub ke bad roza iftar karna hoga. Us ke liye Hindustan ke gharub ka aitbar nahi.
  • Roza dar ko jab aftab nazar aa raha ho to iftar karne ki ijazat nahi hai. Hawayi jahaz walon ka ailan bhi mohmal aur ghalat hai.
  • Roza dar jahan maujud hai wahan ka gharub ma’utabar hai. Pas agar wo das hazar foot ki bulandi par ho aur uski bulandi se gharube aftab dikhayi de to roza iftar kar lena chahiye. Aur jis jagah ki bulandi par jahaz parwaz kar raha hai, wahan ki zamin par gharube aftab ho raha ho to jahaz ke musafir roza iftar nahi karein ge.

(Badaye 2,225)

 

Ramadan mein Bimari ya Safar

  • Agar apko khud ba khud pani, khane ya khoon ki qeh aa gayi to roza nahi toota, khawah thodi ho ya zyadah. Aur agar khud apne ikhteyar se qeh ki aur muh bhar kar huyi to roza toot gya warna nahi.

(Radul Mukhtar 2,414)

 

  • Agar roza dar achanak bimar ho jaye aur andesha ho ke roza na toda to jan ka khatra hai, ya bimari ke badh jane ka khatra hai, aisi halat mein roza todna jayez hai. Warna mamuli bimari mein roza na rakhna ya todna jayez nahi hai.

Isi tarah agar haamla aurat ki jan ko ya bache ki jan ko khatra lahaq ho jaye to roza tod dena darust hai.

(Al-Bahr 2,492,499)

 

  • Ramadan Kareem ke roze har aaqil aur baligh musalman par farz hain aur baghair kisi sahi uzar ke roza na rakhna haram hai. Agar na-baligh ladka ladki roza rakhne ki taqat rakhte hon to maa bap pe lazim hai ke unko bhi roza rakhwayen ta ke unki adat bane aur bad mein mushkil na ho.
  • Agar kisi ko bimari aisi ho ke uski wajah se roza nahi rakh sakta ya roza rakhne se bimari badh jane ka khatra ho to use roza na rakhne ki ijazat hai. Magar jab tandrust ho jaye to bad mein un rozon ki qaza uske zima farz hai.

(Radul Mukhtar 2,422)

 

  • Agar koi shakhs safar mein ho aur roza rakhne mein mushaqqat lahaq hone ka andesha ho to wo bhi qaza kar sakta hai. Dusre waqt mein uska roza rakhna lazim hoga. Aur agar safar mein koi mushaqqat nahi ho to roza rakh lena behtar hai. Agarche roza na rakhne aur bad mein qaza karne ki bhi usko ijazat hai.

(Radul Mukhtar 2,423)

 

  • Aurat ko haiz-o-nafaas ki halat mein roza rakhna jayez nahi. Magar Ramadan Kareem ke bad utne dino ki qaza us par lazim hai.

(Badaye 2,225)

  • Ye to wazeh hai ke jab tak ayyam shuru nahi honge aurat pak hi shumar hogi aur usko Ramadan ke roze rakhna sahi hoga. Raha ye ke rokna sahi hoga ya nahi? To shar’an rokne par koi pabandi nahi. Magar shart ye hai ke ye fel aurat ki sehat ke liye nuqsan deh ho to jayez nahi.

Roza toot gya ya nahi?

  • Agar kisi ne bhule se kuch kha pi liya aur ye samajh kar ke uska roza toot gya hai qasdan kha pi liya to qaza wajib hogi.
  • Isi tarah agar kisi ko qeh huyi aur phir ye khayal kar ke ke iska roza toot gya hai kuch kha pi liya to us surat mein qaza wajib hogi.
  • Kuffarah wajib na hoga lekin agar use ye masla malum tha ke qeh se roza nahi toot-ta is ke ba wajud kuch kha pi liya to is surat mein usje zima qaza aur kuffarah dono lazim honge.

(Radul Mukhtar 2,410)

  • Masudhon se khoon aye aur halaq ke paar ho jaye aur yaqeen ho jaye ke khoon halaq mein chala gya to roza fasid ho jayega. Dubara rakhna zaruri hoga.

(Al-darul mukhtar 2,396)

  • Wuzu, ghusal ya kulli karte waqt ghalti se pani halaq se niche chala jaye to roza toot jata hai magar is surat mein sirf qaza lazim hai, kuffarah nahi.

(Al-darul mukhtar 2,401)

  • Roza ki halat mein ghargharah karna aur nak mein zor se pani dalna mamnu hai. Is se roze ke toot jane ka andesha qawi hai. Agar ghusal farz ho to kulli kare, nak mein pani bhi dale magar roze ki halat mein ghargharah na kare aur na nak mein uper tak pani chadhaye.
  • Roza ki halat mein huqqa pine ya cigarette pine se roza toot jata hai. Aur agar ye amal jan bujh kar kiya ho to qaza aur kuffarah dono lazim honge.
  • Koi aisi chiz nigal li jisko bataur ghaza ya dawa ke nahi khaya jata to roza toot gya aur sirf qaza wajib hogi. Kuffarah wajib nahi hoga.

(Al-darul mukhtar 2,410)

 

  • Danton mein gosht ya resha ya koi chiz reh gayi thi aur wo khud-ba-khud andar chali gayi to agar chane ke dane ke brabar ya is se zyadah ho to roza jata raha aur agar is se kam ho to roza nahi toota. Aur agar baher se koi chiz muh mein dal kar nigal li to khawah thodi ho ya zyadah us se roza toor jaye ga.

(Al-darul mukhtar 2,415)

 

  • Imam Abu Hunaifah Radi ALLAHU Anhu ke nazdik maswak karna makruh nahi agarche wo bilkul tazah hi ho.

(Al-darul mukhtar 2,419)

 

  • Zuban se kisi chiz ka zayeqah chakh kar thook diya to roza nahi toota, magar bila zaruroot aisa karna makruh hai.

(Al-darul mukhtar 2,416)

 

  • Thook ke nigalne se roza nahi toot-ta. Magar thook jama kar ke nigalna makruh hai.
  • Agar halaq ke andar makhi chali gayi ho ya dhuan khud-ba-khud chala gya ya gardo ghubar chala gya to roza nahi toot-ta. Aur agar qasdan (jan bujh kar) aisa kiya to roza jata raha.

(Al-Bahr 2,477)

 

  • Ankh mein dawayi dalne ya zakham par marham lagane ya dawayi lagane se roza mein koi faraq nahi ata. Lekin nak aur kan mein dawayi dalne se roza fasid ho jata hai. Aur agar zakham pet mein ho ya sar par ho aur is par dawayi lagane se damagh ya pet ke andar dawayi saraiyat kar jaye to roza toot jayega.

(Al-Bahr 2,482, Al-darul mukhtar 2,402)

 

  • Gulocose lagwane se roza nahi toot-ta, Basharte ke ye gulocose kisi uzar ki wajah se lagaya jaye. Bila wajah gulocose chadhana makruh hai.
  • Uzar ki wajah se rag mein bhi injection lagwane ki wajah se roza nahi toot-ta. Sirf taqat ka injection lagwane se roza makruh ho jata hai. Gulocose ke injection ka bhi yehi hukam hai. Baz ulma ke nazdik har qisam ke injection se roza toot jata hai, isliye behar hal ahteyat karni chahiye.
  • Ramadan Kareem ke mahina mein surma lagane ya shisha dekhne se roza makruh nahi hoga.

(Al-Bahr 2,490)

 

  • Sar par ya badan ke kisi aur hissa par tel lagane se roza mein koi faraq nahi ata.

(Al-Bahr 2,490)

 

  • Tooth paste ka istemal roza ki halat mein makruh hai, taham agar halaq mein na jaye to roza nahi toot-ta.

(Al-darul mukhtar 2,416)

 

  • Agar kisi shakhs ko koi zahreeli chiz das le to uska roza nahi toota na makruh hota hai.

 

Roze ki Qaza, Fidya, Kuffarah

Agar yad na ho ke kis Ramadan ke kitne roze qaza huye hain to is tarah niyat kare ke sab se pahle Ramadan ka pahla roza jo mere zima hai uski qaza karta/karti hon.

Qaza rozon ko sal ke jin dino mein bhi qaza karna chahein qaza kar sakte hain. Musalsal rakhna zaruri nahi.

Wo kon se Panch din hain jin mein Rodsza rakhne ki Ihazat nahi?

Sirf panch din aise hain jin mein roza rakhne ki ijazat nahi.

  • Do din Eidain ke
  • Aur teen din Ayyam-e-Tashreef yani Zil-Hajj ki gyarwein, barwein aur terwein tarikh.

(Badaye 2, 212,215)

Roze ka Fidya

  • Agar koi insan itna budha ya bimar hai ke na roza rakh sakta hai aur na ye tawaqqu hai ke ayendah rakh sake ga, uske liye fidya ada kar dena jayez hai. Har roze ke fidya ke liye kisi maskin ko do waqt ka khana khila de ya do ser ghalla ya uski qimat diya kare. Baqi wo kisi dusre se apne liye roza nahi rakhwa sakta. Shari’at mein kamzor shakhs ke liye fidya dene ka hukam hai.

(Al-Bahr 2,501)

 

  • Chand rozon ka fidya ek hi maskin ko ek hi waqt mein de dena jayez hai magar is mein ikhtalaf hai. Isliye ahteyat to yahi hai ke kayi rozon ka fidya ek ko na dein, lekin de dene ki bhi gunjayesh hai.
  • Jo shakhs aisi halat mein mare ke iske zima roze hon ya namazein hon, us par farz hai ke wasiyat kar ke mare ke uski namazon aur rozon ka fidya ada kar diya jaye. Agar us ne wasiyat nahi ki to gunehgar hoga.
  • Agar mayyat ne fidya karne ki wasiyat ki ho to mayyat ke wariso par farz hoga ke marhum ki tajheez-o-takfeen aur adaye qarzajaat ke bad uski jitni jayedad baqi rahi, uski tahayi mein se uski wasiyat ke mutabiq uski namazon aur rozon ka fidya ada karein.
  • Agar marhum ne wasiyat nahi ki ya us ne mal nahi choda, lekin waris apni taraf se marhum ki namaz rozon ka fidya ada karta hai to ALLAH Ta’ala ki rehmat se tawaqqu hai ke ye fidya qubool kar liya jayega.
  • Ek roze ka fidya, sadqah-e-fitr ke brabar yani taqreeban paune do killo ghalla hai. Par ek Ramadan ke tees rozon ka fidya saadhe bawan killo huya aur teen Ramadano ke nawwe (90) rozon ka fidya 5-157 killo ghalla huya. Isi ke mutabiq mazid ka hisab kar liya jaye.

(Radul Mukhtar 2,426)

 

  • Jo shakhs roze rakhne ki taqat rakhta ho, uske liye roza todne ka kuffarah do mahine ke pe-dar-pe (lagatar) roze rakhna hai. Agar darmeyan mein ek roza bhi chut gaya to dubara naye sire se shuru kare.

(Radul Mukhtar 2,412)

 

  • Agar chand ke mahine ki pahli tarikh se roze shuru kiye the to chand ke hisab se do mahine ke roze rakhe, khawah ye mahine 29/29 ke hon ya 30/30 ke. Lekin agar darmeyan mahine se shuru kiye to 60 din pure karne zaruri hain.(Bahishti Zewar)
  • Jo shakhs roze rakhne par qadir na ho wo 60 maskinon ko do waqt ka khana khilaye ya har maskin ko sadqah-e-fitr ki miqdar ke brabar ghalla ya uski qimat de.(Radul Mukhtar 2,412)
  • Agar ek Ramadan ke roze kayi dafa tode to ek hi kuffarah lazim hoga aur agar alag alag Ramadan ke roze tode to har roze ke liye mustaqil kuffarah ada karna hoga.(Badaye 2,459)Taraweeh bees Rakat
  1. Hazrat Abdullah bin Abbas Radi ALLAHU Anhu se riwayet hai ke beshak Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe Wasallam Ramadan mein bees rakat (taraweeh) aur witr parha karte the.

(Ibn Abi Sheebah jeem 2, suad 164, sunan kubra behaqqi jeem 2 suad 492, Majma-uz-zawaed jeem 3 suad 172)

 

  1. “Jo shakhs tum mein se mere bad jita raha wo bohat se ikhtalaf dekhe ga. Pas meri sunnat ko aur Khulfa-e-Rashdeen Muhaddibeen ki sunnat ko lazim pakdo. Ise mazbut tham lo aur danton se mazbut pakad lo aur nayi-nayi baton se ahtraz karo kyun ke har nayi bat bid’at hai aur bid’at gumrahi hai.”

(Rawah Ahmad-o-Abu Dawud-o-Al-Tirmazi-o-Ibn-e-Majah, Mashkat suad 30)

 

  1. Hazrat Sayeb bin Yazid Radi ALLAHU Anhu se riwayet hai ke Hazrat Umar Radi ALLAHU Anhu ke daur mein Ramadan mein log bees rakatein padha karte the.

(Sunan kubra behaqqi, Nasb al-Raiyah, Mawta Imam Malik)

  1. Abu Abdur-Rahman Salma Radi ALLAHU Anhu kahte hain ke Hazrat Ali Radi ALLAHU Anhu ne Ramadan mein qariyon ko bulaya. Pas un mein se ek shakhs ko hukam diya ke bees rakatein padha kare aur witr ap khud padhaya karte the.

(Sunan kubra behaqqi, masnaf Ibn abi Sheebah)

 

Chauda sau sal se tamam Ulma wa Fuqha ka is pe itfaq raha hai ke namaz taraweeh bees rakat masnun hai. Haram Makkah wa Haram Madinah aur tamam Islami mumalik mein tamam musalman isi par amal paira rahe hain. Baz rawayaat jin mein Ramadan-ul-Mubarak ke ‘qayam-ul-laeel’ ki gyarah rakaton ka zikr hai, unka taluq namaz-e-tahajjud ya ‘qayam-ul-laeel’ se hai. Namaz taraweeh se nahi.

Janab Nabi Kareem SallALLAHU Alayhe Wasallam ne ummat ko apni aur apne Khulfa-e-Rashdeen ki sunnat ko mazbuti se pakadne ka hukam farmaya hai. Isliye taraweeh ki bees rakat ko masnun samajhte huye qalbi itmenan ke sath ada karna chahiye.

Masail-e-Ai’tkaaf

Ramadan-ul-Mubarak ke aakhri ashre ka ai’tkaaf ‘Sunnat-e-maukadah Al’al kafaiyah’ hai. Iska matlab ye hai ke agar kisi masjid mein koi ek shakhs bhi ai’tkaaf baith jayega to ye sunnat ada ho jayegi. Aur agar koi bhi nahi baithe ga to sab ke zima gunah ayega.

Yahan hum is ai’tkaaf ke chand zaruri masail ka tazkirah karte hain.

  • Ai’tkaaf Masnoon, Ramadan ke pure aakhri ashre ka hota hai. Is se kam ai’tkaaf masnun nahi.
  • Halat-e-ai’tkaaf mein do tarah ke kam karna na jayez hain. In ke karne se ai’tkaaf masnun fasid ho jayega aur iski qaza karni hogi.
  1. Ai’tkaaf ki jagah (masjid ki hudood) se baghair zarurat baher nikalna.
  2. Wo kam jo ai’tkaaf mein karna na jayez hain jaise biwi se taluq qayem karna.
  • Jis zarurat se masjid se baher jaye uske pure hone ke bad wahan na ruke aur jitna mumkin ho jald se jald wapis masjid mein pohanch jaye. Jaise baitul khala jana ke wahan jan bujh kar bekar waqt zaeya karne se ai’tkaaf fasid ho jayega.
  • Bhule se bhi masjid se baher nikal gaya to ai’tkaaf fasid ho jayega.
  • Kisi mariz ki ayadat ya dubte huye ko bachane ke liye ya aag bujhane ke liye ya masjid ke girne ke khauf se masjid se nikalna jayez balke Jan bachane ke liye aisa karna zaruri hai. Lekin is se ai’tkaaf baqi rahega.
  • Agar koi shakhs zabardasti masjid se baher nikal diya jaye, tab bhi uska ai’tkaaf baqi nahi rahe ga.
  • Halat-e-ai’tkaaf mein masjid ke adaab ka khayal rakhna intehayi zaruri hai. Faltu guftagu, bekar gap shap aur waqt guzari se parhez karna chahiye. Iski bajaye apne auqaat zikr-e-ilahi, tilawat-e-qur’an, durood shareef, astaghfar, kalma tayyibah ka wird aur nafal namazon mein guzarne chahiyen.
  • Nafli wuzu ya thandak hasil karne ke liye ghusal ya bal sanwarne aur chahel qadmi ke liye masjid ki hudood se baher jana jayez nahi.

Halat-e-ai’tkaaf mein baghair zaruri kisi duniyawi kam mein mashghul hona makruh tahreemi hai.

Zakat ka Nisab aur ek Ghalat Fahmi

Aksar log Ramadan-ul-Mubarak mein zakat ka farizah ada karte hain.Un ke liye chand rahnuma usool pesh kiye ja rahe hain jin se unhe zakat ki adayegi karne mein asaani hogi.

ALLAH Ta’ala ne zakat ka ek nisab muqarrar kiya hai ke is nisab se kam agar koi shakhs malik hai to us par zakat farz nahi. Agar us nisab ka mailk hoga to zakat farz hogi.

Wo nisab ye hai;

  • Saadhe bawab taula chandi ya iski qimat ka naqad rupeya, ya zewar ya samane tijarat. Jis shakhs ke pas ye mal itni miqdar mein maujud ho to usko ‘sahib-e-nisab’ kaha jata hai. Phir is nisab par ek sal guzarna chahiye yani ek sal tak agar koi shakhs sahib-e-nisab rahe to us par dhayi fisad 2.50 % zakat wajib hoti hai.
  • Is bare mein aam taur par ye ghalat fahmi payi jati hai ke log ye samajhte hain ke har har rupaye par mustaqil pura sal guzre tab is par zakat wajib hoti hai. Ye bat darust nahi balke jab ek martabah sal ke shuru mein ek shakhs sahib-e-nisab ban jaye, maslan farz karein ke yakam Ramadan ko agar koi shakhs sahib-e-nisab ban gaya. Phir ayendah sal yakam Ramadan aya to us waqt bhi wo sahib-e-nisab hai to aise shakhs ko sahib-e-nisab samjha jayega. Darmeyan mein jo raqam ati jati rahi uska koi aitbar nahi.

Amwaal-e-Zakat kon kon se hain?

Janwaron ke ilawah jin chizon par zakat farz hai, wo ye hain;

  • Naqad rupeya, chahe wo kisi bhi shakal mein ho, note hon ya sikke hon.
  • Sona chandi, chahe wo zewar ki shakal mein hon ya sikke ki shakal mein hon. Jo khawateen ke istemal mein zewar hai us par bhi zakat wajib hai.
  • Iske elawa samaan-e-tijarat par zakat wajib hai. Maslan dukan mein jo samaan baraye farokhat rakha huya hai us sare stock par zakat wajib hai. Albatta stock ki qimat lagate huye is bat ki gunjayesh hai ke admi zakat nikalte waqt ye hisab lagaye ke agar main pura stock ikattha farokht karun to bazar mein iski kya qimat lage gi?
  • Dekhiye ek ‘retail price’ hoti hai aur dusri ‘whole sale price’ teesri surat ye hai ke pura stock ikattha farokht karne ki surat mein kya qimat lage gi? Lehazi jab dukan ke andar jo mal hai wo qimat nikal kar phir iska dhaayi fisad zakat mein nikalna. Albatta ahteyat is mein hai ke aam whole sale price se hisab laga kar us par zakat ada kar di jaye.
  • Iske elawa mal-e-tijarat mein har wo chiz shamil hai jisko admi ne bechne ki gharz se kharida ho. Lehazi agar kisi shakhs ne bechne ki gharz se koi plot kharida ya zamin kharidi ya koi makan kharida ya gadi kharidi aur is maqsad se kharidi ke isko bech kar nafa kamaon ga, to ye sab chizein mal-e-tijarat mein shamil hain. Agar koi plot, koi makan, koi zamin kharidte waqt shuru hi mein ye niyat thi ke main isko farokht karunga to uski maliyat par zakat wajib hai, warna nahi. Maliyat us din ki ma’utabar hogi jis din ap zakat ka hisab kar rahe hain. Maslan ek plot ap ne ek lakh rupe mein kharida tha aur aj us plot ki qimat das lakh ho gayi hai. Ab das lakh par dhaayi fisad ke hisab se zakat nikali jayegi, ek lakh par nahi nikali jayegi.

Companies ke Share par Zakat ka Hukam

Isi tarah companies ke shares bhi samaan-e-tijarat mein dakhil hain. Aur inki do suratein hain.

  1. Ek surat ye hai ke ap ne kisi company ke shares is maqsad ke liye kharide hain ke is ke zariye company ka munafa hasil kareinge aur is par hamein salana munafa company ki taraf se milta rahega. Is surat mein ye gunjayesh hai ke shares ki puri qimat par zakat dene ki bajaye company ke tafseeli asaasah malum karein. Company ke jitne fisad asaase qable zakat hon. Maslan 50%, to shares ki qimat mein se bhi sirf pachas par zakat ada kareinge.
  2. Agar ye tafsil maulm na ho sake to phir shares ‘Capital gain’ ke liye kharide hain yani niyat ye hai ke jab bazar mein inki qimat badh jayegi to inko farokht kar ke nafa kamayeinge. Agar ye dusri surat hai to yani shares khairdte waqt shuru hi mein inhe farokht karne ki niyat thi to is surat mein pure shares ki puri ‘Market value’ bazari qimat par zakat wajib hogi.

Shares ke ilawa jitne ‘Financial instruments’ hain, chahe wo ‘Bonds’ hon ya ‘Certificates’ hon, ye sab naqad ke hukam mein hain. Inki asal qimat par zakat wajib hai.

Karkhana ki kin Ashiyaa par Zakat Wajib hai?

Factory mein jo tayar shudah mal hai uski qimat par zakat wajib hai. Isi tarah jo mal tayari ke mukhtalif marahel mein hai ya kham mal ki shakal mein hai, us par bhi zakat wajib hai. Albatta factory ki machinery, building, gadiyan waghaira par zakat wajib nahi.

Jo Qarze ap ne Wasul karne hain unki Tafseel

In ke ilawa bohat si raqmein wo hoti hain jo dusron se ‘wajib-ul-wasul’ hoti hain. Maslan dusron ko qarz de rakha hai ya mal udhar farokht kar rakha hai aur uski qimat abhi wasul honi hai, to jab ap zakat ka hisab lagayen aur apni majmui maliyat nikalein to behtar ye hai ke in qarzon ko aur wajib-ul-wasul raqmon ko aj hi ap apni majmui maliyat mein shamil kar lein. Agarche sharayi hukam ye hai ke jo qarze abhi wasul nahi huye to jb tak wo wasul na ho jayen, us waqt tak shar’an un par zakat ki adayegi wajib nahi hoti. Lekin jab wasul ho jayen to jitney sal guzar chuke hain, un tamam pichle salon ki bhi zakat ada karni hogi.

Jo Qarze ap ne ada karne hain
Phir dusri taraf ye dekhein ke apke zime dusre logon ke kitne qarze hain aur phir majmui maliyat mein se in qarzon ko (minha) tafreeq kar dein, minha karne ke bad jo baqi bache wo qaabile zakat raqam hai. Phir uska dhaayi fisad nikal kar zakat ki niyat se ada karein.

Ek Aham Masla
Qarzon ke silsile mein ek bat aur samajh leni chahiye wo ye ke qarzon ki do qisme hain.

  1. Ek to mamuli qarze hain jinko insan apni zati zaruriyat aur hangami zaruriyat ke liye majburan leta hai.
  2. Dusri qisam ke qarze wo hain jo bade bade sarmaya dar paidawari ke maqsad ke liye lete hain. Maslan factariyan lagane, ya machinery kharidne, ya maal-e-tijarat import karne ke liye qarze lete hain.
  • Aur is mein tafsil ye hai ke pahli qisam ke qarze jo majmui maliyat se nikal diye jayenge. Aur inko minha karne ke bad zakat ada ki jayegi.

Aur dusri qisam ke qarzon mein ye tafsil hai ke agar kisi shakhs ne tijarat ki gharz se qarz liya aur is qarz ko aisi ashiyaa kharidne mein istemal kiya jo qable zakat hain. Maslan is qarz se kham mal kharid liya, ya maal-e-tijarat kharid liya, to us qarz ko majmui maliyat se minha kareinge. Lekin agar us qarz ko aise asaase kharidne mein istemal kiya jo qable zakat hain, maslan building, machinery. To us qarz ko majmui maliyat se minha nahi kareinge.

Zakat ka Mustahiq kon hai?

  • Zakat sirf unhi logon ko di ja sakti hai jo sahib-e-nisab na hon. yahan tak ke agar unki maliyat mein zarurat se zayed aisa samaan maujud hai jo saadhe bawan taula chandi ki qimat tak pohanch jata hai to bhi wo zakat ke mustahiq nahi rahte. Isi wajah se building ki ta’amir par zakat nahi lag sakti, kisi idare ke mulazmin ki tankhawahon par zakat nahi lag sakti.
  • Rishte daron ko zakat de sakte hain basharteke wo mustahiq hon.
    Do Rishte dar aise hain jinhe zakat nahi di ja sakti
  1. Ek wiladat ka rishta hai. Lehaza bap bete ko zakat nahi de sakta.
  2. Dusra nikah ka rishta hai. Lehaza shohar biwi ko zakat nahi de sakta aur na biwi shohar ko zakat de sakti hai.
    Inke ilawa baqi tamam rishton mein zakat di ja sakti hai. Maslan Bhai ko, behan ko, chachu ko, khala ko, phuphi ko, mamu ko zakat di ja sakti hai. Baz log ye samajhte hain ke agar koi khatun bewa ho ya koi bacha yatim ho to usko zakat zarur deni chahiye. Halaan ke yahan bhi shart hai ke mustahiq-e-zakat ho, sahib-e-nisab na ho.

Ramadan mein Adayegi-e-Zakat
Aam taur par log Ramadan-ul-Mubarak mein zakat nikalte hain. Iski wajah ye hai ke Hadees Shareef mein hai ke Ramadan-ul-Mubarak mein ek farz ka savab sattar guna badh jaat hai. Lehaza zakat bhi chunke farz hai, agar Ramadan-ul-Mubarak mein ada kareinge to iska savab bhi sattar guna milega. Aur ye jazba bohat acha hai. Lekin do baton ka khayal rakha jaye.

  1. Agar kisi shakhs ko apne pahli martabah sahib-e-nisab banne ki tarikh malum hai to mehaz is savab ki wajah se wo shakhs Ramadan ki tarikh muqarrar nahi kar sakta. Lehaza use chahiye ke usi tarikh par apni zakat ka hisab kare. Albatta zakat ki adayegi mein ye kar sakta hai ke agar thodi thodi zakat ada kar raha hai to is tarah ada karta rahe aur baqi jo bache usko Ramadan-ul-Mubarak mein ada kare.
  2. Agar kisi shakhs ko tarikh yad nahi hai to phir gunjayesh hai ke Ramadan ki koi tarikh muqarrar kar le. Ahteyatan zyadah ada kar de taa ke agar tarikh ke aage piche hone ki wajah se jo faraq ho gaya ho, wo faraq bhi pura ho jaye.

Ramadan aur Ma’arka-e-Haqq-o-Batil
Ramadan mein bhuk ki shiddat aur peyas ki sakhti mein insan ko bila ikhteyar wo pakizah log yad aa jate hain jo aam dino mein bhi apne gharon se dur araam deh zindagi aur lazzat-o-suroor se bezaar, maidanon, wadiyon, sahraaon aur shahron mein ALLAH ke deen ki sar bulandi ke liye har tarah ki takleef sahne ke liye tayar rahte hain.
ye ALLAH Ta’ala ka azeem-ush-shaan ahsaan hai ke us ne ummat-e-muslimah ko sirf Ramadan aur Qur’an jaisi besh baha ne’imaton aur Daulton se hi nahi nawaza balke in ke tahaffuz aur difa ke liye talwar uthane aur dushman ki shan-o-shaukat ko khak mein milane ka hukam bhi diya, taa ke ye ne’imatein hamesha mahfuz aur baqi rahein.
Jahad dar haqeeqat islam ke difa ka nam hai. Jis tarah har qimati chiz ko hifazat aur security ki zarurat hoti hai, Isi tarah agar isko chod diya jaye to islam aur ahle islam zillat aur ghulami ka shikar ho jate hain.

Ramadan-ul-Mubarak, Qur’an Kareem aur Jahad ka choli daman ka sath hai.
Ramadan-ul-Mubarak aur jahad-e-Muqaddas mein itna mazbut taluq aur rishta hai ke Sarwar-e-Alam SallALLAHU Alayhe Wasallam ne isi mahine mein khud maidano ka rukh farmaya. Aur khud apne hukam se kayi saraya isi Maah-e-Mubarak mein rawana farmaye.

  • Islami tarikh ka sab se aham haqq-o-batil ka ma’arka yani Ghazwa-e-Badar, Ramadan 2 hijri mein pesh aya.
  • Fatah Makkah jis ke bad musalmano ko markaze insaniyat Baitullah par qabza nasib huya, Ramadan 8 hijri mein pesh aya.
  • Sareya Umair bin Adi Radi ALLAHU Anhu, Ramadan 2 hijri mein rawana kiya gaya.
  • Sareya Abdullah bin Ateeq Ansari Radi ALLAHU Anhu, Ramadan 6 hijri mein rawana kiya gaya.
  • Sareya Ghalib bin Abdul lil lishayi Radi ALLAHU Anhu, Ramadan 7 hijri mein rawana kiya gaya.
  • Sareya Hazrat Abu Qatadah Radi ALLAHU Anhu, Batan Azam ki taraf Ramadan 8 hijri mein rawana kiya gaya.
  • Sareya Usama bin Zaid Radi ALLAHU Anhu, harqaat-e-jabinah ki taraf Ramadan 8 hijri mein rawana kiya gaya.
  • Sareya Saad bin Zaid Radi ALLAHU Anhu, mannaat but ko todne ke liye Ramadan 8 hijri mein rawana kiya gaya.
  • Sareya Khalid bin Waleed Radi ALLAHU Anhu, azaa but todne ke liye Ramadan 8 hijri ko rawana kiya gaya.
  • Sareya Umar bin Al-Aas Radi ALLAHU Anhu, sawaa but todne ke liye Ramadan 8 hijri mein rawana kiya gaya.
  • Sareya Zaid bin Harisa Radi ALLAHU Anhu, Ramadan 6 hijri mein rawana kiya gaya.
  • Sareya Ali bin Abi Talib Radi ALLAHU Anhu, Yaman ki taraf Ramdan 10 hijri mein rawana kiya gaya.

ALLAH Ta’ala is Ramadan-ul-Mubarak ko musalmano ki fatah-o-nusrat ka mahina bana de. Ameen.

Sadqah-e-Eid-ul-Fitr

Mah-e-Ramadan ke bad roze daron ke inam milne ka roz hi Eid-ul-Fitr ka din hota hai. ye muaqaddas roz un sab rozedaro ke liye hota jinhone mah-e-ramadan mein bhukhe rehkar ALLAH ka khauf khaya aur ALLAH ki dil ki gehraiyon se ibadat ki. Sirf ALLAH ko khush karne aur use manane ke liye khoob ibadat ki farmabardari ki. Ye roz unhe inam milne ka aham roz hai. Rozedaro ka ALLAH khud inam dete hai. Na ke koi farishte. Jaza rozedaron ko khud ALLAH se milegi Insha ALLAH. Ramadan ke paak mahine ka martabah aala hai uncha hai. Jitna ho sake ibadat kare ALLAH se apni bakhshish karva lein apni aur apni aal ki bhi.

Hazrat Abdullah ibn Umar-o-bin Al-Aas Radi ALLAHU Anhu se riwayet hai ke Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe Wasallam ne ek shakhs ko bheja ke Makkah Mukarmah ke gali kuchon mein ye ailaan kar de ke sadqah-e-fitr har musalman par wajib hai. Khawah mard ho ya aurat, azad ho ya Ghulam, chota ho ya bada. Do mad (taqreeban do heere)  gandam ke ya iske siwa ek saa (saadhe teen ser se kuch zyadah) ghalla ka.
(Tirmazi Shareef)

Sadqah-e-fitr har musalman aaqil azad, khawah mard ho ya aurat, us par wajib hai jab ke wo nisab ka malik ho. Khawah naqad rupe ki shakal mein ho ya zarurat se zyadah samaan ho ya maal-e-tijarat ho ya rehaish ke makan se zayed makan ho. Apni taraf se aur apne un na-baligh bachon ki taraf se jo uske zer-e-kafalat hon zarur ada kare. Sadqah-e-fitr ki maujudah raqam ka ailaan har sal Ulmaa Karaam ki taraf se kar diya jata hai.

 خوش آمدید رمضان المبارک

اللّٰه تعالیٰ نے تجھے کتنا مبارک، کتنا پیارا، کتنا عظیم اور کتنا مقدس بنایا ہے۔  اے رمضان!  ساری دنیا کے مسلمان دو مہینے سے تیرے آنے کی تیاری اور دعا کر رہے ہیں۔ کتنے مجاہد اور اللّٰه والے تیرے استقبال کے لئے بے چین ہیں اور تیرے انتظار کی ایک ایک گھڑی گن گن کر گزار رہے ہیں۔ ابھی ایک دوسرے ملک سے ایک دوست نے پیغام بھیجا ہے کہ ہمارے ہاں آج  پہلا روزہ ہے آپ رمضان المبارک کے خصوصی احکامات مجھے بتا دیجیۓ۔

اے رمضان دیکھ! مسلمان کتنی بے چینی سے تیرا انتظار کر رہے ہیں۔ ہمارے ہاں آج 29 شعبان کی تاریخ ہے۔ کچھ لوگ زندہ رہ کر تجھ سے گلے ملیں گے اور کچھ لوگ اگلے دو تین دنوں میں تیرے انتظار کی مٹھاس اپنے کفن میں لپیٹے قبروں میں جا سوئیں گے۔ اے رمضان! تو بہت عجیب ہے۔ ہمارے آقا مدنی صلی اللّٰه علیہ وسلم ان پر میں اور میرا سب کچھ قربان رجب کا چاند دیکھتے ہی تجھے یاد کرنا شروع کر دیتے تھے۔

اے اللّٰه! ہمارے لئے رجب اور شعبان میں برکت عطا فرما اور ہمیں رمضان تک پہنچا۔ اے رمضان! رب تعالیٰ نے تیری جھولی کو سعادتوں سے بھر دیا۔ اللّٰه تعالیٰ نے قرآن مجید  جیسی عظیم الشان کتاب تیری ایک رات میں لوح محفوظ سے آسمان سے زمین پر اتار دی۔ واہ رمضان واہ! قرآن کریم جیسا تحفہ تیری پاکیزہ رات میں اس امت مرحومہ کو ملا۔

اے رمضان! تیرا تو نام بھی قرآن مجید میں مذکورہ ہے۔ اسلئے تو بھی مبارک اور تیرا نام بھی مبارک۔ اے رمضان! تیری جھولی بھری ہوئی ہے۔ تو رحمت، مغفرت، جہنم سے نجات کا مہینہ ہے۔ تو سخاوت اور غم خواری ک مہینہ ہے۔

اے رمضان! تیرے دن پاک اور تیری راتیں منور اور معطر ہیں۔ اے رمضان! تو پھر آ رہا ہے پوری شان کے ساتھ۔، پوری آن کے ساتھ۔۔ معلوم نہیں اس بار تو کتنے گنہگاروں کی پاکی کا ذریعہ بنے گا۔ ہاں رمضان ہاں! ہمیں پتا ہے تیری راتوں کے نور نے بڑے بڑے شرابی، پاپی، زانی، ڈاکو اور چور پاک کر کے جنتی بنا دیے۔ ہاں رمضان ہمیں علم ہے تو

بہت سخی  ہے۔ تجھے رب نے بہت طاقت دی ہے۔   حضرت جبرئیلؑ جو انبیا کرام علیہ السلام پر اترا کرتے تھے ۔اے رمضان! وہ  تیری ایک رات میں امت کے ان لوگوں کے پاس اترتے  ہیں جو بلک رہے ہوتے ہیں ۔ رو رو کر رب کو منا رہے ہوتے ہیں۔ جھوم کر تلاوت کر رہے ہوتے ہیں۔ تلواریں اٹھائے دشمن کا مقابلہ کر رہے ہوتے ہیں۔

ہاں رمضان! یہ حقیقت ہے تیری ! شب قدر میں روح القدس  فرشتوں کو لیکر زمین  پر آ جاتے ہیں۔ خوش نصیب لوگوں کے لئے سلامتی کی دعا مانگتے ہیں۔

اے رمضان! ہمیں معلوم ہے تیرے آتے ہی جنّت کے دروازے  کھل جاتے ہیں۔ یا اللّه! ہمیں بھی جنّت عطا  فرما اور تیرے آتے ہی جہنّم سے بچا! آمین۔ آج ہر طرف تیرا ہی انتظار ہے۔ ایک ایک گھڑی انتظار ہے۔ تو آئیگا اور ضرور آئیگا۔ ہمیں پتا نہیں کہ ہم ہونگے یا نہیں۔ اگر ہم ہوئے تو تجھے دل کھول کر اپنے دکھڑے سنایں گے۔ ہمیں یقین ہے کہ اے رمضان! تو ہمارا دکھڑا ضرور سنے گا۔ اور انشاء اللّه تیری برکت سے حالات تبدیلی کی کروٹ لیں گے۔ آمین۔

 

تحفہ رمضان

رمضان کریم اللّه تعالیٰ کی نظر میں

ماہ رمضان وہ ہے جس میں قرآن پاک اتارا گیا۔ جو لوگوں کو ہدایت کرنے والا ہے اور جس میں ہدایت  کی اور حق و باطل کی تمیز کی نشانیاں ہیں۔ تم میں سے جو شخص اس مہینہ کو پاۓ اسے روزہ رکھنا چاہیے، ہاں جو بیمار ہو یا مسافر ہو اسے دوسرے دنوں میں یہ گنتی پوری کر لینی چاہیئے۔ اللّه تعالیٰ کا ارادہ تمہارے ساتھ آسانی کا ہے، سختی کا نہیں، وہ چاہتا ہے کہ گنتی پوری کر لو اور اللّه تعالیٰ کی دی ہوئی ہدایت  پر اسکی بڑائیاں بیان کرو اور اسکا شکر کرو۔

 

رمضان  کریم رحمتِ عالم صلی اللّٰه علیہ وسلّم کی نظر میں

حضرت سلمان فارسیؓ سے روایت ہے کہ ماہ شعبان کی آخری تاریخ کو رسول اللّه صل اللّه علیہ وسلم نے ہم کو ایک خطبہ دیا۔ اس میں آپؐ نے فرمایا۔

اے لوگو! تم پر ایک عظمت اور برکت والا مہینہ سایہ فگن ہو رہا ہے۔ اس مبارک مہینہ کی ایک رات (شب  قدر) ہزار مہینوں  سے بہتر ہے۔

اس مہینے کے روزے اللّه تعالیٰ نے فرض کیے ہیں اور اسکی راتوں میں بارگاہ خداوندی میں کھڑا ہونے (یعنی نماز تراویح ) پڑھنے کو نفل عبادت مقرر کیا ہے (جسکا بہت بڑا ثواب رکھا ہے)۔ جو شخص اس مہینے میں اللّه تعالیٰ کی رضا اور اسکا قرب حاصل کرنے کیلئے کوئی غیر فرض عبادت (یعنی سنت یا نفل) ادا کریگا تو اسکو دوسرے زمانے کے فرضوں کے برابر اسکا ثواب  ملے گا۔ اور اس مہینے میں فرض ادا کرنے کا ثواب دوسرے زمانے کے ستر فرضوں  کے برابر ہے۔

مزید ارشاد فرمایا۔

یہ صبر کا مہینہ ہے اور صبر کا بدلہ جنت ہے ۔ یہ ہمدردی اور غم خواری کا مہینہ ہے اور یہی وہ مہینہ ہے جس میں مومن بندوں کے رزق میں اضافہ کیا جاتا ہے۔ جس نے اس مہینہ میں کسی روزہ دار کا روزہ افطار کرایا تو اسکے لئے  گناہوں کی مغفرتاور آتش دوزخ سے آزادی کا ذریعہ ہوگا اور اسکو روزہ دار کے برابر ثواب  دیا جائیگا۔ بغیر اس کے کہ روزہ دار کے ثواب  میں کوئی کمی کی جائے۔

آپؐ سےعرض کیا گیا۔

یا رسول اللّهؐ! ہم میں سے ہر ایک کو تو افطار کرانے کا سامان میسر نہیں ہوتا۔ ( تو کیا غرباء اس عظیم ثواب   سے محروم رہیں گے)؟

آپؐ نے فرمایا۔

اللّه تعالیٰ یہ ثواب  اس شخص کو بھی دے گا جو دودھ کی تھوڑی سی لسی یا صرف پانی ہی کے ایک گھونٹ پر کسی روزہ دار کا روزہ افطار کرا دے۔ اور جو کوئی کسی روزہ دار کو پورا کھانا کھلا دے، اسکو اللّه تعالیٰ میرے حوض  (یعنی کوثر) سے ایسا سیراب کرائے گا جسکے بعد اسے کبھی پیاس ہی نہ

لگے گی تا آخر وہ جنّت میں پہنچ جائے۔

ایک اورحدیث شریف ہے۔

اس ماہ مبارک کا ابتدائی حصہ رحمت  ہے اور درمیانی حصہ مغفرت  ہے اور آخری حصہ آتش دوزخ سے آزادی ہے۔ اور جو آدمی اس مہینے اپنے غلام و خادم کے کام میں تخفیف اور کمی کرے گا۔ اللّه تعالیٰ اسکی مغفرت فرما ئے گا اور اسکو دوزخ سے رہائی اور آزادی دے دیگا۔

(بیہقی )

نیکیوں کا موسم بہار

رمضان المبارک کا مہینہ شروع  ہوتے ہی  ہر مسلمان کا دل خود بخود نیکی کیطرف کھنچا چلا جاتا ہے اور برائی سے ازخود اکتاہٹ محسوس ہونے لگتی ہے۔ شاید سلیم الفطرت طبیعتوں پر خوشگوار اثر اس فرشتے کی پکار سے ہوتا ہے، جو ماہ رمضان میں روزانہ یہ صدا  لگاتا ہے۔

یا باغی الخیر قبل یا باغی لشر اقصر

(اے خیر کے طلب گار! آ گے بڑھ اور جلدی

(اے برائی کے چاہنے والے بس کر اور رک جا

 

اسی مناسبت سے کچھ عبادات کے فضائل احادیث مبارکہ سے منتخب کر کے لکھے جا رہے ہیں تاکہ عمل کرتے وقت اللّه تعالیٰ ک طرف سے ملنے والے اجر و ثواب  کا تصور ہمیں روحانی تقویت بخشے۔

روزہ

حضرت ابو ہریرہؓ سے روایت  ہے کے رسول اللّه صل اللّه علیہ وسلم نے فرمایا۔

آدمی کے ہر اچھے عمل کا ثواب  دس گنا سے سات سو گنا تک بڑھایا جاتا ہے مگر اللّه تعالیٰ کا فرمان ہے کہ روزہ کی یہ بات نہیں، وہ تو صرف میرے ہی لئے ہے اور میں ہی اسکا بدلہ دونگا۔ میرا بندا میری رضا کے لئے اپنی خواہش نفس اور کھانا پینا چھوڑ دیتا ہے۔

روزے دار کیلئے دو خوشیاں ہیں۔

ایک روزانہ افطار کے وقت ، دوسری اپنے رب سے ملاقات کے وقت اور قسم ہے کہ روزہ دار کے منہ کی بو اللّه تعالیٰ کے نزدیک مشک کی خوشبو سے بہتر ہے۔

روزہ (شیطان کے حملوں اور جہنّم سے بچاؤ کے لئے) ڈھال ہے اور جب تم میں سے کسی کا روزہ ہو تو وہ فحش اور بیہودہ باتیں نہ کرے اور شور و شغب نہ کرے اور کوئی دوسرا اس سے جھگڑا یا گالی گلوچ کرے تو کہہ دے کہ میں روزہ دار ہوں۔

(بخاری ، مسلم )

 

حضرت سہل بن سعد ساعدیؓ  نقل کرتے ہیں کہ جناب نبی کریم صل اللّه علیہ وسلم نے فرمایا۔

جنّت میں ایک خاص دروازہ ہے جسے  باب الریان  کہا جاتا ہے۔ قیامت کے دن اس میں صرف روزہ دار داخل ہونگے، انکے سوا اس دروازے سے کوئی اور داخل نہیں ہوگا۔ کہا جائے گا کہ روزے دار کہاں ہیں؟ پاس روزے دار کھڑے ہو جاینگے (اور اس میں سے جنّت  میں داخل ہو جاینگے) انکے علاوہ کوئی اس سے داخل نہیں ہو سکے گا۔ جب روزے دار داخل ہو جاینگے تو یہ دروازہ بند کر دیا جائے گا۔

(بخاری، مسلم)

تراویح نوافل

حضرت ابو ہریرہؓ رحمت عالمؐ کا ارشاد نقل کرتے ہیں کے آپؐ نے فرمایا۔

جو لوگ ایمان اور ثواب  کے یقین کے ساتھ رمضان  کی راتوں میں نماز (تراویح ، نفل، تہجد)  پڑھیں گے  انکے تمام گناہ معاف کر دئے جایں گے۔

(بخاری و مسلم)

 

شب قدر اور اسکی خاص دعا

یہ با برکت اور نورانی رات رمضان کی آخری دس راتوں میں ہوتی ہے۔ اسکی فضیلت بیان کرنے کے لئے قرآن پاک میں ایک سورت نازل فرمائی گئی ہے۔ جسکا ترجمہ یہ ہے۔

بیشک ہم نے اس قرآن کو شب قدر میں اتارا اور آپکو کیا معلوم کہ شب قدر کیا ہے؟ شب قدر ہزار مہینوں سے بہتر ہے۔ اس میں فرشتے اور روح نازل ہو تے ہیں، اپنے رب کے حکم سے ہر کام پر۔ وہ صبح روشن ہونے تک سلامی کی رات ہے۔

حضرت عائشہؓ  سے روایت  ہے کہ میں نے رسول کریم صل اللّه علیہ وسلم سے پوچھا کہ اگر مجھے معلوم ہو جائے کہ کون سی رات شب قدر ہے تو میں اس رات  اللّه تعالیٰ سے کیا عرض کروں؟

آپؐ نے فرمایا، یہ الفاظ کہو۔

اللھم انک عفو کریم تحب العفو فاعف عنی

اے اللّه! تو بہت معاف کرنے والا اور کرم فرمانے والا ہے، معاف کرنا تجھے پسند ہے، پس تو مجھے معاف فرما۔

اعتکاف

یہ ایک عاشقانہ اور والہانہ عبادت ہے۔ کیوں کہ بندہ  اپنے رب کے در پر آ کر پڑ جاتا ہے۔ اوراپنے لئے دنیا اور آخرت کی بھلائیاں سمیٹ  کر لے جاتا ہے۔

حضرت ابن عبّاس سے روایت ہے کہ رسول کریم صل اللّه علیہ وسلم نے اعتکاف کرنے والے کے بارے میں فرمایا ہے کہ وہ گناہوں سے بچا رہتا ہے اور اسکی نیکیوں کا حساب ، ساری نیکیاں کرنے والے بندے کی طرح جاری رہتا ہے۔

(ابن ماجہ)

تلاوت قرآن پاک

ماہ رمضان  اور قرآن پاک میں خصوصی مناسبت اور لگاؤ ہے اور کیوں نہ ہو۔ کلام الہی کی یہ عظیم دولت اسی مہینے میں انسانیت کو نصیب ہوئی۔ اور اللّه تعالیٰ نے رمضان کا تعارف ہی قرآن کے ذریعے کروایا۔

چنانچہ ارشاد ہے۔

رمضان کا مہینہ وہ ہے جس میں قرآن پاک اتارا گیا جو لوگوں کے لئے ہدایت  اور ہدایت  کی روشن دلیلیں اور حق و باطل میں فرق کرنے والا ہے۔

(البقرہ)

 

تلاوت قرآن کے فضائل بہت ہیں۔ کم از کم ہر حرف پر دس نیکیاں ملتی ہیں۔ اسلئے ماہ مبارک میں زیادہ سے زیادہ اسکا اہتمام کیا جائے۔

صدقہ و خیرات

حدیث شریف میں آاتا ہے کہ آپؐ سب سے زیادہ سخی تھے اور رمضان المبارک میں تو آپؐ کی سخاوت تیز ہواؤں سے بھی بڑھ جاتی تھی۔

(فتح الباری )

اس ماہ مبارک میں معمولی سے معمولی  خرچ کرنے والوں کو اللّه تعالیٰ بڑے بڑے انعامات دیتا ہے۔ بسا اوقات کسی کو ایک کھجور سے روزہ افطار کروا دینے پر ہی عمر بھر کے گناہ معاف ہو جاتے ہیں۔  جو مال اللّه کے راستے میں بڑھ کر خرچ کیا جاتا ہے، وہی درحقیقت کام آنے والا ہے۔ جو باقی رہ جاتا ہے وہ تو کسی اور کا مقدر ہے اور اسکا حساب بہرحال ہماری گردن پر ہوگا۔

صدقہ وخیرات کی اہمیت حدیث شریف کی روشنی میں

حضرت ابو موسیٰ الشعریؓ فرماتے ہیں کہ نبی کریم ﷺ نے ارشاد فرمایا۔

ہر مسلمان کو چاہیے کہ صدقہ دیا کرے۔

لوگوں نے دریافت کیا ۔

اگر اسکے پاس صدقہ  دینے کیلئے کچھ نہ ہو تو کیا کرے؟

ارشاد فرمایا۔

اپنے ہاتھوں سے محنت مزدوری  کر کے اپنے آپ

کو بھی فائدہ پہنچائے اور صدقہ بھی دے۔

لوگوں نے عرض کیا۔

اگر یہ بھی نہ کر سکے یا (کر سکتا ہو پھر بھی ) نہ کرے؟

ارشاد فرمایا۔

کسی غم زدہ محتاج کی مدد کرے۔

عرض کیا۔

اگر یہ بھی نہ کرے۔

ارشاد فرمایا۔

تو کسی کو بھلی بات بتا دے۔

عرض کیا۔

اگر یہ بھی نہ کرے۔

ارشاد فرمایا۔

تو (کم از کم) کسی کو نقصان پہنچانے سے ہی باز رہے کیونکہ یہ بھی اسکے لئے صدقہ ہے۔

(بخاری)

 

ایک جامع اور خوبصورت حدیث شریف

ابن عبّاسؓ کی روایت ہے کہ انہوں نے حضورﷺ کو یہ ارشاد فرماتے ہوئے سنا ہے کہ جنّت کو رمضان المبارک کے لئے خوشبوؤں کی دھونی دی جاتی ہے اور شروع سال سے آخر سال تک رمضان کی خاطر آراستہ کیا جاتا ہے۔ پس جب رمضان المبارک کی پہلی رات ہوتی ہے تو عرش کے نیچے سے ایک ہوا چلتی ہے جسکا نام مشیرہ ہے (جسکے جھونکوں کی وجہ سے ) جنّت کے درختوں کے پتے اور کواڑوں کے حلقے بجنے لگتے ہیں۔ جس سے ایسی  دل آویز سریلی  آواز نکلتی ہے کہ سننے والوں نے اس سے اچھی آواز کبھی نہیں سنی ہوگی۔ پاس خوش نما آنکھوں والی حوریں اپنے مکانوں سے نکل کر جنّت کے بالاخانوں  کے درمیان کھڑے ہو کر آواز دیتی ہیں کہ کوئی ہے اللّه تعالیٰ کی بارگاہ میں ہم سے منگنی کرنے والا تا کہ حق تعالیٰ شانہ اسکو ہم سے جوڑ دیں۔ پھر وہی حوریں جنّت کے داروغہ رضوان سے پوچھتی ہیں کہ یہ کیسی رات ہے۔ وہ لبیک کہہ کر جواب دیتے ہیں کہ رمضان المبارک کی پہلی رات ہے۔ جنّت کے دروازے محمد ﷺ  کی امت کے لئے (آج) کھول دئیے گئے ہیں۔ حضور ﷺ نے فرمایا کہ حق تعالیٰ شانہ رضوان سے فرما دیتے ہیں کہ جن کے دروازے کھول دے اور مالک (جہنم کے داروغہ) سے فرما دیتے ہیں کہ احمد ﷺ کی امّت کے روزہ داروں پر جہنم کے دروازے بند کر دے۔ اور جبرئیل کو حکم ہوتا ہے کہ جاؤ زمین پر اور سرکش شیاطین کو قید کرو اور گلے میں طوق ڈال کر دریا میں پھینک دو کہ میرے محبوب ﷺ کی امّت کے روزوں کو خراب نہ کریں۔

نبی کریم ﷺ نے یہ بھی ارشاد فرمایا کہ حق تعالیٰ شانہ رمضان کی ہر رات میں ایک منادی  کو حکم فرماتے  ہیں کہ تین مرتبہ آواز دے کہ ہے کوئی  مانگنے والا کہ جسکو میں عطا کروں۔ ہے کوئی توبہ کرنے والا کہ میں اسکی توبہ قبول کروں۔ کوئی ہے مغفرت چاہنے والا کہ میں اسکی مغفرت کروں۔ کون ہے جو غنی کو قرض دے۔ ایسا غنی جو نادار نہیں، ایسا پورا پورا ادا کرنے والا جو ذرا بھی کمی نہیں کرتا۔

حضور اکرم ﷺ نے فرمایا  کہ حق تعالیٰ شانہ رمضان المبارک میں روزہ افطار  کے وقت  ایسے دس لکھ آدمیوں کو جہنّم سے خلاصی مرحمت فرماتے ہیں جو جہنّم کے مستحق ہو چکے تھے۔ اور جب رمضان کا آخری دن ہوتا ہے تو یکم رمضان سے آج تک جس قدر لوگ جہنّم سے آزاد کیے گئے تھے انکے برابر اس ایک دن میں آزاد فرماتے ہیں۔ اور رات شب قدر ہوتی ہے توحق تعالیٰ شانہ حضرت جبرئیلؑ کو حکم فرماتے ہیں۔

 وہ فرشتوں کے ایک بڑے لشکر کے ساتھ زمین پر اترتے ہیں۔ انکے پاس ایک سبز جھنڈا ہوتا ہے جسکو کعبہ کے اوپرکھڑا کرتے ہیں اور حضرت جبرئیلؑ کے سو بازو ہیں جن میں سے صرف دو بازوؤں کو صرف اسی رات کھولتے ہیں جنکو مشرق سے مغرب تک پھیلا دیتے ہیں۔ پھر جب حضرت جبرئیلؑ فرشتوں کو تقاضا فرماتے ہیں کہ جو مسلمان آج کی رات کھڑا ہو یا بیٹھا ہو، نماز پڑھ رہا ہو یا ذکر کر رہا ہو، اسکو سلام کریں اور مصافحہ کریں اور اسکی دعاؤں پر آمین کہیں۔ صبح تک یہی حالت رہتی ہے۔

 جب صبح ہوتی ہے تو جبرئیلؑ آواز دیتے ہیں کہ اے فرشتوں کی جماعت ! اب کوچ کرو اور اللّه نے محمد ﷺ کی امّت کے مومنوں کی حاجتوں اور ضرورتوں میں کیا معامله فرمایا۔

وہ کہتے ہیں کہ اللّه تعالیٰ نے ان پر توجہ فرمائی اور چار شخصوں کے علاوہ سب کو معاف فرما دیا۔ صحابہ نے فرمایا  کہ یا رسول اللّه ﷺ وہ چار شخص کون ہیں؟

ارشاد ہوا کہ ایک وہ جو شراب کا عادی ہو۔ دوسرا وہ شخص جو والدین کی نافرمانی کرنے والا ہو۔ تیسرا وہ شخص جو قطع رحمی کرنے والا اور ناطہ توڑنے والا ہو۔ چوتھا وہ شخص جو کینہ رکھنے والا ہو اور اپس میں قطع تعلق کرنے والا ہو۔

پھر جب عید الفطر کی رات ہوتی ہے تو اسکا نام (آسمانوں پر) لیلتہ الجائزہ (انعام کی رات) سے لیا جاتا ہے۔ اور جب عید کی صبح ہوتی ہے تو فرشتے سب گلیوں اور راستوں سے سروں پر کھڑے ہو جاتے ہیں اور ایسی آواز سے جسکو انسان اور جنّات  کے سوا ہر مخلوق سنتی ہے، پکارتے ہیں کے اے محمّد ﷺ کی امّت! اس کریم رب کی درگاہ کی طرف چلو جو بہت زیادہ عطا کرنے والا ہے۔

پھر جب لوگ عید گاہ کی طرف نکلتے ہیں تو حق تعالیٰ شانہ فرشتوں سے دریافت  فرماتے ہیں۔ کیا بدلہ ہے اس مزدور کا جو اپنا کام پورا کر چکا ہو؟

وہ عرض کرتے ہیں کہ ہمارے معبود اور ہمارے مالک  اسکا بدلہ یہی ہے کہ اسکی مزدوری پوری پوری دی جائے۔ تو حق تعالیٰ شانہ فرماتے ہیں کہ اے فرشتو! میں تمہیں گواہ بناتا ہوں میں نے انکو رمضان کے روزوں  اور تراویح  کے بدلہ میں اپنی رضا اور مغفرت عطا کر دی اور بندوں سے خطاب  فرما کر ارشاد ہوتا ہے کہ

اے میرے بندو! مجھ سے مانگو۔

میری عزت کی قسم میرے جلال کی قسم آج کے دن اپنے اس اجتماع میں مجھ سے آخرت کے بارے میں جو سوال کرو گے، عطا کرونگا اور دنیا کے بارے میں جو سوال کروگے اس میں تمہاری مصلحت پر نظر کرونگا۔ میری عزت کی قسم کہ جب تک تم میرا خیال رکھو گے میں تمہاری لغزشوں کی پرستاری کرتا رہوں گا (اور انکو چھپاتا رہونگا)۔ میری عزت کی قسم اور میرے جلال کی قسم میں تمہیں مجرموں اور کافروں کے سامنے رسوا اور فضیحت نہ کروں گا۔ بس اب بخشے بخشاۓ اپنے گھروں کو لوٹ جاؤ، تم نے مجھے راضی کر دیا اور میں تم سے راضی ہو گیا۔

پس فرشتے اس اجر و ثواب  کو دیکھ کر جو اس امّت کو افطار  کے وقت ملتا ہے خوشیاں مناتے ہیں اور کھل جاتے ہیں۔

روزے کے ضروری مسائل

روزے کی نیّت کب کریں؟

بہتر یہ ہے کہ رمضان المبارک کے روزے کی نیّت  صبح صادق سے پہلے پہلے کر لی جائے۔

(البحر2، 453)

 

اگر کچھ کھایا پیا نہ ہو تو دوپہر سے ایک گھنٹہ پہلے  (یعنی نصف النہارشرعی سے پہلے) تک رمضان شریف کے روزے میں بس اتنی نیّت  کر لینا کافی ہے کہ آج میرا روزہ ہے۔ یا رات کو نیّت  کرے کے صبح روزہ رکھنا ہے۔

(البحر2، 454- ردالمختار2، 377)

 

سحر و افطار 

روزے کیلئے سحری کھانا با برکت ہے کہ اس سے دن بھر قوّت رہتی ہے۔ مگر یہ روزہ کے صحیح ہونے کی شرط نہیں۔ پس اگر کسی کو سحری کھانے کا موقع نہیں ملا اور اس نے سحری  کھاۓ بغیر روزہ رکھ لیا تو روزہ صحیح ہے۔

(ردالمختار2، 419(

 

سائرن ایک منٹ پہلے شروع ہوتا ہے اس دوران پانی پیا جا سکتا ہے۔ بہرحال احتیاط کا تقاضا یہ ہے کہ سائرن بجنے سے پہلے پہلے پانی پی لیا جائے۔

سورج غروب ہونے کے بعد افطار  کرنے میں تاخیر نہیں کرنی چاہئے۔

(ردالمختار2، 419(

اصول یہ ہے کہ روزہ رکھنے اور افطار  کرنے میں اس جگہ کا اعتبار ہے جہاں آدمی روزہ رکھتے اور افطار کرنے وقت موجود ہو۔ پس جو شخص عرب ممالک سے روزہ رکھ کر ہندوستان آئے، اسکو ہندوستان کے وقت کے مطابق افطار کرنا ہوگا۔ اور جوشخص ہندوستان سے روزہ رکھ کر مثلاً سعودی عرب گیا ہو، اسکو وہاں کے غروب کے بعد روزہ افطار کرنا ہوگا۔ اسکے لئے ہندوستان کے غروب  کا اعتبار نہیں۔

روزہ دار کو جب آفتاب نظر آ رہا ہو تو افطار  کرنے کی اجازت نہیں ہے۔ ہوائی جہاز والوں کا اعلان بھی مہمل اور غلط  ہے۔ روزہ دار جہاں موجود ہے وہاں کا غروب  معتبر ہے۔ پس اگر وہ  دس ہزار فٹ کی بلندی پر ہو اور اس بلندی سے غروب  آفتاب دکھائی دے تو روزہ افطار  کر لینا چاہیے۔ جس جگہ کی بلندی پر جہاز پرواز کر رہا ہے وہاں کی زمین  پرغروب آفتاب ہو رہا ہو تو جہاز کے مسافر روزہ افطار نہیں کرینگے۔

(بدائع 2، 225)

رمضان میں بیماری یا سفر

اگر آپ کو اپنے آپ پانی یا کھانے یا خون کی قے آ گئی تو روزہ نہیں ٹوٹا خواہ تھوڑی ہو یا زیادہ۔

اور اگر خود اپنے اختیار سے کی اور منہ بھر کر ہوئی توروزہ ٹوٹ گیا ورنہ نہیں۔

(ردالمختار2، 414(

اگر روزہ دار اچانک بیمار ہو جائے اور اندیشہ ہو کہ روزہ نہ توڑا تو جان کا خطرہ ہے، یا بیماری کے بڑھ جانے کا خطرہ ہے۔ ایسی حالت میں روزہ توڑنا  جائز ہے۔ ورنہ معمولی  بیماری میں روزہ نہ رکھنا یا توڑنا جائز نہیں۔ اس طرح اگر حاملہ عورت کی جان کو یا بچے کی جان کو خطرہ لاحق ہو جاۓ تو روزہ توڑ دینا درست ہے۔

(البحر2، 492، 499)

 

رمضان شریف کے روزے ہر عاقل اور بالغ مسلمان پر فرض ہیں اور بغیر کسی صحیح عذر کے روزہ نہ رکھنا حرام ہے۔ اگر نابالغ لڑکا لڑکی روزہ رکھنے کی طاقت رکھتے ہوں تو ماں باپ پر لازم ہے کہ انکو بھی روزہ رکھوائیں تا کہ انکی عادت بنے اور بعد میں مشکل نہ ہو۔

اگر بیماری ایسی ہو کہ اسکی وجہ سے روزہ نہیں رکھا جا سکتا یا روزہ رکھنے کی وجہ سے بیماری کے بڑھ جانے کا خطرہ ہو تو روزہ نہ رکھنے کی اجازت ہے۔ مگر جب تندرست ہو جائیں تو بعد میں ان روزوں  کی قضا ادا کرنی فرض ہے۔

(ردالمختار2، 422(

 

اگر کوئی شخص سفر میں ہو اور روزہ رکھنے میں مشقت لاحق ہونے کا اندیشہ ہو تو وہ بھی قضا کر سکتے ہیں، مگر دوسرے وقت میں اس روزہ کی قضا ادا کرنا فرض ہوگا۔

اور اگر سفر میں کوئی مشقت نہیں تو روزہ رکھ لینا بہتر ہے۔ اگرچہ روزہ نہ رکھنے اور بعد میں قضا کرنے کی بھی اسکو اجازت ہے۔

(ردالمختار2، 423(

 

عورت کو حیض و نفاس کی حالت میں روزہ رکھنا جائز نہیں۔ مگر رمضان شریف کے بعد اتنے دنوں  کی قضا اس پر لازم ہے۔

(بدائع 2، 225)

 

یہ تو واضح ہے کہ جب تک ایام شروع نہیں ہونگے عورت پاک ہی شمار ہوگی اور اسکو رمضان  کے روزے رکھنا صحیح ہوگا۔ رہا یہ کہ روکنا صحیح ہوگا یا نہیں؟ تو شرعاً روکنے پر کوئی پابندی نہیں۔

مگر شرط یہ ہے کہ اگر یہ فعل عورت کی صحت کے لئے نقصان دہ ہو تو جائز نہیں۔

 

روزہ ٹوٹ گیا یا نہیں؟

کسی نے بھولے سے کچھ کھا پی لیا اور سمجھ کر کہ اسکا روزہ ٹوٹ گیا قصداً کھا پی لیا تو قضا واجب ہوگی۔

اسی طرح اگر کسی کو قے  ہوئی اور پھر یہ خیال کر کے کہ اسکا روزہ ٹوٹ گیا ہے کچھ کھا پی لے تو اس صورت میں قضا واجب ہوگی۔ کفّارہ واجب نہ ہوگا۔ لیکن اگر اسے یہ مسئلہ معلوم تھا کہ قے سے روزہ نہیں ٹوٹتا اسکے باوجود کچھ کھا پی لیا تو اس صورت میں اسکے ذمہ قضا اور کفّارہ  دونوں لازم ہونگے۔

(ردالمختار 2، 401(

مسوڑھوں سے خون آئے اور حلق کے پار ہو جائے اور یقین ہو کہ خون حلق کے پار چلا گیا ہے تو روزہ فاسد ہوجائے گا۔ دوبارہ رکھنا ضروری ہوگا۔

(الدرالمختار2، 392(

وضو، غسل یا کلی کرتے وقت اگر غلطی سے پانی حلق سے نیچے چلا جائے تو روزہ ٹوٹ جاتا ہے مگر اس صورت میں صرف قضا لازم ہے، کفّارہ  نہیں۔

(الدرالمختار 2، 401(

 

روزہ کی حالت میں غرغرہ کرنا اور ناک میں پانی ڈالنا ممنوع  ہے اس سے روزے کے ٹوٹ جانے کا اندیشہ قوی ہے۔ اگرغسل فرض ہو تو کلی کریں۔ ناک میں پانی بھی ڈالیں مگر روزے کی حالت میں غرغرہ

نہ کریں اور نہ ناک میں پانی اوپر تک چڑھائیں۔

روزہ کی حالت میں حقہ یا سگریٹ پینے سے روزہ ٹوٹ جاتا ہے اور اگر یہ عمل جان بوجھ کر کیا ہو تو قضا و کفّارہ  دونوں لازم ہونگے۔

کوئی ایسی  چیز نگل لی جسکو بطور غذا یا دوا کے نہیں کھایا جاتا تو روزہ ٹوٹ گیا اور صرف قضا واجب  ہوگی۔ کفّارہ واجب نہیں ہوگا۔

(الدرالمختار 2، 410(

دانتوں میں  گوشت کا ریشہ یا کوئی چیز رہ گئی تھی  اور اگر چنے کے دانے کے برابر یا اس سے زیادہ ہو تو روزہ جاتا رہا اور اگر اس سے کم  ہو تو روزہ نہیں ٹوٹا۔ اور اگر باہر سے کوئی چیز منہ میں ڈال کر نگل لی تو خواہ تھوڑی ہو یا زیادہ اس سے روزہ ٹوٹ جائے گا۔

(الدرالمختار 2، 415(

 

امام ابو حنیفہؓ کے نزدیک مسواک کرنا مکروہ نہیں اگرچہ وہ بالکل تازہ ہی ہو۔

(الدرالمختار 2، 419(

 

زبان سے کسی چیز کا ذائقہ چکھ کر تھوک دیا تو روزہ نہیں ٹوٹا ۔ مگر بلا ضرورت ایسا کرنا مکروہ ہے۔

(الدرالمختار 2،416(

 

تھوک کے نگلنے سے روزہ نہیں ٹوٹتا۔ مگر تھوک جمع کر کے نگلنا مکروہ ہے۔

اگر حلق کے اندر مکھی چلی گئی یا دھواں خود بخود چلا گیا یا گردوغبار چلا گیا تو روزہ نہیں ٹوٹتا۔ اگر قصداً ایسا کیا جائے تو روزہ جاتا رہا۔

(البحر 2، 477(

آنکھ میں دوائی ڈالنے یا زخم پر مرہم لگانے یا دوائی لگانے سے روزہ میں کوئی فرق نہیں آتا۔

لیکن ناک اور کان میں دوائی ڈالنے سے روزہ فاسد ہو جاتا ہے۔ اور اگر زخم پیٹ پر ہو یا سر پر ہو اور اس پر دوائی لگانے سے دماغ یا پیٹ کے اندر دوائی سرایت کر جائے تو روزہ ٹوٹ جائے گا۔

(البحر2، 486، الدرالمختار 2، 402 )

 گلوکوز لگوانے سے روزہ نہیں ٹوٹتا۔ بشرطیکہ یہ  گلوکوز کسی عذر کی وجہ سے لگایا جائے۔ بلاعذر گلوکوز چڑھانا مکروہ ہے۔ عذر کی وجہ سے رگ میں بھی انجکشن لگانے سے روزہ نہیں ٹوٹتا۔ صرف طاقت کا انجکشن لگوانے سے روزہ مکروہ ہو جاتا ہے۔ گلوکوز  کے انجکشن کا بھی یہی حکم ہے۔ بعض علماء کے نزدیک ہر قسم کے انجکشن سے روزہ  ٹوٹ جاتا ہے۔ اسلئے بہرحال  احتیاط کرنی چاہیے۔

رمضان المبارک کے مہینہ میں سرمہ لگانے اور شیشہ دیکھنے سے روزہ مکروہ نہیں ہوتا۔

(البحر 2، 490)

 

سر یا بدن کے کسی یر حصّہ پرتیل لگانے سے روزہ میں کوئی فرق نہیں آتا۔

(البحر 2، 490(

 

ٹوتھ پیسٹ کا استمال روزہ کی حالت میں مکروہ ہے۔ تاہم اگر حلق میں نہ جائے تو روزہ نہیں ٹوٹتا۔

(الدرالمختار 2، 416(

 

اگر کسی شخص کو کوئی زہریلی  چیز ڈس لے تو

اسکا روزہ نہیں ٹوٹتا نہ مکروہ ہوتا ہے۔

روزے کی قضاء، فدیہ ، کفّارہ 

اگر یاد نہ ہو کہ کس رمضان کے کتنے روزے قضاء ہوئے ہیں تو اس طرح نیّت  کرے کہ سب سے پہلے  رمضان کا پہلا روزہ جو میرے ذمہ ہے اسکی قضاء کرتا/ کرتی ہوں۔ قضا روزوں کو سال کے جن دنوں میں  بھی قضا کرنا چاہیں قضا کر سکتے ہیں۔  مسلسل رکھنا ضروری نہیں۔ صرف پانچ ایسے دن ہیں جن میں روزہ رکھنے کی اجازت نہیں ہے۔

دو دن عیدین کے 

اور تین دن ایام شریف یعنی ذی الحجہ کی گیارہویں، بارہویں اور تیرہویں تاریخ

(بدائع 2، 212، 215)

 

اگر کوئی شخص اتنا بوڑھا یا بیمار ہے کہ نہ روزہ رکھ سکتا ہے اور نہ یہ توقع ہے کہ وہ آئندہ رکھ سکے گا، اسکے لیے فدیہ ادا کر دینا جائز ہے۔ ہر روزے کے فدیہ کے لئے کسی مسکین کو دو وقت کا کھانا کھلا دیں یا دو سیرغلہ یا اسکی قیمت دے دیں۔ باقی وہ کسی دوسرے سے اپنے لئے روزہ نہیں رکھوا سکتا۔ شریعت میں کمزور شخص کے لئے فدیہ  دینے کا حکم ہے۔

(البحر 2، 501)

 

  روزوں کا فدیہ ایک ہی مسکین کو ایک ہی وقت  میں دے دینا جائز ہے مگر اس میں اختلاف ہے۔ اسلئے احتیاط تو یہی ہے کہ کئی روزوں  کا فدیہ  ایک شخص کو نہ دیں لیکن دے دینے میں بھی گنجائش ہے۔

جو شخص ایسی حالت میں مرے کہ  اسکے ذمہ روزے ہوں یا نمازیں ہوں، اس پر فرض ہے کہ وصیت کر کے مرے کہ اسکی نمازوں کا اور روزوں  کا فدیہ  ادا کر دیا جائے۔ اگر اس نے وصیت  نہیں کی تو گنہگار ہوگا ۔اگر میت نے فدیہ  کرنے کی وصیت  کی ہو تو میت  کے وارثوں پر فرض ہوگا کہ مرحوم کی تجہیز و تکفین اور ادائے قرضہ جات کے بعد اسکی جتنی جایئداد باقی رہی اس کی تہائی میں سے اسکی وصیت  کے مطابق اسکی نمازوں اور روزوں کا فدیہ ادا کریں۔  اگر مرحوم نے وصیت  نہیں کی یا اس نے مال نہیں چھوڑا، لیکن وارث  اپنی طرف سے مرحوم کی نماز اور روزوں  کا فدیہ  ادا کرتا ہے تو اللّه تعالیٰ کی رحمت سے توقع ہے کہ یہ فدیہ  قبول کر لیا جائے گا۔

ایک روزے کا فدیہ  صدقہ فطر کے برابر یعنی پونے دو کلو غلہ ہے۔ پس ایک رمضان کے تیس روزوں  کا فدیہ  ساڑھے باون کلو ہوا۔ اور تین رمضانوں کے نوے روزوں  کا فدیہ  5- 157 کلو غلہ ہوا۔ اسی کے مطابق مزید کا حساب کر لیا جائے۔

(ردالمختار 2، 426(

 

جو شخص روزے رکھنے کی طاقت رکھتا ہو اسکے لئے روزہ توڑنے کا کفّارہ  دو مہینے کے پے در پے روزے رکھنا ہے۔ اگر درمیان میں ایک بھی روزہ چھوٹ گیا تو دوبارہ نئے سرے سے شروع کرے۔

(ردالمختار 2، 412(

اگر چاند کے مہینے کی پہلی تاریخ سے روزے شروع کیے تھے تو چاند کے حساب سے دو مہینے کے روزے رکھے خواہ یہ مہینے 29/29  کے ہوں یا 30/30 کے۔

لیکن اگر درمیان مہینے سے شروع کیے تو ساٹھ دن پورے کرنے ضروری ہیں۔

(بہشتی زیور)

 

جو شخص روزے رکھنے پر قادر نہ ہو وہ ساٹھ مسکینوں کو دو وقت کا کھانا کھلائے یا ہر مسکین کو صدقہ فطر کی مقدار کے برابر غلہ یا اسکی قیمت دے۔

(ردالمختار 2، 412(

 

اگر ایک رمضان کے روزے کئی دفعہ توڑے تو ایک ہی کفّارہ  لازم ہوگا۔ اور اگر الگ الگ رمضانوں  کے روزے توڑے تو ہر روزے کے لئے مستقل کفّارہ ادا کرنا ہوگا۔

(بدائع 2، 459(

 

تراویح  بیس رکعت

حضرت عبدالله بن عبّاسؓ سے روایت  ہے کہ بیشک رسول اللّه ﷺ رمضان میں بیس رکعت (تراویح ) اور وتر پڑھا کرتے تھے۔

 ابن ابی شیبہ ج 2، ص 164، سنن کبریٰ بیہقی ج 2 ص 492، مجمع الزوائد ج 3 ص 172

 

ایک اور حدیث مبارکہ  کے مطابق

جو شخص تم میں سے میرے بعد جیتا رہا وہ بہت سے اختلاف دیکھے گا۔ پس میری سنّت اور خلفا ئے راشدین مہدبین کی سنّت کو لازم پکڑو۔ اسے مضبوط تھام لو اور دانتوں سے مضبوط پکڑ لو اور نئی نئی  باتوں سے احتراز کرو کیونکہ ہر نئی بات بدعت ہے اور ہر بدعت  گمراہی ہے۔

رواه احمد و ابو داؤد و الترمذی و ابن ماجہ ، مشکوٰة ، ص 30

حضرت سائب بن یزیدؓ سے روایت  ہے کہ حضرت عمرؓ کے دور میں رمضان میں لوگ بیس رکعتیں پڑھا کرتے تھے۔

سنن  کبریٰ بیہقی، نصب الرایہ، مؤطا امام مالک

 

ابوعبد الرحمٰن سلمیٰ کہتے ہیں کہ حضرت علیؓ نے رمضان میں قاریوں کو بلایا، پس ان میں سے ایک شخص کو حکم دیا کہ بیس رکعتیں پڑھایا کرواور وترآپ خود پڑھایا کرتے تھے۔

  سنن  کبریٰ بیہقی، مصنف ابن ابی شیبہ

چودہ سو سال سے تمام علماء وفقہا کا اس پر اتفاق رہا ہے کہ نماز تراویح  بیس رکعت مسنون ہے۔ حرم مکہ و حرم مدینہ اور تمام ممالک اسلامیہ میں مسلمان اسی پر عمل پیرا رہے ہیں

بعض روایت جن میں رمضان المبارک کے قیام اللیل  کی گیارہ رکعتوں کا ذکر ہے۔ انکا تعلق نماز تہجّد یا  قیام اللیل سے ہے، نماز تراویح  سے نہیں۔

جناب نبی کریم ﷺ  نےامّت کو اپنی اور اپنے خلفاء راشدین  کی سنّت کو مضبوطی سے پکڑنے کا حکم دیا ہے۔ اسلئے تراویح  کی بیس رکعت کو مسنون سمجھتے ہوئے قلبی اطمینان کے ساتھ ادا کرنی چاہیں۔

مسائل اعتکاف

رمضان المبارک کے آخری عشرے کا اعتکاف  سنّت مؤکدہ علی الکفایہ ہے۔ اسکا مطلب یہ ہے کہ اگر کسی مسجد میں کوئی ایک شخص بھی اعتکاف پر بیٹھ جائے تو یہ سنّت ادا ہو جائے گی۔ اور اگر کوئی بھی نہیں بیٹھے گا تو سب کے ذمہ گناہ آئے گا۔

یہاں ہم اعتکاف  کے چند اہم مسائل کا تذکرہ کرتے ہیں۔

اعتکاف  مسنون، رمضان کے پورے آخری عشرے کا ہوتا ہے۔ اس سے کم اعتکاف مسنون نہیں۔

حالت  اعتکاف  میں دو طرح کے کام کرنا ناجائز ہیں۔ انکے کرنے سے اعتکاف  مسنون فاسد ہو جائے گا اور اسکی قضا کرنی ہوگی۔

اعتکاف  کی جگہ (مسجد کی حدود) سے بغیر ضرورت باہر نکلنا

 وہ کام جو اعتکاف میں کرنا ناجائز ہیں جیسے بیوی سے تعلق قائم کرنا

جس ضرورت سے مسجد سے باہر جائے اسکے پورے ہونے کے بعد وہاں نہ رکے اور جتنا ممکن ہو جلد سے جلد واپس مسجد میں پہنچ جائے۔ جیسے بیت الخلاء جانا کہ وہاں جان بوجھ کر بیکار وقت  ضائع کرنے سے اعتکاف  فاسد ہو جائے گا۔

بھولے سے بھی مسجد سے باہر نکل گیا تو اعتکاف  فاسد  ہو جائے گا۔

کسی مریض کی عیادت یا ڈوبتے  ہوئے کو بچانے کے لئے یا آگ بجھانے کے لئے یا مسجد کے گرنے کے خوف سے مسجد سے نکلنا جائز بلکہ جان بچانے کے لئے ایسا کرنا ضروری ہے۔ لیکن اس سے اعتکاف  باقی رہے گا۔

اگر کوئی شخص زبردستی مسجد سے باہر نکال دیا جائے تب بھی اسکا اعتکاف  باقی نہیں رہے گا۔

حالت اعتکاف میں مسجد کے آداب کا خیال رکھنا انتہائی ضروری ہے۔ فالتو گفتگو، بیکار گپ شپ اور وقت گزاری سے پرہیز کرنا چاہیے۔ اسکی بجائے اپنے اوقات ذکر الہی ، تلاوت قرآن ، درود شریف ، استغفار، کلمہ طیبہ کا ورد اور نفل نمازوں میں گزارنے چاہئیں۔

نفلی وضو یا ٹھنڈک حاصل کرنے کے لئے غسل یا بال سنوارنے اور چہل قدمی کے لئے مسجد کی حدود  سے باہر جانا جائز نہیں۔ حالت اعتکاف میں بغیر ضروری کسی دنیاوی کام میں مشغول ہونا مکروہ تحریمی ہے۔

اکثر لوگ رمضان المبارک میں فریضہ زکوٰة ادا کرتے ہیں۔ انکے لئے چند رہنما اصول پیش کیے جا رہے ہیں۔

 

 زکوٰة کا نصاب اور ایک غلط فہمی

اللّه تعالیٰ نے زکوٰة کا ایک نصاب مقرر کیا ہے کہ اس نصاب سے کم اگر کوئی شخص مالک ہے تو اس پر زکوٰة فرض نہیں۔ اگر اس نصاب کا مالک ہوگا تو زکوٰة فرض ہوگی۔

وہ نصاب یہ ہیں۔

ساڑھے باون  تولہ چاندی یا اسکی قیمت کا نقد روپیہ، یا زیور یا سامان تجارت

جس شخص کے پاس یہ مال اتنی مقدار میں موجود ہو تو اسے صاحبِ نصاب کہا جاتا ہے۔

پھر اس نصاب پر ایک سال گزرنا چاہیے یعنی ایک سال تک اگر کوئی شخص صاحب نصاب رہے تو اس شخص پر ڈھائی فیصد  زکوٰة واجب ہوگی۔

اس بارے میں عام طور پر یہ غلط فہمی پائی جاتی ہے کہ لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ ہر ہر روپے پر مستقل پورا سال گزرے تب اس پر زکوٰة واجب ہوتی ہے۔ یہ بات درست نہیں بلکہ جب ایک مرتبہ سال کے شروع میں ایک شخص صاحب نصاب بن جائے، مثلاً فرض کریں کے یکم رمضان کو اگر کوئی شخص صاحب نصاب بن گیا اور آئندہ سال یکم

رمضان آیا تو اس وقت بھی وہ صاحب نصاب ہے تو  ایسے شخص کو صاحب نصاب سمجھا جائے گا۔ درمیان میں جو رقم آتی جاتی رہی اسکا اعتبار نہیں۔

اموالِ زکوٰة کون کون سے ہیں؟

جانوروں کے علاوہ جن چیزوں پر زکوٰة فرض ہے وہ یہ ہیں۔

نقد روپیہ، چاہے وہ کسی بھی شکل میں ہو، نوٹ ہوں یا سکّے ہوں۔

سونا چاندی، چاہے وہ زیور کی شکل میں ہو یا سکّے کی شکل میں ہو۔ جوخواتین کے استمال میں زیور ہے اس پر بھی زکوٰة واجب ہے۔

دوسرے جس پر زکوٰة فرض ہے وہ ہے سامان تجارت۔ مثلا دکان میں جو سامان برائے فروخت رکھا ہوا ہے، اس سارےاسٹاک پر زکوٰة واجب ہے۔ البتہ اسٹاک کی قیمت لگاتے ہوئے اس بات کی گنجائش  ہے کہ آدمی زکوٰة نکالتے وقت یہ حساب لگائے کہ اگر میں پورا اسٹا ک اکٹھا فروخت کروں تو بازار میں اسکی کیا قیمت لگے گی؟

دیکھئے! ایک ریٹیل پرائس ہوتی ہے اور دوسری ہول سیل پرائس۔ تیسری صورت یہ ہے کہ پورا اسٹاک اکٹھا فروخت  کرنے کی صورت میں کیا قیمت لگے گی؟  لہٰذا جب دکان کے اندر جو مال موجود ہے وہ قیمت نکال کر پھراسکا ڈھائی فیصد زکوٰة میں نکالنا۔ البتہ احتیاط اس میں ہے کہ عام ہول سیل قیمت سے حساب لگا کر اس پر زکوٰة ادا کی جائے۔

اس کے علاوہ مال تجارت میں ہر وہ چیز شامل ہے جس کو آدمی نے بیچنے کی غرض سے خریدا ہو۔ لہٰذا اگر کسی شخص نے بیچنے کی غرض سے کوئی پلاٹ خریدا یا زمین خریدی یا کوئی مکان خریدا یا گاڑی خریدی، اور اس مقصد سے خریدی  کہ اسکو بیچ کر نفع کماؤں گا تو یہ سب چیزیں مال تجارت میں داخل ہیں۔ اگر کوئی پلاٹ، کوئی زمین، کوئی مکان خریدتے وقت شروع ہی میں یہ نیّت  تھی کہ میں اسکو فروخت کرونگا تو اسکی مالیت  پرزکوٰة واجب ہے، ورنہ نہیں۔

مالیت اس دن کی معتبر ہوگی جس دن آپ زکوٰة کا حساب کر رہے ہیں۔ مثلاً ایک پلاٹ آپ نے ایک لاکھ میں خریدا تھا۔ اور آج اس پلاٹ کی قیمت دس لاکھ ہو گئی۔ اب دس لاکھ پر ڈھائی فیصد کے حساب سے زکوٰة نکالی جائے گی، ایک لاکھ پر نہیں نکالی جائے گی۔

کمپنیوں  کے شیئرز پر زکوٰة

اسی طرح کمپنیوں  کے شیئرز  بھی سامان تجارت میں داخل ہیں۔ اور انکی دو صورتیں ہیں۔

ایک صورت یہ ہے کہ آپ نے کسی کمپنی کے شیئرز اس مقصد کے لئے خریدے  ہیں کہ اسکے ذریعے کمپنی کا منافع حاصل کرینگے اور اس پر ہمیں سالانہ منافع کمپنی کی طرف سے ملتا رہے گا۔ اس صورت میں یہ گنجائش ہے کہ شیئرز کی پوری

قیمت پر زکوٰة دینے کی بجائے کمپنی کے تفصیلی اثاثہ معلوم کریں۔ کمپنی کے جتنے فیصد اثاثے قابل زکوٰة ہوں۔ مثلاً پچاس فیصد ہوں تو شیئرز کی قیمت میں سے بھی  صرف پچاس پر زکوٰة ادا کریں۔ لیکن اگر یہ تفصیل معلوم نہ ہو سکے تو پھر شیئرز  کیپٹل گین   کیلئے خریدے ہیں۔ یعنی نیّت  یہ ہے کہ جب بازار میں انکی قیمت بڑھ جائے گی تو انکو فروخت کر کے نفع کمائیں گے۔ اگر یہ دوسری صورت ہے یعنی شیئرز خریدتے وقت  شروع ہی میں انھیں فروخت کرنے کی نیّت تھی تو اس صورت میں پورے شیئرز کی پوری  بازاری قیمت  پر زکوٰة واجب ہوگی۔

اوہ جتنے فائنانشل انسٹرومنٹس ہیں ، چاہے وہ بونڈز ہوں یا سرٹیفیکیٹس  ہوں یہ سب نقد  کے حکم میں ہیں۔ انکی اصل قیمت پر زکوٰة واجب ہے۔

کارخانہ کی کن اشیاء پر زکوٰة واجب ہے؟

فیکٹری میں جو تیار شدہ مال ہے اسکی قیمت پر زکوٰة واجب ہے۔ اسی طرح جو مال تیاری کے مختلف مراحل میں ہے یا خام مال کی شکل میں ہے اس پر بھی زکوٰة واجب ہے۔  البتہ فیکٹری کی مشینری ، بلڈنگ اور گاڑیاں وغیرہ پر زکوٰة واجب نہیں۔

جو قرضے آپ نے وصول کرنے ہیں؟

انکے علاوہ بہت سی رقمیں ایسی ہوتی ہیں جو دوسروں سے واجب الوصول ہوتی ہیں۔ مثلاً دوسروں کو قرض دے رکھا ہے یا مال ادھار فروخت کر رکھا ہے اورا سکی قیمت ابھی وصول ہونی ہے، تو جب آپ زکوٰة کا حساب لگائیں اور اپنی مجموعی مالیت نکالیں تو بہتر یہ ہے کہ ان قرضوں کو اور واجب الوصول رقموں کو آج ہی آپ اپنی مجموعی مالیت  میں شامل کر لیں۔ اگرچہ شرعی حکم یہ ہے کہ جو قرضے  ابھی وصول نہیں ہوئے تو جب تک وہ وصول نہ ہو جائیں، اس وقت تک شرعاً ان پر زکوٰة کی ادائیگی واجب نہیں ہوتی۔ لیکن جب وصول ہو جائیں تو جتنے سال گزر چکے ہیں۔ ان تمام پچھلے سالوں کی بھی زکوٰة ادا کرنی ہوگی۔

جو قرضے آپ نے ادا کرنے ہیں

پھر دوسری طرف یہ دیکھیں کہ آپکے ذمے دوسرے لوگوں کے کتنے قرضے  ہیں۔ اور پھر مجموعی  مالیت  میں سے ان قرضوں کو منہا کر دیں۔ منہا کرنے کے بعد جو باقی بچے، وہ قابلِ زکوٰة رقم ہے۔ اسکا پھر ڈھائی فیصد نکال کر زکوٰة کی نیّت  سے ادا کریں۔

ایک اہم مسئلہ

قرضوں کے سلسلے میں ایک بات اور سمجھ لینی چاہیے۔ وہ یہ کہ قرضوں کی دو قسمیں ہیں۔

ایک تو معمولی قرضے  ہیں جن کو انسان اپنی ذاتی ضروریات اور ہنگامی ضروریات کے لئے مجبوراً لیتا ہے۔

دوسری قسم کے وہ قرضے  ہیں جو بڑے بڑے سرمایہ دار پیداواری اغراض کے لئے لیتے ہیں۔ مثلا فیکٹریاں  لگانے، مشینری  خریدنے یا مال تجارت کو امپورٹ کرنے کیلئے قرضے  لیتے ہیں۔ اور اسکی تفصیل یہ ہے کہ پہلی قسم کے قرضے تو مجموعی مالیت  سے منہا ہو جاینگے۔ اور انکو منہا کرنے کے بعد زکوٰة ادا کی جائے گی۔

اور دوسری قسم کے قرضوں میں یہ تفصیل ہے کہ اگر کسی شخص نے تجارت کی غرض سے قرض لیا اور اس قرض کو ایسی اشیاء خریدنے میں استمال کیا جو قابلِ زکوٰة ہیں۔ مثلاً اس قرض سے خام مال خرید لیا۔ یا مال تجارت خرید لیا تو اس قرض کو مجموعی  مالیت  سے منہا کرینگے۔ لیکن اگر اس قرض کو ایسے اثاثے  خریدنے میں استمال کیا جو ناقابلِ زکوٰة ہیں، جیسے بلڈنگ، مشینری تو اس قرض کو مجموعی  مالیت  سے منہا نہیں کرینگے۔

زکوٰة کا مستحق کون ہے؟

زکوٰة صرف انہی اشخاص کو دی جا سکتی ہے جو

  صاحب نصاب نہ ہوں۔ یہاں تک کہ انکی ملکیت میں ضرورت سے زائد ایسا سامان موجود ہے جو ساڑھے باون  تولہ چاندی کی قیمت تک پہنچ  جاتا ہے۔ تو بھی وہ مستحقِ زکوٰة نہیں رہتے۔ اسی وجہ سے بلڈنگ کی تعمیر پر زکوٰة نہیں لگ سکتی۔ کسی ادارے کے ملازمین کی تنخواہ پر زکوٰة نہیں لگ سکتی۔

رشتے داروں کو زکوٰة دے سکتے ہیں بشرطیکہ وہ مستحق ہوں ۔ صرف دو رشتے ایسے ہیں جنکو زکوٰة نہیں دی جا سکتی۔

 ایک ولادت کا رشتہ  ہے۔ لہٰذا باپ بیٹے کو زکوٰة نہیں دے سکتا اور بیٹا باپ کو زکوٰة نہیں دے سکتا۔

دوسرا نکاح کا رشتہ ہے۔ لہٰذا شوہر بیوی کو زکوٰة نہیں دے سکتا اور ہیوی شوہر کو زکوٰة نہیں دے سکتی۔

انکے علاوہ باقی تمام رشتوں میں زکوٰة دی جا سکتی ہے۔ مثلاً بھائی، بہن، چچا، خالہ، پھوپھی، ماموں کو زکوٰة دی جا سکتی ہے۔ بعض لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ اگر کوئی خاتون بیوہ ہو یا بچہ یتیم ہو تو اسکو زکوٰة ضرور دینی چاہیے۔ حالانکہ یہاں بھی شرط یہ ہے کہ وہ مستحقِ زکوٰة ہو اور صاحبِ نصاب نہ ہو۔

رمضان میں ادائیگی زکوٰة

عام طور پر لوگ رمضان المبارک میں زکوٰة نکالتے ہیں۔ اسکی وجہ یہ ہے کہ حدیث شریف میں  ہے کہ رمضان المبارک میں ایک فرض کا ثواب  ستر گنا بڑھ جاتا ہے۔ لہٰذا زکوٰة بھی چونکہ فرض ہے ۔ اگر رمضان المبارک میں ادا کرینگے تو اسکا ثواب  بھی ستر گنا ملے گا اور یہ جذبہ بہت اچھا ہے۔ لیکن اگر کسی شخص کو اپنے پہلی مرتبہ صاحب نصاب بننے کی تاریخ معلوم ہے  تو محض اس ثواب  کی وجہ سے وہ شخص رمضان کی تاریخ مقرّر نہیں کر سکتا۔ لہٰذا اسکو چاہیے کہ وہ اسی تاریخ پر اپنی زکوٰة کا حساب کرے۔ البتہ زکوٰةکی ادایگی میں یہ کر سکتا ہے کہ اگر تھوڑی تھوڑی زکوٰة ادا کر رہا ہے تو اسی طرح ادا کرتا رہے اور باقی جو بچے اسکو رمضان المبارک میں ادا کرے۔ البتہ اگر تاریخ یاد نہیں ہے تو پھر گنجائش  ہے کہ رمضان المبارک کی کوئی تاریخ مقرّر کر لے۔ احتیاطاً زیادہ ادا کر دے تاکہ اگر تاریخ کے آگے پیچھے ہونے کی وجہ سے جو فرق ہو گیا ہو، وہ فرق بھی پورا ہو جائے۔

رمضان اور معرکہ حق و باطل

رمضان میں بھوک کی شدّت اور پیاس کی سختی میں انسان کو بلا اختیار وہ پاکیزہ لوگ یاد آ جاتے ہیں جو عام دنوں میں بھی اپنے گھروں سے دور آرام دہ زندگی اور لذّت و سرور سے بیزار، میدانوں، وادیوں، صحراؤں اور شہروں میں اللّه کے دین کی سر بلندی کے لئے ہر طرح کی تکلیف سہنے کے لئے تیار رہتے ہیں۔

یہ اللّه تعالیٰ کا عظیم الشان احسان ہے کہ اس نے امّت مسلمہ کو صرف رمضان اور قرآن جیسی بیش بہا نعمتوں اور دولتوں سے ہی نہیں نوازا بلکہ انکے تحفّظ اور دفاع کیلئے تلوار اٹھانے اور دشمن کی شان و شوکت کو خاک  میں ملانے کا حکم بھی دیا تاکہ یہ نعمتیں ہمیشہ محفوظ اور باقی رہیں۔

جہاد درحقیقت اسلام کے دفاع کا نام ہے۔ جس طرح ہر قیمتی چیز کو حفاظت و سیکورٹی کی ضرورت ہوتی ہے اسی طرح اگر اس کو چھوڑ دیا جائے تو اسلام و اہل اسلام ذلّت و غلامی کا شکار ہو جاتے ہیں۔

رمضان المبارک، قرآن پاک  اور جہاد کا چولی دامن کا ساتھ ہے۔ رمضان المبارک اور جہاد مقدّس میں اتنا مضبوط تعلق اور رشتہ ہے کہ حضور ﷺ  نے اسی مہینے میں خود میدانوں کا رخ فرمایا۔ اور خود اپنے حکم سے کئی سرایا اسی مبارک مہینہ میں روانہ فرمائے۔

 اسلامی تاریخ کا سب سے اہم  معرکہ حق و باطل یعنی غزوہ بدر، رمضان 2 ھ میں پیش آیا۔

فتح مکّہ  جسکے بعد مسلمانوں کو مرکز انسانیت  بیت اللّه پر قبضہ نصیب ہوا، رمضان 8 ھ میں پیش آیا۔

سریہ عمیرؓ بن عدی، رمضان 2 ھ میں روانہ کیا

گیا۔

سریہ عبدالله بن عتیق انصاریؓ رمضان 2 ھ میں روانہ کیا گیا۔

سریہ غالبؓ بن عبدالله اللشیی رمضان 7 ھ میں روانہ کیا گیا۔

سریہ حضرت ابو قتادہؓ بطن اضم کیطرف رمضان 8 ھ میں روانہ کیا گیا۔

 سریہ اسامہؓ بن زید حرقات جبینہ کی طرف رمضان 8 ھ میں روانہ کیا گیا۔

 سریه سعدؓ بن زید منات بت کو توڑنے کیلئے رمضان  8 ھ میں روانہ  گیا۔

سریہ خالد ؓ بن ولید عزیٰ بت توڑنے کے لئے رمضان 8 ھ میں روانہ کیا گیا۔

سریہ عمرؓ و بن العاص سواع بت کو توڑنے کے لئے رمضان 8 ھ میں روانہ کیا گیا۔

 سریہ زیدؓ بن حارثہ رمضان 6 ھ میں روانہ کیا گیا۔

سریہ علیؓ بن ابی طالب یمن کی طرف رمضان 10 ھ میں روانہ کیا گیا۔

اللّه تعالیٰ اس رمضان المبارک کو مسلمانوں کی فتح و نصرت کا مہینہ بنا دے۔ آمین

صدقہ فطر

حضرت عبدالله ابن عمر بن العاص سے روایت ہے کہ حضور اکرم ﷺ نے ایک شخص کو بھیجا کہ مکہ مکرمہ کے گلی کوچوں میں یہ اعلان کر دے کہ صدقہ فطر ہر مسلمان پر واجب ہے۔ خواہ مرد ہو یا عورت، آزاد ہو یا غلام، چھوٹا ہو یا بڑا۔

دو مد (تقریباً  دو ہیر)  گندم کے اسکے سوا ایک صاع (ساڑھے تین سیر سے کچھ زیادہ) غلہ کا۔

(ترمذی شریف)

صدقہ فطر ہر مسلمان عاقل آزاد، خواہ مرد ہو یہ عورت، اس پر واجب ہے جب کہ وہ نصاب مالک ہو۔ خواہ نقد روپے کی شکل میں ہوں یا ضرورت سے زیادہ سامان ہو یا مال تجارت ہو یا رہائش کے مکان سے زائد مکان ہو۔ اپنی طرف سے اور اپنے ان نابالغ بچوں کی طرف سے جو اسکے زیرِ کفالت ہوں، صدقہ فطر دینا لازم ہے۔ صدقہ فطر کی موجودہ رقم کا اعلان ہر سال علماء کرام کی طرف سے کر دیا جاتا ہے


18 Comments

  1. Asma on said:

    Asalaam O Alaikum.. Bhai mujhe apki ek help jahiye, Mera shouhar Sharbi hai, aur short temper bhi,
    aur mera 2 betai hain, kamne wala koi nahi hai , isliye mujhe kaam karna padaraha hai,
    mera shouhar mei koi zimedari nahi hai, tou mujhe apki help chaheye ke mai kya karoo jise yeh sahi raste pe chale aur bourry adduotho ko chudhde.

    Please help me iam really in very much in problem , i should be in home look after my children`s but due this problem i cant take care of them,,

    please ho ever read this i beg them to pray for me, & my children`s let him become good & walk on gods path…..

  2. Sabiya on said:

    Assalamu alaikum bhai, rishtedaro ke dil mai hamari family ke liye mohabbat paida karne ke liye konsa wazifa karna chahiye? Sab rishtedar hamare khilaf hai, koi bhi hamare ghar nahi ata, humne kisika kuch bhi nahi bigada hai phir bhi Sab hamari family se nafrat karte hai. Please help kigiye. Koi wazifa bata digiye. Khuda hafiz

  3. maha on said:

    Asalaam O Alaikum.. Main ny istikhara kiya that but kuh smjh nai aya jxt apni Bhai ki haan Sinai di.. Or kuh b yaad nai. Ap batayn kiya krun?

  4. Sabiya on said:

    Assalamu alaikum bhai, mera sawal hai ki ramzan ke mahine mai konse special wazife karne chahiye? Aur ramzan mai shadi ke liye konsa wazifa karna chahiye? Please reply soon. Khuda hafiz

  5. Assalamalekom ji me yhe puchana cha rhi thi ke ramzan me kya hum sheri ke bad istikhara krskte h kya phle 2 rakat nafil istikhara ki fir fajar ki namaz pdke sojye.. kya asa hum krskte h?

  6. maha on said:

    Asalaam O Alaikum.. Bhai ap k kheny k mutabiQ main ny istikhara kiya but kuh b yaad nai raha Aj again istikhara kiya or dekha k main safar my hn din k kuh log 7 hain mery but Phr road dekha or main aus road ko upr asman sy dekha rahi hn aus ko jahn sy shuru kiya vahin vapis agai jahn or aus road py mery Peron k nishan k 7 7 koi Chal raha h aus k peron k nishan kaly hain jb main ny ausy mana kiya tu vo Jo nishan tu sary hat gaye rasty sy.. Phr RAAt ka safar dekha bhai ny car li h or SB bethy hain but aus my kuh v8 ki vaja sy Chal nai rahi bhai ny mjhe bola car my sy utro.. Kesi main utri vo car Chal pati or bht ajib trhan sy Chal rahi ti jesy back taiyer hain hi nai or road bht kharab h Phr main ny khud ko car my dekha safar hi dekha bas. Ap batayn is means istikhary my na aya h.

  7. Aaisha on said:

    Assalamu Alaikum ! Nowadays I do not get any posts in English. All in Urdu. Could you please arrange me to get all posts in English.But earlier I received every thing in English and Alhamdulillah I got so much knowledge and benefits from those Wazifas and other posts.

    Jazakhallah !!!

    • Al 'Imran on said:

      Your feedback has been noted down sis. Jaza kALLAHU Khair and stay with us. #yaALLAHcomments

  8. nagma on said:

    Ramzan me ache surat bataye jo ghar me barkat ho

  9. How to contact u imran bhai i hve followed and liked all ur pages still cant send msg to u.

    • Al 'Imran on said:

      Dear sis, you can drop me a private message at http://m.me/yaALLAHyaRasul between 12:30pm-6:30pm Indian Standard Time. I will reply you there Insha ALLAH. #yaALLAHcomments

Ask your question here..