Is Music Haram in Islam? Quranic Verses About the Prohibition of Songs

Recently updated on August 13th, 2018

Is Music Haram in Islam? Quranic Verses About the Prohibition of Songs
5 (100%) 2 votes

Is Music Haram in Islam? Quranic Verses About the Prohibition of Songs

Aj ka ye post ‘Is Music Haram in Islam? Quranic Verses About the Prohibition of Songs’ is naye zamane ki mausiqi par roshni dalega. Kya ye haram hai? Jo adaat hamein ALLAH ki yad se, ALLAH aur uske Rasool SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam se door kar dein aur ghaafil kar dein. Esi adat Islam mein haram qarar di gayi hai.


Bismillah hirRahmaan nirRaheem
With The Name of ALLAH, The Gracious and The Merciful
SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam

Kya Gane Sunna Gunah Hai? Kya Isse Azab Milega?

Is-Music-Haram-in-Islam-Quranic-Verses-About-the-Prohibition-of-Songs

Why is Listening to Music Haram in Islam According to Qur’an?

Ab chahe wo mausiqi hi kyu na ho, isse kya farq parta hai? Jis qadar ham dil se naat-o-‘hamd dunte hai aur usme doob jate hai. Sunte-sunte hamse josh-o-kharosh chha jata hai ALLAH ki ibadat ka. Yahi sacha aur asal dayra hai jisme mausiqi nahi hoti. Kyuke naat-o-‘hamd gayi nahi jati kahi jati hai.

Mausiqi in Islam Haram or Halal?

Sahih Bukhari, Kitab Al-Jahad mein hai ke Ohad ke muqam par jab musalmano ko shikast ka samna karna pada aur ohad ke daman mein ek ghar numa khufiya jagah par ALLAH ke Rasool Mu’hammad SallALLAHU Alayhe Wasallam ne apne ba’az Sahaba ke sath panah li to Abu Sufeyan ne pukar kar kaha,

“Kya logon mein Mu’hammad SallALLAHU Alayhe Wasallam hain?”

Aap SallALLAHU Alayhe Wasallam ne Sahaba ko jawab dene se mana kar diya.

Chunache Abu Sufeyan ne teen martaba ye jumla kaha aur koi jawab na aya. Is par wo bohat khush hua aur kahne laga,

“Kya logon mein Abu Bakar hai?”

Ye jumla bhi us ne teen martaba kaha magar use koi jawab na mila. Iske bad wo bola,

“Kya logon mein Umar hai?”

Ye jumla bhi us ne teen martaba kaha magar use koi jawab na mila. Chunache wo apni qaum ki taraf mutwajjah hua aur kahne laga,

“Jahan tak in logon ka taluq hai to ye sab qatal kar diye gaye hai.”

Chunache Hazrat Umar Radi ALLAHU Anhu apne uper qabu na rakh sake aur bole,

“Ae ALLAH ki dushman! ALLAH ki qasam! Tum ne jhoot bola hai. Jin logon ko tum ne shumar kiya wo sab zindah hain.”

Is par Abu Sufeyan na’are lagane laga.

“Hubal but ki jay, hubal buland rahe”.

(Yani hubal zindah baad)

Is par Nabi Kareem SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya,

“Tum ise jawab kyun nahi dete?”

Is par Sahaba ne pucha,

Ae ALLAH ke Rasool SallALLAHU Alayhe Wasallam! Hum kya jawab dein?

To Aap SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya, tum kaho,

“ALLAH Bala Bartar aur Pur Jalaal hai.”

Ghaur farmaiye! ALLAH ke Rasool SallALLAHU Alayhe Wasallam ko na apni zat ki parwah thi na apne yar Abu Bakar aur na apni murad Umar Farooq ki parwah thi. Lekin jab Abu Sufeyan ne ALLAH Ta’ala ki tauheed ko chellenge kiya. Button ki jay ka na’ara lagaya. To ALLAH ke Rasool SallALLAHU Alayhe Wasallam fauran bole ke ise jawab kyun nahi dete?

ALLAH ki bulandi aur jalaal ka tazkirah kar ke apne ALLAH ki azmat ka na’ara buland kar ke jawab do.

Ye tha ALLAH ke waqar ka khayal jis se ALLAH ke Rasool SallALLAHU Alayhe Wasallam lehza bhar bhi khamosh na rahe.

Alhamdulillah, khalis ALLAH Ta’ala ki taufiq ke sath hum is nazariye aur aqeede ka jawab de rahe hain jo ALLAH Ta’ala ki tauheed ke munafi hai.

Sahih Bukhari mein ALLAH ke Rasool SallALLAHU Alayhe Wasallam ka farman hamesha samne rahta hai ke jab Aap SallALLAHU Alayhe Wasallam Hazrat Ali Radi ALLAHU Anhu ko khaibar ke muqam par yahud se ladne ke liye rawana farma rahe the to ye bhi nasihat farma rahe the ke,

“Ae Ali! Agar ek bandah tere zariye raah-e-rast par aa jata hai to ye tere liye surkh oonton se behtar hai.”

‘Surkh oont’ jo aj bhi aam oony se qeemati hai. Ise sehraayi jahaz kaha jata hai. Ye apne waqt ka helicopter aur mercedes car thi.

To aaiye! ALLAH ke bandon ko khark ki daldal se jikal kar rohaid  ki pur-waqar aur thandi sadak par layen aur unhe jannat ki taraf rawan dawan gadi mein sawar kar ke jannat ki sawariyan pane ke haqdar banayen.

Gal Samajh Lai Te Raula Ki
Ae Ram Raheem Te Maula Ki…

Punjab ke Maa’roof Sufi Shayer Baba Bulhe Shah ne kya khoob farmaya,

“Such kawan te bhanbad machda ae”

Qarain karaam! Ab bat ye hai ke ye jumla to har firqe ka hamil kehta hai aur keh sakta hai ke chunke hum such kehte hain, lehaza hamari succhi bat par bhanbhad machda ae. Dekhna ye hai ke such ko dhundne aur pane ka mayar kya hai? To ek Musalmam ke han such aur haq, jhoot aur batil ke darmeyan imteyaz aur farq karne wali shae, Rab ka Qur’an hai ke jise ALLAH Azzawajal ne ‘Furqan’ bhi kaha hai. Aur jis Azeem Shakhsiyat par ye Qur’an Kareem nazil hua, Us Ahmad-e-Mustafa sallALLAHU Alayhe Wasallam ki zuban mubarika se nikla hua ke ek jumla bhi haq aur batil ke darmeyan imteyaz (faraq) karne wala hai.

Hamare pyare aur Mahboob Paighamber SallALLAHU Alayhe Wasallam ne jab tauheed ki dawat di to, bhanbad us waqt bhi macha tha aur ye ke sirf ALLAH Ta’ala ki ibadat ki jaye. Aur Min dun-il-ALLAH  ka inkar alal ailan danke ki chot par kiya jaye. Ye kam jab bhi kiya jayega bhanbad machte raheinge. Magar ye bhanbad tauheed ki dawat se na aj tak ahle tauheed ko rok sakein hain aur na hi ayendah kabhi rok sakeinge. Insha ALLAH!

Most Powerful yaALLAH Dua Wazaif

Is Music Haram in Islam? Quranic Verses About the Prohibition of Songs

Baba Bulhe Shah ka Mukhtasir Ta’aruf

Bulhe Shah ka asal nam Abdullah aur walid ka nam Sakhi Mu’hammad Darwesh hai. In ke abaao ajdaad “Mulkwaal” ke rehne wale the. Jahan se tarke watan kar ke Qusoor ke nazdeek ek Gaon “Panoki” mein aa base. Bulhe shah ki paidaish “Uch Geelaniyan” 1960 mein hui. Unki ye badqismati hi rahi ke wo bachpan mein wajbi si ibtadai taleem ke elawa mazid na parh sake. Jabke jawan ho kar ilme batin ke chakron mein ulajh gaye aur yun deeni taleem se mahroon ho gaye aur ek Sufi Shah Anayet ke murid ho gaye.

Prem Singh Bedi ne 1896 mein chapne wali kitab “Kafi Haye Bulhe Shah” mein Bulhe Shah ko an-padh qarar diya hai. Bulhe Shah apne sayyed hone ka dawa karte hain, jaisa ke apne ek sher mein kehte hain,

‘’Bulhe nu Samjhawan aiyan bhainan te bahrjaiyan
Aal Nabi, Aulad Ali di, Bulheya tu kyun leekan laaiyan’’

Bulhe Shah ke mashaaghil mein sab se pasandeeda mashghala nachna aur raqs karna tha aur yun wo tareeqat ki chatri tale raqs kar ke apne tamam ishq ki bharas nikalte the. Nachne gane aur raqso surood ki bina par unki dosti nachne gane wale logon se khub thi. Us daur mein ek tablah Nawaz faqeer bakhsh jo Baba Dhanna ke nam se mashoor tha, Bulhe Shah ka hamnawaz tha.

Jab Bulhe Shah ghungroo bandhne ke bad chan chan kar raqse ma’arfat farmate to ye baba Dhanna khub tablah bajata.yun dono apni apni jaddo jehad mein masroof rehte aur tareeqat ki seeriyan charte jate. Manzilen te karte jate.

Inke silsila Qadriya Shatariya mein ye kam na sirf jayez the ma’arfat ki manzilen te karne ka zariya the. Yahi waja hai ke in kamo ne filmi logon ko inka aqeedat mand bana diya hai, jiski bina par har sal unke Urs par aa kar wo khoob baba ke challan yani ‘’Raqs nach gane’’ par amal karte hain. baa ke Urs ke jiske mani hi shadi ke hain, se mujhe yad aya ke Bulhe Shah ki to sari zindagi hi shadi nahi ho saki aur na unho ne shadi ki.

Kyun? Kya wajuhaat the?

Ye to ALLAH hi behtar janta hai lekin ahle tareeqat ke han Sunnat-e-Rasool SallALLAHU Alayhe Wasallam ke bar’aks shadi na karna bhi walayet ki ek bohat bari nishani hai. Beharhal bat ho rahi thi Baba Bulhe Shah ki shadi ki to haqeeqi shadi se to wo marte dam tak mahroon rahe jabke marne ke bad ab har sal filmi adakar aur adakarayen unke Urs yani shadi karte hain.ek bat ye bhi hai ke Baba Lakka ki agarche shadi to na ho saki, lekin wo auraton mein ishq-e-majazi aur husn ke hamesha mutlashi rahe.

Isliye unke kalaam mein aurat ban kar sher kehna, apne ap ko aurat ke roop mein zaher karna, jawan larkiyon ko mukhatib karna, am taur par paya jata hai. Jisko ishq ka nam diya jata hai. See what is love in Islam here.

Bulhe Shah ke kalaam se ye bhi pata chalta hai ke shayed wo ishq-emajazi ke zariye ishq-e-haqeeqi tak rasayi ke liye kisi dosheezah mein dilchaspi rakhte the. Jo unke as pas kahin maujud thi aur charkha kata karti thi. Unki shayeri mein uske mutaliq kafi ashaar paye jate hain. Ek jaga usko yun mukhatib kar ke kehte hain,

Kar maan na husn jawani da
Pardes na rahan selaani da
Sanu aa Mil Yar Pyareya

Bulhe Shah ka daur wo tha jab angrez Barresaghir par apni makruh Chalon aur sazishon ke zariya qabza karta hua aandhi ki tarah badhta chala aa raha tha. Musalman the ke apni azadi ke liye hath paon mar rahe the. Mujahdeen jahad kar rahe the. Log mazhabi tabqe (Ulma, Fuqha, mashaikh, Sufiya aur gaddi nasheen hazraat) ki taraf kan lagaye hue the ke wo jahad ka hukam dein to hum apni jan par khel jayen. Mujahdeen janon ka nazrana pesh kar rahe the. Muslamano ke khoon se galiyan, bazar aur shehar surkh the. Us waqt jab angrez ki lagayi aag Punjab tak aa pohanchi. Baccha baccha muztarib aur pareshan tha. Bulhe Shah chunke husne ishq aur mahboob pasand tabiyat ke malik the. Isliye wo us waqt apne mahboob ki yad mein magan the aur duniya aur mafiya se bekhabar usko yun pukar rahe the.

Sanu aa mil yar pyar ya
Dar khula hashr azaab da
Bura hal hoya Punjab da
Wich hawe dozakh sareya
Sanu aa mil yar pyar ya

Bulhe Shah ke aqayed aur ifkaar jo ke Shariyate Mutahhara ke sra sar khilaf hi na the bulke wo inka mazaq bhi udate the, jinki tafseel ap agle safhaat mein parheinge. Ye aqayed wa nazariyat jab Bulhe Shah ke daur ke logon ke ilm mein aye to wo Bulhe Shah se sakht nafrat karne lage. Hatta ke jab 1758 mein Bulhe Shah ne wafat payi to Ulma ne unka janaza parhne se inkar kar diya aur awam ne unka janaza na parha hatta ke unki mayyat teen roz tak Qusoor ke qabarastan (jahan darbar waqe hai) mein be-yaro madadgaar ibrat ka namuna bani pari rahi.

Teesre din Bulhe Shah ke hum pyala o hum nawala Peer Shah Hamdani ne jo kisi kam ke silsila mein shahar se baher gaye hue the, wapis ane par Bulhe shah ka janaza parhwaya. Aur unko usi qabarastan mein dafan kar diya jahan aj Bulhe Shah ka mazar waqe hai.

Popular Readings

Mausiqi Haram hone ke Wazeh Dalayel

Deene Islam ne wazeh taur par mauseeqi ko haram qarar diya hai. Qur’an Majeed, Ahadeese Nabvi SallALLAHU Alayhe Wasallam aur Sahaba Karaam afhaame deen (yani deen ki samajh rakhne wale) Islam ke in teeno aham aur buneyadi ma’akhaz se mausiqi ka haram hona wazeh hota hai.

Is Music Haram in Islam? Quranic Verses About the Prohibition of Songs

Qur’ani Dalayel

ALLAH Subhanahu Wata Ala farmate hain,
Tarjuma: ”Pas kya tum is bat se ta’ajjub karte ho? aur hans rahe ho? rote nahi? balke tum khel rahe ho. Ab ALLAH ke samne sajde karo aur usi ki ibadat karo.”
(Surat Al-Najam, 59-62)

Hazrat Ibn abbas ke mutabiq Surat Al-Najam ki mazkura bala ayat no.61 mein lafz ”Samidoon” ka mushrikeen ki us adat ki taraf ishara hai ke jahan kahin wo Qur’an Shareef ki tilawat hote dekhte to zor zor se gana bajana aur mausiqi ka shaur karne lagte, taa ke Qur’an ki tilawat karne wale shakhs ki awaz ko duba diya jaye. Aur logon ko wo tilawat sunne se roka ja sake.

Is mauzu par Qur’an Shareef ki ye ayat mulaheza kijiye.
Turjuma: ” In mein se jise bhi tu apni awaz se bahka sake bahka le aur in par apne sawar aur pyade chadha dal aur unhe (jhoote wade) de le. In se jitney bhi wade shaitan ke hote hain sarasar fareb hain.”
(Surat Bani-Israeel, ayat no.64)

Azhaaq aur Mujahid jaise Taaba’een ne is ayat ki tashreeh karte hue likha hai ke shaitan ka apni awaz se bahkane ka matlab mausiqi, gane bajane aur tafreeh ke saz-o-saman ka istemal karna hai.
Azhaaq kahte hain ke is se murad mausiqi ki awaz wale alaat hain.

Hazrat Ibn Abbas is taluq se kahte hain ke is ayat ka ishara har us pukar aur bahkawe ki taraf hai jo ALLAH Ta’ala ki nafarmani ki taraf bulaye.

Ulma-e-Deen ke han ise hi sab se munasib tashreeh tasleem kiya gaya hai.

ALLAH Ta’ala ek aur jagah irshad farmate hain,
Turjuma: ”Aur baaz log aise bhi hain jo lughw baton ko mol lete hain ke be-ilmi ke sath logon ko ALLAH ki rah se bahkayen aur use hansi banayen, yahi wo log hain jin ke liye ruswa karne wala azaab hai.”
(Surat Luqmaan, ayat no.6)

Is ayat ke taluq se Hazrat Ibn Masood farmate hain.
”Main Us Zat ki qasam kha kar kahta hon jis ke siwa koi Ma’abud nahi ke is ayat ka ishara gane bajane ki taraf hai.”

Aur unho ne is jumle ko teen bar dohraya.
Hazrat Ibn Abbas ne bhi kaha hai ke is ayat ka ishara gane bajane waghaira ki taraf hai. Jab ke Hazrat Jabar ke bare mein riwayet hai ke unho ne is ayat ka mafhoom gana bajana aur gana sunna liya hai.

Mujahid, Akrama, Makhool Umar bin Shoaib jaise kayi Taaba’een ne is ayat ko yaqeeni taur par gane aur mausiqi ki hurmat ki daleel ke taur par liya hai.

Ahadees-e-Nabvi SallALLAHU Alayhe Wasallam Se Dalayel

Mausiqi ke taluq se logon ke aam khayal ke bar-aks Nabi Aakhiruz-Zaman Hazrat Mu’hammad SallALLAHU Alayhe Wasallam ki aisi beshumar ahadees warid hui hain jo wazeh taur par is ghair mutnaze haqeeqat ki taraf ishara karti hain ke mausiqi. Alaat-e-mausiqi aur lah-o-sur ke sath alaat-e-mausiqi ka istemal karna islami shariyat main haram hain.

Mausiqi ki hurmat ke taluq se shariyat-e-islami ke is aam asul mein jo istasna hai wo hai mausiqi ke alaat ke baghair gane ya sur ka istemal karne ki ijazat. In alaat mein bhi jin ki choot di gayi hai wo sirf ek sada sa hath se bajaya jane wala ”Daf” hai. Khas bat ye hai ke ye ijazat bhi aahadees mein kuch makhsoos mawaqe ke liye di gayi hai.

Bad qismati se aj bohat se musalman is ghalat tasavvur ka fayedah utha rahe hain ke mausiqi, gane bajane aur alaat-e-mausiqi se mutaliq jo ahadees warid hui hain wo ya to zaeef hain ya phir mozu yani ghadi hui hain, jab ke mausiqi aur gane bajane par logon ka ye mauqaf naqable dafaa hai.

Sahee Bukhari ki Rawayaat

Rasool Akram SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya ke,

 ”Meri ummat ke kuch log zana, resham ke libas, sharab aur mausiqi ke alaat (ma’azaf) ko halal kar leinge. In mein se kuch log ek pahad ke pas rahte honge, sham ke waqt unka charwaha unke pas ayega aur un se unki zarooriyat puchega to wo kahenge ke (abhi jao aur) hamare pas kal aao.

ALLAH Ta’ala us rat ko un par wo pahad gira kar unhe halak kar dega. Jab ke baqi mandah logon ko bandar aur sur bana dega aur wo usi halat mein raheinge jab tak ke qayamat na aa jaye.”

Top Rated yaALLAH Dua Wazaif

Aljhohri, Qadeem dictionary ”Al-Sahah” ke murattib is bat par zor dete hain ke is hadees mein ma’azaf se murad mausiqi ke alaat hain. Al’azaf se murad gane wala aur ”Azaf” ka matlb ‘hawa ki awaz’. Is taluq se Al-Zubaidi bhi kahte hain ke ma’azaf se murad mausiqi ke alaat hain jinke upper marne ya khelne se awaz nikalti hai. Jaise ke ”Ood”, drum/dhol, tanbur ya is tarah ke deegar mausiqi ke alaat.

drums-not-allowed-islam-yaALLAH-240617

Fatah Al-Bari mein Ibn Hajar likhte hain ke ”azaf” ka istemal gane (ghanaa) ke liye hota hai.

Ye ma’utabar hadees sareeh taur par mausiqi aur gane bajane ko haram qarar deti hai aur ye apne ap mein har us shakhs ke liye kafi hai jo haqeeqat mein is mamle ki succhayi se waqif hone ka khawahishmand ho. Beharhal is mozu par degar ahadees bhi maujud hain jo darj zail hain.

Ibn-e-Majah ki Rivayat hai,

Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe wasallam ne irshad farmaya,

”Meri ummat ke kuch log sharab piyen ge magar wo ise iske asal nam ke elawa kisi aur nam se pukarenge. Mausiqi ke alaat aur gane waliyon ke zariya unke liye tafreeh aur khel ka saman kiya jayega. ALLAH Ta’ala unhe zameen mein dhansa deinge aur (unhi mein se) deegar ko bandar aur sur bana deinge.”

Is hadees ko Behaqqi aur Ibn Asakar ne bhi riwayat kiya hai jab ke hadees ke ma’aroof Alim Ibn Qaim ne is hadees ko ma’utabar qarar diya hai.

Imam Ahmad bin Hanbal ki Rawaiyaat

Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe Wasallam ne irshad farmaya,

”Beshak ALLAH Ta’ala ne sharab, jua, alkobah aur har tarah ke nashe ko haram qarar diya hai.”

Safyan kahte hain ke maine hadees bayan karne wale Ali bin Bazeema se pucha ‘Alkobah’ kya hai? To unho ne jawab diya ke ye drum (dhol) hai.

Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe Wasallam ne farmaya,

”Beshak ALLAH Ta’ala ne meri ummat ke liye sharab, jua, Makayi se banayi gayi mashroob, drum (dhol), spring se bane alaat (mausiqi) ko haram qarar thahraya hai aur Us ne mujhe ek aur namaz se fazilat bakhshi hai aur wo hai ‘Witr’.”

Hakim aur Degar ki Rawaiyaat

Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe wasallam ne farmaya,

”Beshak maine rone se mamn’at nahi ki balke maine mana kiya hai do awazon se jo ke bewaqoofana, badbakhtana aur besharmi wali (awazein) hain.
In mein se ek awaz (gane ki) wo hai jo alaate mauseeqi aur shaitani alaat ka sath dene ke liye ho, dusri kisi afat ki wajah se nikalne wali (noha ki) jis mein kapda aur chehra phada jaye magar ye awaz dard mandi se hasil hoti hai aur jo koi hamdardi ka izhar na kare wo ise hasil nahi kar sakta.”

Is hadees ko ”Husn” qarar diya gaya hai aur is hadees ko deegar kayi ahadees se taqwiyat mili hai.

Abu Bakar Al-Shaf’ai ki Rawaiyaat

Anas bin Malik se riwayet hai ke Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe Wasallam ne

,farmaya

Do tarah ki awazein badbakhtaana hain, alaate mausiqi (mazmar) ki awaz jo khushi aur shan-o-shaukat ke mawaqe par bajaya Jaye, aur dusri noha khawani

.”ki awaz jo musibat ke waqt nikali jaye

Mazkurah baala ayaat aur rawaiyaat ye sabit karne ke liye kafi hain ke mausiqi aur alaate mausiqi ke sath gana haram hai aur iska sunna bhi haram hai

Jaisa ke Qur’an Pak mein Irshad-e-baari

Ta’ala hai.

“Jo dil se mutwajjah ho kar kaan lagaye.”

(Surat Qaaf, ayat 37)

 Is Music Haram in Islam? Quranic Verses About the Prohibition of Songs

Sahaba Karaam ka Tareeqa

Is bat par sabhi ka itfaq hai ke Rasool ALLAH SallALLAHU Alayhe Wasallam ke bad Aap SallALLAHU Alayhe Wasallam ke Sahaba Karaam Radi ALLAHU Anham hi sab se behtareen insan the. Jinhe deene islam ki sab se zyadah behtar faham hasil thi kyunke unho ne deen ko barahe raast Nabi Kareem SallALLAHU Alayhe Wasallam se sikha tha. Is masle par Sahaba Karaam Radi ALLAHU Anham ka itfaqe raye hone se ye bat lazim ho jati hai ke is makhsus masle par har nasal aur har sadi ke Ulmaaye deen mein bhi makammal itfaqe raye ho.

Must Read

Jaisa ke tamam Sahaba Karaam mutfiqqah taur par mausiqi ki hurmat ke  mamle mein yak-raye the, garche unho ne Sunnat-e-Nabvi SallALLAHU Alayhe Wasallam se sabit ek khas astasna ki ijazat di.

Mausiqi ke is mozu par charon Khulfaye Rashdeen aur digar Fuqha Sahaba ki raye bhi yahi hai jo Ibn Masood aur Ibn Abbas (uper bayan kiya ja chuka hai) ki thi.

Is Music Haram in Islam? Quranic Verses About the Prohibition of Songs in Urdu

اسلام میں موسیقی کا مقام

صحیح بخاری، کتاب الجہاد میں ہے کہ احد کے مقام پر جب مسلمانوں کو شکست کا سامنا کرنا پڑا اور احد کے دامن میں ایک غار نما خفیہ جگہ پر اللّٰه کے رسول صلی اللّٰه علیہ وسلم نے اپنے بعض صحابہ کے ساتھ پناہ لی تو ابوسفیان نے پکار کر کہا۔
“کیا لوگوں میں محمد صلی اللّٰه علیہ وسلم ہیں؟”
آپؐ نے صحابہ کو جواب دینے سے منع کر دیا۔
چنانچہ ابوسفیان نے تین مرتبہ یہ جملہ کہا اور کوئی جواب نہ آیا۔ اس پر وہ بہت خوش ہوا اور کہنے لگا۔
“کیا لوگوں میں ابوبکر ہے؟”
یہ جملہ بھی اس نے تین مرتبہ کہا مگر اسے کوئی جواب نہ ملا۔ اس کے بعد وہ بولا۔
“کیا لوگوں میں عمر ہے؟”
یہ جملہ بھی اس نے تین مرتبہ کہا مگر اسے کوئی جواب نہ ملا۔ چنانچہ وہ اپنی قوم کی طرف متوجہ ہوا اور کہنے لگا۔
جہاں تک ان لوگوں کا تعلق ہے تو یہ سب قتل کر دیئے گئے ہیں۔
چنانچہ حضرت عمر اپنے اوپر قابو نہ رکھ سکے اور بولے۔
اے اللّٰه کے دشمن! اللّٰه کی قسم! تم نے جھوٹ بولا ہے۔
“جن لوگوں کو تم نے شمار کیا، وہ سب زندہ ہیں۔”
اس پر ابوسفیان نعرے لگانے لگ گیا۔
“حبل بت کی جے حبل بلند رہے۔”
(یعنی حبل زندہ باد)
اس پر نبی کریم صلی اللّٰه علیہ وسلم نے فرمایا۔
اَلَا تُجِیبُونَهُ؟
“تم اسے جواب کیوں نہیں دیتے؟”
اس پر صحابہ نے پوچھا: اے اللّٰه کے رسولؐ ! ہم کیا جواب دیں؟
تو آپؐ نے فرمایا، تم کہو۔
اَللّٰهُ اَعلٰی وَاَجَلُّ
“اللّٰه بالا برتر اور پر جلال ہے۔”

قارئین کرام! غور فرمائیے! اللّٰه کے رسول صلی اللّٰه علیہ وسلم کو نہ اپنی ذات کی پرواہ تھی ، نہ اپنے یار ابو بکر، نہ اپنی مراد عمر فاروق کی پرواہ، لیکن جب ابو سفیان نے اللّٰه کی توحید کو چیلنج کیا۔ بتوں کی جے کا نعرہ لگایا۔ تو اللّٰه کے رسول صلی اللّٰه علیہ وسلم فوراً بولے کہ اسے جواب کیوں نہیں دیتے؟ اللّٰه کی بلندی اور جلال کا تذکرہ کر کے اپنے اللّٰه کی عظمت کا نعرہ بلند کر کے جواب دو۔ یہ تھا اللّٰه کے وقار کا خیال جس سے اللّٰه کے رسول صلی اللّٰه علیہ وسلم لحظہ بھر بھی خاموش نہ رہے۔
قارئین کرام! بحمد اللّٰه، خالص اللّٰه تعالیٰ کی توفیق کے ساتھ ہم اس نظریے اور عقیدے کا جواب دے رہے ہیں جو اللّٰه تعالیٰ کی توحید کے منافی ہے۔
صحیح بخاری میں اللّٰه کے رسول صلی اللّٰه علیہ وسلم کا یہ فرمان ہمیشہ سامنے رہتا ہے کہ جب آپؐ حضرت علی کو خیبر کے مقام پر یہود سے لڑنے کے لئے روانہ فرما رہے تھے تو یہ بھی نصیحت فرما رہے تھے کہ
اے علی! اگر ایک بندہ تیرے ذریعہ راہِ راست پر آ جاتا ہے تو یہ تیرے لیے سرخ اونٹوں سے بہتر ہے۔

سرخ اونٹ جو آج بھی عام اونٹ سے قیمتی ہے۔ اسے صحرائی جہاز کہا جاتا ہے۔ یہ اپنے وقت کا ہیلی کاپٹر اور مرسڈیز گاڑی تھی۔ تو آئیے! اللّٰه کے بندوں کو خرک کی دلدل سے نکال کر روحید کی پر وقار اور ٹھنڈی سڑک پر لائیں اور انہیں جنت کی طرف رواں دواں گاڑی میں سوار کر کے جنت کی سواریاں پانے کے حقدار بنائیں۔

گل سمجھ لئی تے رولا کیہ
رام، رحیم تے رولا کیہ

پنجاب کے معروف صوفی شاعر بابا بلھے شاہ نے کیا خوب فرمایا۔
سچ کہواں تے بھانبڑ مچدا اے
قارئین کرام! اب بات یہ ہے کہ یہ جملہ تو ہر فرقے کا حامل کہتا ہے اور کہہ سکتا ہے کہ چونکہ ہم سچ کہتے ہیں لہٰذا ہماری بات پر “بھانبڑ مچدا اے”. دیکھنا یہ ہے کہ سچ کو ڈھونڈنے اور پانے کا معیار کیا ہے؟ تو ایک مسلمان کے ہاں سچ اور حق، جھوٹ اور باطل کے درمیان امتیاز اور فرق کرنے والی شے، رب کا قرآن ہے کہ جسے اللّٰه نے فرقان بھی کہا ہے اور جس عظیم شخصیت پر یہ قرآن عظیم نازل ہوا، اس  احمد مصطفٰی صلی اللّٰه علیہ وسلم کی زبان مبارکہ سے نکلا ہوا ایک ایک جملہ بھی حق و باطل کے درمیان امتیاز کرنے والا ہے۔
ہمارے پیارے اور محبوب پیغمبر صلی اللّٰه علیہ وسلم نے جب توحید کی دعوت دی، بھانبڑ اس وقت بھی مچا تھا اور یہ کہ صرف اللّٰه کی عبادت کی جائے۔ اور من دون اللّٰه کا انکار علی الاعلان ڈنکے کی چوٹ پر کیا جائے۔ یہ کام جب بھی کیا جائے گا، بھانبڑ مچتے رہیں گے۔ مگر یہ بھانبڑ توحید کی دعوت سے نہ آج  تک اہل توحید کو روک سکیں ہیں اور نہ ہی آئندہ کبھی روک  سکیں گے۔ انشاء اللّٰه۔


بابا بلھے شاہ کا مختصر تعارف
بلھے شاہ کا اصل نام عبد اللہ اور والد کا نام سخی محمد درویش ہے۔ انکے آباؤ اجداد ملکوال کے رہنے والے تھے۔ جہاں سے ترک وطن کر کے قصور کے نزدیک ایک گاؤں پانڈوکی میں آ بسے۔ بلھے شاہ کی پیدائش اچ گیلانیاں ۱۶۸۰ میں ہوئی۔ انکی یہ بدقسمتی ہی رہی کہ وہ بچپن میں واجبی سی ابتدائی تعلیم کے علاوہ مزید نہ پڑھ سکے۔ جبکہ جوان ہو کر علم باطن کے چکروں میں الجھ گئے اور یوں دینی تعلیم سے محروم ہو گئے اور ایک صوفی شاہ عنایت کے مرید ہو گئے۔

پریم سنگھ بیدی نے ۱۸۹۶ میں چھپنے والی کتاب “کافی ہائے بلھے شاہ” میں بلھے شاہ کو ان پڑھ قرار دیا ہے۔ بلھے شاہ اپنے سیّد ہونے کا دعویٰ کرتے ہیں۔ جیسا کہ اپنے ایک شعر میں کہتے ہیں۔

بلھے نوں سمجھاون آئیاں بھیناں تے بھرجائیاں
آل نبی، اولاد علی دی، بلھیا توں کیہ لیکاں لائیاں

بلھے شاہ کے مشاغل میں سب سے دل پسند مشغلہ ناچنا اور رقص کرنا تھا۔ اور یوں وہ طریقت کی چھتری تلے رقص کر کے اپنے ناتمام عشق کی بھڑاس نکالتے تھے۔ ناچنے، گانے اور رقص و سرود کی بناء پر انکی دوستی ناچنے گانے والے لوگوں سے خوب تھی۔ اس دور میں ایک طبلہ نواز فقیر بخش جو بابا دھنا کے نام سے مشہور تھا، بلھے شاہ کا ہمنوا تھا۔ جب بلھے شاہ گھنگھرو باندھنے کے بعد چھن چھن کر رقص معرفت فرماتے تو یہ بابا دھنا خوب طبلہ بجاتا۔ یوں دونوں اپنی اپنی جدوجہد میں مصروف رہتے اور طریقت کی سیڑھیاں چڑھتے جاتے۔ منزلیں طے کرتے جاتے۔
انکےسلسلہ قادریہ شطاریہ میں نہ صرف یہ کام جائز تھے بلکہ معرفت کی منزلیں طے کرنے کا ذریعہ تھے۔

یہی وجہ ہے کہ ان کاموں نے فلمی لوگوں کو انکا عقیدث مند بنا دیا ہے، جسکی بناء پر ہر سال انکے عرس پر آ کر وہ خوب بابا کے چلن یعنیرقص ناچ گانے پر عمل کرتے ہیں۔ بابا کے عرس کہ جسکے معنی ہی شادی ہے، سے مجھے یاد آیا کہ بلھے شاہ کی تو ساری زندگی شادی ہی نہ ہو سکی اور نہ انہوں نے شادی کی۔ کیوں؟ کیا وجوہات تھیں؟ یہ تو اللہ ہی بہتر جانتا ہے لیکن اہلِ طریقت کے ہاں سنتِ رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے برعکس شادی نہ کرنا بھی ولایت کی ایک بہت بڑی نشانی ہے۔ بہرحال بات ہو رہی تھی بابا بلھے شاہ کی شادی کی، تو حقیقی شادی سے تو وہ مرتے دم تک محروم ہی رہے جبکہ مرنے
کےبعد اب ہر سال فلمی اداکار اور اداکارائیں انکا عرس یعنی شادی کرتے ہیں۔

ایک بات یہ بھی ہے کہ بابا لکھا کی اگر شادی نہ ہو سکی، لیکن وہ عورتوں میں عشق مجازی اور حسن کے ہمیشہ متلاشی رہے۔ اسلئے انکے کلام میں عورت بن کر شعر کہنا، اپنے آپ کو عورت کے روپ میں ظاہر کرنا، جوان لڑکیوں کو مخاطب کرنا، عام طور پر پایا جاتا ہے۔ جس کو عشق کا نام دیا جاتا ہے۔ بلھے شاہ کے کلام سے یہ بھی پتا چلتا ہے کہ وہ شاید عشقِ مجازی کے ذریعہ عشقِ حقیقی تک رسائی کے لیے کسی دوشیزہ میں دلچسپی رکھتے تھے، جو انکے قرب و جوار میں موجود تھی اور چرخہ کاتا کرتی تھی۔ انکی شاعری میں اسکے متعلق کافی اشعار پائے جاتے ہیں۔
ایک جگہ اسے مخاطب کر کے کہتے ہیں۔

کر مان نہ حسن جوانی دا
پردیس نہ رہن سیلانی دا

سانوں آ مل یار پیاریا

بلھے شاہ کا دور وہ تھا جب انگریز برصغیر پر اپنی مکروہ چالوں اور سازشوں کے ذریعہ قبضہ کرتا ہوا آندھی کی طرح بڑھتا چلا آ رہا تھا۔ مسلمان تھے کہ اپنی آزادی کے لئے ہاتھ پاؤں مار رہے تھے۔ مجاہدین جہاد کر رہے تھے۔لوگ مذہبی طبقے ( علماء، فقہاء، مشائخ، صوفیاء اور گدی نشین حضرات ) کی طرف کان لگائے ہوئے تھے کہ وہ جہاد کا حکم دیں تو ہم اپنی جان پر کھیل جائیں۔

مجاہدین جانوں کا نذرانہ پیش کر رہے تھے۔ خون مسلم سے گلیاں بازار اور شہر سرخ تھے۔ اس وقت جب انگریز کی لگائی آگ پنجاب تک آ پہنچی۔ بچہ بچہ مضطرب و پریشان تھا۔ بلھے شاہ چونکہ حسن و عزق اور محبوب پسند طبیعت کے مالک تھے۔ اسلئے اس وقت وہ اپنے محبوب کی یاد میں مگن تھے اور دنیا اور مافیہا سے بے خبر اسکو یوں پکار رہے تھے۔

سانوں آ مل یار پیاریا
در کھلا حشر عذاب دا
برا حال ہو یا پنجاب دا
وچ ہاوے دوزخ ساڑیا
سانوں آ مل یار پیار یا

بلھے شاہ کے عقائد اور افکار جو کہ شریعتِ مطہرہ کے سراسر خلاف ہی نہ تھے بلکہ وہ انکا مذاق بھی اڑاتے تھے، جسکی تفصیل آپ آئندہ صفحات میں پڑھیں گے۔ یہ عقائد و نظریات جب بلھے شاہ کے دور کے لوگوں کے علم میں آئے تو وہ بلھے شاہ سے سخت نفرت کرنے لگے۔

حتیٰ کہ جب ۱۷۵۸ میں بلھے شاہ نے وفات پائی علماء نے انکا جنازہ پڑھانے سے انکار کر دیا اور عوام نے انکا جنازہ نہ پڑھا۔ حتیٰ کہ انکی میت تین روز تک قصور کے قبرستان (جہاں دربار واقع ہے) میں بے یارو مددگار نمونہ عبرت بنی پڑی رہی۔

تیسرے دن بلھے شاہ کے ایک ہم پیالہ و ہم نوالہ پیر شاہ ہمدانی نے جو کسی کام کے سلسلہ میں شہر سے باہر گئے ہوئے تھے، واپس آنے پر بلھے شاہ کا جنازہ پڑھوا کر انکو اسی قبرستان میں دفن کر دیا جہاں آج بلھے شاہ کا مزار واقع ہے۔

شروع میں یہ مزار سادہ قبر کی صورت میں تھا اور پھر ۱۹۲۶ میں یہاں کی ایک خاتون مراد بی بی نے اسکو پکا بنوایا۔ یہ مراد بی بی کون تھی؟ یہ بعد میں پتا چلا کہ وہ کوٹ مراد خان کی معروف طوائف اور رقاصہ تھی۔ کیسی بدقسمتی ہے کہ زندگی میں جو یاری تھی وہ ںاچنے گانے والوں سے تھی۔ پھر مزار بنا تو وہ بھی رقاصہ کے ہاتھوں سے اور آج وہاں میلا لگتا ہے تو اس میلے کو بھی رقاصائیں اور اداکارائیں ہی زینت بخشتی ہیں۔


راتیں جاگن کتے
بابا بلھے شاہ کا ایک اور مشہور کلام یہ ہے۔
راتیں جاگیں، کریں عبادت
راتیں جاگن کتے، تیتھوں اتے
بھونکن توں بند، مول نہ ہندے
جا روڑی تے ستے، تیتھوں اتے


اسے پڑھ کر سمجھ میں آیا کہ لوگ کیوں کہتے ہیں کہ میں فلاں دربار کا کتا ہوں۔ کوئی کہتا ہے: میں سگ (کتا) میراں ہوں اور کوئی کہتا ہے کہ میں مدینے کا کتا ہوں۔ بہرحال کتا مدینے کا ہو تو وہ بھی کتا ہی ہوتا ہے۔
وہ مدینے ہی کے ایک کتے کا بچہ تھا۔ جسے ایک مرتبہ حضرت امام حسن یا حسین علیہ السّلام گھر میں لے آئے۔ جب حضرت جبرائیل علیہ السّلام وعدہ کے باوجود گھر نہ آئے تو اللّٰه کے رسول صلی اللّٰه علیہ وسلم غمگین ہوئے۔ بعد میں پتا چلا کہ گھر میں تو کتے کا بچہ تھا۔
چنانچہ صحیح بخاری و مسلم میں ہے کہ اللّٰه کے رسول صلی اللّٰه علیہ وسلم نے فرمایا۔
رحمت کے فرشتے اس گھر میں داخل نہیں ہوتے جس

میں کتا اور تصویر ہو۔

اب ایسے ناپاک اور نجس جانور کی طرف اپنے آپ کو منسوب کرنے کا چلن اہل دربار میں کیوں معروف ہے؟ یہ تو اصحابِ طریقت ہی بتلا سکتے ہیں۔
مذکورہ بالا اشعار ایک مومن کو ہلا کر رکھ دیتے ہیں کہ جن میں  انتہائی بے باکی سے کتے کو ان لوگوں سے برتر بنا دیا گیا ہے کہ جو اللّٰه کے بندے اپنی راتیں اللّٰه کی محبت اور یاد میں نفل و نوافل میں رو رو کے

 گزارتے ہیں۔

کون سیاپے کرتا ہے؟

بلھے شاہ اپنی شاعری میں اللّٰه تعالیٰ کی یوں توہین کرتا ہے۔
اربع عناصر محل بتائیو، وچ وڑ بیٹھا آپے
آپے کڑیاں آپے نینگر، آپے بنیائیں ماپے
آپے مریں تے آپے جیویں، آپے کریں سیاپے
بلھیا! جو کچھ قدرت رب دی، آپے آپ نجاپے

دیکھئیے! بلھے شاہ کس قدر آگے بڑھ گئے ہیں کہ میرے سبوح، قدوس، ستّار اور ذی شان غیور مولا کریم کو کہ جس کی صفت ہی لم یلد ولم یولد” ہے، کو کس قدر بے باکی اور توحید آمیز اور گستاخانہ انداز میں للکار کر کہہ رہا ہےکہ تم نے خود ہی اربع عناصر (ہوا، مٹی، پانی اور آگ) بنائے اور خود ہی انکے اندر بیٹھ گیا۔ جب کسی کے ہاں لڑکا پیدا ہوتا ہے وہ بھی تو ہی ہوتا ہے۔ جب لڑکی پیدا ہوتی ہے وہ بھی تو ہی ہوتا ہے۔ اور انکو جننے والا بھی (ظاہری طور پر ماں باپ کی شکل میں)  خود ہی ہوتا ہے یعنی جننے والا بھی تو خود اور جو جنا گیا تو وہ بھی تو ہی ہوتا ہے۔ تو خود ہی زندہ ہوتا ہے اور خود ہی مرتا ہے اور پھر اپنے مرنے پر خود ہی سیاپے کرتا ہے۔ العیاذ باللّٰه۔ اللّٰه عزوجل خود سورت اخلاص میں اپنی وحدانیت بیان کرتا ہے جبکہ بلھے شاہ کیا کہ رہا ہے۔ پھر آخر میں بلھے شاہ اپنی ان باتوں کے متعلق کہتا ہے کہ یہ وہ بھید ہے کہ جو کسی کی سمجھ میں اپنے آپ نہیں آ سکتا کیونکہ شیطان لعین ہی ایسے خیالات ذہن میں ڈالتا ہے۔

قارئین کرام! ذرا دیکھیے! یہ  کوئی گستاخی جیسی گستاخی ہے میرے مولا کریم کی۔ یہ کوئی توہین جیسی توہین ہے۔ یہ تو اتنی کڑوی بات ہے کہ اس پر آسمان ٹکڑے ٹکڑے ہو جائے۔ اللّٰه تعالیٰ کی اس سے بڑھ کر توہین اور گستاخی کیا ہو سکتی ہے۔

موسیقی حرام ہونے کے واضح دلائل

دین اسلام نے واضح طور پر موسیقی کو حرام قرار دیا ہے۔ قرآن مجید، احادیث نبوی صلی اللّٰه علیہ وسلم اور صحابہ کرام افہام دین (دین کی سمجھ رکھنے والے) اسلام کے ان تینوں بنیادی اور اہم مآخذ سے موسیقی کا حرام ہونا واضح طور پر ثابت ہے۔

قرآنی دلائل

اللّٰه تعالیٰ فرماتے ہیں۔
“پس کیا تم اس بات س تعجب کرتے ہو؟ اور ہنس رہے ہو؟ روتے نہیں؟ بلکہ تم کھیل رہے ہو۔ اب اللّٰه کے سامنے سجدے کرو اور اسی کی عبادت کرو۔”

(سورت النجم، آیت ۵۹-۶۲)

حضرت ابن عباس کے مطابق سورت النجم کی مذکورہ بالا آیت میں لفظ سٰمدون کا مشرکین کی اس عادت کی طرف اشارہ ہے کہ وہ جہاں کہیں قرآن کی تلاوت ہوتے دیکھتے تو زور زور سے گانا بجانا اور موسیقی کا شور برپا کرنے لگتے تاکہ قرآن کی تلاوت کرنے والے شخص کی آواز کو دبا دیا جائے اور لوگوں کو سننے

سے روکا جاسکے۔

اس موضوع پر قرآن مجید کی یہ آیت بھی ملاحظہ کیجئے۔
“ان میں سے تو جسے بھی اپنی آواز سے بہکا سکے بہکا لے اور ان پر اپنے سوار اور پیادے چڑھا ڈال اور انہیں جھوٹے وعدے  دے لے ۔ ان سے جتنے بھی وعدے شیطان کے ہوتے ہیں سب کے  سب فریب ہیں”۔

(بنی اسرائیل، آیت نمبر ۶۴)

اضحاق اور مجاہد جیسے تابعین نے اس آیت کی تشریح کرتے ہوئے لکھا ہے کہ شیطان کا اپنی آواز سے بہکانے کا مطلب موسیقی، گانے بجانے اور تفریح کے سازو سامان کا استعمال کرنا ہے۔اضحاق کہتے ہیں کہ اس سے مراد موسیقی کی آواز والے آلات ہیں۔ حضرت ابن عباس اس تعلق سے کہتے ہیں کہ اس آیت کا اشارہ ہر اس  پکار اور بہکاوے کی طرف ہے جو اللّٰه تعالیٰ کی نافرمانی کی طرف بلائے۔ علمائے دین کے ہاں اسے ہی سب سے مناسب تشریح تسلیم کیا گیا ہے۔

اللّٰه تعالیٰ ایک اور مقام پر ارشاد فرماتے ہیں۔
“اور بعض لوگ ایسے بھی ہیں جو لغو باتوں کو مول لیتے ہیں کہ بے علمی کے ساتھ لوگوں کو اللّٰه کی راہ سے بہکائیں اور اسے ہنسی بنائیں۔ یہی وہ لوگ ہیں جن کے لئے رسوا کرنے والا عذاب ہے۔”
(سورت لقمان، آیت نمبر۶)

اس آیت کے تعلق سے حضرت ابن مسعود فرماتے ہیں کہ “میں اس ذات کی قسم کھا کر کہتا ہوں جس کے سوا کوئی معبود نہیں کہ اس آیت کا اشارہ گانے بجانے کی طرف ہے”۔
اور انہوں نے اس جملے کو تین بار دہرایا۔

حضرت ابن عباس نے بھی کہا ہے کہ اس آیت کا اشارہ گانے بجانے وغیرہ کی طرف ہے۔ جبکہ حضرت جابر کے بارے میں روایت ہے کہ انہوں نے اس آیت کا مفہوم گانا بجانا اور گانا سننا لیا ہے۔  مجاہد، اکرما، مکہول عمر بن شعیب جیسے متعدد تابعین نے اس آیت کو یقینی طور پر گانے اور موسیقی کی حرمت کی دلیل کے طور پر لیا ہے۔

احادیث نبوی سے دلائل
موسیقی کے تعلق سے لوگوں کے عام خیال کے برعکس نبی آخر الزماں حضرت محمد صلی اللّٰه علیہ وسلم کی ایسی بیشمار احادیث وارد ہوئی ہیں جو واضح طور پر اس غیر متنازع حقیقت کی طرف اشارہ کرتی ہیں کہ موسیقی، آلاتِ موسیقی، اور لہن و سر  کے ساتھ آلاتِ موسیقی کا استعمال کرنا  اسلامی شریعت میں حرام ہیں۔ موسیقی کی حرمت کے تعلق سے شریعتِ اسلامی کے اس عام اصول میں جو استثنیٰ ہے، وہ ہے موسیقی کے آلات کے بغیر گانے یا سر کا استعمال کرنے کی اجازت۔ ان آلات میں بھی جس کی چھوٹ دی گئی ہے وہ صرف ایک سادہ سا ہاتھ سے بجایا جانے والا “دف” ہے۔ خاص بات یہ ہے کہ یہ اجازت بھی کچھ خاص مواقع کے لئے دی گئی ہے۔ بد قسمتی سے آج بہت سے مسلمان اس غلط تصور کا فائدہ اٹھا رہے ہیں کہ موسیقی، گانے بجانے اور آلاتِ موسیقی سے متعلق جو احادیث وارد ہوئی ہیں وہ یا تو ضعیف ہیں یا موضوع یعنی گڑھی ہوئی ہیں۔ جبکہ موسیقی اور گانے بجانے پر لوگوں کا یہ موقف ناقابلِ دفاع ہے۔ اسلام میں منع کی گئی غط عادتوں سے چھٹکارا حاصل کرنے کے لئے اس لنک سے بہترین اسلامی وظیفہ دیکھئیے –

صحیح بخاری کی روایات
رسول اکرم صلی اللّٰه علیہ وسلم نے فرمایا کہ

 “میری امت کے کچھ لوگ زنا، ریشم کے لباس، شراب اور آلاتِ موسیقی (معاذف) کو حلال کر لینگے۔ ان میں سے کچھ لوگ ایک پہاڑ کے پاس میں رہتے ہونگے، شام کے وقت انکا چرواہا ان کے پاس آئے گا اور ان سے انکی ضروریات پوچھے گا تو کہیں گے کہ ابھی جاؤ اور کل ہمارے پاس آؤ۔ اللّٰه تعالیٰ اس رات کو ان پر وہ پہاڑ گرا کر انہیں ہلاک کر دیگا۔ جبکہ باقی ماندہ لوگوں کو بندر اور سور بنا دیگا اور وہ اسی حالت میں

رہینگے جب تک کہ قیامت نہ آ جائے”۔

الجوھری، قدیم ڈکشنری “الصحاح” کے مرتب اس بات پر زور دیتے ہیں کہ اس حدیث میں “معاذف” سے مراد موسیقی کے آلات ہیں، العاذف کا مطلب گانے والا اور عذف کا مطلب ہوا کی آواز۔
اس تعلق سے الزبیدی بھی کہتے ہیں کہ معاذف سے مراد موسیقی کے آلات ہی ہیں کہ جن کے اوپر مارنے یا کھیلنے سے آواز پیدا ہوتی ہے۔ جیسے کہ عود، ڈرم/ڈھول، (تنبور) یا اس طرح کے دیگر موسیقی کے آلات۔

فتح الباری میں ابن حجر لکھتے ہیں کہ “عذف” کا استعمال گانے (غناء) کے لئے ہوتا ہے۔
یہ معتبر حدیث صریح طور پر موسیقی اور گانے بجانے کو حرام قرار دیتی ہے اور یہ اپنے آپ میں ہر اس انسان کے لیے کافی ہے جو حقیقت میں اس معاملے کی سچائی سے واقف ہونے کا خواہشمند ہو۔ بہرحال اس کے علاوا اس موضوع پر دیگر احادیث بھی موجود ہیں جو درج ذیل ہیں۔

ابن ماجہ کی روایات
رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیہ وسلم نے فرمایا۔

“میری امت کے کچھ لوگ شراب پئیں گے مگر وہ اسکے اصل نام کے علاوہ اسے کسی اور نام سے پکاریں گے۔ موسیقی کے آلات اور گانے والیوں کے ذریعہ ان کے لئے تفریح اور کھیل کا سامان کیا جائے گا۔ اللّٰه تعالیٰ انہیں زمین میں دھنسا دیں گے اور (انھی میں سے) دیگر کو بندر اور سور بنا دینگے”۔
اس حدیث کو بیہقی اور ابن عساکر نے بھی روایت کیا ہے جبکہ حدیث کے معروف عالم ابن قیم نے اس حدیث کو معتبر قرار دیا ہے۔

امام احمد بن حنبل کی روایات
رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیہ وسلم نے فرمایا۔

 “بیشک اللّٰه نے شراب، جوا، الکوبہ اور ہر طرح کے نشہ کو حرام قرار دیا ہے”۔
سفیان کہتے ہیں کہ میں نے حدیث بیان کرنے والے علی بن بضیمة سے پوچھا کہ الکوبہ کیا ہے؟ تو انہوں نے جواب دیا
کہ یہ ڈرم (ڈھول) ہے”۔
رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیہ وسلم نے فرمایا۔

“بیشک اللّٰه تعالیٰ نے میری امت کے لئے شراب، جوا، مکئی سے بنائی گئی مشروب، ڈرم (ڈھول) ، سپرنگ سے بنے آلات (موسیقی) کو حرام ٹھہرایا ہے اور اس  نے مجھے ایک اور نماز سے فضیلت بخشی ہے وہ ہے ‘وتر”۔

حاکم اور دیگر کی روایات
رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیہ وسلم نے فرمایا۔

 “بیشک میں نے رونے سے ممانعت نہیں کی بلکہ میں نے منع کیا دو آوازوں سے جو کہ بیوقوفانہ، بدبختانہ اور بےشرمی والی (آوازیں) ہیں۔ ان میں سے ایک آواز (گانے) کی وہ ہے جو آلاتِ موسیقی اور شیطانی آلات کا ساتھ دینے کے لئے ہو، دوسری کسی آفت کی وجہ سے نکلنے والی آواز (نوحہ کی)  جس میں کپڑا اور چہرا پھاڑا جائے مگر یہ آواز دردمندی سے حاصل ہوتی ہے اور جو کوئی ہمدردی کا اظہار نہ کرے وہ اسے حاصل نہیں کر سکتا”۔
اس حدیث کو ‘حسن’ قرار دیا گیا ہے اور اس حدیث کو دیگر کئی احادیث سے تقویت ملی ہے۔

ابوبکر الشافعی کی روایات
انس بن مالک سے روایت ہے کہ رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیہ وسلم نے فرمایا۔
“دو طرح کی آوازیں بدبختانہ ہیں، آلاتِ موسیقی (مضمار) کی آوازجو خوشی اور شان و شوکت کے مواقع پر بجایاجائے، اور (دوسری) نوحہ خوانی کی آواز جو مصیبت کے وقت نکالی جائے”۔
مذکورا بالا آیات اور روایات یہ ثابت کرنے کے لئے کافی ہیں کہ موسیقی اور آلاتِ موسیقی کے ساتھ گانا حرام ہے اور اسکا سننا بھی حرام ہے۔
جیسا کہ قرآن میں ارشادِ باری تعالیٰ ہے۔
“جو دل سے متوجہ ہو کر کان لگائے”۔
(سورت ق، آیت ۳۷(

صحابہ کرام کا طریقہ
اس بات پر سبھی کا اجماع ہے کہ رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیہ وسلم کے بعد آپؐ کے صحابہ کرام رضہ اللّٰه عنہم ہی سب سے بہترین انسان تھے جنہیں دینِ اسلام کی سب سے بہتر فہم حاصل تھی کیونکہ انہوں نے دین کو براہِ راست نبی کریم صلی اللّٰه علیہ وسلم سے سیکھا تھا۔ اس مسئلہ پر صحابہ کرام رضہ اللّٰه عنہم کا اتفاقِ رائے ہونے سے یہ بات لازم ہو جاتی ہے کہ اس مخصوص مسئلے پر ہر نسل اور ہر صدی کے علمائے دین میں بھی مکمل اتفاقِ رائے ہو۔ جیسا کہ تمام صحابہ کرام متفقہ طور پر موسیقی کی حرمت کے معاملے میں یک رائے تھے، گرچہ انہوں نے سنتِ نبوی صلی اللّٰه علیہ وسلم سے ثابت ایک خاص استثنیٰ کی اجازت دی۔
موسیقی کے اس موضوع پر چاروں خلفائے راشدین اور دیگر فقہاء صحابہ کی رائے بھی یہی ہے جو ابن مسعود اور ابن عباس (اوپر بیان کیا جا چکا ہے) ۔


6 Comments

  1. Nayyara on said:

    Acha it means ke apni favourite music bhi nahee sun sakte jab dil chahe.

    • ãl عِmrãń on said:

      ji nahi sun sakte.

  2. Farah on said:

    Salam alekum brother. I sent u an email a few days ago to clarify about a wazifa, i dont know if you have received it or but i have not had a reply. I know this question has nothing to do with todays topic of music. The wazifa is piyar main pagel kernay ka aur us mai ager YouTube main video daikho to likha hai BASTAM KHAWA O KHOOR and ager google main daikho to likha hai BASTAM KHAWAB WA KHOOR. which one is correct. Im

    • ãl عِmrãń on said:

      BASTAM KHAWAH O KHOOR sahi hai.

  3. Abdullah on said:

    Salaam Imran Bhai. Can you Please tell me in a few simple words If music that we listen to nowadays and sing nowadays, are they haram? I do not understand Urdu fully and most of the words are beyond my understanding.

    Jazak Allah Khairan

    • ãl عِmrãń on said:

      Dear brother, yes the music we listen these days is haram. There is a reference on the above page.

Ask your question here..