What is Ramadan-Ramzan Duas-Guidelines, Tips & Suggestions

Recently updated on May 31st, 2018

What is Ramadan-Ramzan Duas-Guidelines, Tips & Suggestions
4.9 (97.14%) 7 votes

As Salamu ‘Alaykum! Nazreen! tamam yaALLAH Followers aur readers to yaALLAH Team ki taraf se dil ki gehraiyon se Ramadan 2018 Mubarak. Ye Hijri saal 1439, maah Shabaan aur tarikh aj 29 ho chali hai. Aj ham Ramadan kya hai? yani What is Ramadan? Aur iske saath-saath Ramzan ki Dua, tariqaqar aur kaise is maah ke ehtaram kiya jaye. In sab baton par ghaur-o-fikr karenge.

What is Ramadan? Want to read Ramzan Duas? Learn Guidelines, Tips & Suggestions for this Holy Month of Ramadan 2018.


Bismillah hirRahmaan nirRaheem
With The Name of ALLAH, The Gracious and The Merciful
SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam

What is Ramadan-mubarak

What is Ramadan?

  1. Hijri calendar has 12 months. Ramadan is the number ninth.
  2. This is the Holy and the most sacred month in Islam.
  3. Ramadan has a number of virtues and benefits.
  4. This month involves keeping fasts for the sake of ALLAH Subhanahu Wata ‘Ala. Which is observed from dawn to sunset.
  5. The significance of this month leans towards worship.
  6. Muslims fast, refraining from worldly pleasures and material benefits.
  7. There are numerous biological benefits of fasting. Read Ramadan 2017: Worship Fasting Virtues Blessings Essential Elements here.
  8. Muslims pray to become closer to ALLAH. The reason behind this is the multiplication of reward into 70 times than in other months.
  9. After the entire lunar month of fasting and worshiping, the day of reward arrives. The day of Eid-ul-Fitr.
  10. ALLAH Jalla Jalaalahoo HIMSELF rewards HIS slaves who had been fasting and worshipping for the entire month of Ramadan.

Popular yaALLAH Dua Wazaif 

Ramzan Duas-Guidelines, Tips & Suggestions

Ramzan aur Roza Kise Kahte Hain? (Roman English Version)

Urdu zuban ka lafz ‘roza’ daraasal arbi ke lafz ‘saum’ ka tarjuma hai. ‘Saum’ ke aam ma’ani ‘kisi bhi cheez se rukne’ ke hain. Lekin Shari’at-e-Islamia ke mutabiq saum usko kaha jata hai ke baqayeda niyyat ke sath subah saadiq se lekar ghuroob-e-aaftab tak khane peene aur nafsaani khawahishaat puri karne se ruk jana. Ham Musalman jab ‘roza’ ka lafz bolte hain to usse bhi yahi muraad hoti hai.

Roze ke Ahkam

Qur’an Majeed ki wazeh Ayaat aur beshumaar Ahadees ki bina par tamam Ummat ka is baat par itfaaq hai ke Ramzan-ul-Mubarak ke roze farz hain. Aur jo shakhs kisi shara’i uzar ke baghair roza nahi rakhe ga, wo gunah-e-kabeera ka murtakib hoga, jo ek azeem jurm hai. Yani isse muraad ye hai ke jo shakhs bila wajah roza chorega usko bohat gunah milega. Uzar shara’i se muraad wo uzar aur majburi hai jise shari’at ne majburi qaraar diya ho. Shari’at me agar ise qubool na kiya gya ho to wo uzar shara’i nahi kahlaayega balke khud saakhta bahaana yani khud se banaya gya bahaana hoga. Aur aise baghair kisi wajah ke roza na rakhne ka bohat gunah milega.

Ramzan aur Roze ke Chand Fazail

  1. Roze ki ibaadat ko ALLAH Ta’ala ne Apni Zaat-e-‘Aali ke sath khas farmaya hai. Aur wo is tarah ke ek Hadees me aata hai ke tumhara Rab farmata hai ke:
“Roza to Mere hi liye hai aur Main khud iska badla dunga.”
Zaher hai ke jab ina’am dene wali Zaat Ahkam-ul-Haakmeen, Rabb-ul-‘Aalameen ki hai to ina’am bhi Usi ke Shayaan-e-Shaan hoga. Aur jis amal ko Us Zaat-e-‘Aali ne Apni taraf mansoob kiya hai wo kis qadar fazeelat wala hoga.
  1. Rozadaar ke munh se khali pet aur khali m’eda hone ki wajah se ek ajeeb si boo aati hai. Aksar ye boo asar ke waqt ke anqarib ane lagti hai. Uske bare me Irshad-e-Nabvi SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam hai ke:
“ye ALLAH Ta’ala ke yahaan mushk ki khushboo se zyadah pasandeeda hai.”
  1. Roze ke mahine me ALLAH Ta’ala ke hukm se sarkash shayaateen ko qaid kar diya jata hai taake wo logo ke roze na kharab kar saken.
  2. Is maah-e-mubarak me ek raat aisi hai jo apni fazeelat ke a’itbaar se hazaar mahino se bhi behtar hai. Aam taur par use Laila-tul-Qadr ya Shabb-e-Qadr kahte hain.
  3. Is mahine me jannat ke darwaaze khol diye jate hain aur dozakh ke darwaaze band kar diye jate hain.
  4. Rozadaar ki du’a zaroor qubool hoti hai.
  5. Roza qayamat ke din, sar-e-mahshar insan ki bakhshish ke liye ALLAH Ta’ala ke han sifaarish karega.
  6. Har rozedaar ko do (2) khushiyan naseeb hoti hain. Ek khushi to rozana iftar ke waqt aur dusri khushi us waqt milegi jab insan apne Rab se milega.
  7. Ramzan-ul-Mubarak me jo bhi imaan aur ikhlaas ke sath raatko taraweeh aur nawafil parhega, ALLAH Ta’ala uske guzishta (purane) tamam gunah mu’af farma dega.
  8. Is maah-e-mubarak ka pahla ashrah (pahle 10 din) ALLAH Ta’ala ki khusoosi rahmato ka hota hai. Jabke dusra ashrah (11 Ramzan se 20 Ramzan tak) khas taur par bakhshish aur maghfirat ka hota hai. Aur teesra ashrah (21 Ramzan se Aakhir-e-Ramzan tak) jahannum se aazadi aur khalaasi ka hota hai.
yahan Qurbani ke masail parhiye!

Roze ke Fayde

  1. Insan roze me nafsaani khawaahishaat aur shaitaani jazbaat par qaabu pana seekh leta hai.
  2. Insan me sabr, ghareeb-parwari aur azm-o-istaqlaal ke jazbaat janm lete hain.
  3. Insani sehat ke liye roza bohat mufeed hai. Aur purane aur naye daur ke doctors ka kahna hai ke roza rakhne se bohat se jismaani fawaid hasil hote hain.
  4. Insan roze ki halat me nekiyo ki taraf khud-ba-khud kashish mahsoos karta hai. Aur gunaho se dil me nafrat aur karaahat paida hoti hai.
Eid ul Azha Kya Hai? yahan parhiye!

Ramzan ke Mahine ke Adaab

  1. Shoq-o-zauq se Ramzan-ul-Mubarak ka chand dekhne ka ahtamaam karna chahiye.
  2. Ramadan ka Chand dekh kar padhne ki dua:
اَللّٰهُمَّ أَهِلَّهُ عَلَيْنَا بِالْاَمْنِ وَالْإِيْمَانِ وَالسَّلَامَةِ وَالْإِسْلَامِ وَالتَّوْفِيقِ لِمَا تُحِبُّ وَتَرْضَى رَبِّي وَرَبُّكَ اللّٰهُ
“ALLAHumma aa-hillahu alayna bil-amni wal-imaani was-salaamati wal-islaami wat-taufeeqi lima tuhibbu wa tarda Rabbi wa Rabbuk-ALLAHU”
 
O ALLAH! Make this moon come out on us with blessings and with Imaan and peace and Islam and make it come out with the ability of that thing which pleases You and that You like, (O moon of the first night) my and your Lord is ALLAH Azzawajal.
یا الٰہی اس چاند کو ہم پر برکت کے ساتھ اور ایمان و سلامتی اور اسلام اور اس چیز کی توفیق کے ساتھ نکال جس سے تو راضی ہوتا ہے اور پسند کرتا ہے، (اے پہلی رات کے چاند) میرا اور تیرا رب اللّٰه عزّوجل ہے۔
Ae ALLAH! Is chand ko ham par barkat kesath aur imaan-o-salaamti aur islam aur us cheez ki taufeeq kesath nikaal jisse Tu raazi hota hai aur pasand karta hai, (Ae pahli raat ke chand) mera aur tera Rab ALLAH Azzawajal hai.
ramzan ka chand dekhne ki dua

Ramzan ka Chand Dekhne ki Dua

  1. Ramzan me ibadaat ka mazid ahtamaam karna chahiye.
  2. Taraweeh me Qur’an Paak ka ahtamaam karna chahiye.
  3. Qur’an Majeed ke khatm karne ka khusoosiyat ke sath ahtamaam karna chahiye.
  4. Taraweeh puri bees (20) raq’aat parhni chahiye.
  5. Sadqah khairaat me izafa kar dena chahiye.
  6. Ramzan ki tamam raaton me jaagne ka ahtamaam karna chahiye. Khas kar aakhri ashre me khoob ahtamaam karna chahiye.
  7. Ramzan me apne maatahton (mulazim) se narmi aur shafqat ka sulook karna chahiye.
  8. Du’aaon ka bhi khoob ahtamaam karna chahiye.
  9. Ramzan ke aakhdi ashre me a’itkaaf bhi karna chahiye.

Roze ke Adaab

  1. Agar khajoor mayassar hoto isse iftaar karna chahiye. Warna chohaare se kar len. Agar wo bhi na hoto pani ke ghoont se roza iftaar karlen.
  2. Sahri me jayez had tak takheer karna aur iftaari me ahteyaat ka khayal rakhte hue jitna ho sake jaldi karna.
  3. Roze ki halat me gunaho se mukammal bachna chahiye. Maslan namaz chorna, haraam khana, gheebat karna, gaana bajaana ya sunna, ladayi jaghda karna, ghair-mahram ko dekhna aur deegar tamam buraiyan aur nafarmaaniyan.
  4. Khane ki miqdaar me ahteyaat se kaam lena chahiye.
  5. Agar kisi uzar shara’i ki wajah se roza na rakh saken to bad me qaza karna zaroori hai.
  6. Safar ke dauran ya marz ki shiddat me roza na rakhne ki ijazat hai.
  7. Roze me chughli, gheebat aur gunaho se khusoosiyat se bachne ka ahtamaam karna chahiye.
  8. Roze ki mushaqqat khushi-khushi bardasht karni chahiye.
  9. Roze na rakh saken aur intaqaal ho jaye to phir har roza ke badle sadqah-e-fitr ke mutabiq fidya dena chahiye.
  10. Sahri bhi khani chahiye.

Sahri ki Dua-Roza Rakhne ki Dua

وَبِصَوْمِ غَدٍ نَّوَيْتُ مِنْ شَهْرِ رَمَضَانَ
Wabisaumi ghadinnawaitu min shahri ramadan
I Intend to keep the fast for the month of Ramadan
اور میں نے ماہِ رمضان کے روزے کی نیّت کی.
Aur Maine Maah-e-Ramzan ke roze ki niyyat ki
sahri ki dua-roza rakhne ki dua
  1. Suraj ghuroob hone ke bad jaldi iftaar karna chahiye.
Iftaar ke waqt ki dua yani roza kholne ki dua:
اَللّٰهُمَّ اِنَّیْ لَکَ صُمْتُ وَبِکَ اٰمَنْتُ وَعَلَيْکَ تَوَکَّلْتُ وَعَلٰیْ رِزْقِکَ اَفْطَرْتُ
“ALLHumma inni laka sumtu wabika ‘aamantu wa ilayka tawakkaltu wa ‘ala rizqika aftartu”
 O ALLAH! I fasted for you and I believe in you and I put my trust in You and I break my fast with Your sustenance.
 اے اللّٰه! میں نے تیری خاطر روزہ رکھا اور تیرے اوپر ایمان لایا اور تجھ پر بھروسہ کیا اور تیرے رزق سے اسے کھول رہا ہوں۔
 Ae ALLAH! Maine Teri khatir roza rakha aur Tere upar imaan laya aur Tujh par bharosa kiya aur Tere rizq se ise khol raha hon.
  1. Jab roza iftaar kar lein to kya parhni chahiye?

Roza Iftar Karne ke bad ki dua ye parhiye:

ذَھَبَ الظَّمَأُ وَابْتَلَّتِ الْعُرُوْقُ وَثَبَتَ الْاجْرُ اِنْشَاءَ اللّٰهُ
“Zahabaz- zama‘u wab tallatil ‘oorooqu wa sabatal ajru insha ALLAHU”
 The thirst is gone, and the veins are moistened, and the reward is guaranteed, if ALLAH wills.
 پیاس ختم ہو گئی اور رگیں تر ہو گئیں اور انشاء اللّٰه روزے کا اجر اللّٰه کے ہاں پکّا ہو گیا ہے۔
 Pyas khatm ho gayi aur ragen tar ho gayen aur insha ALLAH roze ka ajar ALLAH ke haan pakka ho gya hai.
  1. Ba-wuzu qibla rukh ho kar, aur baith kar tilawat karni chahiye.
  2. Tilawat shuru karne se pahle khushboo bhi laga len.
  3. Tilawat shuru karne se pahle Aa‘oozu billahi minash shaitan nirrajeem aur Bismillah hirRahmaan nirRaheem dono parhiye.
  4. Qur’an Majeed ko takiya, rahel, ya kisi oonchi paak jagah par rakh kar tilawat kijiye.
  5. Tilawat karte waqt libaas bhi paak saaf hona chahiye.
  6. Yaksui ki jagah par baith kar tilawat kijiye taake aane jaane wale logo ki pusht Qur’an ki taraf na ho.
  7. Tilawat ke waqt waqaar ke sath baithiye. Ayat-e-Rahmat par rahmat ki du’a mangiye. Aur Ayat-e-Azaab par maghfirat ki du’a kijiye.
  8. Jahan tak mumkin ho khushul haani se Qur’an Paak ko parhiye. Yani masarrat aur khushi kesath parhiye. Qur’an Majeed ko tajweed ke usoolon yani makhaarij aur siffaat ki adayegi ke sath parhiye.
  9. Jahan log apne kaamo me mashghool hon wahan aahista tilawat karni chahiye.
  10. Agar akaile me hon aur kisi ko takleef na ho to phir zor se bhi parhna sahee hai.
  11. Waqt ka khayal rakhte hue tilawat kijiye.
  12. Dauran-e-tilawat jahan tak mumkin ho baat na kijiye. Agar zaroorat se baat karni pare to Aa‘oozu billahi minash shaitan nirrajeem parh kar dobara tilawat shuru kijiye.
  13. Jab tilawat karte-karte thakaawat mahsoos ho to phir bashaashat (taza dam) aane tak tilawat ko rok dijiye.
  14. Ayat-e-sajdah ki tilawat ke fauri bad sajdah karna behtar hai. Learn Quran Tajweed Rules Pronunciation Makhraj Huruf Hijaiyah yahan parhiye.
  15. Qur’an Majeed ke upar koi cheez nahi rakhni chahiye. Agarche qalam, topi aur ‘ainak hi kyun na hon.
  16. Qur’an Majeed ke upar koi kitab waghaira bhi nahi rakhni chahiye. Agarche wo kitab deeni hi kyun na ho.
  17. Baghair kisi uzar (takleef ya majburi) ke let kar tilawat karna sahee nahi.
  18. Aisa Qur’an parhna ke samajh me na aa sake, ye sahee nahi.
  19. Jis kaghaz par Ayat-e-Qur’ani ho usay dastar khawan banana durust nahi.
  20. Qur’ani huroof wali angoothi pahen kar baitul khala nahi jana chahiye.

Du’a ke Aadab

  1. Du’a maangne wala yaqeen-e-kaamil kesath du’a maange.
  2. Du’a maangne se pahle ALLAH Ta’ala ki hamd-o-sana karni chahiye.
  3. Ba-wuzu qibla rukh baith kar du’a maangni chahiye.
  4. Awaaz ko past (dheema) rakhna chahiye.
  5. Du’a maangne wale ka khana-peena aur libaas halaal hona chahiye.
  6. Du’a maangne se pahle koi nek amal kar lena chahiye.
  7. Do zaano hokar du’a maangni chahiye.
  8. Khauf ki halat ikhteyar karni chahiye.
  9. Du’a me qaafiya bandi nahi karna chahiye. Yani aakhir ke alfaz ko gaane ki tarah lay mein gana.
  10. Aasman ki taraf nahi dekhna chahiye. Yahan Facing hardships? Make a Dua! parhiye!
  11. Aajzi aur tawaaz’e kesath du’a maangni chahiye.
  12. Du’a-e-masoora masnoona bhi parhni chahiye.
  13. Apne gunaho ka a’itraaf karte hue du’a karni chahiye.
  14. Sirf apne liye nahi balke tamam Musalmano ke liye du’a maangni chahiye.
  15. Bar-bar (3 bar) ek du’a ko maangiye.
  16. Gunah aur qat’a rahmi ki du’a nahi karni chahiye.
  17. Shuru aur aakhir me Durood Shareef parhna chahiye.
  18. Hatho ko uthaakar du’a karni chahiye. Aur ye hath seene tak uthaane chahiyen.
  19. Du’a me jald-baazi nahi karni chahiye. Maslan aisa bola jaye ke itne din ho gaye hain du’a qubool hi nahi hui. Ye theek tareeqa nahi hai.
  20. Namumkin yani najayaz cheez ki du’a nahi karni chahiye.
  21. ALLAH Tabarak Wata ‘Ala ki Zaat aur Siffaat ka wasta dekar du’a maangni chahiye.
  22. Anbiya Karaam Alayhis Salam ka wasta ikhteyar kiya ja sakta hai.
  23. Choti se choti cheez ki bhi du’a ALLAH Ta’ala se karni chahiye.
  24. Du’a ke aakhir me ‘Aameen’ kahna chahiye.
  25. Du’a ke aakhir me hatho ko munh par pher lena chahiye.
  26. Auqaat-e-mustahba me du’a karni chahiye. Make Dua for Me yahan parhiye!

Namaz-e-Taraweeh Ke Ahkam

  1. Ramzan-ul-Mubarak me mardo aur aurato dono ko bees (20) raq’aat taraweeh parhni chahiye.
  2. Taraweeh me behtar ye hai ke 2-2 raq’ah kar ke parhi jayen.
  3. Agar char (4) raq’ah ke sath taraweeh parhi jaye tab bhi durust hai.
  4. Agar isha ki namaz kisi wajah se faasad ho gayi to ab uske bad parhi jane wali taraweeh bhi durust nahi hogi.
  5. Taraweeh ramzan ki har raatko parhni chahiye. Namaz ki pabandi ka wazifa yahan parhiye!
  6. Taraweeh me kam-az-kam ek (1) martaba Qur’an Majeed khatm karna bhi sunnat hai.
  7. Ghar me agar taraweeh parhi jaye tab bhi durust hai magar masjid ki fazeelat nahi milegi.
  8. Ek masjid me taraweeh ki kaye jama’aten hona acha nahi balke makruh hai.
  9. Jis shakhs ne isha ki namaz jama’at kesath nahi parhi, wo taraweeh jama’at ke sath parh sakta hai.
  10. Bila-uzar taraweeh bhi baithkar nahi parhni chahiye.
  11. Muqtadi baitha rahe aur jab imaam ruk’u me jane lage to ruk’u me imaam ke sath chala jaye, aisa karna durust nahi.
  12. Na-baligh ladke ke piche taraweeh ki namaz durust nahi hogi.
  13. Taraweeh parhaane wale ne dadhi ek musht se kam rakhi ho, ya ramzan ke bad wo moond deta hoto aise shakhs ke puche taraweeh parhna durust nahi (makruh hai). How to Pray Salat Tauba-Salatul Taubah Ki Namaz Ka Tarika yahan parhiye!
  14. Taraweeh ki char (4) raq’ah ke bad itni der baithna acha aur mustahib hai jitni der me char (4) raq’ah parhi gai hain.
  15. Ramazan me witr jama’at kesath parhne chahiyen. Agar kisiki taraweeh ki raq’aat rah jayen to wo witr jama’at kesath parhkar taraweeh ko bhi parhle.
  16. Taraweeh me Qul HuwALLAHU Ahad teen (3) martaba parhne ke bajaye ek (1) martaba hi parhna chahiye.
  17. Bees (20) taraweeh ke khatm hone par witr se pahle ijtama’i du’a ka iltezam nahi karna chahiye.
  18. Char (4) raq’ah taraweeh ke bad tasbeeh parhen ya khamosh rahen. Ba’az Fuqhaa ne char (4)  raq’ah taraweeh ke bad ek du’a ke parhne ko acha samjha hai, jise Tasbeeh-e-Taraweeh bhi kahte hain.

Tasbeeh-e-Taraweeh Tarjuma ke Sath:

 سُبْحَانَ ذِی الْمُلْکِ وَالْمَلَکُوْتِ سُبْحَانَ ذِی الْعِزَّةِ وَالْعَظَمَةِ وَالْهَيْبَةِ وَالْقُدْرَةِ وَالْکِبْرِيَآئِ وَالْجَبَرُوْتِ سُبْحَانَ الْمَلِکِ الْحَيِّ الَّذِی لَا يَنَامُ وَلَا يَمُوْتُ سُبُّوحٌ قُدُّوْسٌ رَبُّنَا وَرَبُّ الْمَلَائِکَةِ وَالرُّوْحِ اَللّٰهُمَّ اَجِرْنَا مِنَ النَّارِ يَا مُجِيْرُ يَا مُجِيْرُ يَا مُجِيْرُ
“Subhaana zil mulki wal malakooti subhaana zil izzati wal azamati wal haibati wal qudrati wal kibriyaa’ee wal jabarooti subhan-al malik-il hayyillazi la yanaamu wala yamootu subboohun quddoosun rabbuna wa rabbul malaa’i-kati war-roohi ALLAHumma ajirna minan-naari  ya Mujeeru ya Mujeeru ya Mujeeru
Glory be to the Owner of the Kingdom of Earth and Heavens. Glory be to He Who commands Respect and Honour and Magnificence & Awe and Power and Greatness and Omnipotence. Glory be to the Sovereign, the Ever-Living. Who does not sleep nor die. He is the Most Praised, the Most Holy,  Our Lord and the Lord of all the Angels and the Spirit. O ALLAH! Save us from the Fire of Hell.
O Protector! O Protector! O Protector!
پاک ہے وہ ﷲ جو مُلک اور بادشاہت والا ہے۔ پاک ہے وہ ﷲ جو عزّت والا اور بزرگی والا اور ہیبت والا اور قدرت والا اور بڑائی والا اور سطوت والا ہے۔ پاک ہے وہ ﷲ جو بادشاہ زندہ رہنے والا کہ نہ اس کے لئے نیند ہے اور نہ موت ہے۔ وہ بے انتہا پاک ہے، بے انتہا مقدّس ہے ہمارا پروردگار اور فرشتوں اور روح کا پروردگار ہے۔ اِلٰہی ہم کو دوزخ سے پناہ دے۔ اے پناہ دینے والے! اے پناہ دینے والے! اے پناہ دینے والے!
Paak hai Wo ALLAH Jo Mulk aur Baadshaahat Wala hai, Paak hai Wo ALLAH Izzat-o-Buzurgi, Haibat-o-Qudrat aur Azmat-o-Rob Wala, Paak hai Wo ALLAH Jo Baadshaah hai Zindah Rahne Wala ke na Uske liye neend hai aur na maut. Bohat hi Paak, Bohat hi Muqaddas hai Hamara Parwardigaar aur Farishto aur Ruh ka Parwardigaar. Ilaahi hamko dozakh se panah de. Ae Panah Dene Wale! Ae Panah Dene Wale! Ae Panah Dene Wale!
Popular yaALLAH Dua Wazaif 

Itikaf ke Adaab

  1. Ramzan ke aakhri ashrah me a’itkaaf karna Sunnat-e-Mo’akkadah hai.
  2. A’itkaaf ke liye sab se behtar jagah Masjid-e-Haraam, phir Masjid-e-Nabvi SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam aur phir Masjid-e-Aqsa (Bait-ul-Maqdas) hai.
  3. Ramzan-ul-Mubarak ki bees (20) tareekh ko suraj ghuroob hone se pahle-pahle masjid me dakhil ho jana chahiye. Jo masjid weeran ho us me a’itkaaf karna sahee nahi.
  4. Ek se zyadah istanjaa khane yani baitul khala hon to a’itkaaf karne wale ko qareebi istanjaa khane me jana chahiye.
  5. Istanjaa khane me agar pahle se koi maujud hoto masjid me uske nikalne ka intezar karna chahiye.
  6. Itikaaf karne wale ko wuzu par wuzu, wuzu khane me jakar nahi karna chahiye.
  7. Libaas bhi masjid me hi tabdeel karna chahiye. M’utakif (a’itkaaf karne wala shakhs) ko chahiye ke wuzu aur ghusal masjid me kare. Bashrteke uska pani masjid me na gire.
  8. Wuzu karte waqt baat kar sakte hain aur baher jakar baat karna mana hai.
  9. Khana lane wala koi nahi hoto lene ke liye ja sakte hain.
  10. Masjid me badbu-daar cheez khane se ahtaraaz (parhez) karna chahiye.
  11. Itikaaf karne wala janaza aur ayaadat karneke liye bhi nahi ja sakta.
  12. Apne mohalle ki masjid me a’itkaaf karna behtar hai.
  13. Baitul khala me qabz ki wajah se der ho jaye to koi harj nahi.
  14. Masjid me agar baitul khala na hoto ghar bhi ja sakte hain magar faraaghat ke bad wahan ruken nahi.
  15. Lungi ya kapde waghaira me najaasat lag jaye to iske dhone keliye M’utakif wuzu khana me ja sakta hai. Dhone ke bad wahan na ruke.
  16. M’utakif masjid me hajaamat banwa sakta hai magar baal waghaira masjid me na girne den.
  17. M’utakif masjid me khareed-o-farokht kar sakta hai.
  18. M’utakif baqadr-e-zaroorat (zaroorat ke mutabiq) samaan masjid me rakh sakta hai. Maslan takiya, chadar, bistar waghaira.
 

Auraton ke Itikaaf ka Tarika aur Chand Aadab

  1. Aurato ko masaajid kebajaye ghar me Itikaaf karna chahiye.
  2. Ghar me jo jagah namaz keliye mu’iyyan ho, usi me Itikaaf karna chahiye.
  3. Aurato keliye masjid me Itikaaf karna makruh tahreemi hai.
  4. Aurato ko Itikaaf keliye shohar se ijazat lena zaroori hai.
  5. Shohar ko bhi biwi ko a’itkaaf se rokna durust nahi.
  6. Aurato ko bhi apne a’itkaaf ki jagah se sirf hajat ke liye baitul khala jane ki ijazat hai. Iske ilawa aur dusre kamo ki ijazat nahi hogi.
  7. Itikaaf ke dauran ham-bistari karne se Itikaaf faasid ho jata hai.
  8. Haiz aane se Itikaaf khatm ho jata hai.
  9. Istehaaza se Itikaaf par koi asar nahi padta.
  10. Haiz aane ke bad sirf ek (1) din ki qaza karni chahiye.

Zakat Dene ke Aadab

  1. Jiske paas nisaab maujud ho uska zakat dena zaruri hai.
  2. Nisab saadhe baawan tola chandi ya saadhe saat tola sone par ek (1) saal guzarna shart hai.
  3. Zakat khullam-khulla den taake dusro ko bhi targheeb mile.
  4. Jisko zakat di hai uspar bad me ahsaan na jatlayen.
  5. Zakat khush dili se deni chahiye.
  6. Ibadat samajh kar zakat deni chahiye.
  7. Saal pura hone ke fauri bad zakat nikaal deni chahiye.
  8. Zakat ada karne ke bad ghuroor aur fakhar me bhi mubtila nahi hona chahiye.
  9. Faqeero aur mohtaajo ko apna mohsin samajhna chahiye ke unki wajah se aapki zakat ada hogayi.

Eid-ul-Fitr ke Ahkam aur Adaab

1. Eid-ul-Fitr ke din ghusal karna, miswak karna chahiye. Aur naakhun kaat lene chahiyen.
2. Jo kapde maujud hon unme se achha kapda pahnna chahiye.
3. Eid-ul-Fitr ki namaz ke liye janese pahle chand khajooren khakar jana chahiye.
4. Khajooren taaq a’idaad me khani chahiyen. Maslan teen (3), panch (5), saat (7) waghaira.
5. Agar khajooren mayassar na honto koi meethi cheez kha leni chahiye.
6. Eid ki namaz eid-gaah me parhni chahiye.
7. Eid-gaah paidal jana chahiye. khawateen ke huqooq yahan parhiye!
8. Ek raaste se jana aur dusre raaste se wapas aana chahiye.
9. Sadqah-e-fitr namaz se pahle ada karna chahiye.
10. Eid ke din khushi ka izhaar karna chahiye.
11. Eid-ul-Fitr ki namaz me jate waqt aahista awaaz me takbeer parhte hue jana chahiye.
Takbeer ki du’a (Tarjuma ke sath) ye hai:
اَللّٰهُ اَکْبَرْ اَللّٰهُ اَکْبَرْ لَا اِلٰهَ اِلَّا اللّٰهُ وَاللّٰهُ اَکْبَرْ اَللّٰهُ اَکْبَرْ وَلِلّٰهِ الْحَمْدُ
“ALLAHU Akbar ALLAHU Akbar La ilaha ill-ALLAHU wa-ALLAHU Akbar ALLAHU Akbar wa lillahil hamd”  
ALLAH is Great, ALLAH is Great, There is no God, but ALLAH, And ALLAH is Great, ALLAH is Great, To Him belongs All Praise.
اللّٰه بڑا ہے، اللّٰه بڑا ہے، اللّٰه کے سوا کوئی عبادت کے لائق نہیں، اور اللّٰه بڑا ہے، اللّٰه بڑا ہے اور تمام تعریف اللّٰه ہی کیلئے ہے۔
ALLAH Bada hai, ALLAH Bada hai, ALLAH ke siwa koi ibadat ke layeq nahi, aur ALLAH Bada hai, ALLAH Bada hai, aur tamam tareef ALLAH hi ke liye hai.

Ramzan aur Roza in Urdu

 رمضان اور روزہ
روزہ کسے کہتے ہیں؟ 
اُردو زُبان کا لفظ روزہ دراصل عربی كے لفظ صوم کا ترجمہ ہے۔ صوم كے عام معنی کسی بھی چیز سے رُکنے كے ہیں۔ لیکن شریعتِ اسلامیہ كے مطابق صوم اس کو کہا جاتا ہے کہ باقاعدہ نیّت كے ساتھ صبح صادق سے لے کر غروبِ آفتاب تک کھانے پینے اور نفسانی خواہشات پوری کرنے سے رُک جانا۔ ہم مسلمان جب روزہ کا لفظ بولتے ہیں تو اس سے بھی یہی مراد ہوتی ہے۔

Ramzan ke Roze ki Ahmiyat in Urdu

روزے کا حکم 
قرآن مجید کی واضح آیات اور بے شمار احادیث کی بناء پر تمام امّت کا اس بات پر اتفاق ہے كے رمضان المبارک كے روزے فرض ہیں۔ اور جو شخص کسی عذر شرعی كے بغیر روزہ نہیں رکھے گا، وہ گناہِ کبیرہ کا مُرتکب ہو گا۔ جو ایک عظیم جرم ہے۔ یعنی اس سے مراد یہ ہے کہ جو شخص بلاوجہ روزہ چھوڑے گا اس کو بہت گناہ ملے گا۔ عذر شرعی سے مراد وہ عذر اور مجبوری ہے جسے شریعتِ اسلامیہ نے مجبوری قرار دیا ہو۔ شریعت میں اگر اسے قبول نہ کیا گیا ہو تو وہ عذر شرعی نہیں کہلائے گا بلکہ خود ساختہ بہانہ یعنی خود سے بنایا گیا بہانہ ہو گا۔ اور ایسے بغیر کسی وجہ كے روزہ نہ رکھنے کا بہت گناہ ملے گا۔

Ramzan aur Roze ke Fazail

رمضان اور روزے كے چند فضائل 
روزے کی عبادت کو اللّٰه تعالیٰ نے اپنی ذاتِ عالی كے ساتھ خاص فرمایا ہے۔ اور وہ اس طرح كہ ایک حدیث شریف میں آتا ہے كہ تمہارا رب فرماتا ہے۔
روزہ تو میرے ہی لیے ہے اور میں خود اس کا بدلہ دوں گا۔
ظاہر ہے كہ جب انعام دینے والی ذات احکم الحاکمین، ربّ العالمین کی ہے تو انعام بھی اسی كے شایانِ شان ہو گا۔ اور جس عمل کو اس ذاتِ عالی نے اپنی طرف منسوب کیا ہے وہ کس قدر فضیلت والا ہو گا۔
روزہ دار كے منہ سے کبھی کبھار خالی پیٹ اور خالی معدہ ہونےکی وجہ سے ایک ناپسندیدہ مہک آتی ہے۔ اس کے بارے میں ارشادِ نبوی صلی اللّٰه علیہ وسلّم ہے۔
یہ اللّٰه كے ہاں مُشک کی خوشبو سے زیادہ پسندیدہ ہے۔
رمضان كے مہینے میں اللّٰه تعالیٰ كے حکم سے سرکش شیاطین کو قید کر دیا جاتا ہے تاکہ وہ لوگوں كے روزے نہ خراب کر سکیں۔
اس ماہِ مبارک میں ایک رات ایسی ہے جو اپنی فضیلت كے اعتبار سے ہزار مہینوں سے بھی بہتر ہے۔ عام طور پر اسے لیلة القدر یا شبِّ قدر کہتے ہیں۔
اس مہینے میں جنّت كے دروازے کھول دیئے جاتے ہیں اور دوزخ كے دروازے بند کر دیئے جاتے ہیں۔
روزہ دار کی دعا ضرور قبول ہوتی ہے۔
روزہ قیامت كے دن سرِ محشر انسان کی بخشش كے لیے اللّٰه تعالیٰ كے ہاں سفارش کرے گا۔
ہر روزہ دار کو دو (۲) خوشیاں نصیب ہوتی ہیں۔ ایک خوشی تو روزانہ افطار كے وقت اور دوسری خوشی اس وقت ملے گی جب انسان اپنے رب سے ملے گا۔
رمضان المبارک میں جو بھی ایمان اور اخلاص كے ساتھ رات کو تراویح اور نوافل پڑھے گا، اللّٰه تعالیٰ اس کے گذشتہ ( پُرانے ) تمام گناہ معاف فرما دے گا۔
اس ماہِ مبارک کا پہلا عشرہ ( پہلے ١۰ دن ) اللّٰه تعالیٰ کی خصوصی رحمتوں کا ہوتا ہے۔ جب کہ دوسرا عشرہ ( ١١ رمضان سے ۲۰ رمضان تک ) خاص طور پر بخشش اور مغفرت کا ہوتا ہے۔ اور تیسرا عشرہ ( ۲١ رمضان سے آخرِ رمضان تک ) جہنّم سے آزادی اور خلاصی کا ہوتا ہے۔

Roze ke Faide

روزہ كے فوائد / فائدے 
انسان روزہ میں نفسانی خواہشات اور شیطانی جذبات پر قابو پانا سیکھ لیتا ہے۔ انسان میں صبر، غریب پروری اور عزم و استقلال كے جذبات جنم لیتے ہیں۔
انسانی صحت كے لیے روزہ بہت مفید ہے۔ اور جدید و قدیم اطباء کا کہنا ہے كہ روزہ رکھنے سے بہت سے جسمانی فوائد حاصل ہوتے ہیں۔
انسان روزہ کی حالت میں نیکیوں کی طرف خود بخود کشش محسوس کرتا ہے۔ اور گناہوں سے دل میں نفرت اور کراہٹ پیدا ہوتی ہے۔

Muslim Religion Women Rights Under Islamic Law yahanparhiye!

Ramzan ke Adaab

رمضان كے مہینے كے آداب 
شوق و ذوق سے رمضان المبارک کا چاند دیکھنے کا اہتمام کرنا چاہیئے۔
چاند دیکھ کر یہ دعا پڑھنی چاہیئے۔
اَللّٰهُمَّ أَهِلَّهُ عَلَيْنَا بِالْيُمْنِ وَالْإِيْمَانِ وَالسَّلَامَةِ وَالْإِسْلَامِ وَالتَّوْفِيقِ لِمَا تُحِبُّ وَتَرْضَى رَبِّي وَرَبُّكَ اللّٰهُ
ترجمہ: یا الٰہی عزوجل اس چاند کو ہم پر برکت کے ساتھ اور ایمان و سلامتی اور اسلام اور اس چیز کی توفیق کے ساتھ نکال جس سے تو راضی ہوتا ہے اور پسند کرتا ہے، (اے پہلی رات کے چاند) میرا اور تیرا رب اللّٰه عزّوجل ہے۔
رمضان میں عبادت کا مزید اہتمام کرنا چاہیئے۔
تراویح میں قرآن پاک کا اہتمام کرنا چاہیئے۔
قرآن مجید كے ختم کرنے کا خصوصیت کے ساتھ اہتمام کرنا چاہیئے۔
تراویح پوری بیس (۲۰) رکعت پڑھنی چاہیئے۔
صدقہ خیرات میں اضافہ کر دینا چاہیئے۔
رمضان کی تمام راتوں میں جاگنے کا اہتمام کرنا چاہیئے۔ خاص کر آخری عشرے میں خوب اہتمام کرنا چاہیئے۔
رمضان میں اپنے ماتحتوں (ملازمین) سے نرمی اور شفقت کا سلوک کرنا چاہیئے۔
دعاؤں کا بھی خوب اہتمام کرنا چاہیئے۔
رمضان كے آخری عشرے میں اعتکاف بھی کرنا چاہیئے۔

Safar Ki Dua HD Images yahan dekhiye!


اگر کھجور میسّر ہو تو اس سے افطار کرنا چاہیئے۔ ورنہ چھوہارے سے افطار کر لیں۔ اگر وہ بھی نہ ہو تو پانی كے گھونٹ سے روزہ افطار کر لیں۔
سحری میں جائز حد تک تاخیر کرنا اور افطاری میں احتیاط کا خیال رکھتے ہوئے جتنا ہو سکے جلدی کرنا۔
روزہ کی حالت میں گناہوں سے مکمل بچنا چاہیئے۔ مثلاً نماز چھوڑنا، حرام كھانا، غیبت کرنا، گانا بجانا یا سننا، لڑائی جھگڑا کرنا، غیر محرم کو دیکھنا اور دیگر تمام بُرائیاں اور نافرمانیاں۔
کھانے کی مقدار میں احتیاط سے کام لینا چاہیئے۔
اگر کسی عذر شرعی کی وجہ سے روزہ نہ رکھ سکیں تو بعد میں قضاء کرنا ضروری ہے۔
سفر كے دوران یا مرض کی شدّت میں روزہ نہ رکھنے کی اجازت ہے۔
روزہ میں چُغلی، غیبت اور گناہوں سے خصوصیت سے بچنے کا اہتمام کرنا چاہیئے۔
روزہ کی مشقّت خوشی خوشی برداشت کرنی چاہیئے۔
روزہ نہ رکھ سکیں اور انتقال ہو جائے تو پھر ہر روزہ كے بدلے صدقہ فطر كے مطابق فدیہ دینا چاہیئے۔
سحری بھی کھانی چاہئیے۔
سحری كے وقت یہ دعا پڑھنی چاہیئے۔
وَبِصَوْمِ غَدٍ نَّوَيْتُ مِنْ شَهْرِ رَمَضَانَ
ترجمہ: اور میں نے ماہِ رمضان کے روزے کی نیّت کی۔
سورج غروب ہونے كے بعد جلدی افطار کرنا چاہیئے۔
افطار کرتے وقت یہ دعا پڑھنی چاہیئے۔
اَللّٰهُمَّ اِنَّیْ لَکَ صُمْتُ وَبِکَ اٰمَنْتُ وَعَلَيْکَ تَوَکَّلْتُ وَعَلٰیْ رِزْقِکَ اَفْطَرْتُ
ترجمہ: اے اللّٰه! میں نے تیری خاطر روزہ رکھا اور تیرے اوپر ایمان لایا اور تجھ پر بھروسہ کیا اور تیرے رزق سے اسے کھول رہا ہوں۔
جب روزہ افطار کر لیں تو یہ دعا پڑھنی چاہیئے۔
ذَھَبَ الظَّمَأُ وَابْتَلَّتِ الْعُرُوْقُ وَثَبَتَ الْاجْرُ اِنْشَاءَ اللّٰهُ
ترجمہ: پیاس ختم ہو گئی اور رگیں تر ہو گئیں اور انشاء اللّٰه روزے کا اجر اللّٰه کے ہاں پکّا ہو گیا ہے۔
باوضو قبلہ رُخ ہو کر اور بیٹھ کر تلاوت کرنی چاہیئے۔
تلاوت شروع کرنے سے پہلے خوشبو بھی لگا لیں۔
تلاوت شروع کرنے سے پہلے اَعُوذُ بِاللّٰهِ مِنَ الشَّیطٰنِ الرَّجِیم اور بِسمِ اللّٰهِ الرَّحمٰنِ الرَّحِیمِ دونوں پڑھیئے۔
قرآن مجید کو تکیہ، رحل یا کسی اونچی پاک جگہ پر رکھ کر تلاوت کیجیئے۔
تلاوت کرتے وقت لباس بھی پاک صاف ہونا چاہیئے۔
‫یکسوئی کی جگہ پر بیٹھ کر تلاوت کیجیئے تاکہ آنے جانے والے لوگوں کی پشت قرآن پاک کی طرف نہ ہو۔
تلاوت كے وقت وقار كے ساتھ بیٹھیئے۔ آیتِ رحمت پر رحمت کی دعا کیجیئے۔ اور آیتِ عذاب پر مغفرت کی دعا کیجیئے۔
جہاں تک ممکن ہو خوش الحانی سے قرآن پاک کو پڑھیئے۔ یعنی مسرّت اور خوشی کے ساتھ پڑھیئے۔ قرآن مجید کو تجوید كے اصولوں یعنی مخارج اور صفّات کی ادائیگی كے ساتھ پڑھیئے۔
جہاں لوگ اپنے کاموں میں مشغول ہوں وہاں آہستہ تلاوت کرنی چاہیئے۔
اگر اکیلے میں ہوں اور کسی کو تکلیف نہ ہو تو پھر زور سے بھی پڑھنا صحیح ہے۔
وقت کا خیال رکھتے ہوئے تلاوت کیجیئے۔
دورانِ تلاوت جہاں تک ممکن ہو بات نہ کیجیئے۔ اگر ضرورت سے بات کرنی پڑے تو اَعُوذُ بِاللّٰهِ مِنَ الشَّیطٰنِ الرَّجِیم پڑھ کر دوبارہ تلاوت شروع کیجیئے۔
جب تلاوت کرتے کرتے تھکاوٹ محسوس ہو تو پھر بشاشت ( تازہ دم ) آنے تک تلاوت کو روک دیجیئے۔
آیتِ سجدہ کی تلاوت كے فوری بعد سجدہ کرنا بہتر ہے۔
قرآن مجید كے اوپر کوئی چیز نہیں رکھنی چاہیئے اگرچہ قلم، ٹوپی اور عینک ہی کیوں نہ ہوں۔
قرآن مجید كے اوپر کوئی کتاب وغیرہ بھی نہیں رکھنی چاہیئے اگرچہ وہ کتاب دینی ہی کیوں نہ ہو۔
بغیر کسی عذر ( تکلیف یا مجبوری ) كے لیٹ کر تلاوت کرنا صحیح نہیں۔
ایسا قرآن پڑھنا كہ سمجھ میں نہ آ سکے، یہ صحیح نہیں۔
جس کاغذ پر آیتِ قرآنی ہو اسے دستر خوان بنانا درست نہیں۔
قرآنی حروف والی انگوٹھی پہن کر بیت الخلاء نہیں جانا چاہیئے۔

Dua ke Adaab

دعا كے آداب
دعا مانگنے والا یقین کامل کے ساتھ دعا مانگے۔
دعا مانگنے سے پہلے اللّٰه تعالیٰ کی حمد و ثناء کرنی چاہیئے۔
باوضو قبلہ رُخ بیٹھ کر دعا مانگنی چاہیئے۔
آواز کو پست ( دھیما ) رکھنا چاہیئے۔
دعا مانگنے والے کا کھانا پینا اور لباس حلال ہونا چاہیئے۔
دعا مانگنے سے پہلے کوئی نیک عمل کر لینا چاہیئے۔
دو زانو ہو کر دعا مانگنی چاہیئے۔
خوف کی حالت اختیار کرنی چاہیئے۔
دعا میں قافیہ بندی نہیں کرنی چاہیئے۔
آسمان کی طرف نہیں دیکھنا چاہیئے۔
عاجزی اور انکساری کے ساتھ دعا مانگنی چاہیئے۔
دعائے ماثورہ مسنونہ بھی پڑھنی چاہیئے۔
اپنے گناہوں کا اعتراف کرتے ہوئے دعا کرنی چاہیئے۔
صرف اپنے لیے نہیں بلکہ تمام مسلمانوں كے لیے دعا مانگنی چاہیئے۔
بار بار ( ٣ بار ) ایک دعا کو مانگنا چاہیئے۔
گناہ اور قطع رحمی کی دعا نہیں کرنی چاہیئے۔
شروع اور آخر میں درود شریف پڑھنا چاہیئے۔
ہاتھوں کو اُٹھا کر دعا کرنی چاہیئے اور یہ ہاتھ سینے تک اٹھانے چاہئیں۔
دعا میں جلد بازی نہیں کرنی چاہیئے۔ مثلاً ایسا بولا جائے كہ اتنے دن ہو گئے ہیں دعا قبول ہی نہیں ہوئی۔ یہ ٹھیک طریقہ نہیں ہے۔
ناممکن چیز کی دعا نہیں کرنی چاہیئے۔
اللّٰه تبارک و تعالیٰ کی ذات اور صفّات کا واسطہ دے کر دعا مانگنی چاہیئے۔
انبیاء کرام علیہ السلام کا واسطہ اختیار کیا جا سکتا ہے۔
چھوٹی سے چھوٹی چیز کی بھی دعا اللّٰه تعالیٰ سے کرنی چاہیئے۔
دعا كے آخر میں آمین کہنا چاہیئے۔
دعا كے آخر میں ہاتھوں کو منہ پر پھیر لینا چاہیئے۔
اوقاتٹ مستحبہ میں دعا کرنی چاہیئے۔

Namaz Taraweeh ke Adab

نمازِ تراویح كے آداب 
رمضان المبارک میں مردوں اور عورتوں دونوں کو بیس (۲۰) رکعات تراویح پڑھنی چاہیئے۔
تراویح میں بہتر یہ ہے كہ ۲-۲ رکعت کر كے پڑھی جائیں۔
اگر چار (٤) رکعات كے ساتھ تراویح پڑھی جائے تب بھی درست ہے۔
اگر عشاء کی نماز کسی وجہ سے فاسد ہو گئی تو اب اس کے بعد پڑھی جانے والی تراویح بھی درست نہیں ہو گی۔
تراویح رمضان کی ہر رات کو پڑھنی چاہیئے۔
تراویح میں کم از کم ایک (١) مرتبہ قرآن مجید ختم کرنا بھی سنّت ہے۔
گھر میں اگر تراویح پڑھی جائے تب بھی درست ہے مگر مسجد کی فضیلت نہیں ملے گی۔
ایک مسجد میں تراویح کی کئی جماعتیں ہونا اچھا نہیں بلکہ مکروہ ہے۔
جس شخص نے عشاء کی نماز جماعت کے ساتھ نہیں پڑھی، وہ تراویح جماعت كے ساتھ پڑھ سکتا ہے۔
بلا عذر تراویح بھی بیٹھ کر نہیں پڑھنی چاہیئے۔
مقتدی بیٹھا رہے اور جب امام رکوع میں جانے لگے تو رکوع میں امام كے ساتھ چلا جائے، ایسا کرنا درست نہیں۔
نابالغ لڑکے كے پیچھے تراویح کی نماز درست نہیں ہو گی۔
تراویح پڑھانے والے نے داڑھی ایک مشت سے کم رکھی ہو، یا رمضان كے بعد وہ مونڈ دیتا ہو تو ایسے شخص كے پیچھے تراویح پڑھنا درست نہیں (مکروہ ہے)۔
تراویح کی چار (٤) رکعات كے بعد اتنی دیر بیٹھنا اچھا اور مستحب ہے جتنی دیر میں چار (٤) رکعات پڑھی گئی ہیں۔
رمضان میں وتر جماعت کے ساتھ پڑھنے چاہیں۔ اگر کس کی تراویح کی رکعات رہ جائیں تو وہ وتر جماعت کے ساتھ پڑھ کر تراویح کو بھی پڑھے۔
تراویح میں سورہ اخلاص تین (٣) مرتبہ پڑھنے كے بجائے ایک (١) مرتبہ ہی پڑھنا چاہیئے۔
بیس (۲۰) تراویح كے ختم ہونے پر وتر سے پہلے اجتماعی دعا کا التزام نہیں کرنا چاہیئے۔
‫چار (٤) رکعات تراویح كے بعد تسبیح پڑھیں یا خاموش رہیں۔ بعض فقہاء نے چار (٤) رکعات تراویح كے بعد ایک دعا كے پڑھنے کو اچھا سمجھا ہے، جسے تسبیحِ تراویح بھی
کہتے ہیں۔ تسبیحِ تراویح یہ ہے۔
سُبْحَانَ ذِی الْمُلْکِ وَالْمَلَکُوْتِ سُبْحَانَ ذِی الْعِزَّةِ وَالْعَظَمَةِ وَالْهَيْبَةِ وَالْقُدْرَةِ وَالْکِبْرِيَآئِ وَالْجَبَرُوْتِ سُبْحَانَ الْمَلِکِ الْحَيِّ الَّذِی لَا يَنَامُ وَلَا يَمُوْتُ سُبُّوحٌ قُدُّوْسٌ رَبُّنَا وَرَبُّ الْمَلَائِکَةِ وَالرُّوْحِ اَللّٰهُمَّ اَجِرْنَا مِنَ النَّارِ يَا مُجِيْرُ يَا مُجِيْرُ يَا مُجِيْرُ
ترجمہ: پاک ہے وہ ﷲ جو مُلک اور بادشاہت والا ہے۔ پاک ہے وہ ﷲ جو عزّت والا اور بزرگی والا اور ہیبت والا اور قدرت والا اور بڑائی والا اور سطوت والا ہے۔ پاک ہے وہ ﷲ جو بادشاہ زندہ رہنے والا کہ نہ اس کے لئے نیند ہے اور نہ موت ہے۔ وہ بے انتہا پاک ہے، بے انتہا مقدّس ہے ہمارا پروردگار اور فرشتوں اور روح کا پروردگار ہے۔ اِلٰہی ہم کو دوزخ سے پناہ دے۔ اے پناہ دینے والے! اے پناہ دینے والے! اے پناہ دینے والے!

Itikaf Ke Adab

اعتکاف کے آداب 
رمضان كے آخری عشرہ میں اعتکاف کرنا سنّت مؤکدہ ہے۔
اعتکاف كے لیے سب سے بہتر جگہ مسجد حرام، پھر مسجد نبوی صلی اللّٰه علیہ وسلّم اور پھر مسجد اقصیٰ (بیت المقدس) ہے۔
رمضان المبارک کی بیس (۲۰) تاریخ کو سورج غروب ہونے سے پہلے پہلے مسجد میں داخل ہو جانا چاہیئے۔ جو مسجد ویران ہو اس میں اعتکاف کرنا صحیح نہیں۔
ایک سے زیادہ استنجاء خانے یعنی بیت الخلاء ہوں تو اعتکاف کرنے والے کو قریبی استنجاء خانے میں جانا چاہیئے۔
استنجاء خاانے میں اگر پہلے سے کوئی موجود ہو تو مسجد میں اس کے نکلنے کا انتظار کرنا چاہیئے۔
اعتکاف کرنے والے کو وضو پر وضو، وضو خانے میں جا کر نہیں کرنا چاہیئے۔
لباس بھی مسجد میں ہی تبدیل کرنا چاہیئے۔ معتکف ( اعتکاف کرنے والا شخص ) کو چاہیئے كہ وضو اور غسل مسجد میں کرے بشرطیکہ اس کا پانی مسجد میں نہ گرے۔
وضو کرتے وقت بات کر سکتے ہیں اور باہر جا کر بات کرنا منع ہے۔
كھانا لانے والا کوئی نہیں ہو تو لینے كے لیے جا سکتے ہیں۔
مسجد میں بدبودار چیز کھانے سے احتراز ( پرہیز ) کرنا چاہیئے۔
اعتکاف کرنے والا جنازہ اور عیادت کرنے کے لیے بھی نہیں جا سکتا۔
اپنے محلّہ کی مسجد میں اعتکاف کرنا بہتر ہے۔
بیت الخلاء میں قبض کی وجہ سے دیر ہو جائے تو کوئی حرج نہیں۔
مسجد میں اگر بیت الخلاء نہ ہو تو گھر بھی جا سکتے ہیں مگر فراغت كے بعد وہاں رُکے نہیں۔
لنگی یا کپڑے وغیرہ میں نجاست لگ جائے تو اس کے دھونے کے لئے معتکف وضو خانہ میں جا سکتا ہے۔ دھونے كے بعد وہاں نہ رکے۔
معتکف مسجد میں حجامت بنوا سکتا ہے مگر بال وغیرہ مسجد میں نہ گرنے دے۔
معتکف مسجد میں خرید فروخت کر سکتا ہے۔
‫معتکف بقدرِ ضرورت ( ضرورت كے مطابق ) سامان مسجد میں رکھ سکتا ہے۔ مثلاً تکیہ ، چادر ، بستر وغیرہ۔

Aurton ka itikaf ka Tarika aur Chand Adab

عورتوں كے اعتکاف كے چند آداب 
عورتوں کو مساجد کے بجائے گھر میں اعتکاف کرنا چاہیئے۔
گھر میں جو جگہ نماز کے لئے معین ہو، اسی میں اعتکاف کرنا چاہیئے۔
عورتوں کے لئے مسجد میں اعتکاف کرنا مکروہ تحرِیمی ہے۔
عورتوں کو اعتکاف کے لئے شوہر سے اجازت لینا ضروری ہے۔
شوہر کو بھی بیوی کو اعتکاف سے روکنا درست نہیں۔
عورتوں کو بھی اپنے اعتکاف کی جگہ سے صرف حاجت كے لیے بیت الخلاء جانے کی اجازت ہے۔ اس کے علاوہ اور دوسرے کاموں کی اجازت نہیں ہو گی۔
اعتکاف كے دوران ہمبستری کرنے سے اعتکاف فاسد ہو جاتا ہے .
حیض آنے سے اعتکاف ختم ہو جاتا ہے۔
استحاضہ سے اعتکاف پر کوئی اثر نہیں پڑتا۔
حیض آنے كے بعد صرف ایک (١) دن کی قضاء کرنی چاہیئے۔

Zakat Dene ka Sahi Tarika aur Adab

زکوٰۃ دینے كے آداب 
جس کے پاس نصاب موجود ہو اس کا زکوٰۃ دینا ضروری ہے۔
نصاب ساڑھے باون تولا چاندی یا ساڑھے سات تولا سونے پر ایک (١) سال گزرنا شرط ہے۔
زکوٰۃ کھلّم کھلّا دیں تاکہ دوسروں کو بھی ترغیب ملے۔
جس کو زکوٰۃ دی ہے اس پر بعد میں احسان نہ جتلائیں۔
زکوٰۃ خوش دلی سے دینی چاہیئے۔
عبادت سمجھ کر زکوٰۃ دینی چاہیئے۔
سال پورا ہونے كے فوری بعد زکوٰۃ نکال دینی چاہیئے۔
زکوٰۃ ادا کرنے كے بعد غرور اور فخر میں بھی مبتلا نہیں ہونا چاہیئے۔
فقیروں اور محتاجوں کو اپنا محسن سمجھنا چاہیئے کہ ان کی وجہ سے آپ کی زکوۃ ادا ہو گئی۔

Eid-ul-Fitr ke Ahkam aur Adaab

عید الفطر كے آداب 
عید الفطر كے دن غسل کرنا، مسواک کرنا چاہیئے۔ اور ناخن کاٹ لینے چاہیں۔
جو کپڑے موجود ہوں اُن میں سے اچھا کپڑا پہننا چاہیئے۔
عید الفطر کی نماز كے لیے جانے سے پہلے چند کھجوریں کھا کر جانا چاہیئے۔
کھجوریں طاق اعداد میں کھانی چاہیں۔ مثلاً تین (٣)، پانچ (٥)، سات (٧) وغیرہ۔
اگر کھجوریں میسّر نہ ہوں توں کوئی میٹھی چیز کھا لینی چاہیئے۔
عید کی نماز عید گاہ میں پڑھنی چاہیئے۔
عید گاہ پیدل جانا چاہیئے۔
ایک راستے سے جانا اور دوسرے راستے سے واپس آنا چاہیئے۔
صدقہ فطر نماز سے پہلے ادا کرنا چاہیئے۔
عید كے دن خوشی کا اظہار کرنا چاہیئے۔
عید الفطر کی نماز میں جاتے وقت آہستہ آواز میں تکبیر پڑھتے ہوئے جانا چاہیئے۔
تکبیر دعا یہ ہے۔
اَللّٰهُ اَکْبَرْ اَللّٰهُ اَکْبَرْ لَا اِلٰهَ اِلَّا اللّٰهُ وَاللّٰهُ اَکْبَرْ اَللّٰهُ اَکْبَرْ وَلِلّٰهِ الْحَمْدُ
ترجمہ: اللّٰه بڑا ہے، اللّٰه بڑا ہے، اللّٰه کے سوا کوئی عبادت کے لائق نہیں، اور اللّٰه بڑا ہے، اللّٰه بڑا ہے اور تمام تعریف اللّٰه ہی کیلئے ہے۔

4 Comments

  1. Mrs. K Khan on said:

    Du’a me qaafiya bandi nahi karna chahiye. Yani aakhir ke alfaz ko gaane ki tarah lay mein gana. Iska matlab?

    • Mehrunnisa Khizr on said:

      Qafiya bandi nahi karein means akhir ke alfaz ko dusri line ke akhir ke alfaz se lay me milakar gaane ki tarah lamba khechna.

  2. Bilaal on said:

    Assalamu Alaikum ! Please send the english translation.

    • Mehrunnisa Khizr on said:

      Insha ALLAH, soon, we will work on the English version of this Ramadan Post.

Ask your question here..