Symptoms of The Day of Resurrection in Islam Nishaniyan Asar e Qayamat

Recently updated on September 8th, 2017

Symptoms of The Day of Resurrection in Islam Nishaniyan Asar e Qayamat
Rate this

The Symptoms of The Day of Resurrection, mentioned in Islam are the ones which can be seen with our own eyes these days. Nishaniyan Qayamat ke Asar ki jinhe ham urdu me bhi kehte hai. Wo aaj ke is daur mein aam ho chuki. Aj isi ke barein me ghaur-o-fikr ham karenge.

Hints of How The Day of Resurrection Come

بِسْمِ اللهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

Bismillah hir Rahman nir Raheem

In the name of ALLAH, The Most Gracious, The Most Merciful

Symptoms of The Day of Resurrection in Islam Nishaniyan Asar e Qayamat-

Symptoms of The Day of Resurrection in Islam Nishaniyan Asar e Qayamat

English Version

The Day of Judgement

Signs & Symptoms of The Day of Judgement)

The Day of Judgement

(Impact of the day of judgement)

 

It is a fact that with the passage of every moment we are getting closer to qayamat (the Day of judgement).

People are having the misconception that this day is too far from us, without realizing that our ancestors who were also having the same thought, came into this world and now they are lying in their respective graves.

But we should accept this fact that one day we all will die. Every soul shall taste death and will directly face ALLAH  Subhanahu Wata ‘Ala in Hereafter. Nothing in this World can save us from that moment. The time of the Day of judgement is only known by ALLAH  Azzawajal. Read ayat-e-karima wazaif here.

We really don’t know what will happen to us in the coming moment. This is so sure that our death is chasing us every time. We cannot escape from it. Similarly, we can not escape from the Day of judgement. This is highly possible that one day when we will be busy in planning for our future and building up our status in society, suddenly this moment would come into our life and everything would be perished. Read Ya Hayyu Ya Qayyum- 1 Solution here.

May ALLAH  Subhanahu Wata ‘Ala grant us the strength to do pious/good deeds and save us from all the evils. Ameen.

The signs of the Resurrection have been clearly explained by many Prophets and very deeply explained by Our Beloved Prophet Hazrat Mu’hammad SallALLAHU  ‘Alayhe Wasallam as well because no Prophet will come after Him. Read about Prophet of Islam here.

 

It has been mentioned in Sahih Muslim,

Huzaifa Radi ALLAHU  Anhu has referred that once Our Beloved Prophet Hazrat Mu’hammad SallALLAHU  ‘Alayhe Wasallam was standing amongst us and there was not a single story which He had missed telling us about all the incidents that will happen before the Day of Qiyamah.

 

Read Surah Fatiha Amal here.

 

One will remember all these events if he wanted to remember them and one will forget these events if he wanted to forget them. I remember this saying of the Prophet Mu’hammad SallALLAHU  ‘Alayhe Wasallam when one of the incidents told by Him, happens in front of me in the same way when you forget  the face of a person in his long absence and when he comes in front of you, you can easily recognize him.

(Sahih Muslim, Suad 39)

 

Irshadat-e-Rusool SallALLAHU  ‘Alayhe Wasallam regarding the Day of Resurrection

  • A time will come before the occurrence of Qiyamah, when there will appear a mountain of gold inside the Naher-ul-Furat, People will fight to occupy it. 99 people will die in the war, though many of them were expecting to be alived.

(Sahih Muslim)

  • According to Bukhari and Muslim, it is narrated by Hazrat Abhu Hurairah Radi ALLAHU Anhu that the Prophet Mu’hammad SallALLAHU  ‘Alayhe Wasallam said, a mountain of gold will appear from the Farat Canal (Neher-e-Furat). (Mashkat Sharif)

 

  • Hazrat Abu Hurairah Razi ALLAHU Anhu narrates that Hazrat Mu’hammad SallALLAHU  ‘Alayhe Wasallam said, there will come a time before the end of this world, when a man will come near the grave and will wish to be inside that grave. He will wish so not to save his religion, rather he will wish so to save himself from the worldly problems.

(Muslim Shareef)

  • It is narrated by Hazrat Jabar Radi ALLAHU Anhu that the Prophet Mu’hammad SallALLAHU  ‘Alayhe Wasallam said, in the last part of this world, there will be a Muslim ruler who will distribute the wealth immensely. He will not even count his wealth. (Muslim Shareef)From Bukari and Muslim, that Prophet Mu’hammad SallALLAHU  ‘Alayhe Wasallam has narrated that The day of resurrection will not come until you will collect immense wealth. The rick will search and feel condolence when no one will accept charity he will offer.

Hazrat Auf bin Malik Radi ALLAHU  has narrated that Prophet SallALLAHU  ‘Alayhe Wasallam has mentioned six symptoms of the day of resurrection. From those six, one is: wealth has been in so much abundance. If a person has given 100 dinar (gold ashrafis) it will not suffice him and he will get upset. Means he will not be satisfied.
(Bukhari Shareef)

– Saubah Radi ALLAHU  Anhu has narrated that Prophet Hazrat Mu’hammad SallALLAHU  ‘Alayhe Wasallam has said, if a sword has been placed within my Ummah (Denotes that the Ummah keep fighting with each other). Then, the sword will not stop till the day of resurrection and it will continue to fight.

The last hour will not come until so many from my Ummah will enter the non-believers. Until so many of my Ummah worship the statues. Then He narrated,

Undoubtedly, from my Ummah there will be thirty types of liars, every one of them will claim to be a Prophet, whereas, I am the only last Prophet.

(Mashkat Shareef)

 

 

Qur’anic References regarding The Day of Judgment

People who are enjoying the luxuries of this world, intend to forget the truth that one day they will die. Even if, such thoughts ever come in their minds, they still tend to ignore them by completely assuming that they are immortal. Read Chahal Rabbana here.

They deny and ignore the commands of ALLAH  Azzawajal. Thus they fail to accomplish their goals fixed by ALLAH  Ta’ala and did not prepare for Akhirah. Read King of All Wazifa here.

ALLAH  Subhanahu Wata ‘Ala States in the Holy Qur’an,

قُل لِّمَن مَّا فِي السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ ۖ قُل لِّلَّهِ ۚ كَتَبَ عَلَىٰ نَفْسِهِ الرَّحْمَةَ ۚ لَيَجْمَعَنَّكُمْ إِلَىٰ يَوْمِ الْقِيَامَةِ لَا رَيْبَ فِيهِ ۚ الَّذِينَ خَسِرُوا أَنفُسَهُمْ فَهُمْ لَا يُؤْمِنُونَ

(Surah Al-An’aam, Verse 12)

 

Translation:

Say, “To whom belongs whatever is in the heavens and earth?” Say, “To ALLAH .” He has decreed upon Himself mercy. He will surely assemble you for the Day of Resurrection, about which there is no doubt. Those who will lose themselves [that Day] do not believe.

 

فَإِذَا نُفِخَ فِي الصُّورِ نَفْخَةٌ وَاحِدَةٌ

وَحُمِلَتِ الْأَرْضُ وَالْجِبَالُ فَدُكَّتَا دَكَّةً وَاحِدَةً

فَيَوْمَئِذٍ وَقَعَتِ الْوَاقِعَةُ

(Surah Al-Haaqah, Verse 13-15)

 

Translation:

Then when the Horn is blown with one blast

And the earth and the mountains are lifted and leveled with one blow –

Then on that Day, the Resurrection will occur,

 

Non-Durability Of This Life (Mortal Life) And The Truth Of After Life (Akhirah)

Akhirah, the real life that will start after ending our lives on a time fixed by Only ALLAH  Zille Shanahu. The world where we are living, is a mortal life. It is a non-durable life and will perish one day. There is not even a single thing on this earth that can give its preponderance of immortality neither your career nor your marriage and wealth. These all will remain in this world and will not go with your dead body in your graves.

The only thing that matters is to live our lives according to the will of ALLAH  Azzawajal. See the Wonderful Photos of Lohe Qurani here.

HE will begin the Day of judgement in a most surprising way. When this day will happen, every person will realize that this life had to end and ultimately had to face the day of judgement. See black seed remedies here.

Every person in this mortal world should remind himself of this Day of Judgment. Have fear of ALLAH in the hearts. There would be those things which we have not imagined in our dreams. It’s a fact that every person on this earth would face it ultimately and it’s a warning for those people who tend to ignore and think about this day just as a mythology. See olive oil remedies for skin here.

If they will keep ignoring the reality of the day of Judgement, they will definitely face the unendurable punishments and unending torture on that day. See Remedies for Psoriasis here.

One day we all will definitely face that day about which the Holy Qur’an has already given a vivid description. That would be the day when no one would be standing by us neither aur assets not our body. We will be standing there alone. We will be created again by ALLAH  Ta’ala. See Tips to loose weight fast here.

We should take advantage of this time given by ALLAH  Subhanahu Wata ‘Ala in this world, to get a beautiful place in Akhirah, the bounties of which are incomparable. We have never come across such blessings on this earth ever that will be granted us in Jannah. So, we should believe ALLAH  Subhanahu Wata ‘Ala with the bottom of our hearts and also believe in the reality of the Day of Resurrection. See Summer protection tips here.

We should keep thanking ALLAH  Azzawajal for all the bounties HE has granted us ever. If we fail to do so, we will regret later on and nothing can save us from facing the unbearable wrath. See the Eye Touching Images of Masjid-e-Nabvi here.

 

ALLAH  Subhanahu Wata ‘Ala has decreed this beautifully in the Holy Quran,

قَدْ خَسِرَ الَّذِينَ كَذَّبُوا بِلِقَاءِ اللَّهِ ۖ حَتَّىٰ إِذَا جَاءَتْهُمُ السَّاعَةُ بَغْتَةً قَالُوا يَا حَسْرَتَنَا عَلَىٰ مَا فَرَّطْنَا فِيهَا وَهُمْ يَحْمِلُونَ أَوْزَارَهُمْ عَلَىٰ ظُهُورِهِمْ ۚ أَلَا سَاءَ مَا يَزِرُونَ

(Surah Al-An’aam, Verse 31)

Translation:

Those will have lost who deny the meeting with ALLAH, until when the Hour [of resurrection] comes upon them unexpectedly, they will say, “Oh, [how great is] our regret over what we neglected concerning it,” while they bear their burdens on their backs. Unquestionably, evil is that which they bear.

We should accept this fact that Akhirah is a reality and we should be prepared for it. Because Akhirah is durable, the everlasting life. The one who denies it or ignores it is not a true Muslim. Therefore, we should start preparing ourselves for it right now and should do good deeds and stay away from bad ones. See Kidney Stones Remedies here.

If we obey ALLAH  Ta’ala in every aspect of our lives, we will definitely get a reward of it in this world and in the Hereafter as well. In the result of which, we will get a place in Jannah where our each and every wish will be fulfilled by ALLAH  Ta’ala Insha ALLAH . See wazifa for hajj/umrah here.

Remember! We will directly face to ALLAH  Azzawajal on the day of judgement. We will be answerable to HIM for each and every deed that we are currently doing in this world. Nothing can save from Him, not even a single deed.

So, we should keep preparing ourselves for Akhirah. See the Beautiful Pictures of Ajmer Dargah here.

We should not miss even a single chance that can lead us to an act of kindness and try to avoid the way that will take us to the evils. Try to obey ALLAH Ta’ala and make HIS creature happy. Don’t hurt anyone as this act will make ALLAH  Azzawajal angry with you. Don’t be a reason to make someone cry. See the Lovely Wallpapers of Kaaba Shareef here.

May ALLAH  Subhanahu Wata ‘Ala give us the strength to follow the right path and save us from all the evils. Ameen. See wazifa to find a missing/ run away person here.

 

How To have Our Faith on The Day of Judgment

To have our faith on the Day of Judgement is one of the strongest pillars of our religion. It is one of the basic principles of Islam. After believing ALLAH  Subhanahu Wata ‘Ala that HE is the Only One Creator of all the worlds, it is also necessary to believe in the Day of Judgement.

Holy Qur’an has given an emphasized description on belief in the Day of Judgement after the belief in ALLAH, the Only One. See wazifa for good luck here.

It is a fundamental part of our faith to have a belief in all the signs and symptoms of the Day of Resurrection that is called as iman-bil-ghaib.

 

لَّيْسَ الْبِرَّ أَن تُوَلُّوا وُجُوهَكُمْ قِبَلَ الْمَشْرِقِ وَالْمَغْرِبِ وَلَـٰكِنَّ الْبِرَّ مَنْ آمَنَ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ وَالْمَلَائِكَةِ وَالْكِتَابِ وَالنَّبِيِّينَ وَآتَى الْمَالَ عَلَىٰ حُبِّهِ ذَوِي الْقُرْبَىٰ وَالْيَتَامَىٰ وَالْمَسَاكِينَ وَابْنَ السَّبِيلِ وَالسَّائِلِينَ وَفِي الرِّقَابِ وَأَقَامَ الصَّلَاةَ وَآتَى الزَّكَاةَ وَالْمُوفُونَ بِعَهْدِهِمْ إِذَا عَاهَدُوا ۖ وَالصَّابِرِينَ فِي الْبَأْسَاءِ وَالضَّرَّاءِ وَحِينَ الْبَأْسِ ۗ أُولَـٰئِكَ الَّذِينَ صَدَقُوا ۖ وَأُولَـٰئِكَ هُمُ الْمُتَّقُونَ

(Surah Al-Baqarah, Verse 177)

  

Translation:

Righteousness is not that you turn your faces toward the east or the west, but [true] righteousness is [in] one who believes in Allah, the Last Day, the angels, the Book, and the prophets and gives wealth, in spite of love for it, to relatives, orphans, the needy, the traveler, those who ask [for help], and for freeing slaves; [and who] establishes prayer and gives charity; [those who] fulfill their promise when they promise; and [those who] are patient in poverty and hardship and during battle. Those are the ones who have been true, and it is those who are the righteous.

 

There are many Verses present in Holy Qur’an which are providing the main description of the Day of Judgement and also emphasizing the value of this day. See Diabetic Remedies here.

 

According to Islamic Principles, The Real Life is Akhirah Only

According to Muslims, Akhirah is the real life and whatever we do in this present life will go with us to The Day of Judgment. Jannah (Heaven) is so big that it expands from the sky to the earth and the Hell is so huge that it can swallow all the beings of the earth at once. See wazifa to get freedom from jail here.

 

As ALLAH  Ta’ala decrees in Holy Qur’an,

 

سَابِقُوا إِلَىٰ مَغْفِرَةٍ مِّن رَّبِّكُمْ وَجَنَّةٍ عَرْضُهَا كَعَرْضِ السَّمَاءِ وَالْأَرْضِ أُعِدَّتْ لِلَّذِينَ آمَنُوا بِاللَّهِ وَرُسُلِهِ ۚ ذَ‌ٰلِكَ فَضْلُ اللَّهِ يُؤْتِيهِ مَن يَشَاءُ ۚ وَاللَّهُ ذُو الْفَضْلِ الْعَظِيمِ

(Surah Al-Hadid, Verse 21)

 

Translation:

Race toward forgiveness from your Lord and a Garden whose width is like the width of the heavens and earth, prepared for those who believed in Allah and His messengers. That is the bounty of Allah which He gives to whom He wills, and Allah is the possessor of great bounty.

 

ALLAH Ta’ala  has also decreed in Holy Qur’an,

يَوْمَ نَقُولُ لِجَهَنَّمَ هَلِ امْتَلَأْتِ وَتَقُولُ هَلْ مِن مَّزِيدٍ

(Surah Qaaf, Verse 30)

Translation:

On the Day We will say to Hell, “Have you been filled?” and it will say, “Are there some more,”

 

Believer And his Belief on The Day of Judgment

It is the faith of the believers that keeps them prepared for The Day of Judgment. In return of this faith, they get a lot of blessings and virtues from ALLAH  Azzawajal and they can also get a place in Jannah. See wazifa for various problems here.

This is the result of the belief in ALLAH Ta’ala and the belief in the Day of Resurrection that a Muslim try to follow the righteous path and avoids all the evil deeds that can take him away from ALLAH Azzawajal. Otherwise, he will not follow the right way if there will be no fear in his heart regarding The Day of Judgment. See Wazifa to get rid of bad dreams in Islam here.

ALLAH  Zille Shanahu is the Only One, WHO gives us strength to do the righteous acts and saves us from the evil way. A believer knows it very well that whatever acts he is performing in the present life, will surely be presented to ALLAH Ta’ala on the Day of Resurrection. See the Rules of a wazifa here.

Only the thing that will help him in Hereafter, will be his kind deeds. So, he keeps doing generous acts as much as he can to get the blessings of ALLAH  Ta’ala in this world and in the Hereafter too. See Blood Pressure Remedies here.

 

ALLAH  Ta’ala has mentioned in Holy Qur’an,

الْحَجُّ أَشْهُرٌ مَّعْلُومَاتٌ ۚ فَمَن فَرَضَ فِيهِنَّ الْحَجَّ فَلَا رَفَثَ وَلَا فُسُوقَ وَلَا جِدَالَ فِي الْحَجِّ ۗ وَمَا تَفْعَلُوا مِنْ خَيْرٍ يَعْلَمْهُ اللَّهُ ۗ وَتَزَوَّدُوا فَإِنَّ خَيْرَ الزَّادِ التَّقْوَىٰ ۚ وَاتَّقُونِ يَا أُولِي الْأَلْبَابِ

(Surah Al Baqarah 197)

Translation:

Hajj is [during] well-known months, so whoever has made Hajj obligatory upon himself therein [by entering the state of ihram], there is [to be for him] no sexual relations and no disobedience and no disputing during Hajj. And whatever good you do – Allah knows it. And take provisions, but indeed, the best provision is fear of Allah. And fear Me, O you of understanding.

 

Sahabi Jalil Umar bin Hamam Radi ALLAHU  Anhu refers that, God fearing,  people of forbearance who are ready for afterlife, people who would be ready to fight in the way of ALLAH  will be surely be accepted by ALLAH Ta’ala. God fearing geniality good deeds people will be accepted and all other would be destroyed.

 

Let’s discuss this in context with Hadith Shareef

Translation: Imam Muslim referred to Hazrat Suheb Radi ALLAHU  Anhu, he says Hazrat Mu’hammad SallALLAHU  ‘Alayhe Wasallam says,

 

Surprised on the condition of a believer, indeed, in whatever condition he is in, it is in his favor, and these things are not meant for a non-believer, if he prospers, he becomes grateful. Therefore, this is good for him. And he encounters afflictions, then he becomes patient so these are for his good.

ALLAH  does well for the man in no matter what state he is in, if he is getting what he wishes for? Then, he should thank ALLAH Ta’ala. And is he going through some hard times he should still thank ALLAH Ta’ala and wait patiently because whatever happens, happens only with the command of ALLAH. ALLAH knows best what is best for us.

 

 

Hazrat Umar Bin Khattab Radhi ALLAHU  Anhu has narrated this very famous saying,

“If in Iraq he finds a mule fallen down then ALLAH  Ta’ala will ask him regarding it that Umar why did you not smoothen the road for him?”

 

ALLAH  Azzawajal Says in the Noble Qur’an,

يَوْمَ تَجِدُ كُلُّ نَفْسٍ مَّا عَمِلَتْ مِنْ خَيْرٍ مُّحْضَرًا وَمَا عَمِلَتْ مِن سُوءٍ تَوَدُّ لَوْ أَنَّ بَيْنَهَا وَبَيْنَهُ أَمَدًا بَعِيدًا ۗ وَيُحَذِّرُكُمُ اللَّهُ نَفْسَهُ ۗ وَاللَّهُ رَءُوفٌ بِالْعِبَادِ

(Surat Al-Imran, Verse 30)

 

Translation:

The Day every soul will find what it has done the good present [before it] and what it has done of evil, it will wish that between itself and that [evil] was a great distance. And Allah warns you of Himself, and Allah is Kind to [His] servants.”

 

Another Saying of ALLAH  Azzawajal is,

وَوُضِعَ الْكِتَابُ فَتَرَى الْمُجْرِمِينَ مُشْفِقِينَ مِمَّا فِيهِ وَيَقُولُونَ يَا وَيْلَتَنَا مَالِ هَـٰذَا الْكِتَابِ لَا يُغَادِرُ صَغِيرَةً وَلَا كَبِيرَةً إِلَّا أَحْصَاهَا ۚ وَوَجَدُوا مَا عَمِلُوا حَاضِرًا ۗ وَلَا يَظْلِمُ رَبُّكَ أَحَدًا

(Surah Kahf, Verse 49)

Translation:

And the record [of deeds] will be placed [open], and you will see the criminals fearful of that within it, and they will say, “Oh, woe to us! What is this book that leaves nothing small or great except that it has enumerated it?” And they will find what they did present [before them]. And your Lord does injustice to no one.

 

Hypocrites and the Day of Resurrection

People who do not have their faith in ALLAH  Ta’ala, and in the Day Of Judgement and spend their lives by listening the voice of their hearts, there will be a severe punishment for them on the Day of Resurrection. See pain remedies here.

Such people run after money and keep fulfilling their temporary wishes. They become selfish and refuse to help people. For them nothng is important than theirsl selves. They think this mortal world is everything for them and will never end ever. And thus they keep committing sins on daily basis without assuming their punishment in Hereafter. See constipation remedies here.

 

As ALLAH  Azzawajal Says regarding such people in the Noble Qur’an,

 

بَلْ يُرِيدُ الْإِنسَانُ لِيَفْجُرَ أَمَامَهُ

يَسْأَلُ أَيَّانَ يَوْمُ الْقِيَامَةِ

(Surah Qiyamah, Verses 5, 6)

 

Translation:

But man desires to continue in sin.

He asks, “When is the Day of Resurrection?”

 

ALLAH Ta’ala  has told about this:

وَقَالُوا إِنْ هِيَ إِلَّا حَيَاتُنَا الدُّنْيَا وَمَا نَحْنُ بِمَبْعُوثِينَ

(Surat  Al-Anam verse 29)

 

Translation:

And they say, “There is none but our worldly life, and we will not be resurrected.”

 

Fatwa without knowledge

Hazrat Abdullah bin Umar radi ALLAHU  Anhu narrates,

 

“Prophet Mu’hammad SallALLAHU  Alayhe Wassallam  has told that ALLAH Ta’ala will not make knowledge disappear at once but it’ll slowly get perished with time with the deaths of scholars and when one day there would be no one left us to guide then people will make a leader who would be uneducated illiterate holding no knowledge of Islam and innocent people would ask them to solve their questions.

 

As days, years and centuries would pass, people will gain knowledge and will become literate with time but at the same time, they would become arrogant to accept the truth. They would refuse to accept the unseen powers of our Almighty ALLAH  Ta’ala. See remedies of all stomach diseases here.

For example, Marxist, a Socio-economic Ideology does not believe in ALLAH and in the Day of Resurrection. It says that life is just a mass and there is no power behind its existence. Marx, the founder of the theory says there is no God and life is only a mass. See Gastric Remedies here.

This is the reason that the behavior of such people has been recorded like an animal. They are unaware of the reality of their own creation. Such people are so greedy for their lives. You will find them running towards the fulfillment of their wishes all the time. These People would be punished severely on the Day of Resurrection for not believing ALLAH  Subhanahu Wata ‘Ala and the Akhirah. See Remedies for Piles, Hemorrhoids and Fissures here.

 

ALLAH  Zille Shanahu has dictated about shirk and Jews,

وَلَتَجِدَنَّهُمْ أَحْرَصَ النَّاسِ عَلَىٰ حَيَاةٍ وَمِنَ الَّذِينَ أَشْرَكُوا ۚ يَوَدُّ أَحَدُهُمْ لَوْ يُعَمَّرُ أَلْفَ سَنَةٍ وَمَا هُوَ بِمُزَحْزِحِهِ مِنَ الْعَذَابِ أَن يُعَمَّرَ ۗ وَاللَّهُ بَصِيرٌ بِمَا يَعْمَلُونَ

(Surah Al-Baqarah, Verse 96)

 

Translation:

And you will surely find them the most greedy of people for life – [even] more than those who associate others with Allah. One of them wishes that he could be granted life a thousand years, but it would not remove him in the least from the [coming] punishment that he should be granted life. And Allah is Seeing of what they do.

 

Non-believers do not believe in life after death (Akhirah). This is the reason why they expect and loves their life to be long and Jews to know they would be caught for their wrong doings in Akhirah. This is the reason, Non-believers and Jews have the worst, pernicious and wicked thoughts and acts as well. See how to get rid of bad breath?

They are habitual to cheat people, to make them their slaves and for taking undue advantage of all the resources they have.

They are not even scared of death because they do not believe that there will be a life after death and if they want something, they become crazy for it. For example, if they wish for something that seems to be impossible to attain, they would not even hesitate to end their life for the fulfillment of their desire. See cough and cold remedies here.

This is why Islam has laid much emphasis and importance in believing the Day of Resurrection. The Noble Qur’an also laid much emphasis on the value of the Day of Resurrection and gave the entire description of it. But when illiterates/Non-believers couldn’t understand or it became hard for them to believe it, they simply refused to accept it. Then ALLAH  Azzawajal Directed HIS Prophet to swear that you are in truth. See health facts here.

 

This has been written by ALLAH  Ta’ala in the Holy Qur’an as follows,

 

زَعَمَ الَّذِينَ كَفَرُوا أَن لَّن يُبْعَثُوا ۚ قُلْ بَلَىٰ وَرَبِّي لَتُبْعَثُنَّ ثُمَّ لَتُنَبَّؤُنَّ بِمَا عَمِلْتُمْ ۚ وَذَ‌ٰلِكَ عَلَى اللَّهِ يَسِيرٌ

(Surat At-Taghabun, Verse 7)

 

Translation:

Those who disbelieve have claimed that they will never be resurrected. Say, “Yes, by my Lord, you will surely be resurrected; then you will surely be informed of what you did. And that, for Allah, is easy.”

 

On the Day of Resurrection, ALLAH  Azzawajal will grant the best of HIS blessings and virtues to the people who loved HIM and led their lives according to Islam and were having the firm beliefs in the day of Judgement. ALLAH  Subhanahu Wata ‘Ala will give punishment to those who disbelieved HIM and refused to believe in the Day of Resurrection as well. See the process of Salatul Hajat here.

 

Some of the beautiful Verses from the Holy Qur’an are presenting here regarding this aspect.

 

يَا أَيُّهَا النَّاسُ إِن كُنتُمْ فِي رَيْبٍ مِّنَ الْبَعْثِ فَإِنَّا خَلَقْنَاكُم مِّن تُرَابٍ ثُمَّ مِن نُّطْفَةٍ ثُمَّ مِنْ عَلَقَةٍ ثُمَّ مِن مُّضْغَةٍ مُّخَلَّقَةٍ وَغَيْرِ مُخَلَّقَةٍ لِّنُبَيِّنَ لَكُمْ ۚ وَنُقِرُّ فِي الْأَرْحَامِ مَا نَشَاءُ إِلَىٰ أَجَلٍ مُّسَمًّى ثُمَّ نُخْرِجُكُمْ طِفْلًا ثُمَّ لِتَبْلُغُوا أَشُدَّكُمْ ۖ وَمِنكُم مَّن يُتَوَفَّىٰ وَمِنكُم مَّن يُرَدُّ إِلَىٰ أَرْذَلِ الْعُمُرِ لِكَيْلَا يَعْلَمَ مِن بَعْدِ عِلْمٍ شَيْئًا ۚ وَتَرَى الْأَرْضَ هَامِدَةً فَإِذَا أَنزَلْنَا عَلَيْهَا الْمَاءَ اهْتَزَّتْ وَرَبَتْ وَأَنبَتَتْ مِن كُلِّ زَوْجٍ بَهِيجٍ

ذَ‌ٰلِكَ بِأَنَّ اللَّهَ هُوَ الْحَقُّ وَأَنَّهُ يُحْيِي الْمَوْتَىٰ وَأَنَّهُ عَلَىٰ كُلِّ شَيْءٍ قَدِيرٌ

 وَأَنَّ السَّاعَةَ آتِيَةٌ لَّا رَيْبَ فِيهَا وَأَنَّ اللَّهَ يَبْعَثُ مَن فِي الْقُبُورِ

 

(Surat Al Hajj, Verses 5, 6, 7)

  

Translation:

O People, if you should be in doubt about the Resurrection, then [consider that] indeed, We created you from dust, then from a sperm-drop, then from a clinging clot, and then from a lump of flesh, formed and unformed – that We may show you. And We settle in the wombs whom We will for a specified term, then We bring you out as a child, and then [We develop you] that you may reach your [time of] maturity. And among you is he who is taken in [early] death, and among you is he who is returned to the most decrepit [old] age so that he knows, after [once having] knowledge, nothing. And you see the earth barren, but when We send down upon it rain, it quivers and swells and grows [something] of every beautiful kind.

That is because Allah is the Truth and because He gives life to the dead and because He is over all things competent

And [that they may know] that the Hour is coming – no doubt about it – and that Allah will resurrect those in the graves.

 

 

If ALLAH  Ta’ala has created humans then HE still holds the power to create them again. From their own bones as HE is the Only Creator and the All-Knowing.

 

ALLAH  Ta’ala says,

 

وَضَرَبَ لَنَا مَثَلًا وَنَسِيَ خَلْقَهُ ۖ قَالَ مَن يُحْيِي الْعِظَامَ وَهِيَ رَمِيمٌ

قُلْ يُحْيِيهَا الَّذِي أَنشَأَهَا أَوَّلَ مَرَّةٍ ۖ وَهُوَ بِكُلِّ خَلْقٍ عَلِيمٌ

(Surah Yasin, Verses 78, 79)

 

Translation:

And he presents for Us an example and forgets his [own] creation. He says, “Who will give life to bones while they are disintegrated?”

Say, “He will give them life who produced them the first time; and He is, of all creation, Knowing.”

 

Hadith Mubarak: Majority of Muslims, all in vain

 

Hazrat Saubah Radi ALLAHU  Anhu narrates that once Prophet Mu’hammad SallALLAHU  ‘Alayhe Wasallam told them, that, a time would come one day when all kufr tribes would gather to kill each other and they would call each other to kill in the same way as guests are invited to eat food near the bowl.

 

Hearing this a noble man asked him will we be less that day? To this, Prophet SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam replied,

 

That we would be at the majority number so much just like a ground looks full of grass leaves but they would be destroyed by each other in the same way just like a gushing water flushes out this grass.

 

One noble person asked him what would be the reason for lethargy lazy attitude?

 

To this Prophet SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam replied,

 

The day will come when these people will start loving this world,  its wealth and will consider death as haraam.

(Abu Dawood)

 

Beautiful Creation of the Universe and ALLAH ‘s Wisdom behind this Creation

Granting rain on arid land to grow seedlings on it and to recreate a human being is the living proof of the wonderful Creations of ALLAH  Ta’ala. See How to Get Forgiveness?

 

ALLAH  Subhanahu Wata ‘Ala Says,

 

أَوَلَيْسَ الَّذِي خَلَقَ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضَ بِقَادِرٍ عَلَىٰ أَن يَخْلُقَ مِثْلَهُم ۚ بَلَىٰ وَهُوَ الْخَلَّاقُ الْعَلِيمُ

إِنَّمَا أَمْرُهُ إِذَا أَرَادَ شَيْئًا أَن يَقُولَ لَهُ كُن فَيَكُونُ

(Surah Yasin, Verses 81-82)

 

Translation:

Is not He who created the heavens and the earth Able to create the likes of them? Yes, [it is so]; and He is the Knowing Creator.

His command is only when He intends a thing that He says to it, “Be,” and it is.

 

As ALLAH  Ta’ala is the Creator of the sky and the earth, therefore it is a very small thing for HIM to recreate a human being. HE the Almighty, the Creator can do anything.

 

ALLAH  Subhanahu Wata ‘Ala has said,

 

لَخَلْقُ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ أَكْبَرُ مِنْ خَلْقِ النَّاسِ وَلَـٰكِنَّ أَكْثَرَ النَّاسِ لَا يَعْلَمُونَ

(Surah Ghafir, Verse 57)

 

Translation:

The creation of the heavens and earth is greater than the creation of mankind, but most of the people do not know.

 

ALLAH  Zille Shanahu has Said,

أَفَحَسِبْتُمْ أَنَّمَا خَلَقْنَاكُمْ عَبَثًا وَأَنَّكُمْ إِلَيْنَا لَا تُرْجَعُونَ

فَتَعَالَى اللَّهُ الْمَلِكُ الْحَقُّ ۖ لَا إِلَـٰهَ إِلَّا هُوَ رَبُّ الْعَرْشِ الْكَرِيمِ

(Surat Al-Mu’minoon, Verse 115-116)

 

Translation:

Then did you think that We created you uselessly and that to Us you would not be returned?”

So exalted is Allah, the Sovereign, the Truth; there is no deity except Him, Lord of the Noble Throne.

 

ALLAH  Ta’ala also Says,

 

وَمَا خَلَقْنَا السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضَ وَمَا بَيْنَهُمَا لَاعِبِينَ

مَا خَلَقْنَاهُمَا إِلَّا بِالْحَقِّ وَلَـٰكِنَّ أَكْثَرَهُمْ لَا يَعْلَمُونَ

(Surah Ad-Dukhan, Verse 38-39)

 

Translation:

And We did not create the heavens and earth and that between them in play.

We did not create them except in truth, but most of them do not know.

 

In the End,

In this world we see numerous things and creations existing all around us. If we think about them, we come to know that all these things are created for a specific purpose and for a fixed time period. That means ALLAH  Ta’ala has created every living being purposely and every creation of ALLAH  Azzawajal has a limited life. See Kaffarah Qaza-e-Umri here.

 

We can not neglect the reality of the Day of Resurrection. It is the fact and it will definitely occur one day.

 

The manner or the way which we follow throughout our life is very important to us. One should Invest his life in such a way that he will get the blessings in the Hereafter. One should try to do kind deeds as much as he can and should avoid the evil way. See Quran Sunnah Remedies here.

Always follow the path of ALLAH  Ta’ala. Do only what HE likes and don’t do what HE don’t like. This is the key to success in this world and the Hereafter too.

 

Also, try to become a reason to put a smile on the face of others, rather to be the cause of bringing tears in their eyes. As good you be here in this world, as much as reward you will get in Akhirah. Insha ALLAH.

 

May ALLAH  Tabarak Wata ‘Ala give us the strength to follow the righteous path and protect us from the evil way, so that we can attain a beautiful place in Heaven. Ameen!

 

Hadees Nishaniyan Asar-e-Qayamat

Roman English Version

Hamare Iman ki hifazat faqat hamein hamre maut tak rakhni hai. Ye sach hai ke har guzarne wale lamhe ke sath ham tezi se qayamat ki taraf badh rahe hain. Aksar logon ka khayal hai ke ye din shayed intehayi mustaqbil ba’eed (bohat zyadah der) ki bat hai. Aise logon ko yad karna chahiye ke in se qabl ane wale logon ka bhi yahi khayal tha.

Dar-haqiqat har zi-ruh ko ek din ALLAH Ta’ala ke huzoor hazir hona hai, jis se wo kisi surat bach nahi sakta. Kyunke qayamat ke din ka sahih waqt sirf ALLAH Ta’ala ko malum hai.

Shayed jab ham apne mustaqbil ke program banane aur apne hal ko sanwarne mein magan honge, ye ghadi hamein aa le. ALLAH Ta’ala hamein qayamat ane se pahle nekiyan karne aur burayi se bachne ki taufiq ata kare. Ameen.

Yahan dekhiye Apne iman ki hifazat kaise ki jaye?

Qayamat ki alamat Sabhi Anbiya Alayhis Salam ne bhi bayan ki hain aur chunke Nabi Kareem Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ke bad koi nabi nahi ayega isliye Nabi Kareem Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne tafseelan isko bayan kiya hai.

Sahih Muslim mein hai,

“Huzaifah Radi ALLAHU Anhu se riwayat hai ke Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam hamare darmeyan khade hue aur is qayam ke dauran Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne qayamat tak hone wala koi aisa waqiya nahi choda jo hamein na bataya ho.

Jis ne yad rakha, yad rakha aur jo bhul gya, wo bhul gya aur Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne jin waqiyat ki hamein khabar di,un mein se jo bhi bhul gya hu, wo jab bhi runuma hota hai tou mujhe yad aa jata hai jaise koi admi jab ghayeb ho tou uska chahra bhul jata hai aur phir jab us par nazar padti hai tou yad aa jata hai.”
(Sahih Muslim, Suad 39)

Nishaniyan Asar Qayamat ke Mutaliq Irshadaat-e-Rasul SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam

Qayamat ke mutaliq Payare Nabi Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ki chand khubsoorat Ahadees zail mein pesh ki ja rahi hain.

Hadees Shareef mein hai ke qayamat se pahle wo waqt ayega ke nahar Farat ke andar se sone ka ek pahad zaher hoga aur us par qabza karne ke liye log jang karenge. Jis ke natija mein ninanwe log mar jayenge jin mein se har ek ka guman hoga ke shayed main hi bach jaon.
(Sahih Muslim)

  • Bukhari aur Muslim ki ek riwayat mein hai jo Hazrat Abu Hurairah Radi ALLAHU Anhu se maravvi hai ke Farat se sone ka ek pahad zaher hoga jo shakhs wahan par maujud ho us se kuch bhi na le.
    (Mashkat Shareef)

 

  • Hazrat Abu Hurairah Radi ALLAHU Anhu farmate hain ke Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne farmaya ke duniya ke khatm hone se pahle aisa waqt zarur guzre ga ke qabar par insan ka guzar hoga aur wo qabar par laut kar kahega ke kash main is qabar wale ki jagah hota aur deen ko wajah se ye tamanna na hogi (bad-dini ki fiza se ghabra kar aisa kare ga) balke (duniyawi) musibat mein giraftar hoga.
    (Muslim Shareef)

 

  • Hazrat Jabar Radi ALLAHU Anhu farmate hain ke Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne farmaya ke akhir zaman mein ek aisa musalman badshah hoga jo lap bhar bhar ke mal taqsim karega aur mal ko shumar nahi karega.
    (Muslim Shareef)

 

  • Bukari o Muslim ki ek riwayat mein hai ke Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne farmaya qayamat us waqt tak qayem na hogi jb tak tumhare andar mal ki is qadar kasrat na ho jaye ke maldar ko iska ranj hoga ke kash koi mera sadqah qubool kar leta.

Hazrat Auf bin Malik Radi ALLAHU Anhu farmate hain ke ke mere samne Rasul ALLAH SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne qayamat ki chhe nishaniyan zikr farmayi hain, jin mein se ek ye hai ke mal ki is qadar kasrat hogi ke insan ko sau dinar (sone ki ashrafiyan) diye jayenge to (unhe kam samajh kar) naraz ho jayega.
(Bukhari Shareef)

  • Hazrat Saubah Radi ALLAHU Anhu farmate hain ke Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne farmaya ke jab meri ummat mein talwar rakh di jayegi (yani ummat apas mein khana jangi karne lage gi) tou qayamat tak talwar chalti rahegi aur qayamat us waqt tak qayem na hogi jab tak meri ummat ke bohat se qabile mushrikeen mein dakhil na ho jayen aur jab tak meri ummat ke bohat se qabile buttaun ko na pujen.

(Phir faramaya ke) bila shubah meri ummat mein tees kazzaab honge jin mein se har ek apne ap ko nabi batayega halanke main ‘Khatam-an-Nabiyyin’ hu. Mere bad koi nabi nahi ho sakta.
(Mashkat Shareef)

Nishaniyan Qayamat ke Asar Qur’an Shareef ki Roshani mein

Wo log jo is duniya ki waqti asayeshon aur khushiyun se mutma’een hain wo kayi aham haqiqaton ko bhulne ki puri koshish karte hain. Jaise ke unki maut jo unka picha kar rahi hai, aur dubara zindah kiye jane ka din. In haqiqaton par ghaur karte hue wo khud se yahi kahte rahte hain ke unhe zindagi apni marzi se guzarni chahiye aur wo ALLAH ke liye apne faraiz bhul jate hain.

Qayamat ke Mutaliq Qur’ani Ayaat

Qur’an Pak roz-e-akhirat ke marahel, us roz logon ko lagne wale hairat ke jhatkon, unke khauf, wahshat aur zahni halat ka naqsha pesh karta hai.

Chunanche ALLAH Ta’ala farmata hai,

Tarjuma: “(Un se) puchiye ke kis ka hai jo kuch asaman aur zamin mein hai ap (hi unhe) bataiye (sab kuch) ALLAH hi ka hai. Us ne lazim kar liya hai Apne par rahmat farmana. Yaqinan jama karega tumhe qayamat ke din. Zra shak nahi is mein (magar) jinhon ne nuqsan mein dal diya hai apne ap ko tou wo nahi iman layenge.”
(Surat Al-Inaam, ayat # 12)

Ek aur jagah Irshad-e-Rabani hai,

Tarjuma: “Phir jab phunk mari jayegi sur mein ek bar aur zamin aur pahado ko utha kar haqiqatan chur chur kar diya jayega to us roz hone wala waqiah ho jayega.”
(Surat Al-Haaqat, ayat # 13-15)

Duniyawi Zindagi ki Na-Payedari aur Akhirat ki Haqiqat

Akhirat ka waqt aur uske bad hamesha baqi rahne wali zindagi jo logon ki muntazir hai, asal mein yahi sab se aham haqiqat hai. Ye duniya jis mein ham zindagi guzar rahe hain, ye to ek din khatm ho ke hi rahni hai. Isi wajah se dunuyawi zindagi ki na-payedari par itna zor diya gya hai.

Is zamin par koi aisi chiz nahi hai jis ko ap apni hamesha qayem rahne wali zindagi par tarjih dein. Na apka career, na shadi, na daulat aur na hi jayedad. Ye sab isi duniya mein rah jana hai.

Agar koi chiz aisi hai jiske liye jiya jaye ya jiski fikr ki jaye tou wo hai ALLAH Ta’ala ki raza. ALLAH Ta’ala akhirat ki zindagi ka aghaz intehayi hairat-angez tariqe se karega. Us roz maujud har shakhs jan le ga ke duniya ki is waqti zindagi ko khatm hona tha aur har shakhs ko akhirat ki zindagi ki haqiqat ka wazeh taur par andaza ho jayega. Yahan se dekhiye tamam Mubarak Durood Shareef ki tafsilaat.

Us din ke ane se pahle har shakhs ko roz-e-qayamat ke waqt (aur uski haibat ko yad) karna chahiye. Khawah unho ne kabhi iske bare mein na socha ho.

Zaher hai wo din lazman sab ko dekhna hai. Ye ek aham warning hai kyunke har wo shakhs jo is din ko aur is din pesh ane wale waqiyat ko nazar andaz karta hai. Use roz-e-qayamat ke naqabil-e-bardasht waqiyat ka samna karna pade ga. Aur akhirat ki na khatm hone wali sakhtiyan bardasht karna padeingi.

Ham sab ko yaqinan us din ka samna karna padega, jis ke bare mein Qur’an Pak ne tafsilan wazahat bayan ki hai. Ham dekheinge ke us roz hamara har asasa (asset) yahan tak ke hamara Jism bhi hamara sath chod dega aur phir hamein dubara takhliq kiya jayega.

Hamein ALLAH Ta’ala ke ata-karda mauqa se fayedah uthana chahiye taa ke akhirat ki muntazir na’emato, khushiyon aur sukoon ko pa sakein jinka muqabla zamin par maujud koi sh’ae nahi kar sakti.

Is zaman mein hamein jo karna hai wo sirf ye hai ke ALLAH Ta’ala par kamil iman layen aur akhirat ki haqiqat aur un na’emato par shukar ada karein jo ALLAH Ta’ala ne hamein ata ki hain. Agar ham aisa nahi karte tou hamein akhirat mein naqabil-e-misal nidamat (sharmindagi) aur pachtawe ka samna karna padega.
Qur’an Pak mein ALLAH Azzawajal ka farman-e-Mubarak hai,

“Beshak khasarah mein rahe wo jinho ne jhutlaya ALLAH se mulaqat (ki khabar) ko. Yahan tak ke jab aa gayi un per qayamat achanak bole haye haye afsos us kotahi par jo ham se hui us zindagi mein aur wo uthaye hue hain apne bojh apni pushton par, aray kitna bojh hai jise wo uthaye hue hain.”
(Surat Al-Inaam, ayat # 31)

Hamein taslim karna chahiye ke akhirat ki zindagi ek haqiqat hai aur iske liye tayari karni chahiye. Kyunke wahi abdi zindagi hai jo hamesha qayem rahe gi. Is duniya ki zindagi ko fana hai, is ne tou ek din khatm ho ke hi rahna hai. Jo is bat se munkar ho, wo kamil musalman hi nahi. Hamare kamil musalman hone ke liye roz-e-qayamat par yaqin hona lazim hai.

Taham aj se hi apni akhirat sanwarne ki tayari shuru kar dijiye, isi mein ham sab ki bhalayi hai. Zyadah se zyadah nekiyan karne ki koshish kijiye aur buraiyon se bachne ki mukammal tag-o-do kijiye. Yahan se dekhiye ayat-e-karima ki afadiyat.

Isi surat mein maujudah zindagi mein kiye gaye hamare a’imal ki qadar hogi. Aur hamein in ka pura-pura badla yahan is duniya mein bhi milega aur akhirat mein bhi milega. Iska ajar jannat mein thikana hoga jahan hamein hamari marzi ki har sha’e mayassar hogi.

Yad rakhiye ke roz-e-qayamat har shakhs ko ALLAH Ta’ala ke samne apne sab a’imal ka hisab dena hoga. Chunache sahih a’imal kijiye aur maut aur iske bad ki haqiqaton ki tayari kijiye. Huqooq ALLAH aur huqooq-ul-ibaad ka khas khayal kijiye. Khub ibadat kijiye aur logon mein khushiyan bantiye.

Na ke kisi ka dil dukhaiye ya kisi ka haq mariye. Us din jawab har amal ka dena padega aur wahan hamein wahi sab milega jis ke ham haqdar honge.

ALLAH Ta’ala hamein akhirat ki zindagi ke liye tayari karne ki taufiq de. Ameen. Apni hajat puri karne ke liye yahan se dekhiye Surat Yaseen Shareef ka khas wazifa.

Symptoms of The Day of Resurrection in Islam Nishaniyan Asar e Qayamat

Yaum-e-Akhirat aur Yaum-e-Qayamat par Iman Lana

Yaum-e-Akhirat par iman lana, iman ke arkaan mein se ek rukan aur Islam ke buneyadi aqayed mein se ke aqidah hai. Kyunke ALLAH Ta’ala ki wahdaniyat ke bad Yaum-e-Akhirat mein uthaye jane ka faisla hi wo faisa hai jis par aqidah ki buneyad qayam hai.

Yaum-e-Akhirat mein pesh ane wali chizon aur uski alamat par iman rakhna ‘iman bil-ghyeb’ ka hissa hai. Iska idraak aqal ke zariye nahi kiya ja sakta aur na hi wahi ke nasus ke ilava iski ma’arfat ka koi zariya hai. Du’a mangne ka tariqa janiye.

Is yaum-e-azim ki ahmiyat ke peshe nazar ham aksar dekhte hain ke ALLAH Ta’ala ne Apni zat par iman lane ko yaum-e-akhirat par iman lane se wabasta kar rakha hai jaisa ke Zat-e-Bari Ta’ala ka farman hai,

Tarjuma: “Mashriq aur maghrib ki taraf muh karne mein hi achhayi nahi balke haqiqatan achha wo shakhs hai jiska ALLAH Ta’ala par aur qayamat ke din par iman hai.”
(Surat Al-Baqarah, ayat # 177)

Ek aur jagah ALLAH Ta’ala ne farmaya,

Tarjuma: “Yahi hai wo jiski nasihat use ki jati hai jo ALLAH par aur qayamat ke din par iman rakhta ho aur jo shakhs ALLAH se darta hai to ALLAH uske liye chutkare (azab se bachne) ki shakl nikal deta hai.”
(Surat Talaq, ayat # 2)

Iske ilava aur bhi bohat si ayaat hain.
Aur Qur’an Pak mein shayed hi koi aisa safha hoga jis mein yaum-e-qayamat aur is mein mutayyan karda savab-o-atab ke mutaliq koi bat pesh na ki gai ho. Yahan se bachon ki har buri nazar se hifazat ke liye wazifa dekhiye.

nishaniyan asar qayamat-yawm-ul-akhirah-yaALLAH.in150717

Islami Tasavvur ke Mutabiq Asal Zindagi, Duniyawi Zindagi nahi balke Akhirat ke bad ki Zindagi hai

Islami tasavvur ke mutabiq to zindagi be-payan hai aur iski muddat qayamat ke din tak draz hai. Aur iska silaila us jagah tak phailta hai jahan dusra ghar hai.

Jannat jiska arz (chaurhayi) asman aur zamin ke brabar hai, ya dozakh jo apne andar sal-ha-sal se zamin ke sine par abaad hone wali bohat so naslon ko samo lene ki wus’at rakhti hai.

ALLAH Ta’ala ne farmaya,

Tarjuma: “Aao daudo apne Rab ki maghfirat ki taraf aur us jannat ki taraf jiski wus’at asman o zamin ki wus’at ke brabar hai. Ye unke liye banayi gai hai jo ALLAH par aur Uske Rasulon par iman rakhte hain. Ye ALLAH ka fazal hai jise chahe Wo de aur ALLAH bade fazal wala hai.”
(Surah Al-Hadid, ayat # 21)

Phir farmaya,

Tarjuma: “Jis din Ham dozakh se pucheinge kya tu bhar chuki? Tou wo javab degi kya kuch aur mazid bhi hai.”
(Surat Qaaf, ayat # 30)

Momin aur Yaum-e-Akhirat

Khair yani nek raston par insan ko chalane ka asal muharrak (stimulas) darasal ALLAH Ta’ala aur yaum-e-akhirat aur us mein chupe savab-o-atab par iman hi hai. Warna bashri qavanin main se koi aisa qanun nahi jo insani sulook ke andar is tarah raasti-o-istaqamat paidah kar de jis tarah yaum-e-akhirat par iman paidah karta hai.

Ye ALLAH Azzawajal ki Pak zat ki taufiq hi hai jo insan nekiyon ki taraf raghib hota hai aur buraiyon se bachne ki taufiq pata hai. Isliye bada farq hai aur bohat duri hai us shakhs ke sulook mein jo ALLAH Ta’ala aur yaum-e-akhirat par iman rakhta hai. Wo janta hai ke duniya akhirat ki khaiti hai aur nek a’imal akhirat ka tosha hain.

Jaisa ke ALLAH Subhanahu Wata ‘Ala ne farmaya,

Tarjuma: “Hajj ke mahine muqarrar hain. Isliye jo shakhs in mein hajj lazim kar le wo apni bewi se mel milap karne, gunah karne aur ladayi jhagde karne se bachta rahe, tum jo neki katoge us se ALLAH Ta’ala ba-khabar hai aur apne sath safar kharch le liya karo. Sab se bahtar tosha ALLAH Ta’ala ka dar hai. Ae aqal-mand! Mujh se darte raha karo.”
(Surat Al-Baqarah, ayat # 197)

Sahabi Jalil Umar bin Hamam Radi ALLAHU Anhu ne farmaya,
“Taqwa, akhirat ka amal aur ALLAH Ta’ala ke liye jahad par sabar ke tosha ke baghair ALLAH Ta’ala ki taraf pesh qadmi nahi ho sakti, taqwa, neki aur rushd ke ilava tamam toshe khatm ho jayenge.”

Us shakhs ki tarz-e-zindagi mein jiska ye hal hua aur us shakhs ke aslub-e-hayat (zindagi guzarne ke andaz) mein jo ALLAH Ta’ala, yaum-e-akhirat aur is mein maujud savab-o-atab par yaqin nahi rakhta, yahi farq hai. Kyunke yaum-e-jaza ki tasdiq karne wala jab zindagi ke safar mein rawan dawan hota hai tou uski nazron mein asman ki mezan hoti hai, zamin ki mezan nahi.

Aur wo apne a’imal duniya ke hisab ki nazar se nahi balke akhirat ke hisab ki nazar se karta hai. Yahan se dekhiye good luck hasil karne ka wazifa.

Zindagi mein aslub achuta hota hai. Is mein istaqamat, tasavvur ki wus’at aur iman ki quwwat payi jati hai. Aur is mein ajar-o-savab ki ummid, mushkilat mein sabat (mazbut rahna) aur musibaton mein sabr paya jata hai. Kyunke wo ye bat achhi tarah janta hai ke jo kuch ALLAH Ta’ala ke pas hai wo bahtareen aur baqi rahne wala hai.

Hadees Shareef ki Roshni mein Roz-e-Qayamat

Turjuma: Imam Muslim ne Hazrat Suheb Radi ALLAHU Anhu se riwayat ki hai, unho ne kaha ke Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne farmaya,

“Ta’ajjub hai momin ki halat par yaqinan uski har halat mein bhalayi hai, aur ye chizen momin ke ilava kisi ko hasil nahi, agar use khush-hali hasil hoti hai tou shukar baja lata hai. Bas tou ye chiz uske liye bhali hoti hai. Aur agar use taklif ka samna hota hai tou sabr kar leta hai, tou ye chizen us ke liye bhali hoti hain.”

Musalman ka nafa bashariyat tak mahdud nahi rahta balke haiwanat tak draz hota hai. Jaisa ke Hazrat Umar bin Khatab Radi ALLAHU Anhu ka mashur qaul hai ke,

“Agar Iraq mein koi khachar gir pade tou main samajhta hun ke ALLAH Ta’ala mujh se is ke mutaliq daryaft farmayega ke ae Umar tu ne iske liye rasta hamwar kyun nahi kiya?”

Ye sha’ur (samajh bujh) ALLAH Ta’ala par iman aur yaum-e-akhirat par iman rakhne ka asar hai aur bhaari zimedari aur amanat ki azmat ke ahsas se paidah hota hai jis ko insan ne utha liya tha jab ke asmano, zamino aur pahado ne ise uthane se apne khauf ka izhar kiya tha.

Ye sha’ur isliye paidah hota hai ke wo janta hai k har choti badi chiz ke mutaliq us se baz purs (hisab kitab) hogi. Aur inka hisab hoga aur inhi ki buneyad par use badla diya jayega. Agar achha hai to achha aur bura hai tou bura. Yahan dekhiye mu’ashre mein izzat badhane ke liye khas amal.

Irshad-e-Bari Ta’ala hai,

Tarjuma: “Jis din har nafs (shakhs apni ki hui nekiyon ko aur apni ki hui buraiyon ko maujud pa lega, arzu karega ke kash! us ke aur buraiyon ke darmeyan bohat hi duri hoti, ALLAH Ta’ala tumhen Apni Zat se dara raha hai aur ALLAH Ta’ala Apne bandon par bada Meharban hai.”
(Surat Al-Imran, ayat # 30)

Aik aur jagah Irshad-e-Bari Ta’ala hai,

Tarjuma: “Aur nama-e-a’imal samne rakh diye jayenge pas tu dekhe ga ke gunahgaar us (ki tahrir) se khaufzadah ho rahe honge aur kah rahe honge haye hamari kharabi ye kaisi kitab hai jis ne koi chhota bada baghair ghere baqi hi nahi chhora aur jo kuch unho ne kiya tha wo (us mein likha hua) hazir payenge aur Tera Rab kisi par zulm-o-sitam na karega.”
(Surat Kahaf, ayat # 49)

Munafiq aur Yaum-e-Akhirat

Aur jo shakhs ALLAH Ta’ala, yaum-e-akhirat aur is mein hone wale hisab aur jaza par iman nahi rakhta wo apni duniyawi zindagi ki hajat ki takmil mein tan man se masruf ho jata hai aur iski asayeshon ke piche bhagta rahta hai aur diwana war unke husool mein laga rahta hai.

Wo koshish karta hai ke uske waste se logon ka kuch bhala na hone paye. Us ne duniya ko apni fikr ka markaz aur ilm ki inteha qarar de rakha hai. Apni zati manf’at ke paimane se sab chizon ko napta hai.

Use dusron ki koi parwah nahi hoti. Wo apne ham jinson par bas itni hi tawajjuh deta hai jitni is mahdud kotah zindagi mein un se uska mufad wabasta hota hai.

Uski tag-o-do (koshish) ka maidan bas zindagi aur uski umr ke hudood hote hain. Aur yahin se uske hisab ka dayra badal jata hai aur uske paimane mukhtalif ho jate hain. Is tarah uski inteha ghalat natayej par hoti hai kyunke wo marne ka bad dubara uthaye jane par yaqin nahi rakhte. Janiye Surat Muzammil ke Fawayed ke bare mein.

Turjuma: “Balke insan tou chahta hai ke aage aage nafarmaniyan karta jaye, puchta hai ke qayamat ka din kab ayega.”
(Surat Al-Qiyamat, ayat # 5,6)

Is tang aur mahdud jahlaana tasavvur ne ahle jahliyat ko khun rezi, lut mar aur rah zani (chori chakari) par amadah kiya. Kyunke dubara uthaye jane aur jaza waghaira par iman nahi rakhte.

Jaisa ke ALLAH Ta’ala ne unke hal ki tasvir kashi farmayi hai,

Tarjuma: “Aur ye kahte hain ke sirf yahi duniyawi zindagi hamari zindagi hai aur ham dubara zindah na kiye jayenge.”
(Surat Al-Inaam ayat # 29)

Baghair ilm ke Fatwa Dena

Hazrat Abdullah bin Umar Radi ALLAHU Anhu farmate hain ke

“Rasul ALLAH SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne farmaya hai ke bandon mein se Khuda ilm ko achanak na uthaye ga balke Ulma ko maut de kar ilm ko rafta rafta khatm kar dega hatta ke jab Khuda kisi alim ko na chode ga tou log jahilon ko umidwar (sadar) banayen ge un se masyel aur mamlat ke bare mein pucheinge.”

Sadiyan guzarti gayen aur ta’ajjub khez chizen taraqqi pazir hoti rahin. Is se bhi kahin badh kar inkar paidah ho jata hai. Ham dekh rahe hain ke mahsus hone wali madi chizon ke siwa tamam chizon ka kuli taur par inkar kiya ja raha hai.

Jaisa ke Al-hadiyat ki hamilMarkasi Ishtarakiyat’ (Marxist, a Socio-economic Ideology) ka hal hai ke jo ALLAH Ta’ala aur yaum-e-akhirat par yaqin nahi rakhti aur hayat ke mutaliq ye kahti hai ke wo to sirf madah hai aur mahsus madah ke piche koi chiz nahi hai.

Is Theory ke sardar mulhid ( Non-Muslim) ‘Marx’ ka khayal to ye hai ke ‘illah’ (ma’abud) koi nahi hai aur zindagi madah hai.

Yahi wajah hai ke wo janwaron ki tarah hain. Aur apni takhliq  aur zindagi ke maqsad ke piche asal haqiqat se be-khabar hain.  Aur agar unke yahan kisi surat ijtamaiyat payi bhi jati hai to wo satwat qanun (qanun ke raub aur dabdabe) ke khauf ki wajah se hai.

Aur isi tarah ke logon ko ap zindagi ke liye sab se zyadah lalchi payenge kyun ke wo yaum-e-akhirat par yaqin nahi rakhte.

Jaisa ke ALLAH Zille Shanahu ne mushrakin aur yahud ke wasf (khubi) ke bare mein farmaya hai,

Tarjuma: “Balke ae Nabi! Sab se zyadah duniya ki zindagi ka haris ap inhi ko payenge, ye hars ki zindagi mein mushrikon se bhi zyadah (aage) hain. Un mein se tou har shakhs ek ek hazar sal ki umr chahta hai goya ye umr diya jana bhi unhe azabon se nahi chuda sakta aur ALLAH Ta’ala unke kamon ko bakhubi dekh raha hai.”
(Surat Al-Baqarah, ayat # 96)

Mushrik tou ‘ba’as ba’ad-ul-maut’ (maut ke bad ki zindagi) ki ummid nahi rakhta. Isliye wo lambi zindagi ko mahbub rakhta hai aur yahudi ke pas jo ilm hai uski bina par wo janta hai ke uske kartuton ke sabab akhirat mein uske liye kis qadar ruswayi hai.

Chunache ye jins aur iski tarah ke log bad-tareen log hain. Ap dekheinge ke inke darmeyan bad-tareen qisam ke lalach aur tama ka daur daura hai.

Qaumon ko zer karna, unhe ghulam bana lena aur duniyawi zindagi se fayedah hasil karne ke lalach mein unke mali khazanon ko lut lena inka shewah hai. Isiliye unke darmeyan ikhlaqi garawat (ikhlaqi zawal) aur zalmana sulook ka zahur hai. Dushman se nijat hasil karne ka wazifa dekhiye.

Aur jab wo dekhte hain ke jis fauri lazzat ke wo mushtaq hain (yani jo khwahish wo chahte hain ke fauri puri ho jaye) agar uske husool mein duniyawi mushkilat unke samne aa rahi hain tou unhe maut ko gale laga lene mein bhi koi dar nahi lagta.

Kyunke dusri zindagi mein bas purs (javab dehi) ka unhe koi andaza nahi rahta. Lehaza is zindagi se chutkara hasil kar lene mein unke nazdik koi chiz mane nahi hoti hai yani koi chiz unhe rok nahi sakti.

Isliye iman-e-bil-akhirat ke mamle mein Islam ne bada ahtmam kiya hai. Qur’an Pak mein bhi iski takid ayi hai. Abdi zindagi, hisab kitab, jaza aur saza ki tausiq ki gai hai yani waze dalayel ke sath bayan kiya gya hai. Aur jahilon ko jab is par yaqin na aya to unho ne iska inkar kar diya.

Aur ALLAH Ta’ala ne Apne Nabi ko hukam diya ke is bat par qasam kha lein ke wo yaqinan haq hai.

Ye bat Qur’an Pak mein ALLAH Azzawajal ne kuch yun irshad farmayi hai,

Tarjuma: “Ap kah dijiye ke kyun nahi, ALLAH ki qasam! Tum zarur dubara uthaye jao ge phir jo tum ne kiya hai uski khabar diye jao ge aur ALLAH Ta’ala par ye bilkul hi asaan hai.”
(Surat Al-Taghabun ki ayat # 7)

Qayamat ke ahwal aur apne muttaqi bandon ke liye ALLAH Azzawajal ne jo savab tayar kar rakha hai, aur gunahgaaron ke liye jo sazayen muqarrar hain, un sab ka tazkirah farmaya hai. Aur munkarin ki tawajjuh uski haqaniyat ke dalayel ki janib mabzul karayi ta ke dilon se har qisam ke shak dur ho jayen.

Aur log is din ko aur is din runuma hone wale khauf ke lamhat jo rogte khade kar dene wale hain, ko apna nasb-ul-ain (maqsad) bana lein. Ye isliye kiya gya taa ke munkarin is duniyawi zindagi mein Rasul Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ke laye din-e-haq ki pairwi karen aur unke sulook ke andar istaqamat paidah ho jaye.

Symptoms of The Day of Resurrection in Islam Nishaniyan Asar e Qayamat

Irshad-e-Bari Ta’ala hai,

Tarjuma:

“Logo! agar tumhen marne ke bad ji uthne (dubara zindah kiye jane )mein shak hai tou socho ham ne tumhen mitti se paidah kiya,phir nutfa se, phir khun basta se, phir gosht ke lauthade se jo surat di gai thi aur be-naqsha tha, ye ham tum par zaher kar dete hain.

Aur ham jise chahein ek thahraye hue waqt tak raham madar mein rakhte hain, phir tumhen bachon ki halat mein duniya mein late hain, phir taa ke tum apni jawani ko pauhancho.

Tum mein se ba’az to wo hain jo faut kar liye jate hain aur ba’az gharz umr ki taraf phir se lauta diye jate hain ke wo ek chiz se ba-khabar hone ke bad phir be-khabar ho jaye tou dekhta hai ke zamin (banjar aur) khushk hai.

Phir jab ham us par barishen barsate hain tou phir wo ubharti aur phulti hai aur har qisam ki ronaq dar nabatat ugati hai.

Ye isliye ke ALLAH hi haq hai aur Wahi murdon ko jalata hai aur Wo har chiz par qudrat rakhne wala hai aur ye ke qayamat qat’an ane wali hai jis mein koi shak-o-shubah nahi aur yaqinan ALLAH Ta’ala qabar walon ko dubara zindah farmaye ga.”
(Surat Al-Hajj, ayat # 5,6,7)

Jo Zat ek bar insan ki takhliq kar chuki hai wo dusri martabah is eyadah se ajiz nahi ho sakti, balke aqli aitbar se ibtada ke muqable mein eyadah asaan hota hai.

Jaisa ke ALLAH Azzawajal ka Irshad hai,

Tarjuma: “Aur us ne hamare liye misal bayan ki aur apni (asl) paidayesh ko bhul gya, kahne laga in gali sadi hadiyon ko kaun zindah kar sakta hai? Ap javab dijiye ke inhe Wo zindah karega jis ne inhe pahli martaba paidah kiya tha aur jo sab tarah ki paidayesh ka bakhubi jan-ne wala hai.”
(Surat Yaseen, ayat # 78,79)

Hadees Mubarikah ki Roshni mein Muslamano ki Aksariyat hogi lekin Bekar

“Hazrat Sauban Radi ALLAHU Anhu farmate hain ke ek martaba Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne irshad farmaya ke ek aisa zamana ane wala hai ke (kufr-o-batil) ki jama’atein tumhein khatm karne ke liye apas mein ek dusre ko is tarah bula kar jama kar lein gi jaise khane wale ek dusre ko bula kar peyala ke as pas jama ho jate hain.

Ye sun kar ek sahab ne saval kiya kya ham us roz kam honge?

Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne farmaya nahi! Balke tum us roz ta’adad mein bohat hoge lekin ghass ke un tinkon ki tarah hoge jinhe pani ka sailab baha kar le jata hai.”

(Phir irshad farmaya ke) “Aur Khuda zarur zarur tumhare dushmano ke dil se tumhara raub nikal dega aur yaqinan tumhare dilon mein kaahili aur susti dal dega.

Ek sahab ne arz kiya ke susti ka kya (sabab) hoga. Is par Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne irshad farmaya ke duniya (yani mal-o-daulat se) muhabbat karne lago ge aur maut ko makruh samajhne lago ge.”
(Abu Dawud)

Kainaat ki Khubsurat Takhliq aur Khudaye Buzurg-o-Bartar ki Azim Hikmat

Barish ke zariye murdah zamin mein zindagi ki lahar daura dena aur is mein nabatat (paude) ugana aur murdon ko zindagi bakhshne par Buzurg-o-Bartar Khaliq ki Qudrat ki dalil hai.

ALLAH Subhanahu Wata Ala ka farman hai,

Tarjuma: “Jis ne asmano aur zamin ko paidah kiya hai kya wo in jaison ko paidah karne par qadir nahi, beshak qadir hai aur Wahi to paidah karne wala daana hai. Wo jab kabhi kisi chiz ka iradah karta hai tou Usay itna farma dena (kafi hai) ke ho ja aur wo usi waqt ho jati hai.”
(Surat Yasin, ayat # 81-82)

Lehaza Wo asman-o-zamin ki azmat ke bawajud unka Khaliq hai tou wo is chote se insan ki dubara takhkiq karne par bhi qadir hai.

Jaisa ke ALLAH Subhanahu Wata Ala ke is farman mein maujud hai,

Tarjuma: “Asman-o-zamin ki paidayesh insan ki paidayesh se bohat bada kam hai lekin (ye aur bat hai ke) aksar log be-ilm hain.”
(Surat Ghafir, ayat # 57)

ALLAH Ta’ala ki Pak zat insan ko be-kar nahi chod sakti, na Us ne inhe be-kar ya faltu paidah farmaya hai ke na to unhe kisi bat ka hukam diya jaye,na hi kisi bat se roka jaye aur na hi unke a’imal ka unhe badla diya jaye.

ALLAH Zille Shanahu insan ka farman hai,

Tarjuma: “Kya tum ye guman kiye huye ho ke Ham ne tumhe yunhi be-kar paidah kiya hai aur ye ke tum Hamari taraf lautaye hi na jao ge, ALLAH Ta’ala sacha Badshah hai Wo badi bulandi wala (Wo fuzool chizon ke paidah karne se Pak-o-Buland hai) Uske siwa koi ma’abud nahi Wahi Buzrug arsh ka Malik hai.”
(Surat Al-Mu’minon, ayat # 115-116)

Aur farmaya,

Tarjuma: “Ham ne zamin aur asman aur inke darmeyan ki chizon ko khel ke taur par paidah nahi kiya, balke Ham ne unhe darust tadbir ke sath hi paidah kiya hai lekin in mein se aksar log nahi jante.”
(Surat Al-Dukhan, ayat # 38-39)

Akhirat ki tayari ki koshish mein Gamzan ALLAH Ta’ala ke Nek Bande.

Jo chiz bilkul waze hain ke jo in makhluqaat ke ajayebat ke gird nazar ghumaye aur inke andar jo nizam aur payedari payi jati hai un par ghaur karega, tou use malum ho jaye ga ke har chiz ek andaz ke mutabiq takhliq ki gai hai. Aur har chiz ki takhliq ek ghayet aur muddat ke tahat hai.

Aur is ghayet ki tahqiq ki khatir har wo chiz muhayya ki gai hai jo iske qayam aur wajud ki zamin ho, agar wo isi nehaj par chalta raha, jiska ALLAH Ta’ala ne uske liye irada farmaya hai.

Is azim kayenat par ghaur-o-fikr karne se jahan hamein ALLAH Ta’ala ke huma-gir ilm aur azim qudrat ka pata chalta hai, wahin Uski be-payan hikmat bhi nazar ati hai. Wo insan ko is tarah nahi chod deta ke wo lambi umr ko paunche aur budhape mein koi uska hath pakadne wala na ho.

Aur na un logon ko is tarah chod dene wala hai jo raah-e-haq se munharif (inkari) ho jate hain ke is zindagi ke bad jis saza ke wo mustahiq hain unhe wo saza na mile. Hajj aur umrah ki khawahish puri karne ka wazifa dekhiye.

Aur na un logon ko yunhi nazar andaz kar dene wala hai jo apne Rab ki raza mandi ki khatir har waqt koshish mein lage rahte hain. Aur har gunah se bachne ki bharpur koshish karte hain ke kahin un se koi aisi ghalti na ho jaye ke unhe ALLAH Ta’ala ke kisi fazal se mahrumi ho aur akhirat ke din koi inam na mile.

Aise kam karne ke koshan rahte hain ke jinke zariye malum ho ke unho ne mata’e duniya ki qurbani di hai aur is duniya mein jo mushkilein uthayi hain wo jannat ke savab aur uski un na’emato ke muqable mein koi hasiyat nahi rakhti. Wo na’ematein jinhe na kisi ne ankh se dekha hai aur na kisi ne kan se suna hai, na jis ke mutaliq tasavvur kiya ja sakta hai.

Agar log ALLAH Azzawajal ki kahi sunnaton par aur Uski azim hikmat par insan par nazil shudah Uski na’emato ke mutaliq ghaur-o-fikr karen tou ye chiz unhe yaum-e-akhirat par iman lane par majbur kar degi. Unka is duniyawi zindagi par zarurat se zyadah lalach bhi khatm ho jayega.

Balke un mein neki aur taqwa jaisi nek seratein bhi janam lene lageinge. Insha ALLAH. Sirf jo kam ayega wo apna nek amal. Yahi sirf wo ek shai hogi jo hamein rah-e-nijat tak le jayegi.

Huzoor-e-Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ka irshad-e-mubarak hai,

Ese shakhs ke liye qayamat wale roz meri shafa’at halal hai.

Sahih Al-Bukhari

xxx

Yaum-ul-Qiyamah

Yaum-ul-Qiyamah kya hai? Yaum-ul-Qiyamah kahen ya Yaum-ul-jaza-o-saza, Yaum-ul-Hisab kahen ya Yaum-e-Hashar, Roz-e-Mahshar kahen ya Roz-e-Jaza. In tamam namo se murad ek hi din hai jo ke akhir kar aa kar hi rahega. Us ke ane ka waqt sirf ALLAH Ta’ala ko malum hai. Par ye din atal hai. Koi iski haqiqat se inkar nahi kar sakta. See lohe Qur’ani wallpapers here.

Yaum-e-Akhirat ek aisi haqiqat hai jise koi nahi jhutla sakta. Jaise Maut bar-haq hai. Waise hi Yaum-ul-Qiyamah bhi bar-haq hai. Wo din jis ka nam sunte hi ruh kanpne lagti hai. Jism pe rongte khade hone lagte hain. Ek lahze ko lagta hai ke jism sath hi nahi raha. Jise sochte hi apne charon aur apne a’imal gardish karte nazr ate hain. Us din ka khauf aisa khud pe taari hota hai ke ankhon se ansu bahne lagte hain. Aur bandah bila-ikhteyar apne Rab ke age hath pahilata hai. Aur kapkapaate honto ke sath US ke age gidgadaata hai. Apne gunaho ki mu’afi talb karta hai. See message of Islam here.

Roz-e-Mahshar ka hai ye khauf, jo lamha bhar ke liye jeete jaagte insan ko aisi kaifiyat mein mubtila kar deta hai ke wo apna hosh hi kho bethta hai. Khud ke girebaan mein nazr dalne pe majbur ho jata hai aur uske bad nazr uthana use bhari mahsus hota hai. Wo khud se kahta hai ke ae bande! Tu ne ab tak kya kamaya? Tu kya karta raha ab tak? Itna ghafil tu kaise ho gaya? Ye sab savalaat us ke dimagh mein ghumne lagte hai. Wo isliye, kyunke is duniya mein ane ka jo uska maqsad tha, use tou wo bhula hi betha tha. Gunah pe gunah karta chala ja raha tha ye soche baghair ke kal ko jab wo din aye ga, wo din jis din har-har amal ka hisab dena hoga. Us din wo kya javab dega apne Rab ko??? Qayamat ka lafz hi use is duniya mein bheje jane ka maqsad yad karvane ke liye kafi hota hai. See Islam religion history here.

Ye hai Qayamat ke din ki haqiqat. Wo din jab koi insan kisi dusre insan ke kam na ayega. Kam ayega tou sirf khud ka nama-e-a’imal aur wo bhi agar nekiyon se bhara hoga. ya Rab! Hamein nek raste pe chalne aur burayi ke raste se bachne ki taufiq ata farma. Ameen! See One Muslim Ummah here.

ALLAH Rabbul Izzat ne insan ke liye teen tarah ke Aalam banaye hain. Jin mein se har zi-ruh ko guzarna hai aur akhir khar abdi zindagi ko pauhanchna hai. Wo aalam mandarja zail hain.

  1. Aalam-e-Duniya
  2. Aalam-e-Barzakh
  3. Yaum-ul-Qiyamah

Aalam-e-Duniya

Is duniya mein jo bhi aya, har kisi ne ise chod kar dusre aalam ka rasta liya.Ye duniya tou faani hai jo ke bani hi khatm hone ke liye hai. Iske khatm hone ka bhi ek waqt muqarrar hai jis ki ALLAH Ta’ala ke siwa kisi ko khabar nahi.

Har insan ki zindagi ki ek umr ALLAH Azzawajal ne tae kar rakhi hai. Jiske pura hote hi wo maut ki aghoush mein chala jata hai.

Aalam-e-Barzakh

Phir ALLAH Zille Shanahu ke muqarrar-kardah waqt par Aalam-e-Barzakh shuru ho jayega. Wahan apne a’imal ke mutabiq insan jaza ya saza payega. Mukhtalif halaat se guzare ga. Aur is aalam ki bhi umr ALLAH Azzawajal ne muqarrar kar rakhi hai.

Yaum-ul-Qiyamah

Aalam-e-Barzakh ki umr puri hone ke ba’ad ayega wo sabse bada din, jo hoga Hisab ka din. Jis din har zi-ruh ko dubarah zindah kiya jayega. ALLAH Azzawajal, Hazrat Israfeel Alayhis Salam ko hukm farmayega ke Sur phunk diya jaye. Aur unke Sur phunkte hi Qayamat ka aghaz ho jayega. See ahad nama here.

Wo zindagi jo kabhi khatm nahi hogi. Wo Dayemi zindagi jiski haqiqat Rab Ta’ala ke siva kisi ko nahi malum. Aur phir faisla ho jayega jannat aur jahannum ke haqdaaron ka. See benefits of ayat-ul-kursi here.

Irshad-e-Bari Ta’ala hai.

Tarjuma: “Phir tum us ke ba’d maro ge phir tum qayamat ke din khade kiye jao ge.”

 

Qayamat ke Mukhtalif Nam

Qur’an Pak mein na sirf Qayamat ki alamato ka zikr kiya gaya hai balke iske liye mukhtalif nam bhi istemal kiye gaye hain. In mein se har nam ke liye khas dalil di gayi hai.

In namo mein se kuch nam ye hain.

 

  • As-Saa’at

Qur’an Pak mein ALLAH Ta’ala ka irshad-e-Garami hai.

(Surat Ghafir, ayat 59)

Tarjuma: “Be-shak qayamat ke qaim hone mein koi shak nahi hai.

 

  • Yaum-ul-Ba’as

Qur’an Shareef mein ALLAH Ta’ala farmata hai.

Tarjuma: “Aur jin logon ko ilm aur iman diya gaya hai wo javab deinge ke tum tou jaisa ke kitab ALLAH Mein hai yaum-e-akhirat tak thahre rahe, aj ka din qayamat ka hi din hai. Lekin tum (is bat ko) yaqin hi nahi mante the.”

 

  • Yaum-ul-Din

Irshad-e-Bari Ta’ala hai.

(Surat Al-Fatiha, ayat 03)

Tarjuma: “Badle ke din (ya’ni qayamat) ka Maalik hai.”

 

  • Yaum-ul-Hasrati

ALLAH Ta’ala ka irshad hai.

Surat Maryam, ayat 39

Taurjuma: “Tu unhe us ranj-o-afsos ke din ka dar suna de jab ke kam anjam ko pauncha diya jayega aur ye log ghaflat aur be-imani mein rah jayenge.”

 

  • Daar-ul-Akhirah

ALLAH Buzurg-o-Bartar ne farmaya.

Surah Al-Ankabut, ayat 64

Tarjuma: “Albatta sachi zindagi tou akhirat ka ghar hai, kash! Ye jante hote.”

 

  • Yaum-at-tanaad

ALLAH Azzawajal ka farman hai.

Surah Ghafir, ayat 32

Tarjuma: “MAIN tumhare liye qayamat ke din se khauf khata hun.”

 

  • Daar-ul-Qaraar

ALLAH Subhanahu Wata ‘Ala ne farmaya.

Surat Ghafir, ayat 39

Tarjuma: “Akhirat hi qaraar ka ghar hai.”

 

  • Yaum-ul-Fasl

ALLAH Tabarak Wata ‘Ala ne farmaya.

Surat As-Saafaat, ayat 21

Tarjuma: “Yahi faisla ka din hai jise tum jhutlate the.”

 

  • Yaum-ul-Jam’i

ALLAH Azzawajal ne farmaya.

Surat Ash-Shura, ayat 7

Tarjuma: “Aur jama hone ke din se jiske ane mein koi shak nahi (unko) dara dein ke (ek) garoh jannat mein hoga aur ek garoh jahannum mein hoga.”

 

  • Yaum-ul-Hisab

ALLAH Zille Shanahu ne farmaya.

Surat Suad, ayat 53

Tarjuma: “Ye hai wo jiska wadah tum se hisab ke din ke liye kiya jata hai.”

 

  • Yaum-ul-Wa’eed

Rabb-e-Kayenaat ne farmaya.

Surat Qaaf, ayat 20

Tarjuma: “Aur sur phunk diya jayega. Wada-e-azab ka din yahi hai.”

 

  • Yaum-ul-Khulood

ALLAH Subhanahu Wata ‘Ala ne farmaya.

Surat Qaaf, ayat 34

Tarjuma: “Tum is jannat mein salamti ke sath dakhil ho jao ye hamesha rahne ka din hai.”

 

  • Yaum-ul-Khurooj

Irshad-e-Bari Ta’ala hai.

Surat Qaaf, ayat 42

Tarjuma: “Jis roz is tand-o-tez chikh ko yaqin ke sath sun leinge ye din nikalne ka hoga.”

 

  • Al-Waqi’ah

Irshad-e-Garami hai.

Surat Al-Waqi’ah, ayat 01

Tarjuma: “Jab qayamat aa jayegi.”

 

  • Al-Haqqah

ALLAH Zille Shanahu ka farman hai.

Surat Al-Haqqah, ayaat 1,2,3

Taurjuma: “Sabat hone wali, sabat hone wali kya hai aur tujhe kya malum ke wo sabat shudah kya hai.”

 

  • At-Taamat-ul-Kubra

Irshad-e-Garami hai.

Surat An-Nazi’aat, ayat34

Tarjuma: “Pas jab wo badi afat (qayamat) aa jayegi.”

 

  • As-Saa’khah

Irshad-e-Bari Ta’ala hai.

Surat Abas, ayat 33

Tarjuma: “Us waqt jab ke kan bahre kar dene wali qayamat aa jayegi.”

 

  • Al-Aazifah

Farman-e-Mubarak hai.

Surat An-Najam, ayat 57

Tarjuma: “Qayamat nazdik aa gayi hai.”

 

  • Al-Qari’ah

Farman-e-Ilahi hai.

Surat Al-Qari’ah, ayaat 1,2,3

Tarjuma: “khadkhada dene wali, kya hai wo khadkhada dene wali. Tujhe kya malum ke wo khadkhada dene wali kya hai.”

 

Qayamat ki Nishaniyan/Alamaat

Bohat si ahadees ki kitabon mein qayamat ki nishaniyon ka zikr kiya gaya hai. In mein se chand nishaniyan darj zail hain.

Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmate hain.

“Jab tum dekho ke log namazein ghaarat karne lagein, amanat zaya karne lagein, sud khane, jhut bolne aur use halal samajhne, ma’muli bat par khun-rezi karne, unchi-unchi buldingein banane, deen bech kar duniya kamane lagein, Zulm, talaq aur na-gahaani maut aam ho jaye, khayanat-kaar ko amanat-daar, jhut ko sach, tohmat-tarashi, barish ke ba-wajud garmi,

kamino ki thaath ho, amir-o-wazir jhut ke aadi hon, aalim-o-qari bad-kaar ho jayen, sona chandi aam ho jaye, gunah zyadah ho jayen, Qur’an Pak ke nuskhon ko araasta kiya jaye, sharabein pi jayen, Islami sazain khatm kar di jayen,mard aurton ki aur auratein mardo ki naqaali karen, ghair ALLAH ki qasmein khayi jayen (maslan bete ki qasam, maa ki qasam), sirf jan pahchan walon ko salam kiya jaye, kamina qaum ka sarbarah ban jaye, beta bap ka nafarmaan ban jaye, maa se bad-saluki ki jaye,

masjidon mein duniyawi awazein buland ho jayen, zakat ko tax samajhne lagein, shohar apni biwi ki be-ja ata’at kare, aulad walidain ki nafarmaan ho jaye, khel khud naach gaana, zana kaari aam ho jaye, mulaqaat ke waqt salam ki bajaye dil lagi ki khatir galiyan dene lagein, sharm-o-haya uth jaye, auratein zyadah ho jayen, Qur’an ko zariya-e-mu’ash banaya jaye, likhne padhne ka rawaj ho jaye lekin sirf duniya ke liye,

Qur’an ke sath gaane bajane ke alaat bajaye jayen, tijarat itni aam ho jaye ke aurat bhi shohar ka hath batane lage, charb zubani se rupeya kamaya jaye, jhute nabi paida hon, nekiyon ka hukm dena aur buraiyon se mana karna ruk jaye, log moti moti gadiyon wali sawari (karon) par masjidon ke darwazon tak ayenge, unki auratein kapdon mein hongi magar nangi hongi (kapde barik-o-chust honge), unke sir ke bal bakhti oont ki kohan ki tarah uper ko honge (ya bal kate hue honge ya sir par juda bana hoga) lachak lachak kar chalein gi, logon ko apni taraf mayel karengi, ye log na jannat mein dakhil honge na uski Khushboo ko payenge,

charon taraf se kuffar ka hujoom Musalmano par hamla karega, bid’atoun ka farogh hoga, naye-naye ghair-abaad ilaqe abaad ho jayenge, deeni masail mein har aira ghaira apni raye pesh karega, azab-e-qabr aur shafa’at ka inkar karenge, deen ki baton mein taweelein ki jayengi, yahud-o-nasara ki naqali hogi, nojawan bekar aur larkiyan aur auratein aape se bahar hongi, halaat mein din badin shiddat ati jayegi, ma’muli bacha bhi budhe ko jhidke ga, har admi ka aham maqsad shikam parwari aur khawahish parasti hoga,

be-hayai aur bad-kaari ke khubsoorat nam rakhe jayenge, haram chizon mein apne liye na-jayez taweelein karenge aur phir aisa zamana aa jayega ke ye log khinzir aur bandar ki shakl mein maskh kar diye jayenge, alaat-e-mausiqi, raqs karne wali auratein aur tabla sarangi (aam ho jayega), aisa waqt aa jayega ke sahib-e-aulad auratein ghamzadah aur be-aulad auratein khush hongi,

Islam ka kam wo karenge jo Musalman na honge (jaise kafiron ne Musalmano ke achhe ikhlaq ikhtiyar kar liye), a’ilaniya fahash harkaat hongi, la-ilaj amraaz (cancer, aids) honge, amamon ko chod kar nange sir ka rawaj hoga, jaid Ulamye Karaam kam ho jayenge, dadhiyan saf ki jayengi, chamde ke jute pahan kar use khub chamkayenge, mard auraton ki tarah zinat ikhtiyar karenge, tarah-tarah ke khane aur kapde honge,

zamin sukad jayegi, zamana ek dusre ke qarib ho jayega (jadid zaraye ablaagh, telephone, hawayi jahaz), jute ka tasma batein karenge (jadid alaat aur cables), sir par kohan numa sha’e hogi (auratein sir ke bal katwayengi aur wig pahnein gi), log bazaron mein chaleinge aur ranein nazr ayengi (mard o aurat ki patlun, skart aur jeans), Musalman, Musalman ko qatl karenge, aubash chalti auraton se ched chaad karenge,

ALLAH ke samne javab-dahi ka khuaf na hoga, mard reshmi aur rangin kapde pahnein ge, 73 firqe honge, sirf wo jannat mein jayega jo meri Sunnat aur Sahaba Karaam Rizwan uALLAHi Alayhim Ajma’een ki jama’at ko manega, ham-jins se lazzat hasil karenge, qalmi tufan aa jayega, har admi apni raye par is tarah israr karega ke goya wahi thik kah raha hai,

auratein sir dupatta se khali kar ke matka kar chalein gi, bal phaila kar saron ko mota karengi aur qayamat ke qarib Islami khalafat Kharasan (Afghanistan) se shuru ho kar puri duniya par qayam hogi.

(Bukhari, Muslim, Abu-Dawud, Tirmazi aur digar kutab Hadees)

Tried and Tested ya ALLAH Dua Wazaif

Qayamat kin Logon par ayegi?

Huzoor Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmate hain,

“Qayamat bad-tareen makhluq par qaim hogi.”

Niz Irshad farmaya,

“Qayamat kisi aise shakhs par qaim nahi hogi jo ALLAH ALLAH kahta hoga.”

Hazrat Abdullah bin Mas’ud Radi ALLAHU Anhu bayan karte hain ke Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne irshad farmaya,

“Dajjaal ko qatl karne ka ba’d Hazrat Esaa Alayhis Salam sat baras tak logon mein raheinge aur us daur mein do admiyon ke darmeyan zra dushmani na hogi. Phir ALLAH Ta’ala mulk Sham ki taraf se ek thandi hawa bhejeinge aur tamam Mo’min khatm ho jayenge. Aur zamin par koi aisa shakhs baqi na rahega jis ke dil mein khair ka koi zarrah baqi ho. Yahan tak ke koi shakhs (Muslamano mein se) pahad ke andar (khu mein) dakhil ho jayega tou wo hawa wahan bhi dakhil ho kar uski ruh qabz kar le gi.

Phir bad-tareen logon par qayamat qaim kar di jayegi aur sur phunka jayega aur sab log behosh ho jayenge, phir ALLAH Ta’ala ek barish bheje ga jo shabnam ki tarah hogi us se admi ug jayenge yani qabron mein mitti ke jism ban jayenge.

Phir dubarah sur phunka jayega tou sab uth kar khade ho jayenge uske ba’d a’alan hoga ke ae logo! Chalo apne Rab ki taraf aur farishton ko hukm hoga ke in ko thahraw in se saval hoga. Phir a’ilan hoga (us sare majma’ se) dozakhiyon ko alahdah kar do. Is par daryaft hoga (ALLAH Ta’ala se)  ke kis ta’adad mein dozakhi nikale jayen tou javab mile ga fi hazar 999 dozhaki nikalo.”

Huzoor Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ke Mubarak Irshad ke mutabiq ye wo din hai jiski haibat aur wahshat se bache budhe ho jayenge.

Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ke Mubarak Irshad ke mutabiq qayamat jumm’a ke din qaim hogi.

Har muqarrab farishta asmaan aur zamin aur pahad aur samandar par sab jumm’a ke din se darte hain ke kahin aj qayamat na aa jaye, makhluq ke fana ho jane ke ba’d ALLAH Ta’ala farmayen ge aj kis ki hakumat hai tou koi javab dene wala na hoga. Bil-akhir khud hi farmayen ge,

“ALLAH-ul Wahid-ul Qahhar”

Tarjuma: “Aj bas ALLAH hi ka raj hai.”

Hazrat Abu Hurairah Radi ALLAHU Anhu farmate hain ke Rasool ALLAH SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam irshad farmate hain ke log qayamat ke din behosh ho jayenge. Main bhi unke sath behosh ho jaon ga phir sab se pahle meri behoshi dur hogi tou achanak dekhunga ke Musa Alayhis Salam Arsh-e-Ilahi ki ek janib

Pakde khade hain. Main nahi janta ke wo behosh ho kar mujh se pahle hosh mein aa chuke hain.

Irshad-e-Bari Ta’ala hai,

“Illa man shaa ALLAH”

(Mishkaat Shareef, Suad 5-7 az Bukhari-o-Muslim)

 

Khayenaat ka Darham Barham hona

Sur phunke jane se na sirf murde zindah ho jayenge balke kayenaat ka nizam darham barham ho jayega. Asman phat jayega, sitare jhad jayenge, suraj aur chand ki roshni khatm kar di jayegi. Zamin hamwar maidan ban jayegi aur pahad udte phirenge.

Irshad-e-Bari Ta’ala hai,

Tarjuma: “Jis din badal jayegi is zamin se dusri zamin aur badle jayenge asman aur nikal khade honge ALLAH Wahid Qahhar ke liye.”

Is Ayat Shareefa mein jo asman aur zamin ke badle jane ka zikr hai, ye us waqt hoga jab log jannat ya dozakh mein bheje jane ke liye pul saraat pauhanch jayenge.

Us roz zamin apne andar maujud sab kuch bahar ugal degi, maslan khazane uar murde waghairah. Us roz chand be-nur ho jayega. Us roz suraj aur chand be-nur ho jayenge yani unki roshni lapet di jayegi, na kisi chiz par padegi. See face reading in Islam here.

 

Qabron se uthaya jana

“Huzoor Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam irshad farmate hain ke sab se pahle zamin phat kar mujhe zaher karegi, phir Abu Bakar Radi ALLAHU Anhu aur Umar Radi ALLAHU Anhu qabron se zaher hongi. Phir Baqee’ (qabrastan) mein jaunga aur wo (qabron se nikal kar) mere sath jama kar diye jayenge. Phir main Makkah walon ka intezar karunga hatta ke wo bhi qabron se nikal kar mere sath ho jayenge yahan tak ke main (Harmain) walon ke darmeyan mahshur honga.”

(Mishkaat al-Masabih, Suad 556 az-Tirmazi)

 

Log nange pawn, nange badan, be-khatna jama kiye jayenge. See manzil dua here.

“Hazrat Ayesha Radi ALLAHU Anha farmati hain ke maine Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam se arz kiya ke ya Rasool ALLAH SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam! Kya mard-o-aurat sab (nange honge aur) wo ek dusre ko dekhte honge (agar aisa hua tou bohat sharm ka muqam hoga).

Iske javab mein Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne faramaya, Ae Ayesha Radi ALLAHU Anha! Qayamat ki sakhti is qadar hogi aur log ghabrahat aur pareshani se aise bad hal honge ge ke kisi ko dusre ki taraf dekhne ka dhyan hi na hoga.”

(Mishkaat al-Masabih, Suad 183)

 

Ulma ne likha hai ke Hazrat Ibrahim Alayhis Salam ko isliye sab se pahle libas pahnaya jayega ke unho ne sab se pahle faqiron ko kapde pahnaye the. Ya isliye ke wo ALLAH Ta’ala ke deen ki dawat dene ki wajah se sab se pahle nange kiye gaye jab ke kafiron ne apko aag mein dala. See shash qufal du’a here.

“Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne farmaya, sab se pahle jisko kapde pahnaye jayenge wo Ibrahim (Alayhis Salam) honge. ALLAH Ta’ala farmayen ge MERE dost ko pahnaw. Chunache jannat ke kapdon mein se do barik aur narm safed kapde unko pahnane ke liye laye jayenge, uske ba’d mujhe kapde pahnaye jayenge.”

 

Maidan-e-Hashr mein Jama hona

Huzoor Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmate hain log teen qismon mein jama kiye jayenge.

  1. Ek jama’t paidal
  2. Dusri sawar
  3. Teesri jama’t apne chehron ke bal chalegi.

Saval kiya gaya, ya Rasool ALLAH SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam! Wo chehron ke bal kyunkar chalenge?

Javab mein Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne farmaya,

“Beshak jis Zat Pak ne unhe qadmon par chalaya WO is par qadir hai ke unko chehron ke bal chala de.”

Phir farmaya,

“Khabardar wo (chehron ke bal is tarah chalen ge) ke zamin ke ubhre hue hisse aur kanton tak se apne chehre ke zariye bachaw karenge. Ye hal kafiron ka hoga kyunke duniya mein unki peshani ALLAH ke Huzoor sajdah-rez nahi hui aur takkabur aur gharur ke ba’es sajdah mein sir rakhne se inkar kiya. Is liye unke chehron se pawn ka kam liya jayega ta ke khub zalil-o-khawar hon.”

Kuffar gunga, bahra aur andha kar ke uthaya jayega, ye ibtada-e-hashr mein hoga. Phir ankhein zuban aur kan khol diye jayenge ta ke mahshar ke halaat aur uski sakhtiyan dekh saken aur un se hisab kitab kiya jaye, kafiron ki ankhein neeli hongi. See Durood-e-Muqaddas here.

Surat Taha mein hai,

Tarjuma: “Aur ham jama karenge us din gunehgaaron ko is hal mein ke unki ankhein neeli hongi, chupke chupke apas mein kahte honge ke duniya mein bas tum das din rahe ho.”

Yani bad-numayi ke liye ankhein neeli kar di jayengi.

Duniya ke maze aur lambi chodi zindagi bhul jayenge. Aur dunuya ke sal-ha-sal unhe pahle din ki tarah mahsus honge. Read Surat Rahman here.

 

Qayamat ke Din Hairani aur Pareshani

Qabron se nikal kar log lungi bandhe sakht hairani aur pareshani ki halat mein chalenge, zra palak bhi na jhapki jayegi. ALLAH ke nek bandon ke chehre safed aur hashah bashash hanste khelte honge. Kafiron ke chehron par udasi aur zillat chayi hogi. Read All Durood Shareef here.

Sarwar-e-Do-Alam SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne irshad farmaya,

“Qayamat ke din Ibrahim Alayhis Salam Bargaah-e-Khudavandi mein arz karenge, AP ne mujh se wadah kiye tha ke qayamat ke din mujhe ruswa nahi karenge, is se zayadah kya ruswayi hogi ke mera bab halak ho raha hai.

ALLAH Ta’ala farmayen ge ke MAINE kafiron par jannat haram kar di hai.

Phir Ibrahim Alayhis Salam se pucha jayega ke ap ke paow main kya hai?

Wo nazar karege tou ek luthda hua bijju hoga jise tangon se pakad kar dozakh mein dal diya jayega.

ALLAH Ta’ala apni qudrat se Azar ko bijju ki shakl mein kar deinge taa ke Ibrahim Alayhis Salam ko ruswayi na ho.”

 

Maidan-e-Hashr mein Logon ki Mukhtalif Halatein

Qayamat ke din log apne a’imal ki buraiyon ke pasina mein gharq honge kyunke suraj us din ek meel ke fasle par aa jayega. Suraj awwal tou be-nur ho jayega, magar dubarah logon ke saron pe qaim kiya jayega aur phir dubarah be-nur kar ke dozakh mein dal diya jayega taa ke uske parastaron ko ibrat ho. Read Surah Muzammil Benefits here.

Huzoor Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ke Irshad-e-Mubarak ke mutabiq,

“Roz-e-Hashr jo shakhs logon se saval karta hai aur bheek mangta hai, is hal mein laya jayega ke uske chehre par ghosht ki zara bhi boti na hogi, jis mard ne biwiyon mein na-insafi ki, wo is halat mein ayega ke uska pahlu gira hua hoga,  jo shakhs Qur’an Shareef padh kar bhula de wo kodhi ki shakl mein ayega, be-namaziyon ka hashr Hamaan, Firaun, Qaroon aur Abi bin Khalf ke sath hoga,

jo shakhs zakat ada nahi karta tou qayamat ke din mal-e-ganja sanp bana diya jayega aur tauq bana kar uske gale mein dal diya jayega, jo duniya mein sab se der tak pet bhare rahte hain wo qayamat ke din sab se zayadah der tak bhuke rahenge, jo duniya mein doghla-pan ikhtiyar karta hai uske munh mein do zubanein aag ki hongi, jo kansuyi karega us ke kan mein pighla hua seesa dala jayega, jo koi tasvir (jandaar ki) banaye ga use majbur kiya jayega ke is mein ruh phunke jo wo na kar sake ga aur use azab diya jayega,

jis ne duniya mein shauhrat (takabbur aur itrawe) ka libas pahna use zillat ka libas pahnaya jayega, jis ne zara si zamin bhi baghair haq ke li usko saton zamino ke niche dhunsa diya jayega, aur jab logon ka faisla ho jayega tou wo saton zaminein us ke gale mein tauq bana kar dal di jayengi, jis se koi ilm ki bat puchi jaye aur jante bujhte hue chupa le us ke munh mein aag ki lagaam di jayegi,

jo shakhs ghussa pi leta hai ALLAH Ta’ala qayamat ke din sari makhluq ke samne ikhtiyar deinge ke jis hoor ko chahe ikhtiyar kar le, jo Haram Madina ya Haram Makkah mein mar gaya ALLAH Ta’ala use qayamat ke din aman walo mein uthayega, jo hajj karte hue mar jaye qayamat ke din takbir padhte hue uthe ga, jo raah-e-haq mein shahid hua qayamat ke din jo uske zakhm honge unse khun bah raha hoga aur Khushboo mushk ki tarah aayegi.

Masjidon ko andheron mein jane walon ko qayamat ke din pura-pura noor anayet kiya jayega, azan dene wale sab logon se zayadah lambi gardanon wale honge, Khuda se muhabbat karne wale noor ke mimbaron par honge, Muslamano ke munsif badshah, wo javan jo ALLAH ki ibadat mein javani guzare, wo mard jiska dil masjid mein atka rahe, wo do shakhs jo ALLAH ke liye apas mein muhabbat karen, jo ALLAH ko tanhayi mein yad kare aur ansu nikal ayen, jo mard jise koi Khubsurat aurat bure kam ke liye bulaye aur wo kah de ke main tou ALLAH se darta hun aur jo is tarah sadqah de ke bayen hath ko bhi khabar na ho ke dahne hath ne kya diya hai, ye sat qisam ke log arsh ke saya mein honge,

jo Qur’an padh kar amal kare uske walidain ko aisa taj pahnaya jayega jiski roshni aftab se bhi zayadah hogi, jo halal kamaye aur apne biwi bachon par kharch kare wo qayamat ke roz is tarah ayega ke chehra chaudvein rat ke chand ki tarah roshan hoga. Read Surah Yaseen Shareef here.

 

Sarwar-e-Konain SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ka Martaba aur Maidan-e-Hashr

Hamare Nabi Karim SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam tamam aulad-e-adam ke Sardar honge. Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ke hath mein Hamd ka jhanda hoga. Sab Nafsi Nafsi pukareinge. Hatta ke Oolul’Azm Paighambar bhi Nafsi Nafsi pukareinge ke ya ALLAH hamari jan bachayen. Log ghutan aur be-chaini ka shikar honge. Log bari-bari mukhtalif Paighambaron ke pas jayenge ke wo ALLAH Zille Shanahu se sifarish farmayen ke hamara kya hal bana hua hai. Read Duas of Prophet Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam here.

Bil-akhir Esa Alayhis Salam ke pas jayenge aur wo kahen ge ke aisa karo, Hamare Payare Nabi Hazrat Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ke pas pauhancho. Chunache Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam se arz karenge ke apne Parwardigaar se sifarish karen. Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam arsh ke niche aa kar sajdah karenge aur ALLAH Ta’ala ki Hamd-o-Sana bayan karenge tou Irshad-e-Rabani hoga,

“Sir uthaw aur mango tumhara saval pura kiya jayega, sifarish karo sifarish qubool ki jayegi.”

Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmayen ge ke,

“ya ALLAH! Ae Rab! Meri ummat par raham farma.”

Lehaza irshad hoga apni ummat ke un logon ko jin par koi hisab nahi jannat ke darwazon mein se dayen darwaze se dakhil karo aur uske ilawa dusre darwazon mein se bhi.

Roz-e-Mahshar Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam apni ummat ke logon ko wuzu ke asar se jo roshan chehre honge pahchan leinge. Iske ilava unke nama-e-a’imal dayen hath mein diye jayenge. Read six kalimas here.

Maidan-e-Mahshar main Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ko Hauz-e-Kausar ata kiya jayega. Us hauz se sab se pahle fuqra, muhaajarin pani piyenge. Jis ka pani dudh se zayadah safed aur Khushboo mushk se zayadah umdah hai.

Nabi Pak SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmate hain,

“Yaqin jano roz-e-qayamat tumhara Mera samna hoga, jo mere pas ho kar guzar gaya wo pi le ga aur jo pi le ga wo phir kabhi payasa na hoga.”

Jo deen mein adal badal karte hain, bid’atein karte hain, unhe Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ke qarib nahi ane diya jayega. Shadi bayah ke mauqa par fuzool rasmein karne wale, soim, chehlam, qabar ya chadar, qabar ka ghusal, urs, pukhta qabar karne wale, isi tarah bohat so dusri bid’atein karte hain, wo Hauz-e-Kausar se hata diye jayenge. Log apne apne bapon ke namon se pukare jayenge. See Naming the child in Islam here.

Qayamat ke din nei’maton ke mutaliq saval kiya jayega.

“Nabi Karim SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ke Mubarak Irshad ke mutabiq qayamat ke din nei’maton mein sab se pahle (thande pani aur tandrusti ka saval hoga).

Aur yun pucha jayega ke kya HAM ne tumhare jism ko thik na rakha tha?

Kya HAM ne thande pani se sairab na kiya tha?”

Khudawand Karim ke insan par be-shumar ahsanaat hain.

“Nabi Alayhis Salatou Wasallaam ke Mubarak Irshad ke mutabiq qayamat ke roz insan ke teen daftar honge. Ek daftar mein us ke nek a’imal likhe honge. Dusre daftar mein uske gunah darj honge. Aur ek daftar mein ALLAH ki nei’matein darj hongi jo ise duniya mein di gayi thein. Chunache wo nei’matein uske tamam nek a’imal ko apni qimat mein nikalein gi aur phir bhi wo nei’matein arz karengi, (Ae Rab) Apki izzat ki qasam! (Abhi) ham ne puri qimat wasul nahi ki.”

ALLAH Ta’ala jab kisi bande par raham karna chahega tou kahe ga ke MAINE teri nekiyon mein izafa kar diya aur tere gunaho se darguzar kiya aur apni nei’matein bakhsh dein. See Getting name numbers here.

 

Hisab Kitab, Qasas, Mezan

“Huzoor Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ke Mubarak Irshad ke mutabiq qayamat ke roz jin logon ke mutaliq sab se pahle faisla diya jayega un mein ek wo hoga jo (jahad mein qatal hone ki wajah se) shahid samajh liya gaya tha, usko laya jayega aur ALLAH Ta’ala ki nei’maton ki pahchan karayi jayegi aur use yad aa jayega ke use ye nei’matein mili thein.

Chunache arz hoga tu ne inko kis tarah kharch kiya?

Wo kahe ga ap ke raste mein ladayi ladi shahid ho gaya.

Irshad hoga jhut kaha, isliye jang ki ke tujhe bahadur samjha jaye sou tujhe uska phal mil chuka hai. Aur iske ba’d irshad hoga ke ise munh ke bal khainch kar jahannum mein dal diya jaye.

Phir isi tarah ek shakhs ne ilm-e-deen sikha sikhaya aur Qur’an padha, use bhi nei’maton ki pahchan karayi jayegi aur pucha jayega inhe kis tarah istemal kiya?

Wo arz karega, ilm hasil kiya dusron ko sikhaya aur Apki raza ke liye Qur’an padha.

ALLAH Ta’ala farmayen ge, jhut bola. Tu ne ilm isliye hasil kiya ke log Alim kahen aur Qur’an isliye padha ke log Qari kahein.

Chunache kaha ja chuka aur jahannum mein dal diya jayega.

Is tarah ek shakhs ko jise duniya mein bohat mal diya gaya tha, us se bhi nei’maton ke mutaliq puch gach hogi ke unhe kyun kar istemal kiya.

Tou wo kahe ga ke Apki raza ke liye mal kharch kiya.

Arz hoga, jhut kaha. Mal isliye kharch kiya ke log Sakhi kahein. Chunache kaha ja chuka aur jahannum mein dal diya jayega.”

“Hazrat Mu’hammad Mustafa SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ke Mubarak Irshad ke mutabiq qayamat ke din jab logon ko jama kiya jayega tou ek pukarne wala zor se pukare ga ke jis ne koi amal ALLAH ke liye kiya aur us amal mein kisi dusre ko (dikhane ki niyat kar ke) bhi sharik kar liya tou use chahiye ke us amal ka savab ALLAH ke siwa us ghair se le le.”

Roz-e-Mahshar rayakaaron se kaha jayega ke jinko dikhane ke liye amal kiye the unhi ke pas jao phir dekho ke unke pas tumhare liye jaza ya bhalayi milti hai. Roz-e-Mahshar sab se pahle bande ke a’imal mein se namaz ka hisab hoga.Agar wo thik nikli tou kamyab aur ba-murad hoga aur agar namaz kharab nikli tou na-murad hoga. Aur agar farzon mein koi kami rah gayi tou unko nawafil se pura kiya jayega aur iske ba’d baqi a’imal ka hisab kiya jayega. Phir isi tarah zakat ka hisab hoga phir isi tarah dusre a’imal dekhe jayenge. See Complete guide of child names in Islam here.

Huzoor Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmate hain ke qayamat ke roz ek pukarne wala zor se pukar kar kahega ke wo log kahan hain jin ke pahlu bistaron se alag rahte the (kyunke wo raton ko namazon mein waqt guzaarte the) is sift ke log pure majma’ mein se nikal kar khade honge aur baghair hisab kitab ke jannat mein dakhil ho jayenge. Phir baqi logon ka hisab hoga. See love marriage in Islam here.

Nabi Karim SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmate hain ke Mere Rab ne mujh se wadah kiya hai ke teri ummat se sattar hazar bila hisab kitab jannat mein dakhil honge jin par koi azab na hoga aur har hazar ke sath sattar hazar honge (jo is fazilat se nawaze jayenge aur teen lap Mere Rab ke bhi lap bhar ke jannat mein dakhil honge).

Hazrat Ayesha Radi ALLAHU Anha se riwayat hai ke unho ne Huzoor Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ko ek namaz mein ye du’a karte hue suna,

“Allahumma Hasibnee Hisaaban Yaseeran”

Tarjuma: “Ae ALLAH mujh se asaan hisab lijiye”.

Maine arz ki ya Nabi SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam! Asaan hisab ka kya matlab hai?

Tou Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne irshad farmaya, asaan hisab ye hai ke a’imal nama mein sirf nazar kar ke dar-guzar kar diya jaye aur chan been na ki jaye. Ye haqiqat hai ke jis ki chan been ki gayi aur hisab liya gaya wo halak hua.”

Irshad-e-Nabvi SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam hai,

“ALLAH Ta’ala qayamat ke din Mo’min ko Apne qarib karenge (mahshar walon se paushidah kar ke) farmayenge tujhe falan gunah yad hai kya tujhe falan gunah yad hai?

Wo javab mein arz karwa leinge aur wo dil mein yaqin kar le ga ke barbad ho chuka.

ALLAH Ta’ala phir us se irshad farmayenge ke MAINE duniya mein teri pardah-poshi ki aur un gunaho ko zaher na kiya jayega. Leikin kuffar aur mushrakin ki tash-heer ki jayegi aur sari makhluq ke samne un ke mutaliq zor se pukara jayega ke ye log hain jinhon ne apne Rab ki nisbat jhuti batein lagayein, khabardar, ALLAH ki la’anat hai zalimo par.”

Nabi Pak SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmate hain,

“Tum mein se koi bhi aisa nahi hai jis ka Rab khud (hisab lene ke silsile mein) bat na kare. Bande ke aur Rab ke darmeyan koi wasta ya hijab na hoga.”

Roz-e-Mahshar bande se huqooq ALLAH aur huqooq-ul-ibaad dono ka hisab liya jayega. Jis ne kisi par zulm kiya hoga tou (baqadar zulm) uski nekiyan mazlum ke nama-e-a’imal mein dal di jayengi. Agar nekiyan na huyen tou mazlum ki buraiyan zalim ke nama-e-a’imal mein dal di jayen gi. See wedding night in Islam here.

Aur Hadees Shareef mein haqiqi muflis us shakhs ko qarar diya gaya hai jo Roz-e-Mahshar apni nekiyon ke sath hoga, namaz, zakat, roze le kar ayega magar kisi ko gali di hogi, kisi pe taumat lagayi hogi, kisi ka na-haq mal khaya hoga. Chunache uski nekiyan haq talfi karne walon mein taqsim kar di jayengi. See women rights in Islam here.

Hazrat Abu Hurairah Radi ALLAHU Anhu ke mutabiq jis ne apne zar kharid ghulam ko ek kodha bhi zulman mara hoga uska hisab dena hoga. Roz-e-Mahshar walidain bhi apni aulad se qarz ke silsile mein ulajh jayenge yani agar aulad ke zimme bhi koi qarz hoga tou un se bhi mutalba karenge. Roz-e-Hashr mad’ee aur mad’aa-alayh do padosi honge.

Janwaron ka bhi hisab hoga. Jis janwar ne dusre ko chunch mari uska bhi hisab hoga. Ye majra insano ke samne hoga lekin phir bhi janwaron ko hukm hoga ke mitti ke ho jao, tumhare liye na jannat hai na dozakh. Us waqt kafir rashk karega ke kah uthega main (bhi) millti ho jata. See women roles and rights in Islam here.

Duniya Daar-ul-amal, Daar-ul-fikr, Daar-ul-Mahan aur Daar-ul-Hazan hai.

Huzoor Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmate hain,

“Jo akhirat se be-fiker raha wo barbad hua.”

Banda qayamat ke din jhagdalu aur kat-hujjati (ladayi jagda karne wali) tabiyat ke ba’es ALLAH Ta’ala se bhi hujjat karega magar us waqt uske a’izaa badan khud uske a’imal ki gawahi deinge aur us ki hujjat khatm kar di jayegi. See love Marriage in Islam here.

Logon ko nama-e-a’imal de diye jayenge, kisi ke dahne aur kisi ke bahne hath mein, phir un a’imal ka wazan hoga.

Log ate jayenge aur tarazu ke pas khade kiye jayenge. Jo ayega tarazu ke dono paldon ke darmeyan khada kar diya jayega. Agar tol bhari hua tou farishta uski khush-naseebi ka a’ilan kar dega aur agar tol halke rahe tou uski bad-naseebi ka a’ilan hoga. Ye a’ilan sari makhluq sune gi. See Islam’s  praying here.

Ek shakhs ko Roz-e-Hashr pesh kiya jayega. Uske a’imal ke 99 daftar khole jayenge jo muntahaye nazar (dur dur tak) phaile honge. Phir Haq Ta’ala irshad farmayenge ke tere pas in bad-a’imaliyon ka koi uzar hai?

Wo kahe ga Ae Parwardigaar! Koi uzar nahi.

Phir irshad hoga, Hamare pas teri ek neki mahfuz hai. Phir ek purzah laya jayega jis par

“Ashaadu An-laa ilaaha ill-ALLAHU Wa Ashaadu Anna Mu’hammadan Abduhoo Wara-suloohu”

darj hoga.

Bande se farmaya jayega ja apne a’imal ka wazan hota dekh.

Wo kahega, ya Rabbi (tolna na tolna barabar hai meri halakat zaher hai) in daftaron ki maujudgi mein is purzah ki kya ahmiyat.

ALLAH Ta’ala farmayenge yaqin jan tujh par zulm na hoga. Phir wo purzah dusre palde mein rakha jayega aur wo sab daftaron ke muqable mein zyadah bhari hoga. See tahajjud prayer here.

Syed-do-Alam SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmate hain bat asal ye hai ke ALLAH ke Nam ki maujudgi mein koi chiz wazni na ho sakegi.”

Ye ikhlas aur khushu khuzu se muhabbat o taluq se ALLAH Azzawajal ke Nam lene ki barkat hai.

“Hadees Shareef mein hai ke Mo’min ke nama-e-a’imal mein sab se zayadah wazni neki achhe ikhlaq honge.”

Jannat mein koi shakhs ALLAH Ta’ala ki rahmat ke baghair dakhil na hoga, yani mahaz a’imal ki badolat dakhil na hoga. Kyunke nek a’imal qubool karna na karna ALLAH ka kam hai. Lehaza Abidon, Zahidon aur Mujahidon ko is taraf khusoosi taur par tanbih ki gayi hai ke ham mein se koi bhi shakhs apne a’imal par naz na kare ke ham waqe’i jannat ke haqdaar hain. Aur apne a’imal ko heech (kamtar) samajhte hue darte rahen ke pata nahi koi amal qubool hua bhi ya nahi. See How to do prayer in Islam?

Huzoor Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ke Mubarak Irshad ke mutabiq koi shakhs agar apni paidaish se le kar maut tak ALLAH Ta’ala ki ata’at mein chehre ke bal gira pada rahe tab bhi wo roz-e-qayamat apne sare a’imal ko haqir samajh kar tamanna kare ga ke duniya mein wapas ja kar aur ajar-o-savab aur nek a’imal hasil kare.”

 

Hadees-e-Qudsi SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam hai

“Har shakhs apni maut ke waqt pashemaan hoga. Achhe amal karne wala pashemaan hoga ke amal kar leta aur bure amal karne wala pashemaan hoga ke kash buraiyon se apni jan bacha leta.”

 

Huzoor Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ki Shafa’at Mubarak

Roz-e-Mahshar Huzoor Akram SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam Panch qisam ki Shafa’at karenge.

  1. Pahli Shafa’at Maidan-e-Hashr mein Jama’ hone aur hisab kitab shuru karwane ke liye tamam awwaleen, akhireen, Muslameen-o-kafireen ki Shafa’at farmayenge.
  2. Dusri Shafa’at bohat se Mo’mineen ko bula kar bila hisab jannat mein dakhil karane ke liye karenge.
  3. Teesri Shafa’at unki hogi jo apni bad-a’imaliyon ke ba’es dozakh ke mustahiq ho chuke honge.
  4. Chothi un gunahgaaron ki hogi jo dozakh mein dakhil ho chuke honge, unko dozakh se nikalne ke liye tamam Anbiya Karaam Alayhis Salam aur farishte aur Mo’mineen shafa’at karenge.
  5. Panchvein jannatiyon ke darje buland karane ke liye hogi.

 

“Nabi Pak SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmate hain ke Insha ALLAH Mere har us Ummati ko zarur Meri Shafa’at pauhanche gi jo us hal mein mar gaya ke ALLAH ke sath kisi ko sharik na karta tha.”

(Sahih Muslim)

 

“Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmate hain Main apni Ummat ke liye Shafa’at karta rahunga hatta ke Mera Rab Tabarak Wata ‘Ala Mujh se puchega,

“Ae Mu’hammad SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam! Kya razi ho gaye?”

Main arz karunga,

“Ae Rab Main razi ho gaya”

Kuch log dozakh mein bhej diye jayenge hatta ke Main unke nikalne ke liye bhi sifarish karunga. Darogha-e-Dozakh Mujh se kahenge ke Ap SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam ne Apni Ummat mein se kisi ko bhi ALLAH ke ghusse ke liye nahi choda (jo) azab mein mubtila rahta balke sab ko nikalwa liya.”

An-Hazrat SallALLAHU ‘Alayhe Wasallam farmate hain ke bila shuba Meri Ummat ke ba’z afrad puri-puri jama’aton ke liye shafa’at karenge.

La’nat karne wale qayamat ke roz na gawah baneinge, na shafa’at karne ke ahal honge.

Shahid apne sattar rishte daron ki shafa’at kar sake ga jo qubool ki jayegi. Na-baligh bache ki bhi (jo faut hoga) shafa’at qubool ki jayegi aur wo apne walidain ke liye dozakh se bachane ke liye mazbut qila’ ban jayenge. See Gemstone and Rings in Islam here.

Jo shakhs Qur’an padh kar use yad kar leta hai aur uske halal ko halal aur haram ko haram samajhta hai tou wo jannat mein dakhil hoga. Aur wo apne ghar ke das admiyon ki shafa’at karega jin ke liye dozakh mein jana zaruri ho chuka hoga. Lakin sirf wo Hafize Qur’an shafa’at kar sake ga jo waqiatan Qur’an Pak par amal bhi karta hai. Qur’an Aziz aur roze ko bhi shafa’at ka haq diya jayega aur unki shafa’at qubool ki jayegi. See all the videos of yaALLAH dua wazaif here.

Pul-e-Saraat aur Taqsim-e-Noor

Jannat mein jane ke liye dozakh ke upar se ek rasta hoga jise Ahadees Karma mein Siraat farmaya gaya hai aur aam taur par Pul Saraat kaha jata hai. Mo’mineen is par se sahih salamat guzar jayenge aur bad-amal na chal sakein ge. Dozakh se badi-badi sundasiyan nikli hui hongi, jinko dozakh mein girana manzur hoga wo sundasiyan unko gira kar choden gi. Aur phir kuch muddat ba’d shafa’at se aur akhir mein barahe raast Arhamur Rahimeen ki maharbani se wo sab log dozakh se nikaal liye jayenge jinho ne sache dil se kalma padha hoga. Aur sirf kafir, mushrik aur munafiq dozakh mein rah jayenge. See Islamic foods here.

Pul Saraat se guzarne se pahle Noor taqsim ho ga. Apne apne a’imal ke noor taqsim honge. Ye Noor ALLAH Ta’ala ki taraf se jannat ka rasta batane ke liye hoga. Mo’mineen aur Mo’minaat Noor milne ke ba’d Pul Saraat se guzarne lageinge. Munafqeen, Mo’mineen se kahen ge ke zara intazam karo, ham bhi tumhari roshni se fayedah uthayen,magar unhe kuch hasil na hoga. See istikhara for future here.

Qayamat ke din a’ilan hoga jo jisko pujta tha apne ma’abud ke piche honge. Aur jo ghair ALLAH ko pujte the wo sab dozakh mein gir padenge aur yahud-o-nasara munh ke bal dozakh mein gir padenge.

Aur sirf Haq Ta’ala Wahdahu Laa Shareeka Lahu ke man-ne wale ya’ni Musalman rah jayenge aur unke samne ek tajalli hogi. Wo log jo khuloose dil se ALLAH Azzawajal ko sajdah karte the, tajalli ko dekhte hi sajdah mein gid padenge. Aur jo log dikhawe ya (muslihaton ki bina par duniyawi mushkilat se) bachne ke liye ya’ni (nafaq ke sath) sajdah karte the, ALLAH Ta’ala unki kamar ko takhta bana deinge aur wo jhuk na sakeinge. Un mein se jo bhi sajdah ka iradah karega gaddi ke bal gid padega.

Pul Saraat chikni aur phisalne wali jagah hai. Mo’mineen mein se kayi palak jhapakne mein koi bijli ki tarah aur koi hawa ya parindon ki tarah guzar jayenge. See yaALLAH Nikah Istikhara here.

Mo’mineen jab nijat pa chuke honge tou Haq Ta’ala Shanahu ke hukam aur mansha se (apni arz par) dozakh se kuch logon ko nikalne ki sifarish karenge. Aur bhari ta’dad mein log dozakh se nikal liye jayenge jin ke dil mein rayi barabar bhi iman maujud hoga ya zarrah barabar iman hoga, dozakh se nikal liya jayega.

 

Symptoms of The Day of Resurrection in Islam Nishaniyan Asar e Qayamat

Urdu Version


آثارِ قیامت
ہمارے ایمان کی حفاظت ہمیں فقط اپنی موت تک رکھنی ہے۔ یہ سچ ہے کہ ہر گزرنے والے لمحے کے ساتھ ہم تیزی سے قیامت کی طرف بڑھ رہے ہیں۔ اکثر لوگوں کا خیال ہے کہ یہ دن شاید انتہائی مستقبل بعید کی بات ہے۔ اسے لوگوں کو یاد رکھنا چاہیے کہ ان سے قبل آنے والوں کا بھی یہی خیال تھا۔ دار حقیقت ہر ذی روح کو ایک دن اللّه تعالیٰ کے حضور حاضر ہونا ہے۔ جس سے وہ کسی صورت بچ نہیں سکتا۔ کیوں کہ قیامت کے دن کا صحیح وقت صرف اللّه تعالیٰ کو معلوم ہے۔ شاید جب ہم اپنے مستقبل کے پروگرام بنانے اور اپنے حال کو سنوارنے میں مگن ہونگے تو یہ گھڑی ہمیں آ لے۔ اللّه تعالیٰ ہمیں قیامت آنے سے پہلے نیکیاں کرنے اور برائی سے بچنے کی توفیق عطا کرے۔ آمین۔

اسلام میں پانچ وقت کی نماز ادا کرنے کا صحیح طریقہ جانئیے۔


قیامت کی علامات سبھی انبیاء کرام نے بھی بیان کی ہیں اورچونکہ نبی کریم  ﷺ کے بعد کوئی نبی نہیں
آئے گا اسلئے نبی کریم ﷺ نے تفصیلاً اسے بیان کیا ہے۔


صحیح مسلم میں ہے
حضرت حذیفہؓ سے روایت ہے کہ حضور اکرم ﷺ ہمارے درمیان کھڑے ہوئے اور اس قیام کے دوران آپؐ نے قیامت تک ہونے والا کوئی ایسا واقعہ نہیں چوڑا جو ہمیں نہ بتایا ہو۔ جس نے یاد رکھا، یاد رکھا اور جو بھول گیا وہ بھول گیا۔ اور آپؐ نے جن واقعات کی ہمیں خبر دی، ان میں سے جو بھی بھول گیا ہوں، وہ جب بھی رونما ہوتا ہے تو مجھے یاد آ جاتا ہے جیسے کوئی آدمی جب غائب ہو تو اسکا چہرہ بھول جاتا ہے اور پھر جب اس پر نظر پڑتی ہے تو یاد آ جاتا ہے۔
(صحیح مسلم، ص 39)

قیامت کے متعلق ارشاداتِ رسول
قیامت کے آثار کے متعلق پیارے نبی حضرت محمّد ﷺ  کی چند خوبصورت احادیث درج ذیل ہیں۔

حدیث شریف میں ہے کہ قیامت سے پہلے وہ وقت آئے گا کہ نہر فرات کے اندر سونے کا ایک پہاڑ ظاھر ہوگا اور اس پر قبضہ کرنے کے لئے لوگ جنگ کرینگے۔ جسکے نتیجہ میں 99 فیصد لوگ مر جاینگے۔ جن میں سے ہر ایک کا یہ گمان ہوگا کہ شاید میں ہی بچ جاؤں۔
(صحیح مسلم)


بخاری اور مسلم کی روایت میں ہے جو حضرت ابو ہریرہ رضی اللّه عنہ سے مروی ہے کہ فرات سے سونے کا ایک پہاڑ ظاہر ہوگا۔ جو شخص وہاں موجود ہو اس سے کچھ بھی نہ لے۔
(مشکٰوة شریف)


حضرت ابو ہریرہ رضی اللّه عنہ فرماتے ہے کہ حضرت محمّد ﷺ نے فرمایا کہ دنیا کے ختم ہونے سے پہلے ایسا وقت ضرور گزرے گا کہ قبر پر انسان کا گزر ضرور ہوگا اور وہ قبر پر لوٹ کر کہے گا کہ کاش میں اس قبر والے کی جگہ ہوتا اور دین کی وجہ سے یہ تمنا نہ ہوگی کہ ( بد دینی کی فضا سے گھبرا کر ایسا کرے گا ) بلکہ دنیاوی مصیبت میں گرفتار ہوگا۔
(مسلم شریف)

حضرت جابر رضی اللّه عنہ فرماتے ہیں کہ حضور اکرم ﷺ نے فرمایا آخر زمانہ میں ایک ایسا مسلمان بادشاہ ہوگا جو لپ بھر بھر کر مال تقسیم کریگا اور مال کو شمار نہ کریگا۔
(مسلم شریف)

بخاری و مسلم کی ایک روایت میں ہے کہ حضور اکرم ﷺ نے فرمایا کہ قیامت اس وقت تک قائم نہ ہوگی جب تک تمہارے اندر مال کی اس قدر کثرت نہ ہو جائے کہ مالدار کو اسکا رنج ہوگا کہ کاش کوئی میرا صدقہ قبول کر لیتا۔
حضرت عوف بن مالک رضی اللّه عنہ فرماتے ہیں کہ میرے سامنے رسول اللّه ﷺ نے قیامت کی چھ نشانیاں بیان فرمائی ہیں ۔ جن میں سے ایک یہ ہے کہ مال کی اس قدر کثرت ہوگی کہ انسان کو سو دینار (سونے کی اشرفیاں) دیے جاینگے تو (انہیں کم سمجھ کر) ناراض ہو جایگا۔
(بخاری شریف)

حضرت ثوبان ﷺ رضی اللّه عنہ فرماتے ہیں کہ حضور اکرم ﷺ نے فرمایا جب میری امّت میں تلوار رکھ دی جاۓ گی (یعنی امّت آپس میں خانہ جنگی کرنے لگے گی) تو قیامت تک تلوار چلتی رہیگی اور قیامت اس وقت تک قائم نہ ہوگی جب تک میری امّت کے بہت سے قبیلے مشرکین میں داخل نہ ہو جائیں اور جب تک میری امّت کے بہت سے قبیلے بتوں کو نہ پوجیں۔ پھر فرمایا کہ بلا شبہ میری امّت میں تیس کذاب ہونگے جن میں  سے ہر ایک اپنے آپ کو نبی بتاۓ گا حالاں کہ میں خاتم النّبیین ہوں۔ میرے بعد کوئی نبی نہیں ہو سکتا۔
(مشکوٰة شریف)

قیامت کے آثار قرآن شریف کی روشنی میں
وہ لوگ جو اس دنیا کی وقتی آسائشوں اور خوشیوں سے مطمئین ہیں وہ کئی اہم حقیقتوں کو بھولنے کی حتی الامکان کوشش کرتے ہیں۔ جیسے کہ انکی موت جو انکے تعاقب میں ہے اور دوبارہ زندہ کیے جانے کا دن۔ ان حقیقتوں پر غور کرتے ہوئے وہ خود سے یہی کہتے رہتے ہیں کہ انھیں زندگی اپنی مرضی سے گزارنی چاہیے اور وہ اللّه کے لئے اپنے فرائض بھول جاتے ہیں۔

تمام درود شریف مع فضیلت دیکھئیے۔

قیامت کے متعلق قرآنی آیات
قرآن پاک روزِ آخرت کے مراحل، اس روز لوگوں کو لگنے والے حیرت کے جھٹکوں، انکے خوف وحشت کیحالت کا نقشہ پیش کرتا ہے۔


اللّه تعالیٰ فرماتا ہے۔
ترجمہ:(ان سے) پوچھئیے کہ کس کا ہے جو کچھ آسمان اور زمین میں ہے۔ آپ (ہی انھیں) بتائیے (سب کچھ) اللّه ہی کا ہے۔ اس نے لازم کر  لیا ہے اپنے پر رحمت فرمانا۔ یقیناً جمع کرے گا تمہیں قیامت کے دن۔ ذرا شک نہیں اس میں (مگر جنہوں) نے نقصان میں ڈال دیا ہے اپنے آپ کو تو وہ نہیں ایمان لائینگے۔
(سورت الانعام، آیت 12)

ایک اور جگہ فرمایا۔
ترجمہ: پھر جب پھونک ماری جائے گی صور میں ایک بار اور زمین اور پہاڑوں کو اٹھا کر حقیقتاً چور چور کر دیا جائے گا تو اس روز ہونے والا واقعہ ہو جائےگا۔
(سورت الحاقة، آیات 13-15)

دنیاوی زندگی کی ناپائیداری اور آخرت کی حقیقت
وقتِ آخرت اور ہمیشہ باقی رہنے والی اس کے بعد کی زندگی جو لوگوں کی منتظر ہے، حقیقتاً یہی سب سے اہم حقیقت ہے۔ اسی وجہ دنیاوی زندگی کی ناپائداری پر اتنا زور دیا گیا ہے۔ اس زمین پر کوئی چیز ایسی نہیں جسکو آپ اپنی ہمیشہ قائم رہنے والی زندگی پر ترجیح دیں۔ نہ آپکی کیریئر، نہ شادی، نہ دولت اور نہ ہی جائیداد۔ اگر کوئی چیز ایسی کہ جسکے لئے جیا جاۓ یا جسکی فکر کی جاۓ تو وہ ہے اللّه کی رضا۔

یہاں سے دیکھئیے دعائے منزل اور اسکی فضیلت


اللّه تعالیٰ آخرت کی زندگی کا آغاز انتہائی حیرت انگیز طریقے سے کریگا۔ اس روز موجود ہر شخص جان لے گا کہ دنیا کی اس وقتی زندگی کو ختم ہونا تھا اور ہر شخص کو آخرت کی زندگی کی حقیقت کا واضح طور پر اندازہ ہو جائےگا۔ اس دن کے آنے سے پہلے ہر شخص کو روز قیامت کے وقت ( اور اسکی ہیبت کو یاد ) کرنا چاہیے۔ خواہ انہوں نے اسکے بارے میں کبھی نہ سوچا  ہو۔ یہاں سے دیکھئیے ہمارے پیارے آقا محمد ﷺ کی سکھائی گئی پیاری دعائیں


ظاہر ہے وہ دن لازماً سب کو دیکھنا ہے۔ یہ ایک اہم وارننگ ہے کیونکہ ہر وہ شخص جو اس دن کو اور اس روز پیش آنے والے واقعات کو نظر انداز کرتا ہے۔ اسے روز قیامت کے ناقابلِ برداشت واقعات کا سامنا کرنا پڑے گا۔ اور آخرت کی نا ختم ہونے والی سختیاں برداشت کرنا   پڑیں گی۔ شش قفل کی فضیلت پڑھئیے۔


ہم سب کو یقیناً اس دن کا سامنا کرنا ہوگا۔ جس کے بارے میں قرآن پاک نے تفصیلاً وضاحت بیان کی ہے۔ ہم دیکھیں گے کہ اس روز ہمارا ہراثاثہ یہاں تک کہ ہمارا جسم بھی ہمارا ساتھ چھوڑ دیگا اور ہمیں دوبارہ تخلیق کیا جائے گا۔ ہمیں اللّه تعالیٰ کے عطا کردہ اس موقع سے فائدہ اٹھانا چاہیے تاکہ آخرت کی منتظر نعمتوں، خوشیوں اور سکون کو پا سکیں۔ جنکا مقابلہ زمین پر موجود  کوئی شے نہیں کر سکتی۔ آیت الکرسی کی فضیلت اور مؤثر وظائف دیکھئیے۔

اس ضمن میں ہمیں جو کرنا ہے وہ صرف یہ ہے کہ اللّه تعالیٰ پر کامل ایمان لائیں۔ اور آخرت کی حقیقت پر اور ان نعمتوں پر شکر ادا کریں جو اللّه تعالیٰ نے ہمیں عنایت کی ہیں۔ اگر ہم ایسا نہیں کرتے تو ہمیں آخرت میں ناقابلِ برداشت ندامت اور پچھتاوے کا سامنا کرنا پڑے گا۔ پڑھئیےسورت رحمٰن انگلش ترجمے کے ساتھ۔


قرآن پاک میں اللّه تعالیٰ کا فرمان ہے۔
ترجمہ: بے شک خسارہ میں رہے وہ جنہوں نے جھٹلایا اللّه سے ملاقات (کی خبر) کو۔ یہاں تک کہ جب آ گئی ان پر قیامت۔ اچانک بولے ہائے ہائے افسوس اس کوتاہی پر جو ہم سے ہوئی اس زندگی میں اور وہ اٹھاۓ ہوئے ہیں  بوجھ اپنی پشتوں پر۔ ارے کتنا بوجھ ہے جسے وہ اٹھاۓ ہوئے ہیں۔
(سورت الانعام، آیت 31)


ہمیں تسلیم کر لینا چاہیے کہ آخرت کی زندگی ایک حقیقت ہے اور اسکے لئے تیاری کرنی چاہیے۔ اسی صورت میں موجودہ زندگی میں کیے گئے اعمال کی کوئی قدر ہوگی اور ہمیں اسکا پورا پورا بدلہ یہاں اس دنیا میں بھی ملے گا اور آخرت میں بھی۔ اسکا اجر جنّت میں ٹھکانا ہوگا۔ جہاں ہمیں ہماری مرضی کی ہر شے میسر ہوگی۔ عہد نامہ مع ترجمہ و فضیلت پڑھئیے۔

یاد رکھیے کہ روز قیامت ہر شخص کو اللّه تعالیٰ کے سامنے اپنے اعمال کا حساب تنہا دینا ہوگا۔ چنانچہ صحیح اعمال کیجیے۔ اور موت اور اسکے بعد کی حقیقتوں  کے لئے تیاری کیجیے۔ کیونکہ وہاں ہمیں وہی سب ملے گا جسکے ہم حقدار ہونگے۔ اللّٰه تعالیٰ ہمیں آخرت کی زندگی کے لئے تیاری کرنے کی توفیق عطا فرماۓ۔ آمین۔ درودِ مقدس کے فضائل سے استفادہ حاصل کیجئیے۔


یومِ آخرت پر ایمان لانا
یومِ آخرت پر ایمان لانا ایمان کے ارکان میں سے ایک رکن ہے اور اسلام کے بنیادی عقائد میں سے ایک عقیدہ ہے۔ کیونکہ اللّه تعالیٰ کی وحدانیت  کے بعد یومِ آخرت میں اٹھاۓ جانے کا فیصلہ ہی وہ فیصلہ ہے جس پر  عقیدہ کی بنیاد قائم ہے۔

یومِ آخرت میں پیش آنے والی چیزوں اور اسکی علامات پر ایمان رکھنا ‘ ایمان بالغیب‘ کا حصّہ ہے۔ اسکا ادراک عقل کے ذریعہ نہیں کیا جا سکتا۔ اور نہ ہی وحی کے نصوص کے علاوہ اسکی معرفت کا کوئی ذریعہ ہے۔
اس یومِ عظیم کی اہمیت کے پیشِ نظر ہم اکثر دیکھتے ہیں کہ اللّه تعالیٰ نے اپنی ذات پر ایمان لانے کو یومِ آخرت پر ایمان لانے سے وابستہ کر رکھا ہے۔ اسلام کی تاریخ پڑھئیے۔


جیسا کہ اس ذاتِ باری تعالیٰ کا فرمان ہے۔
ترجمہ: مشرق اور مغرب کی طرف منہ کرنے میں ہی اچھائی نہیں بلکہ حقیقتاً اچھا وہ شخص ہے جسکا اللّه تعالیٰ پراور قیامت کے دن پر ایمان ہے۔
(سورت البقرہ، آیت 177)

اور فرمایا۔
ترجمہ: یہی ہے وہ جسکی نصیحت اسے کی جاتی ہے جو اللّه پراور قیامت کے دن پر ایمان رکھتا ہو اور جو شخص اللّه سے ڈرتا ہے تو اللّه اس کے لئے چھٹکارے (عذاب سے بچنے) کی شکل نکال دیتا ہے۔
(سورت طلاق، آیت 2)
اسکے علاوہ اور بھی بہت سی آیات ہیں۔
اور قرآن میں شاید ہی کوئی ایسا صفحہ ہوگا جس میں یومِ آخرت اور اس میں متعین کردہ ثواب و عتاب کے کے متعلق کوئی بات نہ پیش کی گئی ہو۔

اسلامی تصور کے مطابق اصل زندگی، دنیاوی زندگی نہیں بلکہ آخرت کے بعد کی زندگی ہے
اسلامی تصور کے مطابق حیات کوتاہ محدود دنیاوی زندگی کا نام نہیں ہے اور نہ ہی یہ انسان کی مختصر و محدود عمر کا نام ہے۔ اسلامی تصوّر  کے مطابق تو زندگی بے پایاں ہے اور اسکی مدّت قیامت کے دن تک دراز ہے۔ اور اسکا سلسلہ اس جگہ تک پھیلتا ہے جہاں دوسرا گھر ہے جنّت یا دوزخ۔ جنّت، جسکا عرض آسمان و زمین کے برابر ہے اور دوزخ جو اپنے اندر سال ہا سال سے زمین کے سینے پر آباد ہونے والی بہت سی نسلوں کو سمو لینے کی وسعت رکھتی ہے۔ اسلام میں ناموں کے اعداد جانئیے۔

اللّه تعالیٰ نے فرمایا۔
ترجمہ: آؤ دوڑو اپنے رب کی مغفرت کی طرف اور اس جنّت کی طرف جسکی وسعت آسمان و زمین کی وسعت کے برابر ہے۔ یہ انکے لئے بنائی گئی ہے جو اللّه پر اور اسکے رسولوں پر ایمان رکھتے ہیں۔ یہ اللّه کا فضل ہے جسے چاہے وہ دے اور اللّه بڑے فضل والا ہے۔
(سوره الحدید، آیت 21)

پھر فرمایا۔
ترجمہ: جس دن ہم دوزخ سے پوچھیں گے کیا تو بھر چکی؟ تو وہ جواب دے گی کیا کچھ اور مزید بھی ہے؟
(30 سوره ق، آیت )

مومن اور یومِ آخرت
خیر کے راستوں پر انسان کے چلانے کا حقیقی محرّک دراصل اللّه اور یومِ آخرت اور اس میں پوشیدہ ثواب و عتاب پر ایمان  ہی ہے۔ ورنہ بشری قوانین میں سے کوئی قانون ایسا نہیں ہے جو انسانی سلوک کے اندر اس طرح راستی و استقامت پیدا کردے جس طرح یومِ آخرت پر ایمان پیدا کرتا ہے۔ اسلئے بڑا فرق اور بہت دوری ہے اس شخص کے سلوک میں جو اللّه اور یومِ آخرت پر ایمان رکھتا ہے۔ اور یہ جانتا ہے کہ دنیا آخرت کی کھیتی ہے اور اعمال صالحہ آخرت کا توشہ ہیں۔ اسلامی علم کے مطابق چہروں سے انسانی شخصیت کو جانئیے


جیسا کہ اللّه تعالیٰ نے فرمایا۔
ترجمہ: حج کے مہینے مقرر ہیں اسلئے جو شخص ان میں حج لازم کر لے وہ اپنی بیوی سے میل ملاپ کرنے، گناہ کرنے اور لڑائی جھگڑا کرنے سے بچتا رہے۔ تم جو نیکی کروگے اس سے اللّه تعالیٰ با خبر ہے اور ساتھ سفر خرچ لے لیا کرو۔ سب سے بہتر توشہ اللّه تعالیٰ کا ڈر ہے۔ اے عقل مند! مجھ سے ڈرتے رہا کرو۔
(سورت البقرہ، آیت 197)

اور جیسا کہ صحابی جلیل عمر بن حمامؓ نے فرمایا۔
رکضا الی اللّه بغیر زاد   الا التقٰی و عمل المعاد
والصبر فی اللّه علی الجہاد    کل زاد عرضة النفاد
غیر التقٰی وابر و الرشاد
ترجمہ: تقویٰ، آخرت کا عمل اور اللّه تعالیٰ کے لئےجہاد پر صبر کے توشہ  کے بغیر اللّه تعالیٰ کی طرف پیش قدمی نہیں ہو سکتی۔ تقویٰ، نیکی اور رشد کے علاوہ تمام توشے ختم ہو جائیں گے۔ اسلام میں سنت کے مطابق خوراک کی معلومات دیکھئیے۔

اس شخص کی طرزِ زندگی میں جسکا یہ حال ہوا اور اس شخص کے اسلوبِ حیات میں جو اللّه، یوم آخرت اور اس میں پنہاں ثواب و عتاب پر یقین نہیں رکھتا یہی فرق ہے۔ کیونکہ یومِ جزا کی تصدیق کرنے والا جب کارگاہ حیات میں رواں دواں ہوتا ہے تو اسکی نگاہ میں آسمان کی میزان ہوتی ہے زمین کی میزان  نہیں۔ اور اس کے عمل کا مدارحساب آخرت پر ہوتا ہے حساب دنیا پر نہیں۔

زندگی میں اسلوب اچھوتا ہوتا ہے۔ اس میں استقامت، تصوّر کی وسعت اور ایمان کی قوت پائی جاتی ہے۔ اور اس میں اجر و ثواب کی امید، مشکلات میں ثبات اور مصیبتوں پر صبر پایا جاتا ہے۔ کیونکہ وہ یہ بات اچھی طرح جانتا ہے کہ جو کچھ اللّه تعالیٰ کے پاس ہے وہ بہترین اور باقی رہنے والا ہے۔ اسلام میں سنتِ رسول ﷺ کے مطابق انگوٹی پہننے کی معلومات  حاصل کریں۔

حدیث مبارکہ کے مطابق
امام مسلم نے حضرت صہیبؓ سے روایت کی ہے۔ انہو ں نے کہا کہ رسول اللّه ﷺ نے فرمایا: تعجب ہے مومن کی حالت پر یقیناً اسکی ہر حالت میں بھلائی ہے۔ اور یہ چیزیں مومن کے سوا اور کسی کو حاصل نہیں۔ اگر اسے خوشحالی حاصل ہوتی ہے تو شکر بجا لاتا ہے۔ بس تو یہ چیز اسکے لئے بھلی ہوتی ہے اور اگر اسے تکلیف کا سامنا ہوتا ہے تو صبر کر لیتا ہے
تو یہ چیزیں اس کے لئے بھلی ہوتی ہیں۔

مسلمان کا نفع بشریت تک محدود نہیں بلکہ حیوانات تک دراز ہوتا ہے۔ جیسا کہ حضرت عمر بن خطاب رضی اللّٰه عنہ کا مشہور مقولہ ہے کہ اگر عراق میں کوئی خچر گر پڑے تو میں سمجھتا ہوں کہ اللّٰه تعالیٰ مجھ سے اسکے متعلق دریافت فرمائے گا کہ اے عمر تو نے اس کے لئے رستہ ہموار کیوں نہیں کیا تھا؟ جانئیے اسلام میںموسیقی حلال یا حرام؟ 

یہ شعور ایمان باللّٰه اور یومِ آخرت پر ایمان رکھنے کا اثر ہے۔ اور بھاری ذمہ داری اور امانت کی عظمت کے احساس سے پیدا ہوتا ہے۔ جسکو انسان نے اٹھا لیا تھا جب کہ آسمانوں، زمینوں اور پہاڑوں نے اسے اٹھانے سے اپنے خوف کا اظہار کیا تھا۔ یہ شعور اسلئے پیدا ہوتا ہے کہ وہ جانتا ہے کہ ہر چھوٹی بڑی چیز کے متعلق اس سے باز پرس ہو گی اور انکا حساب ہو گا اور انہی کی بنیاد پر اسے بدلہ دیا جائے گا۔ اگر اچھا ہے تو اچھا اور اگر برا ہے تو برا۔

ارشادِ باری تعالیٰ ہے۔
ترجمہ: جس دن ہر نفس (شخص اپنی کی ہوئی نیکیوں کواور اپنی کی ہوئی برائیوں کو موجود پا لے گا آرزو کرے گا کہ کاش! اسکے اور برائیوں کے بیچ بہت ہی دوری ہوتی۔ اللّٰه تعالیٰ تمہیں اپنی ذات سے ڈرا رہا ہےاور اللّٰه تعالیٰ اپنے بندوں پر بڑا مہربان ہے۔
(سورت آلِ عمران، آیت 30)

ایک اور جگہ فرمایا۔
ترجمہ: اور نامہِ اعمال سامنے رکھ دیے جائیں گے پس تو دیکھے گا کہ گنہگار اس (کی تحریر) سے خوفزدہ ہو رہے ہونگے اور کہہ رہے ہونگے ہائے ہماری خرابی یہ کیسی کتاب ہے جس نے کوئی چھوٹا بڑا بغیر گھیرے باقی ہی نہیں چھوڑا اور جو کچھ انہوں نے کیا تھا وہ (اس میں لکھا ہوا) حاضر پائیں گے اور تیرا رب کسی پر ظلم و ستم نہ کرے گا۔
(سورت الکھف، آیت 49)

منافق اور یومِ آخرت
اور جو شخص اللّٰه تعالیٰ، یوم آخرت اور اس میں ہونے والے حساب اور جزاء پر ایمان نہیں رکھتا، وہ اپنی دنیاوی زندگی کی حاجات کی تکمیل میں تن من سے مصروف ہو جاتا ہے۔ اور اس کی آسائشوں کے پیچھے بھاگتا رہتا ہے۔ اور دیوانہ وار ان کے حصول میں لگا رہتا ہے۔ وہ کوشش کرتا ہے کہ اس کے واسطے سے لوگوں کا کچھ بھلا نہ ہونے پائے۔

اس نے دنیا کو اپنی فکر کا مرکز اور علم کی انتہا قرار دے رکھا ہے۔ اپنی ذاتی منفعت کے پیمانے سے تمام چیزوں کو ناپتا ہے۔ اسے دوسروں کی کوئی پرواہ نہیں ہوتی۔ وہ اپنے ہم جنسوں پر بس اتنی ہی توجہ دیتا ہے جس قدر اس محدود کوتاہ زندگی میں ان سے اسکا مفاد وابسطہ ہوتا ہے۔ اس کی تگ و دو کا میدان بس زمین اور اس کی عمر کے حدود ہوتے ہیں۔ اور یہیں سے اسکے حساب کا دائرہ بدل جاتا ہے اور اسکے پیمانے مختلف ہو جاتے ہیں۔ اور اس کی انتہا غلط نتائج پر ہوتی ہے۔ کیونکہ وہ مرنے کے بعد دوبارہ اٹھائے جانے کو مستبعد گردانتا ہے۔ تہجد کی نماز کی اہمیت دیکھئیے۔

ارشادِ باری تعالیٰ ہے۔
ترجمہ: بلکہ انسان تو چاہتا ہے کہ آگے آگے نافرمانیاں کرتا جائے، پوچھتا ہے کہ قیامت کا دن کب آئے گا۔
(سورت القیامة، آیت 5,6)

اس تنگ اور محدود جاہلانہ تصوّر نے اہلِ جاہلیت کو خون ریزی، لوٹ مار اور راہ زنی پر آمادہ کیا۔ کیونکہ دوبارہ اٹھاۓ جانے اور جزاء وغیرہ پر ایمان نہیں رکھتے۔

جیسا کہ اللّه تعالیٰ نے انکے حال کی تصوّر  کشی فرمائی ہے۔
ترجمہ: اور یہ کہتے ہیں کہ صرف یہی دنیاوی زندگی ہماری زندگی ہے اور ہم دوبارہ زندہ نہ کیے جائیں گے۔
(سورت الانعام، آیت 29)

بغیر علم کے فتویٰ
حضرت عبدالله بن عمرؓ فرماتے ہیں کہ رسول اللّه ﷺ نے فرمایا ہے کہ بندوں  میں سے خدا علم کو اچانک نہ اٹھاۓ گا بلکہ علماء کو موت دے کر علم کو رفتہ رفتہ ختم کرے گا۔ حتیٰ کہ جب خدا کسی عالم کو نہ چھوڑے گا تو لوگ جاہلوں کو امیدوار (صدر) بنائیں گے اور ان سے مسائل اور معاملات کے بارے میں پوچھینگے۔

صدیاں گزرتی گئیں اور تعجب خیز چیزیں ترقی پذیر ہوتی رہیں۔ اس سے بھی کہیں بڑھ کر انکار پیدا ہو جاتا ہے۔ ہم دیکھ رہے ہیں کہ محسوس ہونے والی مادی چیزوں کے علاوہ تمام چیزوں کا کلی طور پر انکار کیا جا رہا ہے۔ جیسا کہ الحادیت کی حامل مارکسی اشتراکیت کا حال ہے کہ جو اللّه تعالیٰ اور یوم آخرت پر ایمان نہیں رکھتی اور حیات کے متعلق یہ کہتی ہے کہ وہ تو صرف مادہ ہے اور محسوس مادہ کے پیچھے کوئی چیز نہیں ہے۔ اسلام میں عورت کے حقوق پڑھئیے۔


انکے سردار ملحد مارکس کا خیال تو یہ ہےکہ الہ (معبود ) کوئی نہیں ہے اور زندگی مادہ ہے۔ یہی وجہ ہے کہ وہ حیوانات کی طرح ہیں۔ اور اپنی غایت تخلیق اور معنیِ حیات کے ادراک سے بے بہرہ ہیں۔ بلکہ ضائع و سر گرداں ہیں۔  اور اگر انکے یہاں کسی صورت اجتماعیت پائی بھی جاتی ہے تو سطوتِ قانون کے سایے تلے ہے۔
اور اس طرح کے لوگوں کو آپ زندگی پر سب سے زیادہ حریص پائیں گی کیونکہ ان میں سے بعض بعد الموت پر ایمان نہیں رکھتے ۔ اسلام میں پسند کی شادی کرنے کی اجازت ہے یا نہیں؟ جانئیے۔


جیسا کہ اللّه تعالیٰ نے یہود اور مشرکین کے وصف میں فرمایا ہے۔

ترجمہ: بلکہ اے نبی! سب سے زیادہ دنیا کی زندگی کا حریص آپ انہی کو پائیں گے۔ یہ حرص کی زندگی میں مشرکوں سے بھی زیادہ آگے ہیں۔ ان میں سے تو ہر شخص ایک ایک ہزارسال کی عمر چاہتا ہے گویا یہ عمر دیا جانا بھی انہیں عذابوں سے نہیں چھڑا سکتا اور اللّٰه تعالیٰ ان کے کاموں کو بخوبی دیکھ رہا ہے۔
(سورت البقرہ، آیت 96)
مشرک تو بعث بعد الموت کی امید نہیں رکھتا۔ اسلئے وہ لمبی زندگی کو محبوب رکھتا ہے۔ اور یہودی کے پاس جو علم ہے اسکی بنا پر وہ جانتا ہے کہ اس کے کرتوتوں کے سبب آخرت میں اس کے لئے کس قدر رسوائی ہے۔ چنانچہ یہ جنس اور اس کی طرح کے لوگ بدترین لوگ ہیں۔ اسلام میں بچوں کی تاریخ پیدائش کے لحاظ سے موزوں نام دیکھئیے۔

آپ دیکھیں گے کہ ان کے درمیان بدترین قسم کی لالب اور طمع کا دور دورہ ہے۔ قوموں کو زیر کرنا، انہیں غلامبنا لینا اورحیات دینوی سے فائدہ حاصل کرنے کے لالچ میں ان کی ثروتوں کو لوٹ لینا ان لوگوں کا شیوہ ہے۔ اور اسی لیے ان کے درمیان اخلاقی گراوٹ بہیمانہ سلوک کا ظہور ہے۔ ختمِ خواجگان کا طریقہ پڑھئیے۔

اور جب وہ یہ دیکھتے ہیں کہ جس فوری لذت کے وہ مشتاق ہیں اگر اس کے حصول میں دنیاوی زندگی کے آلام و مصائب آڑے آ رہے ہیں، تو انہیں موت کو گلے لگا لینے میں کوئی باک نہیں ہوتا۔ کیونکہ دوسری زندگی میں بازپرس کا انہیں کوئی اندازہ نہیں رہتا ہے۔ لہٰذا اس زندگی سے چھٹکارا حاصل کر لینے میں ان کے نزدیک کوئی چیز مانع نہیں ہوتی ہے۔ مختلف قسم کے اہم استخارہ کے طریقے دیکھئیے۔

اسلئے ایمان بالآخرت کے معاملے کا اسلام نے بڑا اہتمام کیا ہے۔ اور قرآن کریم میں اس کی تاکید آئی ہے۔ اور بعث، حساب اور جزا کا اثبات کیا گیا ہے۔ اور جاہلوں نے جب اسے مستبعد گردانا تو اس کا انکار کیا گیا۔

اللّٰه تعالیٰ نے اپنے نبی کو حکم دیا کہ اس بات پر قسم کھا لیں کہ وہ یقیناً حق ہے۔
ترجمہ: آپ کہہ دیجیئے کہ کیوں نہیں اللّٰه کی قسم! تم ضرور دوبارہ اٹھائے جاؤ گے پھر جو تم نے کیا ہے اسکی خبر دیے جاؤ گے اور اللّٰه تعالیٰ پر یہ بالکل ہی آسان ہے۔
(سورت التغابن، آیت 7)

قیامت کے احوال اور اللّٰه تعالیٰ نے اپنے متقی بندوں کے لئے جو ثواب تیار کر رکھا ہے۔ اور گنہگاروں کے لئے جو سزائیں مقرر کی ہیں ان سب کا تذکرہ فرمایا۔ اور منکرین کی توجہ اس کی حقانیت کے دلائل کی جانب مبذول کرائی تاکہ دلوں سے شکوک کی بیخ کنی ہو جائے۔ اور لوگ اس دن کو اور اس میں رونما ہونے والے خوف کے لمحات کو اپنا نصب العین بنا لیں جو رونگٹے کھڑے کر دینے والے ہیں۔ تاکہ وہ اپنی اس دنیاوی زندگی میں رسول اکرم ﷺ کے لائے دینِ حق کی اتباع کریں اور ان کے سلوک کے اندر استقامت پیدا ہو جائے۔ دعا کیا ہے؟ مکمل تفصیل جانئیے۔

ارشادِ باری تعالیٰ ہے۔
ترجمہ: لوگو! اگر تمہیں مرنے کے بعد جی اٹھنے (دوبارا زندہ کیے جانے) میں شک ہے توسوچو ہم نے تمہیں مٹی سے پیدا کیا۔ پھر نطفہ سے، پھر خونِ بستہ سے، پھر گوشت کے لوتھڑے سے جو صورت دی گئی تھی اور بے نقشہ تھا۔ یہ ہم تم پر ظاہر کر دیتے ہیں اور ہم جسے چاہیں ایک ٹھہرائے ہوئے وقت  تک رحمِ مادر میں رکھتے ہیں پھر تمہیں بچپن کی حالت میں دنیا میں لاتے ہیں۔ پھر تاکہ تم اپنی پوری جوانی کو پہنچو۔ تم میں سے بعض تو وہ ہیں جو فوت کر لئے جاتے ہیں۔ بعض غرض عمر کی طرف پھر سے لوٹا دیے جاتے ہیں کہ وہ ایک چیز سے باخبر ہونے کے بعد پھر بےخبر ہو جائیں۔ تو دیکھتا ہے کہ زمین (بنجر اور) خشک ہے پھر جب ہم اس پر بارشیں برساتے ہیں تو پھر وہ ابھرتی اور پھولتی ہے۔ اور ہر قسم کی رونق دار نباتات اگاتی ہے۔ یہ اسلئے کہ اللّٰه ہی حق ہے اور وہی مردوں کو جلاتا ہے اور وہ ہر چیز پو قدرت رکھنے والا ہے۔ اور یہ کہ قیامت قطعاً آنے والی ہے جس میں کوئی شک و شبہ نہیں اور یقیناً اللّٰه تعالیٰ قبر والوں کو دوبارہ زندہ فرمائے گا۔
(سورت الحج، آیات 5،6،7)

جو ذات متعدد المدار میں انسان کی تخلیق پر قادر رہتی ہے وہ دوسری مرتبہ اس اعادہ سے عاجز نہیں ہو سکتی۔ بلکہ عقلی اعتبار سے ابتداء کے مقابلے میں اعادہ آسان ہوتا ہے۔ سورت فاتحہ کے مجرب و آسان وظائف دیکھئیے۔

جیسا کہ اللّٰه تعالیٰ کا ارشاد ہے۔
ترجمہ: اور اس نے ہمارے لئے مثال بیان کی اور اپنی (اصل) پیدائش کو بھول گیا کہنے لگا ان گلی سڑی ہڈیوں کو کون زندہ کر سکتا ہے؟ آپ جواب دیجیے کہ انہیں وہ زندہ کرے گا جس نے انہیں پہلی مرتبہ پیدا کیا تھا اور جو سب طرح کی پیدائش کا بخوبی جاننے والا ہے۔
(سورت یٰسین، آیات 78،79)

حدیث شریف کی روشنی میں مسلمانوں کی اکثریت ہو گی لیکن بیکار
حضرت ثوبان رضی اللّٰه تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں کہ ایک مرتبہ رسولِ خدا ﷺ نے فرمایا کہ ایک ایسا زمانہ آنے والا ہے کہ (کفر و باطل کی) جماعتیں تمہیں ختم کرنے کیلئے آپس میں ایک دوسرے کو اس طرح بلا کر جمع کر لیں گی جیسے کھانے والے ایک دوسرے کو بلا کر پیالہ کے آس پاس جمع ہو جاتے ہیں۔ یہ سن کر ایک صاحب نے سوال کیا کہ کیا اس روز ہم کم ہونگے؟
آپؐ نے فرمایا! نہیں۔ بلکہ تم اس روز تعداد میں بہت ہو گے لیکن گھاس کے ان تنکوں کی طرح ہو گے جنہیں پانی کا سیلاب بہا کر لے جاتا ہے۔

(پھر ارشاد فرمایا کہ)
اور خدا ضرور ضرور تمہارے دشمنوں کے دل سے تمہارا رعب نکال دے گا اور بالضرور یقیناً وہ تمہارے دلوں میں کاہلی اور سستی ڈال دے گا۔
ایک صاحب نے عرض کیا کہ سستی کا کیا (سبب) ہو گا؟
اس پر آپؐ نے ارشاد فرمایا کہ دنیا (یعنی مال و دولت سے) محبّت کرنے لگو گے اور موت کو مکروہ سمجھنے لگو گے۔
(ابو داؤد)

کائنات کی خوبصورت تخلیق اور خدائے بزرگ و برتر کی عظیم حکمت
بارش کے ذریعہ مردہ زمین میں زندگی کی لہر دوڑا دینا اور اس میں نباتات کا ظہورِ قیام اور مردوں کو زندگی بخش دینے پر بزرگ و برتر خالق کی قدرت کی دلیل ہے۔

اللّٰه سبحانہ وتعالیٰ کا فرمان ہے۔
ترجمہ: جس نے آسمانوں اور زمین کو پیدا کیا ہے وہ ان جیسوں کے پیدا کرنے پر قادر نہیں، بیشک قادر ہے اور وہی تو پیدا کرنے والا دانا (بینا) ہے۔ وہ جب کبھی کسی چیز کا ارادہ کرتا ہے تو اسے اتنا فرما دینا (کافی ہے) کہ ہو جا اور وہ اسی وقت ہو جاتی ہے۔
(سورت یٰسں، آیات 81,82)

لہٰذا وہ آسمان و زمین کی عظمت کے باوجود ان کا خالق ہے تو وہ اس چھوٹے سے انسان کے اعادہ خلق پر بھی قادر ہے۔

جیسا کہ ارشادِ باری تعالیٰ ہے۔
ترجمہ: آسمان و زمین کی پیدائش انسان کی پیدائش سے بہت بڑا کام ہے لیکن (یہ اور بات ہے کہ) اکثر لوگ بے علم ہیں۔
(سورت غافر، آیت 57)

ذات حکیم انسان کو بیکار نہیں چھوڑ سکتی۔ نہ اس نے انہیں بیکار یا فضول پیدا فرمایا ہے کہ نہ تو انہیں کسی بات کا حکم دیا جائے، نہ ہی کسی بات سے روکا جائے اور نہ ہی ان کے اعمال کا انہیں بدلہ دیا جائے۔

اسی متعلق قرآن مجید میں اللّٰه تعالیٰ کا فرمان ہے۔
ترجمہ: کیا تم یہ گمان کیے ہوئے ہو کہ ہم نے تمہیں یونہی بیکار پیدا کیا اور یہ کہ تم ہماری طرف لوٹائے ہی نہ جاؤ گے۔ اللّٰه تعالیٰ سچا بادشاہ ہے وہ بڑی بلندی والا (وہ فضول چیزوں کے پیدا کرنے سے پاک و بلند ہے) اس کے سوا کوئی معبود نہیں وہی بزرگ عرش کا مالک ہے۔
(سورت المؤمنون، آیات 115, 116)

پھر فرمایا۔
ترجمہ: ہم نے زمین اور آسمان اوران کے درمیان کی چیزوں کو کھیل کے طور پر پیدا نہیں کیا، بلکہ ہم نے انہیں درست تدبیر کے ساتھ ہی پیدا کیا ہے لیکن ان میں سے اکثر لوگ نہیں جانتے۔
(سورت الدخان، آیات 38,39)

آخرت کی تیاری کی کوشش میں گامزن اللّٰه تعالیٰ کے نیک بندے

ایک چیز جو بالکل واضح ہے کہ جو ان مخلوقات کے عجائبات کے گرد نظر گھمائے اور ان کے اندر جو نظام اور پائداری پائی جاتی ہے ان میں غور و تدبر کرے گا تو اسے یہ معلوم ہو جائے گا کہ ہر چیز ایک انداز کے مطابق تخلیق کی گئی ہے۔ اور ہر چیز کی تخلیق ایک غایت اور مدت کے تحت ہے۔ اور اس غایت کی تحقیق کی خاطر وہ چیز مہیا کی گئی ہے جو اس کے قیام اور اسکے وجود کی ضامن ہو اگر وہ اسی نہج پر چلتا رہا،      جس کا اللّٰه تعالیٰ نے اس کے لئے ارادہ فرمایا ہے۔    
اس عظیم کائنات پر غور و فکر کرنے سے جہاں ہمیں اللّٰه تعالیٰ کے ہمہ گیر علم اور عظیم قدرت کا پتہ چلتا ہے، وہیں اس کی بے پایاں حکمت بھی نظر آتی ہے۔ وہ انسانوں کو اس طرح نہیں چھوڑ دیتا کہ قوی ضعیف پر دست درازی کرتا رہے اور کوئی اس کا ہاتھ پکڑنے والا نہ ہو۔ اور نہ ان لوگوں کو اس طرح چھوڑ دینے والا ہے جو راہِ حق سے منحرف ہو جاتے ہیں کہ اس زندگی
کے بعد جس سزا کے وہ مستحق ہیں انہیں وہ سزا نہ ملے۔ دعا مانگنے کا مکمل طریقہ جانئیے۔

اور نہ ان لوگوں کو یونہی نظر انداز کر دینے والا ہے کہ جو اپنے رب کی رضامندی کی خاطر ہر وقت کوشش میں لگے رہتے ہیں۔ اور کوئی دقیقہ فروگزاشت نہیں کرتے کہ انہیں اللّٰه تعالیٰ کا کوئی فضل حاصل نہ ہو۔ اور آخرت کے دن انہیں کوئی انعام نہ ملے جن کے ذریعے انہیں یہ معلوم ہو کہ انہوں نے متاعِ دنیا کی قربانی دی ہے۔ اور حیات دنیا میں جو مشقتیں اٹھائی ہیں وہ دنیا کے ثواب اور اسکی ان نعمتوں کے مقابلے میں کوئی حیثیت نہیں رکھتی ہیں جنہیں نہ کسی نے آنکھ سے دیکھا ہے، نہ کسی کان نے سنا ہے اور نہ جن کے متعلق تصور کیا جا سکتا ہے۔ چہل ربنا کی فضیلت پڑھئیے۔

اگر لوگ اللّٰه تعالیٰ کی کہی سنتوں پر اور اسکی عظیم حکمت اور انسان پر اس کی تکریم و عنایت کے متعلق غور و فکر کریں تو یہ چیز انہیں یومِ آخرت پر ایمان لانے پر مجبور کر دے گی۔ دنیاوی زندگی پر ضرورت سے زیادہ بڑھی ہوئی ان کی حرص نہ صرف یہ کہ ختم ہو جائے گی بلکہ نیکی اور تقویٰ کی بنیاد پر تعاون بھی ہونے لگے گا۔

یومِ آخرت جو کام آئے گا وہ ہوں گے ہمارے نیک اعمال۔     یہی وہ واحد شے ہو گی جو ہمیں راہِ نجات تک لے جائے گی۔ آمین۔

پیارے آقا محمد ﷺ کا ارشادِ مبارک ہے۔

ایسے شخص کیلئے قیامت والے روز میری شفاعت حلال ہے۔
(صحیح البخاری)

قیامت کے مختلف نام

یومِ آخرت کے اہتمام کا ایک مظہر یہ بھی ہے کہ جہاں اسکی علامتوں کا ذکر ہوتا ہے تو وہیں قرآن کریم میں مختلف ناموں کے ساتھ اس کا ذکر بھی آیا۔ ان میں سے ہر نام کی اپنی خاص دلالت ہے۔ ان ناموں میں سے کچھ نام درج ذیل ہیں۔

١۔ الساعتہ

اللّٰه تعالیٰ کا ارشاد گرامی ہے۔

ترجمہ: بے شک قیامت کے قائم ہونے میں کوئی شک نہیں ہے۔

(سورت غافر، آیت ٥٩(

 

٢۔ یوم البعث

اللّٰه تعالیٰ کا فرمان ہے۔

ترجمہ: اور جن لوگوں کو علم اور ایمان دیا گیا وہ جواب دیں گے کہ تم تو جیسا کہ کتاب اللّٰه میں ہے یومِ قیامت تک ٹھہرے رہے۔ آج کا دن قیامت کا ہی دن ہے لیکن تم (اس بات کا) یقین ہی نہیں مانتے تھے۔

٣۔ یوم الدین

اللّٰه تعالیٰ فرماتا ہے۔

ترجمہ: بدلے کے دن (یعنی قیامت) کا مالک ہے۔

(سورت فاتحہ، آیت٣(

 

٤۔ يوم الحسرة

اللّٰه تعالیٰ کا ارشاد ہے۔

ترجمہ: تو انہیں اس رنج و افسوس کے دن کا ڈر سنا دے  جب کہ کام انجام کو پہنچا دیا جائے گا اور یہ لوگ غفلت اور بے ایمانی میں رہ جائیں گے۔

(سورت مریم، آیت ٣٩(

 

٥۔ الدار الآخرة

اللّٰه بزرگ و برتر نے فرمایا۔

ترجمہ: البتہ سچی زندگی تو آخرت کا گھر ہے، کاش! یہ جانتے ہوتے۔

(سورت العنکبوت، آیت ٦٤(

 

٦۔ یوم التناد

اللّٰه رب العزۃ نے فرمایا۔

ترجمہ: میں تمہارے لیے قیامت کے دن سے خوف کھاتا ہوں۔

(سورت غافر، آیت ٣٢(

 

٧۔ دارالقرار

اللّٰه تعالیٰ نے فرمایا۔

ترجمہ: آخرت ہی قرار کا گھر ہے۔

(سورت غافر، آیت ٣٩(

 

٨۔ یوم الفصل

اللّٰه سبحانہ وتعالیٰ نے فرمایا۔

ترجمہ: یہی فیصلہ کا دن ہے جس کو تم جھٹلاتے تھے۔

) سورت الصّٰٓفّٰت، آیت ٢١(

 

٩۔ یوم الجمع

اللّٰه رب العالمین نے فرمایا۔

ترجمہ: اور جمع ہونے کے دن سے جس کے آنے میں کوئی شک نہیں ان کو ڈرا دیں کہ ایک گروہ جنت میں ہو گا اور ایک گروہ جہنم میں ہوگا۔

( سورت الشوریٰ، آیت ٧(

 

١٠۔ یوم الحساب

اللّٰه ذی الجلال والاکرام نے فرمایا۔

ترجمہ: یہ ہے وہ جس کا وعدہ تم سے حساب کے دن کے لئے لیا جاتا تھا۔

( سورت صٓ، آیت ٥٣(

 

١١۔ یوم الوعید

 ارشادِ باری تعالیٰ ہے۔

ترجمہ: اور صور پھونک دیا جائے گا وعدہ عذاب کا دن یہی ہے۔

( سورت قٓ، آيت ٢٠(

 

١٢۔ یوم الخلود

اللّٰه حق تعالیٰ نے فرمایا۔

ترجمہ: تم اس جنت میں سلامتی کے ساتھ داخل ہو جاؤ یہ ہمیشہ رہنے کا دن ہے۔

(سورت قٓ، آیت ٣٤(

 

١٣۔ یوم الخروج

ارشادِ گرامی ہے۔

ترجمہ: جس روزاس تند و تیز چیخ کو یقین کے ساتھ سن لیں گے یہ دن نکلنے کا ہوگا۔

(سورت قٓ، آیت٤٢(

 

١٤۔ الواقعہ

ارشادِ حق تعالیٰ ہے۔

ترجمہ: جب قیامت آ جائے گی۔

(سورت الواقعہ، آیت ١(

 

١٥۔ الحاقة

ارشادِ ربانی ہے۔

ترجمہ: ثابت ہونے والی، ثابت ہونے والی کیا ہے اور تجھے کیا معلوم کہ وہ ثابت شدہ کیا ہے۔

(سورت الحٓاقة، آیت ١,٢,٣(

 

١٦۔ الطامة الكبرىٰ

اللّٰه سبحان نے فرمایا۔

ترجمہ: پس جب وہ بڑی آفت (قیامت) آ جائے گی۔

(النازعات، آیت٣٤(

 

١٧۔ الصاخة

اللّٰه تبارک وتعالیٰ نے فرمایا۔

ترجمہ: اس وقت جب کہ کان بہرے کر دینے والی قیامت آ جائے گی۔

(سورت عبس، آیت ٣٣(

 

١٨۔ الاٰزفة

اللّٰه سبحان نے فرمایا۔

ترجمہ: قیامت نزدیک آ گئی ہے۔

(سورت النجم، آیت ٥٧(

 

١٩۔ القارعہ

اللّٰه تعالیٰ کا فرمان ہے۔

ترجمہ: کھڑکھڑا دینے والی، کیا ہے وہ کھڑکھڑا دینے والی۔ تجھے کیا معلوم کہ وہ کھڑکھڑا دینے والی کیا ہے۔

(سورت القارعہ، آیت ١،٢،٣(

 

یوم القیامہ

اس دنیا میں جو بھی آیا ہر ایک نے اسے چھوڑ کر دوسرے عالم کا راستہ لیا۔ موت کی گھاٹی کو طے کر کے عالمِ برزخ میں پہنچا اور برزخ میں اعمال کے مطابق جزا و سزا پانے کے بعد اور مختلف حالات سے گزرنے کے بعد اس عالم کی عمر جب ختم ہو جائے گی تو ایک دن آنے والا ہے۔ جسے یوم القیامہ کہتے ہیں۔

اللّٰه سبحانہ وتعالی کا ارشاد ہے۔

ترجمہ: پھر تم اس کے بعد مرو گے پھر تم قیامت کے دن کھڑے کیے جاؤ گے۔

قرآن مجید اسی دن کو بدلے کا دن، فیصلہ کا دن اور حساب کا دن کہتا ہے۔ قیامت برحق ہے۔ اللّٰه تعالیٰ کی جب مشیت ہو گی صور پھونک دیا جائے گا اور قیامت آ موجود ہوگی۔ اس کےآنے کا وقت اللّٰه تعالیٰ کے علم میں ہے۔

علاماتِ قیامت

متعدد کتب احادیث میں قیامت کی بہت سی نشانیاں ذکر کی گئی ہیں۔ ان میں سے چند درج ذیل ہیں۔

حضرت محمد صلی اللّٰه علیہ وسلم ارشاد فرماتے ہیں۔

جب تم دیکھو کہ لوگ نمازیں غارت کرنے لگیں، امانت ضائع کرنے لگیں، سود کھانے، جھوٹ بولنے اور اسے حلال سمجھنے، معمولی بات پر خون ریزی کرنے، اونچی اونچی بلڈنگیں بنانے، دین بیچ کر دنیا کمانے لگیں گے۔   ظلم، طلاق اور ناگہانی موت عام ہو جائے گی۔ خیانت کار کو امانت دار، جھوٹ کو سچ، تہمت تراشی، بارش کے باوجود گرمی، کمینوں کی ٹھاٹھ ہو، امیر و وزیر جھوٹ کے عادی ہوں، عالم و قاری بدکار ہو جائیں،

 سونا و چاندی عام ہو جائے، گناہ زیادہ ہو جائیں، قرآن پاک کے نسخوں کو آراستہ کیا جائے، شرابیں پی جائیں، اسلامی سزائیں ختم کر دی جائیں، مرد عورتوں کی اور عورتیں مردوں کی نقالی کریں، غیر اللّٰه کی قسمیں کھائی جائیں (مثلاً بیٹے کی قسم، ماں کی قسم)، صرف جان پہچان والوں کو سلام کیا جائے،

 کمینہ قوم کا سربراہ بن جائے، بیٹا باپ کا نافرمان بن جائے، ماں سے بدسلوکی کی جائے، مسجدوں میں دنیاوی آوازیں بلند ہو جائیں، زکوٰۃ کو ٹیکس سمجھنے لگیں، شوہر اپنی بیوی کی بے جا اطاعت کرے، اولاد والدین کی نافرمان ہو جائے، کھیل کود، ناچ گانا، زناکاری عام ہو جائے، ملاقات کے وقت سلام کی بجائے دل لگی کی خاطر گالیاں دینے لگیں، شرم و حیا اٹھ جائے، عورتیں زیادہ ہو جائیں، قرآن کو ذریعہ معاش بنایا جائے،

لکھنے پڑھنے کا رواج ہو جائے لیکن صرف دنیا کیلئے، قرآن کے ساتھ گانے بجانے کے آلات بجائے جائیں، تجارت اتنی عام ہو جائے کہ عورت بھی شوہر کا ہاتھ بٹانے لگے، چرب زبانی سے روپیہ کمایا جائے، جھوٹے نبی پیدا ہوں، نیکیوں کا حکم دینا اور برائیوں سے منع کرنا رک جائے، لوگ موٹی موٹی گدیوں والی سواری (کاروں) پر مسجدوں کے دروازے تک آئیں، انکی عورتیں کپڑوں میں ہوں گی مگر ننگی ہوں گی (کپڑے باریک و چست ہوں گے)، ان کے سر کے بال بختی اونٹ کی کوہان کی طرح اوپر کو ہوں گے، (یا بال کٹے ہوئے ہوں گے یا سر پر جوڑا بنا ہوگا)، لچک لچک کر چلیں گی، لوگوں کو اپنی طرف مائل کریں گی، یہ لوگ نہ جنت میں داخل ہونگے نہ اس کی خوشبو کو پائیں گے،

چاروں طرف سے کفار کا ہجوم مسلمانوں پر حملہ کرے گا، بدعتوں کا فروغ ہو گا، نئے نئے غیر آباد علاقے آباد ہو جائیں گے، دینی مسائل میں ہر ایرا غیرا اپنی رائے پیش کرے گا، عذاب قبر اور شفاعت کا انکار کریں گے، دین کی باتوں میں تاویلیں کی جائیں گی، یہودی و نصاریٰ کی نقالی ہو گی، نوجوان بے کار اور لڑکیاں اور عورتیں آپے سے باہر ہوں گی، حالات میں دن بدن شدت آ تی جائے گی،

معمولی بچہ بھی بوڑھے کو جھڑکے گا، ہر آدمی کا اہم مقصد شکم پروری اور خواہش پرستی ہو گا، بے حیائی اور بدکاری کے خوبصورت نام رکھے جائیں گے، حرام چیزوں میں اپنے لیے ناجائز تاویلیں کریں گے اور پھر ایسا زمانہ آ جائے گا کہ خنزیر اور بندر کی شکل میں مسخ ہو جائیں گے، آلات موسیقی، رقص کرنے والی عورتیں اور طبلہ سارنگی (عام ہو جائے گا)، ایسا وقت آ جائے گا کہ صاحبِ اولاد عورتیں غمزدہ اور بے اولاد خوش ہوں گی، اسلام کا کام وہ کریں گے جو مسلمان نہ ہوں گے (جیسے کافروں نے مسلمانوں کے اچھے اخلاق اختیار کر لیے)، اعلانیہ فحش حرکات ہوں گی،  لاعلاج امراض )کینسر، ایڈز) عام ہونگے، عماموں کو چھوڑ کر ننگے سر کا رواج ہو گا، جید علمائے کرام کم ہو جائیں گے،

داڑھیاں صاف کی جائیں گی، چمڑے کے جوتے پہن کر اسے خوب چمکائیں گے، مرد عورتوں کی طرح زینت اختیار کریں گے، طرح طرح کے کھانے اور کپڑے ہوں گے، زمین سکڑ جائے گی، زمانہ ایک دوسرے کے قریب ہو جائے گا (جدید ذرائع ابلاغ، ٹیلی فون، ہوائی جہاز)، جوتے کا تسمہ باتیں کرے گا (جدید آلات اور کیبلز)، سر پر کوہان نما شے ہو گی (عورتیں سر کے بال کٹوائیں گی اور وِگ پہنیں گی)،

 لوگ بازاروں میں چلیں گے اور رانیں نظر آئیں گی (مرد وعورت کی پتلون، اسکرٹ اور جینز)، مسلمان مسلمان کو قتل کریں گے، اوباش عورتوں سے چھیڑ چھاڑ کریں گے،

اللّٰه کے سامنے جوابدہی کا خوف نہ ہو گا، مرد ریشمی اور رنگین کپڑے پہنیں گے، 73 فرقے ہوں گے صرف وہ جنت میں جائے گا جو میری سنت اور صحابہ کرام رضوان اللہ علیھم اجمعین کی جماعت کو مانے گا،

ہم جنس سے لذت حاصل کریں گے، قلمی طوفان آ جائے گا، ہر آدمی اپنی رائے پر اس طرح اصرار کرے گا کہ گویا وہی ٹھیک کہہ رہا ہے، عورتیں سر دوپٹہ سے خالی کر کے مٹکا کر چلیں گی، بال پھیلا کر سروں کو موٹا کریں گی اور قیامت کے قریب اسلامی خلافت خراساں (افغانستان) سے شروع ہو کر پوری دنیا پر قائم ہوگی۔

(بخاری، مسلم، ابوداؤد، ترمذی اور دیگر کتب حدیث)

قیامت کن لوگوں پر آئے گی؟

حضور اکرم صلی اللّٰه علیہ وسلم ارشاد فرماتے ہیں قیامت بدترین مخلوق پر قائم ہوگی۔

 نیز ارشاد فرمایا کہ قیامت کسی ایسے شخص پر قائم نہیں ہو گی جو اللّٰه اللّٰه کہتا ہوگا۔

حضرت عبد اللّٰه بن مسعود رضی اللّٰه عنہ بیان کرتے ہیں کہ آپؐ نے ارشاد فرمایا کہ دجال کو قتل کرنے کے بعد حضرت عیسیٰ علیہ السلام سات برس تک لوگوں میں رہیں گے اور اس دور میں دو آدمیوں کے درمیان ذرا دشمنی نہ ہوگی۔ پھر اللّٰه تعالیٰ ملک شام کی طرف سے ایک ٹھنڈی ہوا بھیجیں گے اور تمام مومن ختم ہو جائیں گے اور زمین پر کوئی ایسا شخص باقی نہ رہے گا جس کے دل میں خیر کا کوئی ذرہ باقی ہو۔ یہاں تک کہ کوئی شخص (مسلمانوں میں سے) پہاڑ کے اندر (کھو میں) داخل ہو جائے گا تو وہ ہوا وہاں بھی داخل ہو کر اس کی روح قبض کر لے گی۔

پھر بدترین لوگوں پر قیامت قائم کر دی جائے گی اور صور پھونکا جائے گا اور سب لوگ بیہوش ہو جائیں گے۔ پھر اللّٰه تعالیٰ ایک بارش بھیجے گا جو شبنم کی طرح ہوگی، اس سے آدمی اُگ جائیں گے یعنی قبروں میں مٹی کے جسم بن جائیں گے۔

پھر دوبارہ صور پھونکا جائے گا تو سب اٹھ کر کھڑے ہو جائیں گے۔ اس کے بعد اعلان ہو گا کہ اے لوگو! چلو اپنے رب کی طرف اور فرشتوں کو حکم ہو گا کہ ان کو ٹھہراؤ ان سے سوال ہوگا۔  پھر اعلان ہوگا (اس سارے مجمع سے) دوزخیوں کو علیحدہ کر دو۔  اس پر دریافت ہو گا (اللّٰه سبحانہ وتعالیٰ سے) کہ کس تعداد میں دوزخی نکالے جائیں تو جواب ملے گا فی ہزار 999 دوزخی نکالو۔

حضور علیہ الصلٰوۃ والسلام کے مبارک ارشاد کے مطابق یہ وہ دن ہے جس کی ہیبت اور دہشت سے بچے بوڑھے ہو جائیں گے۔

حضور علیہ الصلٰوۃ والسلام کے مبارک ارشاد کے مطابق قیامت جمعہ کے دن قائم ہوگی۔ ہر مقرب فرشتہ آسمان اور زمین اور پہاڑ اور سمندر پر سب جمعہ کے دن سے ڈرتے ہیں کہ کہیں آج قیامت نہ آ جائے، مخلوق کے فنا ہو جانے کے بعد اللّٰه تعالیٰ فرمائیں گے آج کس کی حکومت ہے تو کوئی جواب دینے والا نہ ہوگا، بالآخر خود ہی فرمائیں گے۔

اَللّٰہُ الوَاحِدُ القَھَّار

ترجمہ: آج بس اللّٰه ہی کا راج ہے۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللّٰه عنہ فرماتے ہیں کہ آنحضرت صلی اللّٰه علیہ وسلم ارشاد فرماتے ہیں کہ لوگ قیامت کے دن بیہوش ہو جائیں گے۔ میں بھی ان کے ساتھ بیہوش ہو جاؤں گا۔ پھر سب سے پہلے میری بیہوشی دور ہوگی تو اچانک دیکھوں گا کہ موسیٰ علیہ السلام عرشِ الٰہی کی ایک جانب پکڑے کھڑے ہیں۔ میں نہیں جانتا کہ وہ بیہوش ہو کر مجھ سے پہلے ہوش میں آ چکے ہیں۔

ارشادِ باری تعالیٰ ہے۔

اِلاَّ مَن شَاء اَللّٰه

(مشکوٰۃ شریف ص 7-5 از بخاری و مسلم)

 

کائنات کا درہم برہم ہونا

صور پھونکے جانے سے نہ صرف مردے زندہ ہو جائیں گے بلکہ کائنات کا نظام درہم برہم ہو جائے گا۔ آسمان پھٹ جائے گا، ستارے جھڑ جائیں گے، سورج و چاند کی روشنی ختم کر دی جائے گی۔ زمین ہموار میدان بن جائے گی، پہاڑ اڑتے پھریں گے۔

ارشادِ باری تعالیٰ ہے۔

ترجمہ: جس دن بدل جائے گی اس زمین سے دوسری زمین اود بدلے جائیں گے آسمان اور نکل کھڑے ہوں گے اللّٰه واحد قہار کے لئے۔

اس آیت شریفہ میں جو آسمان و زمین بدلے جانے کا ذکر ہے یہ اس وقت ہوگا جب لوگ جنت یا دوزخ میں بھیجے جانے کے لئے پل صراط پہنچ جائیں گے۔

اس دن زمین اپنے اندر موجود سب کچھ باہر اُگل دے گی مثلاً خزانے اور مردے وغیرہ۔ اس روز چاند بےنور ہو جائے گا۔ اس روز سورج اور چاند بےنور ہو جائیں گے یعنی ان کی روشنی لپیٹ دی جائے گی، کسی چیز پر نہ پڑے گی۔ خود اعتمادی حاصل کرنے کا عمل دیکھیئے۔

قبروں سے اٹھایا جانا

حضور اکرم صلی اللّٰه علیہ وسلم ارشاد فرماتے ہیں کہ سب سے پہلے زمین پھٹ کر مجھے ظاہر کرے گی، پھر ابو بکرؓ اور عمرؓ قبروں سے ظاہر ہوں گے۔ پھر بقیع (قبرستان) میں جاؤں گا اور وہ (قبروں سے نکل کر) میرے ساتھ جمع کر دیے جائیں گے پھر میں مکہ والوں کا انتظار کروں گا، حتیٰ کہ وہ بھی قبروں سے نکل کر میرے ساتھ ہو جائیں گے یہاں تک کہ میں حرمین والوں کے درمیان محشور ہوں گا۔

(مشکوٰۃ المصابیح ص 556 از ترمذی)

لوگ ننگے پاؤں، ننگے بدن، بے ختنہ جمع کیے جائیں گے۔ حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللّٰه عنہا فرماتی ہیں کہ میں نے آپؐ سے عرض کیا کہ یا رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیہ وسلم! کیا مرد و عورت سب (ننگے ہوں گے اور) ایک دوسرے کو دیکھتے ہوں گے (اگر ایسا ہوا تو بہت شرم کا مقام ہوگا).

اسکے جواب میں آپؐ نے فرمایا! اے عائشہ قیامت کی سختی اس قدر ہو گی اود لوگ گھبراہٹ اور پریشانی سے ایسے بدحال ہونگے کہ کسی کو دوسرے کی طرف دیکھنے کا دھیان ہی نہیں ہوگا۔

(مشکوٰۃ المصابیح ص 183(

علماء نے لکھا ہے کہ حضرت ابراہیم علیہ السلام کو اس لئے سب سے  پہلے لباس پہنایا جائے گا کہ انہوں نے سب سے پہلے فقیروں کو کپڑے پہنائے تھے یا اس لیے کہ وہ اللّٰه تعالیٰ کے دین کی دعوت دینے کی وجہ سے سب سے پہلے ننگے کیے گئے تھے جب کہ کافروں نے آپ کو آگ میں ڈالا۔

رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیہ وسلم فرماتے ہیں سب سے پہلے جس کو کپڑے پہنائے جائیں گے وہ ابراہیم (علیہ السلام) ہوں گے۔ اللّٰه تعالیٰ فرمائیں گے میرے دوست کو پہناؤ۔ چنانچہ جنت کے کپڑوں میں سے دو باریک  اور نرم سفید کپڑے ان کو پہنانے کے لئے لائے جائیں گے، اس کے بعد مجھے کپڑے پہنائے جائیں گے۔ معاشرے میں عزت حاصل کرنے کا عمل دیکھیئے۔

 

میدانِ حشر میں جمع ہونا

حضور اکرم صلی اللّٰه علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ لوگ تین قسموں میں جمع کیے جائیں گے۔

ایک جماعت پیدل

دوسری سوار

تیسری جماعت اپنے چہروں کے بل چلے گی۔

سوال کیا گیا یا رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیہ وسلم! وہ چہروں کے بل کیوں کر چلیں گے؟

جواب میں آپؐ نے فرمایا!

بیشک جس ذات پاک نے انہیں قدموں پر چلایا وہ اس پر قادر ہے کہ ان کو چہروں کے بل چلا دے۔ پھر فرمایا کہ خبردار وہ ( چہروں کے بل اس طرح چلیں گے) کہ زمین کے ابھرے ہوئے حصے اور کانٹوں تک سے اپنے چہروں کے ذریعے بچاؤ کریں گے۔ یہ حال کافروں کا ہوگا کیونکہ دنیا میں ان کی پیشانی اللّٰه کے حضور سجدہ ریز نہیں ہوئی اور تکبر و غرور کے باعث سجدے میں سر رکھنے سے انکار کیا۔ اس لئے ان کے چہروں سے پاؤں کا کام لیا جائے گا تاکہ خوب ذلیل ہوں۔

کفار گونگا، بہرہ اور اندھا کر کے اٹھایا جائے گا۔ یہ ابتدائے حشر میں ہوگا۔ پھر آنکھیں، زبان اور کان کھول دیے جائیں گے تاکہ محشر کے حالات اور اس کی سختیاں دیکھ سکیں اور ان سے حساب کتاب کیا جائے۔ کافروں کی آنکھیں نیلی ہوں گی۔ شوہر کا پیار حاصل کرنے کا وظیفہ دیکھیئے۔
سورت طٰهٰ میں ہے۔
ترجمہ: اور ہم جمع کریں گے اس دن گنہگاروں کو اس حال میں کہ ان کی آنکھیں نیلی ہوں گی، چپکے چپکے آپس میں کہتے ہوں گے کہ دنیا میں بس تم دس دن رہے ہو۔
یعنی بدنمائی کے لئے آنکھیں نیلی  کر دی جائیں گی۔ دنیا کے مزے اور لمبی چوڑی زندگی بھول جائیں گے اور دنیا کے سال ہا سال انہیں پہلے دن کی طرح محسوس ہوںگے۔ شادی کی رکاوٹ دور کرنے کے وظائف دیکھیئے۔

قیامت کے دن حیرانی اور پریشانی
قبروں سے نکل کر لوگ لنگی باندھے سخت حیرانی اور پریشانی کی حالت میں چلیں گے ذرا پلک بھی نہ جھپکی جائے گی۔ اللّٰه کے نیک بندوں کے چہرے سفید اود ہشاش بشاش ہنستے کھیلتے ہوں گے اور کفار و فجار کے چہروں پر اداسی اور ذلت چھائی ہو گی۔
ارشاد فرمایا سرورِ دو عالم صلی اللّٰه علیہ وسلم نے قیامت کے دن ابراہیم علیہ السلام بارگاہِ خداوندی میں عرض کریں گے۔ آپ نے مجھ سے وعدہ کیا تھا کہ قیامت کے دن مجھے رسوا نہیں کریں گے اس سے زیادہ کیا رسوائی ہوگی کہ میرا باپ ہلاک ہو رہا ہے۔
اللّٰه تعالیٰ فرمائیں گے کہ میں نے کافروں پر جنت حرام کر دی ہے۔
پھر ابراہیم علیہ السلام سے پوچھا جائے گا کہ آپ کے پاؤں میں کیا ہے؟
وہ نظر کریں گے تو ایک لتھڑا ہوا بجّو ہوگا۔ جسے ٹانگوں سے پکڑ کر دوزخ میں ڈال دیا جائے گا۔ اللّٰه تعالیٰ اپنی قدرت سے آزر کو بجّو کی شکل میں کر دیں گے تاکہ ابراہیم علیہ السلام کی رسوائی نہ ہو۔ نوکری یا کاروبار کیلئے استخارہ دیکھیئے۔

میدانِ حشر میں لوگوں کی مختلف حالتیں
قیامت کے دن لوگ بقدر اعمال کی برائیوں کے پسینہ میں غرق ہوں گے کیونکہ سورج اس دن ایک میل کے فاصلے پر آ جائے گا۔ سورج اول تو بےنور ہو جائے گا مگر دوبارہ لوگوں کے سروں پر قائم کیا جائے گا اور پھر دوبارہ بےنور کر کے دوزخ میں ڈال دیا جائے گا تاکہ اس کے پرستاروں کو عبرت ہو۔
حضورعلیہ الصلٰوۃ والسلام کے مبارک ارشاد کے مطابق روزِ حشر جو شخص لوگوں سے سوال کرتا ہے اور بھیک مانگتا ہے اس حال میں لایا جائے گا کہ اس کے چہرے پر گوشت کی ذرا سی بھی بوٹی نہ ہوگی۔ جس مرد نے بیویوں میں ناانصافی کی وہ اس حالت میں آئے گا کہ اسکا پہلو گرا ہوا ہوگا۔ جو شخص قرآن کریم پڑھ کر بھلا دے وہ کوڑھی کی شکل میں آئے گا۔ بےنمازیوں کا حشر ہامان، فرعون، قارون اور ابی بن خلف کے ساتھ ہوگا۔ جو شخص زکوٰۃ ادا نہیں کرتا تو قیامت کے دن مال گنجا سانپ بنا دیا جائے گا اور طوق بنا کر اس کے گلے میں ڈال دیا جائے گا۔
جو دنیا میں سب سے زیادہ دیر تک پیٹ بھرے رہتے ہیں وہ قیامت کے دن سب سے زیادہ دیر تک بھوکے رہیں گے۔ جو دنیا میں دوغلا پن اختیار کرتا ہے اس کے منہ میں دو زبانیں آگ کی ہوں گی۔ جو کنسوئی کرے گا اس کے کان میں پگھلا ہوا سیسہ ڈالا جائے گا۔ جو کوئی تصویر (جاندار کی) بنائے گا اسے مجبور کیا جائے گا کہ اس میں روح پھونکے جو وہ نہ کر سکے گا اور اسے عذاب دیا جائے گا۔جس نے دنیا میں شہرت (تکبر اور اتراوے) کا لباس پہنا اسے ذلت کا لباس پہنایا جائے گا۔

جس نے ذرا سی زمین بھی بغیر حق کے لی اسے ساتوں زمینوں کے نیچے دھنسا دیا جائے گا۔ اورجب لوگوں کا فیصلہ ہو جائے گا تو وہ ساتوں زمینیں اس کے گلے میں طوق بنا کر ڈال دی جائیں گی۔ جس سے کوئی علم کی بات پوچھی جائے اور وہ جانتے بوجھتے ہوئے چھپا لے، اسکے منہ میں آگ کی لگام دی جائے گی۔ جو شخص غصہ پی لیتا ہے اللّٰه تعالیٰ قیامت کے دن ساری مخلوق کے سامنے اختیار دیں گے کہ جس حور کو چاہے اختیار کر لے۔

جو حرم مدینہ یا حرم مکہ میں مر گیا، اللّٰه تعالیٰ اسے قیامت کے دن امن والوں میں اٹھائے گا۔ جو حج کرتے ہوئے مر جائے قیامت کے دن تکبیر پڑھتے ہوئے اٹھے گا۔ جو راہِ حق میں شہید ہوا قیامت کے دن جو اس کے زخم ہوں گے ان سے خون بہہ رہا ہوگا اور خوشبو مشک کی طرح آئے گی۔
مسجدوں کو اندھیروں میں جانے والوں کو قیامت کے دن پورا پورا نورعنایت کیا جائے گا۔ اذان دینے والے سب سے زیادہ لمبی گردنوں والے ہوں گے۔ اللّٰه کے لئے محبت کرنے والے نور کے منبروں پر ہوں گے۔

مسلمانوں کا منصف بادشاہ، وہ جوان جو اللّٰه کی عبادت میں جوانی گزارے، وہ مرد جس کا دل مسجد میں اٹکا رہے، وہ دو شخص جو اللّٰه کے لئے آپس میں محبت کریں، جو اللّٰه کو تنہائی میں یاد کرے اور آنسو نکل آئیں، وہ مرد جسے کوئی خوبصورت عورت برے کام کے لئے بلائے اور وہ کہہ دے کہ میں تو اللّٰه سے ڈرتا ہوں اور جو اس طرح صدقہ دے کہ بائیں ہاتھ کو بھی خبر نہ ہو کہ داہنے ہاتھ نے کیا دیا ہے، یہ سات قسم کے لوگ عرش کے سایہ میں ہوں گے۔

جو قرآن پڑھ کر عمل کرے اس کے والدین کو ایسا تاج پہنایا جائے گا جس کی روشنی آفتاب سے بھی زیادہ ہو گی۔ جو حلال کمائے اور اپنے بیوی بچوں پر خرچ کرے وہ قیامت کے روز اس طرح آئے گا کہ چہرہ چودھویں رات کے چاند کی طرح روشن ہوگا۔ رشتہ اچھا ہے یا نہیں، یہ معلوم کرنے کے لئے استخارہ  دیکھیئے۔

 سرورِ کونین صلی اللّٰه علیہ وسلم کا مرتبہ اور میدانِ حشر
ہمارے پیارے نبی کریم صلی اللّٰه علیہ وسلم تمام اولاد آدم کے سردار ہوں گے۔ آپؐ کے ہاتھ میں حمد کا جھنڈا ہوگا۔ سب نفسی نفسی پکاریں گے حتیٰ کہ اولوالعزم پیغمبر بھی نفسی نفسی پکاریں گے کہ یااللّٰه ہماری جان بچائیں۔ لوگ گھٹن اور بے چینی کا شکار ہوں گے۔ باری باری مختلف پیغمبروں کے پاس جائیں گے کہ وہ حق تعالیٰ شانہ سے سفارش فرمائیں کہ ہمارا کیا حال بنا ہوا ہے۔ بالآخر عیسیٰ علیہ السلام کے پاس جائیں گے اور وہ کہیں گے کہ ایسا کرو، ہمارے نبی حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللّٰه علیہ وسلم کے پاس پہنچو۔
چنانچہ وہ آپؐ سے عرض کریں گے کہ اپنے پروردگار سے سفارش کریں۔
آپؐ عرش کے نیچے آ کر سجدہ کریں گے اور اللّٰه تعالیٰ کی حمد و ثناء بیان کریں گے۔
تو ارشادِ ربانی ہوگا سر اٹھاؤ اور مانگو تمہارا سوال پورا کیا جائے گا، سفارش کرو سفارش قبول کی جائے گی۔
آپؐ فرمائیں گے یااللّٰه! اے میرے رب! میری امّت پر رحم فرما۔
لہٰذا ارشاد ہوگا اپنی امّت کے ان لوگوں کو جن پر کوئی حساب نہیں جنت کے دروازوں میں سے دائیں دروازوں سے داخل کرو اور اس کے علاوہ دوسرے دروازوں سے بھی۔
روزِ محشر آپؐ اپنی امّت کے لوگوں کو وضو کے اثر سے جو روشن چہرے ہونگے پہچان لیں گے۔ اس کے علاوہ ان کے اعمال نامے دائیں ہاتھ میں دیے جائیں گے۔ میدانِ حشر میں آپؐ کو حوضِ کوثر عطا کیا جائے گا۔ اس حوض سے سب سے پہلے فقراء، مہاجرین پانی پیئں گے۔ جس کا پانی دودھ سے زیادہ سفید اور خوشبو مشک سے زیادہ عمدہ ہے۔
نبی پاک صلی اللّٰه علیہ وسلم فرماتے ہیں یقین جانو روزِ قیامت تمہارا میرا سامنا ہوگا جو میرے پاس ہو کر گزر گیا وہ پی لے گا اور جو پی لے گا وہ پھر کبھی پیاسا نہ ہوگا۔ جو دین میں ادل بدل کرتے ہیں، بدعتیں کرتے ہیں ، انہیں آپؐ کے قریب نہیں آنے دیا جائے گا۔ شادی بیاہ کے موقع پر فضول رسمیں کرنے والے، سوئم، چہلم، قبر یا چادر، قبر کا غسل، پختہ قبر کرنے والے اسی طرح بہت سی دوسری بدعتیں کرتے ہیں، وہ حوضِ کوثر سے ہٹا دیے جائیں گے۔ لوگ اپنے اپنے باپوں کے نام سے پکارے جائیں گے۔
قیامت کے دن نعمتوں کے متعلق سوال کیا جائے گا۔ حضور علیہ الصلٰوۃ والسلام کے مبارک ارشاد کے مطابق قیامت کے دن نعمتوں میں سب سے پہلے (ٹھنڈے پانی اور تندرستی کا سوال ہوگا)۔
اور یوں پوچھا جائے گا کیا ہم نے تمہارے جسم کو ٹھیک نہ رکھا؟ کیا ہم نے ٹھنڈے پانی سے سیراب نہ کیا تھا؟
خداوند کریم کے انسان پر بےشمار احسانات ہیں۔ شوہر کا دل نرم کرنے کا وظیفہ دیکھیئے۔
نبی کریم صلی اللّٰه علیہ وسلم کے مبارک ارشاد کے مطابق قیامت کے دن انسان کے تین دفتر ہوں گے۔
ایک دفتر میں اس کے نیک عمل لکھے ہوں گے۔
دوسرے دفتر میں اس کے گناہ درج ہوں گے۔
اور تیسرے دفتر میں اللّٰه کی نعمتیں درج ہوں گی جو اسے دنیا میں دی گئیں تھیں۔
چنانچہ وہ نعمتیں اس کے تمام نیک اعمال کو اپنی قیمت میں نکالیں گی اور پھر بھی وہ نعمتیں عرض کریں گی (اے رب) آپ کی عزت کی قسم! (ابھی) ہم نے پوری قیمت وصول نہیں کی۔
اللّٰه تعالیٰ جب کسی بندے پر رحم کرنا چاہے گا تو کہے گا میں نے تیری نیکیوں میں اضافہ کر دیا اور تیرے گناہوں سے درگزر کر دیا اور اپنی نعمتیں بخش دیں۔ اپنی بیوی کا پیار پانے کا وظیفہ دیکھیئے۔

حساب، کتاب، قصاص، میزان
نبی کریم صلی اللّٰه علیہ وسلم کے مبارک ارشاد کے مطابق قیامت کے روز جن لوگوں کے متعلق سب سے پہلے فیصلہ دیا جائے گا ان میں سے ایک وہ ہوگا جو (جہاد میں قتل ہو جانے کی وجہ سے) شہید سمجھ لیا گیا تھا اس کو لایا جائے گا اور اللّٰه تعالیٰ کی نعمتوں کی پہچان کرائی جائے گی اور اسے یاد آ جائے گا کہ اسے یہ نعمتیں ملی تھیں۔
چنانچہ عرض ہو گا تو نے ان کو کس طرح خرچ کیا۔
وہ عرض کرے گا آپ کے راستے میں لڑائی لڑی شہید ہو گیا۔
ارشاد ہو گا جھوٹ کہا اس لئے جنگ کی کہ بہادر سمجھا جائے۔ سو تجھے اس کا پھل مل چکا ہے اور اس کے بعد ارشاد ہوگا اسے منہ کے بل کھینچ کر جہنم میں ڈال دیا جائے۔
پھر اس طرح ایک شخص نے علم دین سیکھا سیکھایا اور قرآن پڑھا۔ اسے بھی نعمتوں کی پہچان کرائی جائے گی اور پوچھا جائے گا کہ انہیں کس طرح استعمال کیا۔
وہ عرض کرے گا علم حاصل کیا دوسروں کو سکھایا اور آپکی رضا کے لئے قرآن پڑھا۔
اللّٰه تعالیٰ ارشاد فرمائیں گے جھوٹ بولا تم نے علم اس لئے حاصل کیا کہ لوگ عالم کہیں اور قرآن اس لئے پڑھا کہ لوگ قاری کہیں۔
چنانچہ کہا جا چکا اور جہنم میں ڈال دیا جائے گا۔
اس طرح ایک شخص کو جسے دنیا میں بہت مال دیا گیا تھا اس سے بھی نعمتوں کے متعلق پوچھ گچھ ہوگی کہ انہیں کیونکر استعمال کیا۔
تو وہ کہے گا کہ آپ کی رضا کے لئے مال خرچ کیا۔
اور عرض ہوگا جھوٹ کہا مال اس لیے خرچ کیا تھا کہ لوگ سخی کہیں۔ چنانچہ کہا جا چکا اور جہنم میں ڈال دیا جائے گا۔

حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللّٰه علیہ وسلم کے مبارک ارشاد کے مطابق قیامت کے روز جب لوگوں کو جمع کیا جائے گا توایک پکارنے والا زور سے پکارے گا کہ جس نے کوئی عمل اللّٰه کے لئے کیا اوراس عمل میں کسی دوسرے کو (دکھانے کی نیت کر کے) بھی شریک کر لیا تو اس کو چاہیئے کہ اس عمل کا ثواب اللّٰه کے سوا اس غیر سے لے لے۔
روزِ محشر ریاکاروں سے کہا جائے گا کہ جن کو دکھانے کے لئے عمل کیے تھے ان ہی کے پاس جاؤ پھر دیکھو ان کے پاس تمہارے لیے جزا یا بھلائی ملتی ہے۔
روزِ محشر سب سے پہلے بندہ کے اعمال میں سے نماز کا حساب ہوگا۔ اگر وہ ٹھیک نکلی تو کامیاب اور بامراد اور اگر نماز خراب نکلی تو نامراد ہوگا۔ اور اگر فرضوں میں کوئی کمی رہ گئی تو ان کو نوافل سے پورا کیا جائے گا اور اسکے بعد باقی اعمال کا حساب ہوگا۔ پھر اسی طرح زکوٰۃ کا حساب ہوگا۔ پھر اسی طرح دوسرے اعمال دیکھے جائیں گے۔ ناراض خاوند کو منانے کا خاص عمل  دیکھیئے۔
آنحضرت صلی اللّٰه علیہ وسلم ارشاد فرماتے ہیں کہ قیامت کے دن ایک پکارنے والا زور سے پکار کر کہے گا کہ وہ لوگ کہاں ہیں جن کے پہلو بستروں سے الگ رہتے تھے (کیونکہ وہ راتوں کو نمازوں میں وقت گزارتے تھے) اس صفت کے لوگ پورے مجمع میں سے نکل کھڑے ہوں گے اور بغیر حساب کتاب جنت میں داخل ہو جائیں گے۔ پھر باقی لوگوں کا حساب ہوگا۔
نبی کریم صلی اللّٰه علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ میرے رب نے مجھ سے وعدہ کیا ہے کہ تیری امّت سے ستّر ہزار بلا حساب کتاب جنت میں داخل ہونگے جن پر کوئی عذاب نہ ہو گا اور ہر ہزار کے ساتھ ستّر ہزار ہونگے (جو اس فضیلت سے نوازے جائیں گے اور تین لپ میرے رب کے بھی لپ بھر کر داخلِ جنت ہونگے)۔
حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللّٰه عنہا سے مروی ہے کہ میں نے ایک نماز میں حضور اکرم صلی اللّٰه علیہ وسلم کو یہ دعا کرتے ہوئے سنا۔
اللھم حاسبنی حساباً یسیرا
(اے اللّٰه مجھ سے آسان حساب لیجیے۔)
میں نے عرض کی یا نبی صلی اللّٰه علیہ وسلم! آسان حساب سے کیا مراد ہے؟
تو آپؐ نے ارشاد فرمایا کہ آسان حساب یہ ہے کہ اعمال نامہ میں صرف نظر کر کے درگزر کر دیا جائے اور چھان بین نہ کی جائے۔ یہ حقیقت ہے کہ جس کی چھان بین کی گئ اور حساب لیا گیا وہ ہلاک ہوا۔
ارشادِ نبوی صلی اللّٰه علیہ وسلم ہے اللّٰه تعالیٰ قیامت کے دن  مومن کو اپنے قریب کریں گے اور (محشر والوں سے پوشیدہ کر کے) فرمائیں گے تجھے فلاں گناہ یاد ہے کیا تجھے فلاں گناہ یاد ہے؟

وہ جواب میں عرض کروا لیں گے اور وہ دل میں یقین کر لے گا کہ برباد ہو چکا۔
اللّٰه تعالیٰ پھراس سے ارشاد فرمائیں گے کہ میں نے دنیا میں تیری پردہ پوشی کی اور ان گناہوں کو ظاہر نہ کیا جائے گا۔ لیکن کفار اور مشرکین کی تشہیر کی جائے گی اور ساری مخلوق کے سامنے ان کے متعلق زور سے پکارا جائے گا کہ یہ لوگ ہیں جنہوں نے اپنے رب کی نسبت جھوٹی باتیں لگائیں، خبردار اللّٰه کی لعنت ہے ظالموں پر۔
نبی کریم صلی اللّٰه علیہ وسلم فرماتے ہیں تم میں سے کوئی بھی ایسا نہیں ہے جس کا رب خود (حساب لینے کے سلسلے میں) بات نہ کرے۔ بندہ اور رب کے درمیان کوئی واسطہ یا حجاب نہ ہو گا۔
روزِ حشر بندہ سے حقوق اللّٰه اور حقوق العباد دونوں کا حساب لیا جائے گا۔ جس نے کسی پر ظلم کیا ہوگا (تو بقدر ظلم) اس کی نیکیاں مظلوم کے نامہِ اعمال میں ڈال دی جائیں گی۔
اورحدیث شریف میں حقیقی مفلس اس شخص کو قرار دیا گیا ہے جو روزِ محشر اپنی نیکیوں کے ساتھ ہوگا۔ نماز، زکوٰۃ اور روزے لیکر آئے گا مگر کسی کو گالی دی ہوگی، کسی پر تہمت لگائی ہوگی، کسی کا ناحق مال کھایا ہوگا۔ چنانچہ اس کی نیکیاں حق تلفی کرنے والوں میں تقسیم کر دی جائیں گی۔ سورت فاتحہ کاخاص وظیفہ دیکھیئے۔
حضرت ابو ہریرہ رضی اللّٰه عنہ کے مطابق جس نے اپنے زر خرید غلام کو ایک کوڑا بھی ظلماً مارا ہوگا اسکا حساب دینا ہوگا۔ روزِ حشر والدین بھی اپنی اولاد سے قرض کے سلسلے میں الجھ جائیں گے یعنی اگر اولاد کے ذمہ بھی کوئی قرض ہوگا تو ان سے مطالبہ کریں گے۔

 روزِ حشر سب سے پہلے مدعی اور مدعا علیہ دو پڑوسی ہوں گے۔ جانوروں کا بھی حساب ہوگا۔ جس جانور نے دوسرے کو چونچ ماری تھی اسکا بھی حساب ہوگا۔  یہ ماجرا انسانوں کے سامنے ہوگا۔ لیکن پھر جانوروں کو حکم ہوگا کہ مٹی ہو جاؤ تمہارے لیے نہ جنت ہے نہ دوزخ۔ اس وقت کافر رشک کرے گا کہ کہہ اٹھے گا کہ( میں) مٹی ہو جاتا۔
دنیا دارالعمل، دارالفکر، دارالمحن اور دارالحزن ہے۔ سورت یٰسین کا خاص عمل  دیکھیئے۔
آنحضرت صلی اللّٰه علیہ وسلم فرماتے ہیں جو آخرت سے بےفکر رہا وہ برباد ہوا۔
بندہ قیامت کے دن جھگڑالو اور کٹ حجتی طبیعت کے باعث خداوند قدوس سے بھی حجت کرے گا مگر اس وقت اس کے اعضاء بدن خود اس کے اعمال کی گواہی دیں گے اور اس کی حجت ختم کر دی جائے گی۔ لوگوں کو اعمال نامے دے دیے جائیں گے کسی کے داہنے اور کسی کے بائیں ہاتھ میں پھران اعمال کا وزن ہوگا۔

لوگ آتے جائیں گے اور ترازو کے پاس کھڑے کیے جائیں گے۔ جو آئے گا ترازو کے دونوں پلڑوں کے درمیان کھڑا کر دیا جائے گا۔ اگر تول بھاری ہوا تو فرشتہ اس کی خوش قسمتی کا اعلان کرے گا اور اگر تول ہلکے رہے تو اس کی بد قسمتی کا اعلان ہوگا۔  یہ اعلان ساری مخلوق سنے گی۔
ایک شخص کو روزِ حشر پیش کیا جائے گا۔ اس کےاعمال کے ننانوے دفتر کھولے جائیں گے جو منتہائے نظر پھیلے ہوں گے۔ پھر حق تعالیٰ شانہ فرمائیں گے کہ تیرے پاس ان بد اعمالیوں کا کوئی عذر ہے؟
وہ کہے گا اے پروردگار! کوئی عذر نہیں۔
پھر ارشاد ہوگا ہمارے پاس تیری ایک نیکی محفوظ ہے۔ پھر ایک پرزہ لایا جائے گا جس پراَشْھَدُ اَنْ لَّآ اِلٰهَ اِلَّا اللّٰهُ وَحْدَہٗ لَا شَرِیْكَ لَهٗ وَ اَشْھَدُ اَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُہٗ وَرَسُوْلُهٗ درج ہوگا۔
بندہ سے فرمایا جائے گا جا اپنے اعمال کا وزن ہوتا دیکھ۔
وہ کہے گا یا ربّی! (تولنا نہ تولنا برابر ہے میری ہلاکت ظاہر ہے) ان دفتروں کی موجودگی میں اس پرزہ کی کیا اہمیت۔
اللّٰه تعالیٰ فرمائیں گے یقین جان تجھ پر ظلم نہ ہوگا۔
پھر وہ پرزہ دوسرے پلڑے میں رکھ دیا جائے گا اور وہ سب دفتروں کے مقابلے میں زیادہ بھاری ہوگا۔
سید دوعالم صلی اللّٰه علیہ وسلم فرماتے ہیں بات اصل یہ ہے کہ اللّٰه کے نام کی موجودگی میں کوئی چیز وزنی نہ ہو سکے گی۔ یہ اخلاص، خشوع و خضوع اور محبت و تعلق سے اللّٰه کا نام لینے کی برکت ہے۔
حدیث شریف میں ہے کہ مومن کے نامہِ اعمال میں سب سے زیادہ وزنی نیکی اچھے اخلاق ہوں گے۔
جنت میں کوئی بھی شخص اللّٰه کی رحمت کے بغیر داخل نہ ہوگا یعنی محض اعمال کی بدولت داخل نہ ہوگا۔ کیونکہ نیک اعمال قبول کرنا نہ کرنا اللّٰه کا کام ہے لہٰذا عابدوں، زاہدوں اور مجاہدوں کو اس طرف خصوصی تنبیہ کی گئی ہے کہ ہم میں سے کوئی بھی شخص اپنے اعمال پر ناز نہ کرے کہ ہم واقعی جنت کے حقدار ہیں۔ بلکہ اپنے اعمال کو ہیچ سمجھتے ہوئے ڈرتے رہیں کہ پتہ نہیں کوئی عمل قبول ہوا بھی یا نہیں۔ آیتِ کریمہ کے مجرب وظائف دیکھیئے۔
نبی علیہ الصلوٰة التسلیمات کے مبارک ارشاد کے مطابق کوئی شخص اگر اپنی پیدائش سے موت تک  اللّٰه کی اطاعت میں چہرے کے بل گرا پڑا رہے تب بھی وہ روزِ قیامت اپنے سارے اعمال کو حقیر سمجھتے ہوئے تمنا کرے گا کہ دنیا میں واپس جا کر اور اجر و ثواب اور اعمالِ صالحہ حاصل کرے۔
حدیثِ نبوی صلی اللّٰه علیہ وسلم ہے ہر شخص اپنی موت کے وقت پشیمان ہوگا۔ اچھے عمل کرنے والا پشیمان ہوگا کہ عمل کر لیتا اور برے عمل کرنے والا پشیمان ہوگا کہ کاش برائیوں سے اپنی جان بچا لیتا۔

روزِ حشر آنحضرت صلی اللّٰه علیہ وسلم پانچ قسم کی شفاعت کریں گے۔ پہلی شفاعت میدانِ حشر میں جمع ہونے اور حساب کتاب کروانے کے لیے تمام اولین، آخرین، مسلمین و کافرین کی شفاعت کریں گے۔ دوسری شفاعت بہت سے مومنین کو بلا حساب جنت میں داخل کرانے کے لئے کریں گے۔  تیسری شفاعت ان کی ہوگی جو اپنی بد اعمالیوں کے باعث دوزخ کے مستحق ہو چکے ہوں گے۔ چوتھی ان گنہگاروں کی ہوگی جو دوزخ میں داخل ہو چکے ہوں گے۔ ان کو دوزخ سے نکالنے کے لئے تمام انبیاء کرام علیہم الصلوٰة والسلام اور فرشتے اور مومنین شفاعت کریں گے۔ پانچویں شفاعت جنتیوں کے درجے بلند کرانے کے لئے ہوگی۔
نبی کریم صلی اللّٰه علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ انشاء اللّٰه میرے ہر اس امتی کو ضرور میری شفاعت پہنچے گی جو اس حال میں مر گیا کہ اللّٰه کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرتا تھا۔
(صحیح مسلم)
نبی پاک صلی اللّٰه علیہ وسلم فرماتے ہیں میں اپنی امّت کے لئے شفاعت کرتا رہوں گا حتیٰ کہ میرا رب تبارک و تعالیٰ مجھ سے پوچھے گا۔
اے محمد ﷺ! کیا راضی ہو گئے؟
میں عرض کروں گا اے رب! میں راضی ہو گیا۔
کچھ لوگ دوزخ میں بھیج دیے جائیں گے حتیٰ کہ میں ان کو نکالنے کے لئے بھی سفارش کروں گا۔ داروغہ دوزخ مجھ سے کہیں گے کہ آپؐ نے اپنی امت میں سے کسی کو بھی اللّٰه کے غصہ کے لیے نہیں چھوڑا (جو) عذاب میں مبتلا رہتا بلکہ سب کو نکلوا لیا۔

 حضرت محمد صلی اللّٰه علیہ وسلم فرماتے ہیں بلاشبہ میری امت کے بعض افراد پوری پوری جماعتوں کے لئے شفاعت کریں گے۔
لعنت کرنے والے قیامت کے روز نہ گواہ بنیں گے نہ شفاعت کرنے کے اہل ہوں گے۔  شہید اپنے ستّر رشتہ داروں کی شفاعت کر سکے گا جو قبول کی جائے گی۔ نابالغ بچے کی بھی (جو فوت ہوگا) شفاعت قبول کی جائے گی اور وہ اپنے والدین کے لئے دوزخ سے بچانے کے لئے مضبوط قلعہ بن جائیں گے۔
جو شخص قرآن پڑھ کر اس کو یاد کر لیتا ہے اور اس کے حلال کو حلال اور حرام کو حرام سمجھتا ہے تو وہ جنت میں داخل ہوگا اور اپنے گھر کے دس آدمیوں کی شفاعت کرے گا جن کے لیے دوزخ میں جانا ضروری ہو چکا ہوگا۔ لیکن وہی حافظِ قران شفاعت کر سکے گا جو واقعتاً قرآن شریف پر عمل بھی کرتا ہے۔  قرآن عزیز اور روزے کو بھی شفاعت کا حق دیا جائے گا اور ان کی شفاعت قبول کی جائے گی۔

پل صراط اور تقسیمِ نور
جنت میں جانے کے لئے دوزخ کے اوپر سے ایک راستہ ہوگا جسے احادیث کریمہ میں صراط فرمایا گیا ہے اور عام طور پر پل صراط کہا جاتا ہے۔ مومنین اس پر سے صحیح سلامت گزر جائیں گے اور بدعمل نہ چل سکیں گے۔ دوزخ سے بڑی بڑی سنڈاسیاں نکلی ہوئی ہوں گی۔ جن کو دوزخ میں گرانا منظور ہوگا وہ سنڈاسیاں ان کو گرا کر چھوڑیں گی۔ اور پھر کچھ مدت کے بعد شفاعت سے اور آخر میں براہِ راست ارحم الراحمین کی مہربانی سے وہ سب لوگ دوزخ سے نکال لیے جائیں گے جنہوں نے سچے دل سے کلمہ پڑھا ہوگا۔ اور صرف کافر، مشرک اور منافق دوزخ میں رہ جائیں گے۔
پل صراط سے گزرنے سے پہلے نور تقسیم ہوگا۔ اپنے اپنے اعمال کے نور تقسیم ہوں گے۔ یہ نور اللّٰه تعالیٰ کی طرف سے جنت کا راستہ بتانے کے لئے ہوگا۔ مومنین اور مومنات نور ملنے کے بعد پل صراط پر گزرنے لگیں گے۔ منافقین مومنین سے کہیں گے کہ ذرا انتظام کرو ہم بھی تمہاری روشنی سے فائدہ اٹھائیں مگر انہیں کچھ حاصل نہ ہوگا۔
قیامت کے دن اعلان ہوگا جو جس کو پوجتا تھا اپنے معبود کے پیچھے ہوں گے اور جو غیر اللّٰه کو پوجتے تھے وہ سب دوزخ میں گر پڑیں گے۔ اور یہود و نصاریٰ منہ کے بل دوزخ میں گر پڑیں گے اور صرف حق تعالیٰ وحدہ لا شریک لہ کے ماننے والے یعنی مسلمان رہ جائیں گے اور ان کے سامنے ایک تجلی ہوگی۔
وہ تجلی دیکھ کر وہ لوگ جو خلوص سے اللّٰه کو سجدہ کرتے تھے وہ بہ اذن الٰہی سجدہ میں گر پڑیں گے اور جو لوگ دکھاوے اور (مصلحتوں کی بناء پر دنیاوی مشکلات سے) بچنے کے لئے یعنی (نفاق کے ساتھ) سجدہ کرتے تھے، اللّٰه تعالیٰ ان کی کمر کو تختہ بنا دیں گے اور وہ جھک نہ سکیں گے۔ ان میں سے جو بھی سجدہ کا ارادہ کرے گا گدی کے بل گر پڑے گا۔
پل صراط چکنی اور پھسلنے والی جگہ ہے۔ مومنین میں سے کئی پلک جھپکنے میں کوئی بجلی کی طرح اور کوئی ہوا یا پرندوں کی طرح گزر جائیں گے۔ مومنین جب نجات پا چکے ہوں گے تو حق تعالیٰ شانہ کے حکم اور منشاء سے (اپنی عرض پر) دوزخ سے کچھ لوگوں کو نکالنے کی سفارش کریں گے۔ اور بھاری تعداد میں لوگ دوزخ سے نکال لیے جائیں گے۔ جن کے دل میں رائی برابر بھی ایمان موجود ہوگا یا ذرہ برابر ایمان ہوگا دوزخ سے نکال لیا جائے گا۔

[jetpack-related-posts]


33 Comments

  1. Mrs. Ammad on said:

    Assalamualikum Bhai,

    Muje ap se ye pochna hy k mera ik hi bara bhai hy jo shaddi k bad mere ammi abbu k sath rehtey or unky do betey b han. Jis ghar me ye sb rehty han wo mere abbu ka hy meri shaddi hochuki hy lekin masla ye hy k mera bhai jo pehly mjh per or meri maa per jan chirakta tha aj wo hum logo ko pochya b ni ulta har bat per ulajhta hy meri bhabi ki hr sahi ghalat bat ko labaik kehta hy meri maa se badtamizi krta hy or meri bhabi b bht badtamizi krti hy mjse b or mere ammi abbu se b. Bhai ki shaddi k ik saal k bad achanak ye change ana shuru hua hy me gawah hn mene khud dekha hy meri bhabi mere bhai ko bharkati hy or usne pata ni kya aesa jadu kia hy k mera bhai siwa meri bhabi k kisi ka ni. Ghar me puri tarha hukmurani krty han dono miya biwi kitni bar abbu ne ghar se janey ko kaha tb b jam kar hmarey sir per mussalat han. Meri ammi purey ghar ka kam krti han or meri bhabi apni marzi ki malik hy koi help ni krti meri ammi kuch kehti han to badtamizi krti hy or mera bhai uski badtamizi krny per ik lafz ni kehta ulta usi ka sath deta hy.
    Ab ye waqt agaya hy k mere ammi or abbu dono mere bhai bhabi se dartey han.

    Ap kindly ye btaen k mere bhai bhabi se kese jan churrain or meri bhabi ne jo jadu krwaya hy mere bhai per uska khatma kese karen k meri bhabi ki sachai samney aye.

    Regards,
    Naz.

  2. Irshad ali on said:

    Assalamlekum bhai mai b. Pharmcay krta hu pr mera mn padhai me nhi lgta hai aur na hi padne ko mn krta hai sirf ladkiyo aur glt gam me mn lgta hai jiske karn mere ghr wale mujse presan hai lo to koi ayesa wazifa btaeye ki mera mn sirf or sirf padhai me lge plz

  3. Abdoulrahmaan (Dramane) Cissokho on said:

    Dear Brother(s) In Islaam,

    You REALLY CANNOT IMAGINE HOW THIS SITE IS IMPORTANT TO US AND MILLIONS OF MUSLIMS THROUGHOUT THE WORLD. This only problem is that some very important articles are just in one LANGUAGE: URDU! We do not have anything againt Urdu but we cannot read it. So all the job benefit of a given dua is just understood and taken advantage of people who do master that language.
    I do live far from your region but I am so INTERESTED in learning in this site.
    Best and warmest greetings and please, carry on with the FANTASTIC JOB YOU ARE DOING. MAY ALLAAH BLESS YOU ALL!

    Sheikh

    • ãl عِmrãń on said:

      Dear brother I am really working hard on the translations part. There are lenghty contents. I assure you, it will be available soon Insha ALLAH. Be with us. We need your support.

  4. Gousiya on said:

    Maine ghar me ladies boutique start kiya aur online dealers se deal karti hun….saare deals ache ho rahe the ki ek dealer ne paise tho leliye magar tab se contact ni h aur na mera parcel aya…mera paisa ya maal wapas aane ke aur us dealer ko dhoka karne ka pachtava ho ki dusron ko karne ka b na soche…iska wazifa ya solution bataaye.!

  5. Amjad on said:

    Can u please post the in English please

    • ãl عِmrãń on said:

      Dear brother, I thank you for your feedback. We are working on english translations allow us some time. You will find it soon here. You will get the update soon Insha ALLAH.

    • ãl عِmrãń on said:

      As Salamu ‘Alaykum! dear brother Amjad, Please have a look on the post above, it has been updated in English also. You can now read it in English as well. We are working on other posts translation too. be with us.

  6. Abdoulrahmaan on said:

    Salaam!

    I hereby strongly approve off and confirm our sister Aaisha’s complaint about sending something useful articles to all of us in just URDU LANGUAGE. There was a time this site was very interesting due to the fact everybody could take advantage of it. Presently, it’s as if ISLAM JUST BELONGS TO THOSE WHO DO READ AND UNDERSTAND URDU. I think it’s a little UNFAIR! Around a month ago, I raised the same issue with a dua I wanted in English but up to now, I haven’t got a satisfactory answer to my question and the dua is still in just Urdu.
    Your audience will further shrink if the site persists in having dua and other in just Urdu language.

    JazakhALLAAH!

    • ãl عِmrãń on said:

      Dear brother, I thank you for being with us here. We are working on english translations and you will find it soon here. You will get the update soon Insha ALLAH.

    • ãl عِmrãń on said:

      As Salamu ‘Alaykum! dear brother Abdul Rahman, Please must read the post above, it is in English now. As you requested. You can now read it in English as well. We are working on other posts translation too. be with us.

  7. cüneyt on said:

    Assalamünaleyküm i need a dua which help me that my divorced woman stay far from me !
    Everytime she disturb me and so on !
    Please give me something!

    Jazakallah

  8. naila on said:

    ASSALAMLIKUM IMRAN BAHI PLEASE GAVE ME WAZIFA TO GET GOOD HALAL JOB I AM SINGLE MOTHER TRYING TO SUPPORT MY SON.AND WAZIFA FOR GOOD FUTURE.

  9. Farha syed on said:

    Assalamu Alaikum Imran bhai mera sasural mere city se bht door he or me chahti hu ke Meri Nannd ka Nikah mere city me ho jaaye ya mere sasural wale Ajmer shareef me Shift ho jaaye pls Imran bhai Koi Wazifa esa bata den ke sab bjt asaan ho jaaye aana jana 18hours se 12 hours ho jaay me bht pareshan hu Pls waizfa bata de jo bht powerful ho or Jald se Jald kaam ho

    • ãl عِmrãń on said:

      Dear Sis, upar link se amal shuru kar dein ap. Dear sis/bro, agar ap yaALLAH Website ke follower hai to apko wazifa karne ki ijazat hai. Follow karne ke liye is link pe click kijiye- http://www.yaALLAH.in/2015/04/03/follow-us/

  10. asma on said:

    Asalam alaikum sir Maine o love marriage keliye taweez banaya qul ka abi 8din hove hain kal rat mere khawab main lal sanp dikhai deraha hai o bht zaherila hai or meri baheno ko nuksan pahuncharaha hai lekin mujhe nahi nuksan pahuncharaha meri mausko Marne ki koshish karahi hai lekin Mar nai pa rahi hai
    Iska kya Matlab hai bataiye

    • ãl عِmrãń on said:

      Dear Sis, khule dushman hai apke koi jo nuksan pahuchana chahte hai. Please follow, rate and like my personal profile FB page here- https://www.fb.me/alimraanraza

  11. Omolola Fatokun on said:

    Assalamu Alaikum !

    please kindly send the posts in English. I made the same request two months ago. But still I don’t receive posts in English. At the beginning I received the posts in English language. Alhamdulillah It was very useful. So please send the English version. Thanks.
    Salam

    • ãl عِmrãń on said:

      Thanks for this feedback brother. We are working on the translation. Please be with us.

    • ãl عِmrãń on said:

      As Salamu ‘Alaykum! dear Omolola, Please must read the post above, it is in English now. As you requested. You can now read it in English as well. We are working on other posts translation too. be with us.

  12. Please I will like to have this post in English. Thank you

    • ãl عِmrãń on said:

      Okay Insha ALLAH we will work on this feedback.

  13. ahmedullah on said:

    Mind blowing …n eye opening update .. Great work YaAllah admins ……jazakallah …..

    • ãl عِmrãń on said:

      Jaza kALLAHU khair Dear brother.

  14. Aaisha on said:

    Assalamu Alaikum !

    Could you please send the posts in English. Ii made the same request two months back also. But still I don’t receive posts in English. At the beginning I received the posts in English language. Alhamdulillah It was very useful. So please make sure to send the English version.

    Jazakhallah !!1

    • ãl عِmrãń on said:

      As Salamu ‘Alaykum! dear, Please must read the post above, it is in English now. As you requested. You can now read it in English as well. We are working on other posts translation too. be with us.

Ask your question here..